رواة الحدیث

نتائج
نتیجہ مطلوبہ تلاش لفظ / الفاظ: بكر عبد الله المزني 1933
کتاب/کتب میں: سنن ابن ماجہ
5 رزلٹ جن میں تمام الفاظ آئے ہیں۔
رواۃ الحدیث: المغيرة بن شعبة الثقفي ( 1665 ) ، بكر بن عبد الله المزني ( 1933 ) ، ثابت بن اسلم البناني ( 2009 ) ، معمر بن ابي عمرو الازدي ( 7633 ) ، عبد الرزاق بن همام الحميري ( 4533 ) ، الحسن بن ابي الربيع الجرجاني ( 1310 ) ، حدیث ۔۔۔ مغیرہ بن شعبہ ؓ کہتے ہیں کہ میں نبی اکرم ﷺ کے پاس آیا اور میں نے آپ سے ذکر کیا کہ میں ایک عورت کو پیغام دے رہا ہوں ، آپ ﷺ نے فرمایا : ” جاؤ اسے دیکھ لو ، اس سے تم دونوں میں محبت زیادہ ہونے کی امید ہے “ ، چنانچہ میں ایک انصاری عورت کے پاس آیا ، اور اس کے ماں باپ کے ذریعہ سے اسے پیغام دیا ، اور نبی اکرم ﷺ کا فرمان سنایا ، لیکن ایسا معلوم ہوا کہ ان کو یہ بات پسند نہیں آئی ، اس عورت نے پردہ سے یہ بات سنی تو کہا : اگر رسول اللہ ﷺ نے دیکھنے کا حکم دیا ہے ، تو تم دیکھ لو ، ورنہ میں تم کو اللہ کا واسطہ دلاتی ہوں ، گویا کہ اس نے اس چیز کو بہت بڑا سمجھا ، مغیرہ ؓ کہتے ہیں : میں نے اس عورت کو دیکھا ، اور اس سے شادی کر لی ، پھر انہوں نے اپنی باہمی موافقت اور ہم آہنگی کا حال بتایا ۔
Terms matched: 5  -  Score: 722  -  4k
رواۃ الحدیث: ابو رافع القبطي ( 548 ) ، بكر بن عبد الله المزني ( 1933 ) ، حميد بن ابي حميد الطويل ( 2531 ) ، همام بن يحيى العوذي ( 8097 ) ، ابو سعيد الخدري ( 3260 ) ، بكر بن قيس الناجي ( 1936 ) ، قتادة بن دعامة السدوسي ( 6458 ) ، همام بن يحيى العوذي ( 8097 ) ، يزيد بن هارون الواسطي ( 8488 ) ، ابن ابي شيبة العبسي ( 5049 ) ، حدیث ۔۔۔ ابو سعید خدری ؓ کہتے ہیں کیا میں تمہیں وہ بات نہ بتاؤں جو میں نے رسول اللہ ﷺ کی زبان مبارک سے سنی ہے ، وہ بات میرے کان نے سنی ، اور میرے دل نے اسے یاد رکھا کہ ایک آدمی تھا جس نے ننانوے خون (ناحق) کئے تھے ، پھر اسے توبہ کا خیال آیا ، اس نے روئے زمین پر سب سے بڑے عالم کے بارے میں سوال کیا ، تو اسے ایک آدمی کے بارے میں بتایا گیا ، وہ اس کے پاس آیا ، اور کہا : میں ننانوے آدمیوں کو (ناحق) قتل کر چکا ہوں ، کیا اب میری توبہ قبول ہو سکتی ہے ؟ اس شخص نے جواب دیا : (واہ) ننانوے آدمیوں کے (قتل کے) بعد بھی (توبہ کی امید رکھتا ہے) ؟ اس شخص نے تلوار کھینچی اور اسے بھی قتل کر دیا ، اور سو پورے کر دئیے ، پھر اسے توبہ کا خیال آیا ، اور روئے زمین پر سب سے بڑے عالم کے بارے میں سوال کیا ، اسے جب ایک شخص کے بارے میں بتایا گیا تو وہ وہاں گیا ، اور اس سے کہا : میں سو خون (ناحق) کر چکا ہوں ، کیا میری توبہ قبول ہو سکتی ہے ؟ اس نے جواب دیا : تم پر افسوس ہے ! بھلا تمہیں توبہ سے کون روک سکتا ہے ؟ تم اس ناپاک اور خراب بستی سے (جہاں تم نے اتنے بھاری گناہ کئے) نکل جاؤ ، اور فلاں نیک اور اچھی بستی میں جاؤ ، وہاں اپنے رب کی عبادت کرنا ، وہ جب نیک بستی میں جانے کے ارادے سے نکلا ، تو اسے راستے ہی میں موت آ گئی ، پھر رحمت و عذاب کے فرشتے اس کے بارے میں جھگڑنے لگے ، ابلیس نے کہا کہ میں اس کا زیادہ حقدار ہوں ، اس نے ایک پل بھی میری نافرمانی نہیں کی ، تو رحمت کے فرشتوں نے کہا : وہ توبہ کر کے نکلا تھا (لہٰذا وہ رحمت کا مستحق ہوا) ۔ راوی حدیث ہمام کہتے ہیں کہ مجھ سے حمید طویل نے حدیث بیان کی ، وہ بکر بن عبداللہ سے اور وہ ابورافع ؓ سے روایت کرتے ہیں وہ کہتے ہیں : (جب فرشتوں میں جھگڑا ہونے لگا تو) اللہ تعالیٰ نے ایک فرشتہ (ان کے فیصلے کے لیے) بھیجا ، دونوں قسم کے فرشتے اس کے پاس فیصلہ کے لیے آئے ، تو اس نے کہا : دیکھو دونوں بستیوں میں سے وہ کس سے زیادہ قریب ہے ؟ (فا...
Terms matched: 5  -  Score: 722  -  8k
رواۃ الحدیث: ابو هريرة الدوسي ( 4396 ) ، نفيع بن رافع المدني ( 7930 ) ، بكر بن عبد الله المزني ( 1933 ) ، حميد بن ابي حميد الطويل ( 2531 ) ، إسماعيل بن علية الاسدي ( 1003 ) ، ابن ابي شيبة العبسي ( 5049 ) ، حدیث ۔۔۔ ابوہریرہ ؓ سے روایت ہے کہ وہ جنبی تھے نبی اکرم ﷺ مدینے کے کسی راستے میں انہیں ملے ، تو وہ چپکے سے نکل لیے ، نبی اکرم ﷺ نے ان کو غائب پایا ، جب وہ آئے تو آپ ﷺ نے پوچھا : ” ابوہریرہ ! تم کہاں تھے ؟ “ ، کہا : اللہ کے رسول ! آپ سے ملاقات کے وقت میں جنبی تھا ، اور بغیر غسل کئے آپ کی محفل میں بیٹھنا مجھے اچھا نہیں لگا ، تو رسول اللہ ﷺ نے فرمایا : ” مومن ناپاک نہیں ہوتا “ ۔
Terms matched: 5  -  Score: 632  -  2k
رواۃ الحدیث: المغيرة بن شعبة الثقفي ( 1665 ) ، حمزة بن المغيرة الثقفي ( 2512 ) ، بكر بن عبد الله المزني ( 1933 ) ، حميد بن ابي حميد الطويل ( 2531 ) ، محمد بن إبراهيم السلمي ( 6795 ) ، محمد بن المثنى العنزي ( 6861 ) ، حدیث ۔۔۔ مغیرہ بن شعبہ ؓ کہتے ہیں کہ رسول اللہ ﷺ (ایک سفر میں) پیچھے رہ گئے ، اور ہم اس وقت لوگوں کے پاس پہنچے جب عبدالرحمٰن بن عوف ؓ انہیں ایک رکعت پڑھا چکے تھے ، جب انہوں نے نبی اکرم ﷺ کی آمد محسوس کی تو پیچھے ہٹنے لگے ، نبی اکرم ﷺ نے ان کو نماز مکمل کرنے کا اشارہ کیا ، آپ ﷺ نے فرمایا : ” تم نے اچھا کیا ، ایسے ہی کیا کرو “ ۔
Terms matched: 5  -  Score: 622  -  2k
رواۃ الحدیث: انس بن مالك الانصاري ( 720 ) ، بكر بن عبد الله المزني ( 1933 ) ، غالب بن ابي غيلان الراسبي ( 6350 ) ، بشر بن المفضل الرقاشي ( 1868 ) ، إسحاق بن إبراهيم الشهيدي ( 920 ) ، حدیث ۔۔۔ انس بن مالک ؓ کہتے ہیں کہ ہم نبی اکرم ﷺ کے ساتھ سخت گرمی میں نماز پڑھتے تھے ، جب ہم میں سے کوئی اپنی پیشانی زمین پہ نہ رکھ سکتا تو اپنا کپڑا بچھا لیتا ، اور اس پر سجدہ کرتا ۔
Terms matched: 5  -  Score: 622  -  2k


Search took 0.580 seconds