رواة الحدیث

نتائج
نتیجہ مطلوبہ تلاش لفظ / الفاظ: بهز اسد العمي 1973
کتاب/کتب میں: سنن نسائی
27 رزلٹ جن میں تمام الفاظ آئے ہیں۔
رواۃ الحدیث: انس بن مالك الانصاري ( 720 ) ، ثابت بن اسلم البناني ( 2009 ) ، حماد بن سلمة البصري ( 2492 ) ، بهز بن اسد العمي ( 1973 ) ، محمد بن نافع القيسي ( 6786 ) ، حدیث ۔۔۔ انس ؓ کہتے ہیں کہ جب آیت « لن تنالوا البر حتى تنفقوا مما تحبون » ” تم « بِر » (بھلائی) کو حاصل نہیں کر سکتے جب تک کہ تم اس میں سے خرچ نہ کرو جسے تم پسند کرتے ہو “ (آل عمران : ۹۲) نازل ہوئی تو ابوطلحہ نے کہا : اللہ تعالیٰ ہم سے ہمارے اچھے مال میں سے مانگتا ہے ، تو اللہ کے رسول ! میں آپ کو گواہ بنا کر کہتا ہوں کہ میں نے اپنی زمین اللہ کی راہ میں وقف کی ، رسول اللہ ﷺ نے فرمایا : ” اس وقف کو اپنے قرابت داروں : حسان بن ثابت اور ابی بن کعب کے لیے کر دو “ (کہ وہ لوگ اس زمین کو اپنے تصرف میں لائیں اور فائدہ اٹھائیں) ۔
Terms matched: 4  -  Score: 292  -  3k
رواۃ الحدیث: عدي بن حاتم الطائي ( 5575 ) ، تميم بن طرفة الطائي ( 1998 ) ، عبد العزيز بن رفيع الاسدي ( 4571 ) ، شعبة بن الحجاج العتكي ( 3795 ) ، بهز بن اسد العمي ( 1973 ) ، عمرو بن يزيد الجرمي ( 6222 ) ، حدیث ۔۔۔ عدی بن حاتم ؓ کہتے ہیں کہ رسول اللہ ﷺ نے فرمایا : ” جو کسی بات کی قسم کھائے ، پھر اس سے بہتر بات پائے تو وہی کرے جو بہتر ہے اور اپنی قسم کو چھوڑ دے “ ۔
Terms matched: 4  -  Score: 292  -  2k
رواۃ الحدیث: انس بن مالك الانصاري ( 720 ) ، ثابت بن اسلم البناني ( 2009 ) ، حماد بن سلمة البصري ( 2492 ) ، بهز بن اسد العمي ( 1973 ) ، محمد بن نافع القيسي ( 6786 ) ، حدیث ۔۔۔ انس ؓ کہتے ہیں کہ رسول اللہ ﷺ کا ایک فارسی پڑوسی تھا جو اچھا شوربہ بناتا تھا ۔ ایک دن رسول اللہ ﷺ کے پاس آیا ، آپ ﷺ کے پاس عائشہ ؓ بھی موجود تھیں ، اس نے آپ کو اپنے ہاتھ سے اشارہ کر کے بلایا ، آپ نے عائشہ ؓ کی طرف اشارہ کر کے پوچھا : ” کیا انہیں بھی لے کر آؤں “ ، اس نے ہاتھ سے اشارہ سے منع کیا دو یا تین بار کہ نہیں ۔
Terms matched: 4  -  Score: 292  -  2k
رواۃ الحدیث: انس بن مالك الانصاري ( 720 ) ، ثابت بن اسلم البناني ( 2009 ) ، حماد بن سلمة البصري ( 2492 ) ، بهز بن اسد العمي ( 1973 ) ، محمد بن نافع القيسي ( 6786 ) ، حدیث ۔۔۔ انس ؓ سے روایت ہے کہ عبدالرحمٰن بن عوف ؓ آئے اور ان پر زعفران کے رنگ کا اثر تھا تو رسول اللہ ﷺ نے کہا : ” یہ کیا ہے ؟ انہوں نے کہا : میں نے ایک عورت سے شادی کی ہے (یہ اسی کا اثر و نشان ہے) ۔ آپ نے پوچھا ؟ مہر کتنا دیا ؟ کہا : کھجور کی گٹھلی کے وزن کے برابر سونا ، آپ نے فرمایا : ولیمہ کرو اگرچہ ایک بکری ہی کیوں نہ ہو ۔
Terms matched: 4  -  Score: 292  -  2k
رواۃ الحدیث: انس بن مالك الانصاري ( 720 ) ، ثابت بن اسلم البناني ( 2009 ) ، حماد بن سلمة البصري ( 2492 ) ، بهز بن اسد العمي ( 1973 ) ، محمد بن نافع القيسي ( 6786 ) ، حدیث ۔۔۔ انس ؓ کہتے ہیں کہ رسول اللہ ﷺ نے فرمایا : ” جنت والوں میں سے ایک شخص اللہ کے سامنے پیش کیا جائے گا ، اللہ اس سے کہے گا : آدم کے بیٹے ! تم نے اپنا ٹھکانہ کیسا پایا ؟ وہ کہے گا : اے میرے رب ! مجھے تو بہترین ٹھکانہ ملا ہوا ہے ۔ اللہ تعالیٰ کہے گا تمہاری کوئی طلب اور کوئی تمنا ہو تو مانگو اور ظاہر کرو ۔ وہ کہے گا : میری تجھ سے یہی تمنا و طلب ہے کہ تو مجھے دنیا میں دسیوں بار بھیج تاکہ (میں جاؤں) پھر تیری راہ میں مارا جاؤں ۔ اس کی یہ تمنا شہادت کی فضیلت دیکھنے کی وجہ سے ہو گی “ ۔
Terms matched: 4  -  Score: 292  -  3k
رواۃ الحدیث: انس بن مالك الانصاري ( 720 ) ، ثابت بن اسلم البناني ( 2009 ) ، قتادة بن دعامة السدوسي ( 6458 ) ، حماد بن سلمة البصري ( 2492 ) ، بهز بن اسد العمي ( 1973 ) ، محمد بن نافع القيسي ( 6786 ) ، حدیث ۔۔۔ انس ؓ سے روایت ہے کہ قبیلہ عرینہ کے کچھ لوگ حرہ میں ٹھہرے ، پھر وہ نبی اکرم ﷺ کے پاس آئے ، انہیں مدینے کی آب و ہوا راس نہ آئی ، تو آپ نے انہیں حکم دیا کہ وہ صدقے کے اونٹوں میں جا کر ان کے دودھ اور پیشاب پیئیں ، تو انہوں نے چرواہے کو قتل کر دیا ، اسلام سے پھر گئے اور اونٹوں کو ہانک لے گئے ، رسول اللہ ﷺ نے ان کے پیچھے کچھ لوگوں کو بھیجا ، انہیں پکڑ کر لایا گیا تو آپ نے ان کے ہاتھ پاؤں کاٹ دئیے ، آنکھیں پھوڑ دیں اور انہیں حرہ میں ڈال دیا ۔ انس ؓ کہتے ہیں : میں نے ان میں سے ایک کو دیکھا کہ وہ پیاس کی وجہ سے زمین سے اپنے منہ کو رگڑ رہا تھا ، (یعنی زمین کو اپنے منہ سے چاٹ رہا تھا) یہاں تک کہ سب مر گئے ۔
Terms matched: 4  -  Score: 292  -  3k
رواۃ الحدیث: عدي بن حاتم الطائي ( 5575 ) ، عامر الشعبي ( 4099 ) ، عبد الله بن ابي السفر الهمداني ( 4626 ) ، شعبة بن الحجاج العتكي ( 3795 ) ، بهز بن اسد العمي ( 1973 ) ، سليمان بن عبيد الله الغيلاني ( 3610 ) ، حدیث ۔۔۔ عدی بن حاتم ؓ کہتے ہیں کہ میں نے رسول اللہ ﷺ سے پوچھا : میں اپنا کتا چھوڑتا ہوں ؟ آپ نے فرمایا : ” جب تم اپنا کتا چھوڑو اور اس پر « بسم اللہ » پڑھ لو تو اسے (شکار کو) کھاؤ اور اگر اس نے اس (شکار) میں سے کچھ کھایا ہو تو تم اسے نہ کھاؤ ، اس لیے کہ اسے اس کتے نے اپنے لیے شکار کیا ہے ، اور جب تم اپنے کتے کو چھوڑو پھر اس کے ساتھ اس کے علاوہ (کوئی کتا) پاؤ تو اس شکار کو مت کھاؤ ، اس لیے کہ تم نے « بسم اللہ » صرف اپنے کتے پر پڑھی ہے ، دوسرے پر نہیں ۔
Terms matched: 4  -  Score: 292  -  3k
رواۃ الحدیث: انس بن مالك الانصاري ( 720 ) ، ثابت بن اسلم البناني ( 2009 ) ، حماد بن سلمة البصري ( 2492 ) ، بهز بن اسد العمي ( 1973 ) ، محمد بن نافع القيسي ( 6786 ) ، حدیث ۔۔۔ ثابت بیان کرتے ہیں کہ لوگوں نے انس ؓ سے رسول اللہ ﷺ کی انگوٹھی کے بارے میں سوال کیا ، تو وہ بولے : گویا میں آپ ﷺ کی چاندی کی انگوٹھی کی چمک دیکھ رہا ہوں ، پھر انہوں نے اپنے بائیں ہاتھ کی چھنگلی انگلی کو بلند کیا ۔
Terms matched: 4  -  Score: 292  -  2k
رواۃ الحدیث: عبد الله بن عمر العدوي ( 4967 ) ، زاذان الكندي ( 2985 ) ، عمرو بن مرة المرادي ( 6197 ) ، شعبة بن الحجاج العتكي ( 3795 ) ، بهز بن اسد العمي ( 1973 ) ، عمرو بن يزيد الجرمي ( 6222 ) ، حدیث ۔۔۔ زاذان کہتے ہیں کہ میں نے عبداللہ بن عمر ؓ سے درخواست کی کہ مجھ سے کوئی ایسی بات بیان کیجئیے جو آپ نے رسول اللہ ﷺ سے برتنوں کے سلسلے میں سنی ہو اور اس کی شرح و تفسیر بھی بیان کیجئے تو انہوں نے کہا : رسول اللہ ﷺ نے لاکھی برتن سے روکا اور یہ وہی ہے جسے تم « جرہ » (گھڑا) کہتے ہو ۔ « دباء » سے روکا ، جسے تم « قرع » (کدو کی تُو نبی) کہتے ہو ، « نقیر » سے روکا اور یہ کھجور کے درخت کی جڑ ہے جسے تم کھودتے ہو (اور برتن بنا لیتے ہو) اور « مزفت » جو « مقیر » ہے اس سے بھی روکا ۔
Terms matched: 4  -  Score: 292  -  3k
رواۃ الحدیث: انس بن مالك الانصاري ( 720 ) ، عطاء بن ابي ميمونة البصري ( 5628 ) ، عبد الله بن بكر المزني ( 4747 ) ، عفان بن مسلم الباهلي ( 5653 ) ، بهز بن اسد العمي ( 1973 ) ، عبد الرحمن بن مهدي العنبري ( 4493 ) ، محمد بن بشار العبدي ( 6879 ) ، حدیث ۔۔۔ انس بن مالک ؓ کہتے ہیں کہ رسول اللہ ﷺ کے پاس جب بھی کوئی ایسا معاملہ آیا جس میں قصاص ہو تو آپ نے اسے معاف کر دینے کا حکم دیا ۔
Terms matched: 4  -  Score: 292  -  2k
رواۃ الحدیث: عبد الله بن عمر العدوي ( 4967 ) ، عبد الله بن دينار القرشي ( 4797 ) ، شعبة بن الحجاج العتكي ( 3795 ) ، بهز بن اسد العمي ( 1973 ) ، عمرو بن يزيد الجرمي ( 6222 ) ، حدیث ۔۔۔ عبداللہ بن عمر ؓ کہتے ہیں کہ رسول اللہ ﷺ نے فرمایا : ” بیچنے اور خریدنے والے دونوں کے درمیان اس وقت تک بیع پوری نہیں ہوتی جب تک وہ جدا نہ ہو جائیں ، سوائے بیع خیار کے “ ۔
Terms matched: 4  -  Score: 292  -  2k
رواۃ الحدیث: ثابت بن وديعة الانصاري ( 2032 ) ، زيد بن وهب الجهني ( 3160 ) ، عدي بن ثابت الانصاري ( 5573 ) ، شعبة بن الحجاج العتكي ( 3795 ) ، بهز بن اسد العمي ( 1973 ) ، عمرو بن يزيد الجرمي ( 6222 ) ، حدیث ۔۔۔ ثابت بن یزید بن ودیعہ ؓ کہتے ہیں کہ ایک شخص رسول اللہ ﷺ کے پاس ایک ضب لایا ۔ آپ اسے دیکھنے لگے اور اسے الٹا پلٹا اور فرمایا : ” ایک امت کی صورت مسخ کر دی گئی تھی ، نہ معلوم اس کا کیا ہوا ، اور میں اس کا علم نہیں ، شاید یہ اسی میں سے ہو “ ۔
Terms matched: 4  -  Score: 292  -  2k
رواۃ الحدیث: عائشة بنت ابي بكر الصديق ( 4049 ) ، الاسود بن يزيد النخعي ( 1146 ) ، إبراهيم النخعي ( 902 ) ، الحكم بن عتيبة الكندي ( 1372 ) ، شعبة بن الحجاج العتكي ( 3795 ) ، بهز بن اسد العمي ( 1973 ) ، عمرو بن يزيد الجرمي ( 6222 ) ، حدیث ۔۔۔ ام المؤمنین عائشہ ؓ سے روایت ہے کہ انہوں نے بریرہ ؓ کو خرید کر آزاد کر دینا چاہا ، لیکن ان کے مالکان نے ولاء (ترکہ) خود لینے کی شرط لگائی ۔ تو انہوں نے اس کا تذکرہ رسول اللہ ﷺ سے کیا ، تو آپ نے فرمایا : ” اسے خرید لو ، اور آزاد کر دو ، ولاء (ترکہ) اسی کا ہے جو آزاد کرے “ ، اور جس وقت وہ آزاد کر دی گئیں تو انہیں اختیار دیا گیا کہ وہ اپنے شوہر کی زوجیت میں رہیں یا نہ رہیں ۔ (اسی درمیان) رسول اللہ ﷺ کے پاس گوشت لایا گیا ، کہا گیا کہ یہ ان چیزوں میں سے ہے جو بریرہ ؓ پر صدقہ کیا جاتا ہے ، تو آپ نے فرمایا : ” یہ اس کے لیے صدقہ ہے ، اور ہمارے لیے ہدیہ ہے “ ، ان کے شوہر آزاد تھے ۔
Terms matched: 4  -  Score: 292  -  3k
رواۃ الحدیث: عبد الله بن ابي اوفى الاسلمي ( 4622 ) ، عمرو بن مرة المرادي ( 6197 ) ، شعبة بن الحجاج العتكي ( 3795 ) ، بهز بن اسد العمي ( 1973 ) ، عمرو بن يزيد الجرمي ( 6222 ) ، حدیث ۔۔۔ عبداللہ بن ابی اوفی ؓ کہتے ہیں کہ رسول اللہ ﷺ کے پاس جب کوئی قوم اپنا صدقہ لے کر آتی تو آپ فرماتے : ” اے اللہ ! فلاں کے آل (اولاد) پر رحمت بھیج “ (چنانچہ) جب میرے والد اپنا صدقہ لے کر آپ کے پاس آئے تو آپ نے فرمایا : ” اے اللہ ! آل ابی اوفی پر رحمت بھیج “ ۔
Terms matched: 4  -  Score: 292  -  2k
رواۃ الحدیث: ابو ايوب الانصاري ( 2650 ) ، موسى بن طلحة القرشي ( 7744 ) ، عثمان بن عبد الله التميمي ( 5537 ) ، عمرو بن عثمان القرشي ( 6166 ) ، شعبة بن الحجاج العتكي ( 3795 ) ، بهز بن اسد العمي ( 1973 ) ، محمد بن عثمان الثقفي ( 7166 ) ، حدیث ۔۔۔ ابوایوب ؓ سے روایت ہے کہ ایک شخص نے عرض کیا : اللہ کے رسول ! مجھے کوئی ایسا عمل بتائیے جو مجھے جنت میں داخل کرے تو رسول اللہ ﷺ نے فرمایا : ” اللہ کی عبادت کرو ، اس کے ساتھ کسی کو شریک نہ کرو ، نماز قائم کرو ، زکاۃ ادا کرو اور صلہ رحمی کرو ، اسے چھوڑ دو “ گویا آپ اپنی اونٹنی پر سوار تھے ۔
Terms matched: 4  -  Score: 292  -  2k
رواۃ الحدیث: عبد الله بن عمر العدوي ( 4967 ) ، سعيد بن جبير الاسدي ( 3307 ) ، الحكم بن عتيبة الكندي ( 1372 ) ، شعبة بن الحجاج العتكي ( 3795 ) ، بهز بن اسد العمي ( 1973 ) ، عمرو بن يزيد الجرمي ( 6222 ) ، حدیث ۔۔۔ حکم کہتے ہیں کہ ہمیں سعید بن جبیر نے مزدلفہ میں ایک اقامت سے مغرب کی تین رکعتیں پڑھائیں ، پھر سلام پھیرا ، پھر (دوسری اقامت سے) عشاء کی دو رکعت پڑھائی ، پھر ذکر کیا کہ عبداللہ بن عمر ؓ نے ایسا ہی کیا ، اور انہوں نے ذکر کیا کہ رسول اللہ ﷺ نے (بھی) ایسا ہی کیا تھا ۔
Terms matched: 4  -  Score: 292  -  2k
رواۃ الحدیث: عبد الله بن مغفل المزني ( 5105 ) ، مطرف بن عبد الله الحرشي ( 7531 ) ، يزيد بن حميد الضبعي ( 8408 ) ، شعبة بن الحجاج العتكي ( 3795 ) ، بهز بن اسد العمي ( 1973 ) ، عمرو بن يزيد الجرمي ( 6222 ) ، حدیث ۔۔۔ عبداللہ بن مغفل ؓ کہتے ہیں کہ رسول اللہ ﷺ نے کتوں کو مار ڈالنے کا حکم دیا ، آپ ﷺ نے فرمایا : ” لوگوں کو کتوں سے کیا سروکار ؟ “ اور آپ ﷺ نے شکاری کتوں اور بکریوں کی رکھوالی کرنے والے کتوں کی اجازت دی ، اور فرمایا : ” جب کتا برتن میں منہ ڈال دے تو اسے سات دفعہ دھو لو ، آٹھویں دفعہ مٹی سے مانجھو “ ، ابوہریرہ ؓ نے عبداللہ بن مغفل کی مخالفت کی ہے اور (اپنی روایت میں) یوں کہا ہے : ان میں سے ایک بار مٹی سے مانجھو ۔
Terms matched: 4  -  Score: 292  -  3k
رواۃ الحدیث: عمار بن ياسر العنسي ( 5860 ) ، عبد الرحمن بن ابزى الخزاعي ( 4261 ) ، سعيد بن عبد الرحمن الخزاعي ( 3353 ) ، ذر بن عبد الله المرهبي ( 2837 ) ، الحكم بن عتيبة الكندي ( 1372 ) ، شعبة بن الحجاج العتكي ( 3795 ) ، بهز بن اسد العمي ( 1973 ) ، عمرو بن يزيد الجرمي ( 6222 ) ، حدیث ۔۔۔ عبدالرحمٰن بن ابزی سے روایت ہے کہ ایک شخص نے عمر بن خطاب ؓ سے تیمم کے متعلق سوال کیا ، تو وہ نہیں جان سکے کہ کیا جواب دیں ، عمار ؓ نے کہا : کیا آپ کو یاد ہے ؟ جب ہم ایک سریہ (فوجی مہم) میں تھے ، اور میں جنبی ہو گیا تھا ، تو میں نے مٹی میں لوٹ پوٹ لیا ، پھر میں نبی اکرم ﷺ کے پاس آیا تو آپ ﷺ نے فرمایا : ” تمہارے لیے اس طرح کر لینا ہی کافی تھا “ ، شعبہ نے (تیمم کا طریقہ بتانے کے لیے) اپنے دونوں ہاتھ دونوں گھٹنوں پر مارے ، پھر ان میں پھونک ماری ، اور ان دونوں سے اپنے چہرہ اور اپنے دونوں ہتھیلیوں پر ایک بار مسح کیا “ ۔
Terms matched: 4  -  Score: 292  -  3k
رواۃ الحدیث: علي بن ابي طالب الهاشمي ( 5722 ) ، النزال بن سبرة الهلالي ( 1710 ) ، عبد الملك بن ميسرة العامري ( 5248 ) ، شعبة بن الحجاج العتكي ( 3795 ) ، بهز بن اسد العمي ( 1973 ) ، عمرو بن يزيد الجرمي ( 6222 ) ، حدیث ۔۔۔ عبدالملک بن میسرہ کہتے ہیں کہ میں نے نزال بن سبرہ سے سنا ، انہوں نے کہا کہ میں نے علی ؓ کو دیکھا کہ آپ نے ظہر کی نماز پڑھی ، پھر لوگوں کی ضرورتیں پوری کرنے یعنی ان کے مقدمات نپٹانے کے لیے بیٹھے ، جب عصر کا وقت ہوا تو پانی کا ایک برتن لایا گیا ، آپ نے اس سے ایک ہتھیلی میں پانی لیا ، پھر اسے اپنے چہرہ ، اپنے دونوں بازو ، سر اور دونوں پیروں پر ملا ، پھر بچا ہوا پانی لیا اور کھڑے ہو کر پیا ، اور کہنے لگے کہ کچھ لوگ اسے ناپسند کرتے ہیں حالانکہ میں نے رسول اللہ ﷺ کو ایسا کرتے دیکھا ہے ، اور یہ ان لوگوں کا وضو ہے جن کا وضو نہیں ٹوٹا ہے ۔
Terms matched: 4  -  Score: 292  -  3k
رواۃ الحدیث: عبد الله بن عمر العدوي ( 4967 ) ، سعيد بن جبير الاسدي ( 3307 ) ، سلمة بن كهيل الحضرمي ( 3518 ) ، شعبة بن الحجاج العتكي ( 3795 ) ، بهز بن اسد العمي ( 1973 ) ، عمرو بن يزيد الجرمي ( 6222 ) ، حدیث ۔۔۔ سعید بن جبیر کہتے ہیں کہ میں نے عبداللہ بن عمر ؓ کو مزدلفہ میں نماز پڑھتے دیکھا ، انہوں نے اقامت کہی ، اور مغرب کی نماز تین رکعت پڑھی ، پھر (دوسری اقامت سے) عشاء کی دو رکعت پڑھی ، پھر کہا : میں نے رسول اللہ ﷺ کو اس جگہ ایسا ہی کرتے دیکھا ہے ۔
Terms matched: 4  -  Score: 292  -  2k
رواۃ الحدیث: انس بن مالك الانصاري ( 720 ) ، ثابت بن اسلم البناني ( 2009 ) ، حماد بن سلمة البصري ( 2492 ) ، بهز بن اسد العمي ( 1973 ) ، محمد بن نافع القيسي ( 6786 ) ، حدیث ۔۔۔ انس ؓ سے روایت ہے کہ نبی اکرم ﷺ فرماتے تھے : ” برابر ہو جاؤ ، برابر ہو جاؤ ، برابر ہو جاؤ ، قسم ہے اس ذات کی جس کے ہاتھ میں میری جان ہے ، میں تمہیں اپنے پیچھے سے بھی اسی طرح دیکھتا ہوں جس طرح تمہیں اپنے سامنے سے دیکھتا ہوں “ ۔
Terms matched: 4  -  Score: 292  -  2k
رواۃ الحدیث: جابر بن عبد الله الانصاري ( 2069 ) ، محمد بن المنكدر القرشي ( 6864 ) ، شعبة بن الحجاج العتكي ( 3795 ) ، بهز بن اسد العمي ( 1973 ) ، عمرو بن يزيد الجرمي ( 6222 ) ، حدیث ۔۔۔ جابر بن عبداللہ بن حرام ؓ سے روایت ہے کہ ان کے والد غزوہ احد کے دن قتل کر دیئے گئے ، میں ان کے چہرہ سے کپڑا ہٹانے اور رونے لگا ، لوگ مجھے روک رہے تھے ، اور رسول اللہ ﷺ نہیں روک رہے تھے ، میری پھوپھی (بھی) ان پر رونے لگیں ، تو رسول اللہ ﷺ نے فرمایا : ” تم ان پر مت روؤ ، فرشتے ان پر برابر اپنے پروں سے سایہ کیے رہے یہاں تک کہ تم لوگوں نے اٹھایا “ ۔
Terms matched: 4  -  Score: 292  -  2k
رواۃ الحدیث: عبد الله بن العباس القرشي ( 4883 ) ، عمران بن الحارث السلمي ( 6030 ) ، سلمة بن كهيل الحضرمي ( 3518 ) ، شعبة بن الحجاج العتكي ( 3795 ) ، بهز بن اسد العمي ( 1973 ) ، عمرو بن يزيد الجرمي ( 6222 ) ، حدیث ۔۔۔ عبداللہ بن عباس ؓ سے روایت ہے کہ نبی اکرم ﷺ نے فرمایا : ” میرے پاس جبرائیل علیہ السلام آئے اور انہوں نے کہا : مہینہ انتیس دن کا بھی ہوتا ہے “ ۔
Terms matched: 4  -  Score: 292  -  2k
رواۃ الحدیث: عبد الرحمن بن ابزى الخزاعي ( 4261 ) ، سعيد بن عبد الرحمن الخزاعي ( 3353 ) ، ذر بن عبد الله المرهبي ( 2837 ) ، زبيد بن الحارث اليامي ( 2995 ) ، سلمة بن كهيل الحضرمي ( 3518 ) ، شعبة بن الحجاج العتكي ( 3795 ) ، بهز بن اسد العمي ( 1973 ) ، عمرو بن يزيد الجرمي ( 6222 ) ، حدیث ۔۔۔ عبدالرحمٰن بن ابزیٰ ؓ سے روایت ہے کہ رسول اللہ ﷺ وتر میں « ‏سبح اسم ربك الأعلى » اور « قل يا أيہا الكافرون » اور « قل ہو اللہ أحد‏ » پڑھتے تھے ، اور جب سلام پھیرتے تھے ، تو « سبحان الملك القدوس » تین بار کہتے ، اور تیسری بار اپنی آواز بلند کرتے ۔
Terms matched: 4  -  Score: 292  -  2k
رواۃ الحدیث: البراء بن عازب الانصاري ( 1157 ) ، عامر الشعبي ( 4099 ) ، زبيد بن الحارث اليامي ( 2995 ) ، شعبة بن الحجاج العتكي ( 3795 ) ، بهز بن اسد العمي ( 1973 ) ، محمد بن عثمان الثقفي ( 7166 ) ، حدیث ۔۔۔ شعبی (عامر بن شراحیل) کہتے ہیں کہ ہم سے براء بن عازب ؓ نے مسجد کے ستونوں میں سے ایک ستون کے پاس بیان کیا کہ نبی اکرم ﷺ نے قربانی کے دن خطبہ دیا ، تو آپ نے فرمایا : ” اپنے اس دن میں سب سے پہلا کام یہ ہے کہ ہم نماز پڑھیں ، پھر قربانی کریں ، تو جس نے ایسا کیا تو اس نے ہماری سنت کو پا لیا ، اور جس نے اس سے پہلے ذبح کر لیا تو وہ محض گوشت ہے جسے وہ اپنے گھر والوں کو پہلے پیش کر رہا ہے “ ، ابوبردہ ابن نیار (نماز سے پہلے ہی) ذبح کر چکے تھے ، تو انہوں نے عرض کیا : اللہ کے رسول ! میرے پاس ایک سال کا ایک دنبہ ہے ، جو دانت والے دنبہ سے بہتر ہے ، تو آپ نے فرمایا : ” اسے ہی ذبح کر لو ، لیکن تمہارے بعد اور کسی کے لیے یہ کافی نہیں ہو گا “ ۔
Terms matched: 4  -  Score: 292  -  3k
Result Pages: 1 2 Next >>


Search took 0.471 seconds