رواة الحدیث

نتائج
نتیجہ مطلوبہ تلاش لفظ / الفاظ: بيان بشر الاحمسي 1980
کتاب/کتب میں: صحیح مسلم
7 رزلٹ جن میں تمام الفاظ آئے ہیں۔
رواۃ الحدیث: جرير بن عبد الله البجلي ( 2123 ) ، قيس بن ابي حازم البجلي ( 6508 ) ، بيان بن بشر الاحمسي ( 1980 ) ، خالد بن عبد الله الطحان ( 2663 ) ، عبد الحميد بن ابي عيسى الواسطي ( 4228 ) ، جرير بن عبد الله البجلي ( 2123 ) ، قيس بن ابي حازم البجلي ( 6508 ) ، بيان بن بشر الاحمسي ( 1980 ) ، خالد بن عبد الله الطحان ( 2663 ) ، يحيى بن يحيى النيسابوري ( 8350 ) ، حدیث ۔۔۔ سیدنا جریر بن عبداللہ ؓ سے روایت ہے ، رسول اللہ ﷺ نے مجھےکبھی نہیں روکا اندر آنے سے جب سے میں مسلمان ہوا اور کبھی مجھے نہیں دیکھا مگر آپ ﷺ ہنسے (یعنی خندہ روئی اور کشادہ پیشانی سے ملے) ۔
Terms matched: 4  -  Score: 500  -  2k
رواۃ الحدیث: ابو ذر الغفاري ( 2187 ) ، يزيد بن شريك التيمي ( 8430 ) ، إبراهيم بن يزيد التيمي ( 901 ) ، بيان بن بشر الاحمسي ( 1980 ) ، جرير بن عبد الحميد الضبي ( 2122 ) ، قتيبة بن سعيد الثقفي ( 6460 ) ، سليم بن اسود المحاربي ( 3542 ) ، إبراهيم النخعي ( 902 ) ، عبد الرحمن بن ابي الشعثاء المحاربي ( 4265 ) ، بيان بن بشر الاحمسي ( 1980 ) ، جرير بن عبد الحميد الضبي ( 2122 ) ، قتيبة بن سعيد الثقفي ( 6460 ) ، حدیث ۔۔۔ عبدالرحمٰن بن ابی الشعثاء نے کہا کہ آیا میں ابراہیم نخفی اور ابراہیم تیمی کے پاس اور کہا کہ میں چاہتا ہوں کہ جمع کروں حج اور عمرہ دونوں کو اس سال میں سو ابراہیم نخعی نے کہا کہ تمہارے والد تو کبھی ایسا ارادہ نہ کرتے تھے ۔ اور قتیبہ نے کہا کہ روایت کی ہم سے سیدنا جریر ؓ نے ، ان سے بیان نے ، ان سے ابراہیم تیمی نے ، ان سے ان کے باپ نے کہ وہ سیدنا ابوذر ؓ کے ساتھ ربذہ کو گئے اور ان سے حج و عمرہ جمع کرنے کا ذکر کیا تو انہوں نے کہا کہ ہم لوگوں کے لیے خاص تھا اور تمہارے واسطے نہیں ہے یعنی صحابہ ؓ کے سوا اوروں کو روا نہیں ۔
Terms matched: 4  -  Score: 500  -  4k
رواۃ الحدیث: جرير بن عبد الله البجلي ( 2123 ) ، قيس بن ابي حازم البجلي ( 6508 ) ، بيان بن بشر الاحمسي ( 1980 ) ، خالد بن عبد الله الطحان ( 2663 ) ، عبد الحميد بن ابي عيسى الواسطي ( 4228 ) ، حدیث ۔۔۔ سیدنا جریر ؓ سے روایت ہے ، جاہلیت کے زمانہ میں ایک بت خانہ تھا (یمن میں) جس کو ذوالخلصہ کہتے تھے اور کعبہ یمانی یا کعبہ شامی بھی اس کا نام تھا رسول اللہ ﷺ نے مجھ سے فرمایا : ”اے جریر ! تو مجھے بےفکر کرتا ہے ذوالخلصہ اور کعبہ یمانی اور شامی کی طرف سے ۔ “ (یعنی اس کو تباہ اور برباد کر کہ لوگ شرک سے باز آئیں) میں ایک سو پچاس آدمی احمس قبیلے کے اپنے ساتھ لے کر گیا اور ذوالخلصہ کو توڑا اور جتنے لوگوں کو وہاں پایا قتل کیا ، پھر لوٹ کر آیا اور آپ ﷺ سے بیان کیا ۔ آپ ﷺ نے ہمارے لیے اور احمس کے قبیلے کے لیے دعا کی ۔
Terms matched: 4  -  Score: 292  -  3k
رواۃ الحدیث: عبد الله بن عمر العدوي ( 4967 ) ، وبرة بن عبد الرحمن المسلي ( 8145 ) ، بيان بن بشر الاحمسي ( 1980 ) ، جرير بن عبد الحميد الضبي ( 2122 ) ، قتيبة بن سعيد الثقفي ( 6460 ) ، حدیث ۔۔۔ وبرہ نے کہا کہ ایک شخص نے سیدنا ابن عمر ؓ سے پوچھا کہ میں طواف کروں بیت اللہ کا اور میں نے حج کا احرام باندھا ہے ؟ تو انہوں نے کہا کہ طواف سے تم کو کون روک سکتا ہے انہوں نے کہا کہ میں نے فلانے کے فرزند کو دیکھا (یعنی ابن عباس ؓ کو) کہ وہ اس کو مکروہ جانتے ہیں اور آپ ان سے زیادہ ہمارے پیارے ہیں اور میں ان کو دیکھتا ہوں کہ دنیا نے ان کو غافل کر دیا ہے تو سیدنا ابن عمر ؓ نے فرمایا کہ ہم میں اور تم میں کون ایسا ہے جس کو دنیا نے غافل نہیں کیا ۔ پھر کہا سیدنا ابن عمر ؓ نے کہا ہم نے رسول اللہ ﷺ کو دیکھا کہ انہوں نے حج کا احرام باندھا اور بیت اللہ کا طواف کیا اور صفا مروہ میں سعی کی اور سنت اللہ کی اور اس کے رسول اللہ ﷺ کی بہتر ہے تابعداری کے لیے فلانے کی سنت سے اگر تو سچا ایمان دار ہے ۔
Terms matched: 4  -  Score: 292  -  4k
رواۃ الحدیث: ابو هريرة الدوسي ( 4396 ) ، قيس بن ابي حازم البجلي ( 6508 ) ، بيان بن بشر الاحمسي ( 1980 ) ، سلام بن سليم الحنفي ( 3457 ) ، هناد بن السري التميمي ( 8098 ) ، حدیث ۔۔۔ سیدنا ابوہریرہ ؓ نے کہا : میں نے سنا رسول اللہ ﷺ سے ، فرماتے تھے : ” اگر کوئی صبح کو جا کر ایک گٹھا لکڑی کا اپنی پیٹھ پر لادے اور اس سے صدقہ دے « » اور اپنا کام بھی نکالے کہ لوگوں کا محتاج نہ ہو یہ اس کے لیے اس سے بہتر ہے کہ لوگوں سے مانگتا پھرے کہ وہ دیں یا نہ دیں اور بلاشبہ اوپر کا ہاتھ افضل ہے نیچے کے ہاتھ سے اور پہلے صدقہ اس کو دے جو تیرے سر روٹی کھاتا ہے ۔ “
Terms matched: 4  -  Score: 292  -  2k
رواۃ الحدیث: عقبة بن عامر الجهني ( 5672 ) ، قيس بن ابي حازم البجلي ( 6508 ) ، بيان بن بشر الاحمسي ( 1980 ) ، جرير بن عبد الحميد الضبي ( 2122 ) ، قتيبة بن سعيد الثقفي ( 6460 ) ، حدیث ۔۔۔ عامر کے بیٹے سیدنا عقبہ ؓ نے کہا کہ رسول اللہ ﷺ نے فرمایا : ” تم نہیں دیکھتے کہ آج کی رات ایسی آیتییں اتری ہیں کہ ان کے مثل کبھی نہیں دیکھیں اور وہ « قُلْ أَعُوذُ بِرَبِّ الْفَلَقِ » اور « قُلْ أَعُوذُ بِرَبِّ النَّاسِ » ہیں ۔ “
Terms matched: 4  -  Score: 292  -  2k
رواۃ الحدیث: عدي بن حاتم الطائي ( 5575 ) ، عامر الشعبي ( 4099 ) ، بيان بن بشر الاحمسي ( 1980 ) ، محمد بن الفضيل الضبي ( 7237 ) ، ابن ابي شيبة العبسي ( 5049 ) ، حدیث ۔۔۔ سیدنا عدی ؓ بن حاتم سے روایت ہے ، میں نے رسول اللہ ﷺ سے پوچھا : ہم لوگ شکار کیا کرتے ہیں ان کتوں سے ۔ آپ ﷺ نے فرمایا : “ ”جب تو اپنے شکاری کتوں کو چھوڑے اور اللہ تعالیٰ کا نام لے کر چھوڑے تو کھا ان جانوروں میں سے جن کو وہ پکڑ لیں اگرچہ وہ مار ڈالیں مگر جس صورت میں کتا بھی اس جانور میں سے کھا لے تو اس کو مت کھا کیونکہ مجھے ڈر ہے کہیں کتے نے اس کو اپنے لیے نہ پکڑا ہو اسی طرح اگر اس کتے کے ساتھ اور غیر کتے شریک ہو جائیں تب بھی مت کھا ۔ “
Terms matched: 4  -  Score: 288  -  3k


Search took 0.464 seconds