رواة الحدیث

نتائج
نتیجہ مطلوبہ تلاش لفظ / الفاظ: برد سنان الشامي 1834
کتاب/کتب میں: سنن نسائی
6 رزلٹ جن میں تمام الفاظ آئے ہیں۔
رواۃ الحدیث: مكحول بن ابي مسلم الشامي ( 7659 ) ، برد بن سنان الشامي ( 1834 ) ، معتمر بن سليمان التيمي ( 7607 ) ، إسحاق بن راهويه المروزي ( 927 ) ، حدیث ۔۔۔ مکحول کہتے ہیں : ہر نشہ لانے والی چیز حرام ہے ۔
Terms matched: 4  -  Score: 340  -  1k
رواۃ الحدیث: عائشة بنت ابي بكر الصديق ( 4049 ) ، عروة بن الزبير الاسدي ( 5594 ) ، محمد بن شهاب الزهري ( 7272 ) ، برد بن سنان الشامي ( 1834 ) ، حاتم بن وردان السعدي ( 2214 ) ، إسحاق بن راهويه المروزي ( 927 ) ، حدیث ۔۔۔ ام المؤمنین عائشہ ؓ کہتی ہیں کہ میں نے دروازہ کھلوانا چاہا ، اس وقت رسول اللہ ﷺ نفل نماز پڑھ رہے تھے ، دروازہ قبلہ کی طرف پڑ رہا تھا ، آپ اپنے دائیں جانب یا بائیں جانب (چند قدم) چلے ، اور آپ نے دروازہ کھولا ، پھر آپ اپنی جگہ پر واپس لوٹ آئے ۔
Terms matched: 4  -  Score: 292  -  2k
رواۃ الحدیث: جابر بن عبد الله الانصاري ( 2069 ) ، عطاء بن ابي رباح القرشي ( 5625 ) ، برد بن سنان الشامي ( 1834 ) ، قدامة بن شهاب المازني ( 6463 ) ، يوسف بن واضح الهاشمي ( 8594 ) ، حدیث ۔۔۔ جابر بن عبداللہ ؓ سے روایت ہے کہ جبرائیل علیہ السلام نبی اکرم ﷺ کے پاس آئے وہ آپ ﷺ کو نماز کے اوقات سکھا رہے تھے ، تو جبرائیل علیہ السلام آگے بڑھے ، اور رسول اللہ ﷺ ان کے پیچھے تھے اور لوگ رسول اللہ ﷺ کے پیچھے تھے ، تو جبرائیل علیہ السلام نے ظہر پڑھائی جس وقت سورج ڈھل گیا ، پھر جبرائیل علیہ السلام آپ ﷺ کے پاس اس وقت آئے جب سایہ قد کے برابر ہو گیا ، اور جس طرح انہوں نے پہلے کیا تھا ویسے ہی پھر کیا ، جبرائیل آگے بڑھے ، اور رسول اللہ ﷺ ان کے پیچھے ہوئے ، اور لوگ رسول اللہ ﷺ کے پیچھے ، پھر انہوں نے عصر پڑھائی ، پھر جبرائیل علیہ السلام آپ ﷺ کے پاس اس وقت آئے جب سورج ڈوب گیا ، تو جبرائیل آگے بڑھے ، رسول اللہ ﷺ ان کے پیچھے ہوئے ، اور لوگ رسول اللہ ﷺ کے پیچھے ، پھر انہوں نے مغرب پڑھائی ، پھر جبرائیل علیہ السلام آپ ﷺ کے پاس اس وقت آئے جب شفق غائب ہو گئی ، تو وہ آگے بڑھے ، اور رسول اللہ ﷺ ان کے پیچھے ہوئے ، اور لوگ رسول اللہ ﷺ کے پیچھے ، تو انہوں نے عشاء پڑھائی ، پھر جبرائیل علیہ السلام آپ ﷺ کے پاس اس وقت آئے جب فجر کی پو پھٹی ، تو وہ آگے بڑھے ، رسول اللہ ﷺ ان کے پیچھے اور لوگ رسول اللہ ﷺ کے پیچھے ، انہوں نے فجر پڑھائی ، پھر جبرائیل علیہ السلام دوسرے دن آپ کے پاس اس وقت آئے جب آدمی کا سایہ اس کے قد کے برابر ہو گیا ، چنانچہ انہوں نے ویسے ہی کیا جس طرح کل کیا تھا ، تو ظہر پڑھائی ، پھر وہ آپ کے پاس اس وقت آئے جب انسان کا سایہ اس کے قد کے دوگنا ہو گیا ، انہوں نے ویسے ہی کیا جس طرح کل کیا تھا ، تو انہوں نے عصر پڑھائی ، پھر آپ کے پاس اس وقت آئے جب سورج ڈوب گیا ، تو انہوں نے ویسے ہی کیا جس طرح کل کیا تھا ، تو انہوں نے مغرب پڑھائی ، پھر ہم سو گئے ، پھر اٹھے ، پھر سو گئے پھر اٹھے ، پھر جبرائیل علیہ السلام آپ کے پاس آئے ، اور اسی طرح کیا جس طرح کل انہوں نے کیا تھا ، پھر عشاء پڑھائی ، پھر آپ ﷺ کے پاس اس وقت آئے جب فجر (کی روشنی) پھیل گئی ، صبح ہو گئی ، اور ستارے نمودار ہو گئے ، اور انہوں نے ویسے ہی کیا جس طرح کل کیا تھا ، تو انہوں نے فجر پڑھائی ، پھر کہا : ” ان دونوں نمازوں کے درمیان میں ہی نماز ...
Terms matched: 4  -  Score: 292  -  7k
رواۃ الحدیث: عائشة بنت ابي بكر الصديق ( 4049 ) ، غضيف بن الحارث السكوني ( 6369 ) ، عبادة بن نسي الكندي ( 4159 ) ، برد بن سنان الشامي ( 1834 ) ، حماد بن زيد الازدي ( 2491 ) ، يحيى بن حبيب الحارثي ( 8247 ) ، حدیث ۔۔۔ غضیف بن حارث کہتے ہیں کہ میں ام المؤمنین عائشہ ؓ کے پاس آیا ، تو میں نے ان سے سوال کیا اور کہا : رسول اللہ ﷺ رات کے ابتدائی حصہ میں غسل کرتے تھے یا آخری حصے میں ؟ تو انہوں نے کہا : دونوں طرح سے (کرتے تھے) ، کبھی رات کے ابتدائی حصہ میں غسل کرتے ، اور کبھی آخری حصہ میں ، اس پر میں نے کہا : اس اللہ کی تعریف ہے جس نے شریعت مطہرہ والے معاملہ کے اندر گنجائش رکھی ہے ۔
Terms matched: 4  -  Score: 292  -  2k
رواۃ الحدیث: عائشة بنت ابي بكر الصديق ( 4049 ) ، غضيف بن الحارث السكوني ( 6369 ) ، عبادة بن نسي الكندي ( 4159 ) ، برد بن سنان الشامي ( 1834 ) ، حماد بن زيد الازدي ( 2491 ) ، يحيى بن حبيب الحارثي ( 8247 ) ، حدیث ۔۔۔ غضیف بن حارث کہتے ہیں کہ میں ام المؤمنین عائشہ ؓ کے پاس آیا ، اور ان سے پوچھا : کیا رسول اللہ ﷺ رات کے ابتدائی حصہ میں غسل کرتے تھے یا آخری حصہ میں ؟ تو انہوں نے کہا : دونوں وقتوں میں کرتے تھے ، کبھی رات کے شروع میں غسل کرتے اور کبھی رات کے آخر میں ، میں نے کہا : شکر ہے اس اللہ رب العزت کا جس نے اس معاملے میں گنجائش رکھی ہے ۔
Terms matched: 4  -  Score: 292  -  2k
رواۃ الحدیث: عائشة بنت ابي بكر الصديق ( 4049 ) ، غضيف بن الحارث السكوني ( 6369 ) ، عبادة بن نسي الكندي ( 4159 ) ، برد بن سنان الشامي ( 1834 ) ، سفيان الثوري ( 3436 ) ، مخلد بن يزيد الحراني ( 7370 ) ، عمرو بن هشام الجزري ( 6213 ) ، حدیث ۔۔۔ غضیف بن حارث سے روایت ہے کہ انہوں نے ام المؤمنین عائشہ ؓ سے پوچھا : رسول اللہ ﷺ رات کے کس حصہ میں غسل کرتے تھے ؟ تو انہوں نے کہا : کبھی آپ ﷺ نے رات کے ابتدائی حصہ میں غسل کیا ، اور کبھی آخری حصہ میں کیا ، میں نے کہا : شکر ہے اس اللہ تعالیٰ کا جس نے معاملہ میں وسعت اور گنجائش رکھی ہے ۔
Terms matched: 4  -  Score: 292  -  2k


Search took 0.527 seconds