رواة الحدیث

نتائج
نتیجہ مطلوبہ تلاش لفظ / الفاظ: بيان بشر الاحمسي 1980
کتاب/کتب میں: سنن ترمذی
4 رزلٹ جن میں تمام الفاظ آئے ہیں۔
رواۃ الحدیث: جرير بن عبد الله البجلي ( 2123 ) ، قيس بن ابي حازم البجلي ( 6508 ) ، بيان بن بشر الاحمسي ( 1980 ) ، زائدة بن قدامة الثقفي ( 2980 ) ، معاوية بن عمرو الازدي ( 7589 ) ، احمد بن منيع البغوي ( 494 ) ، حدیث ۔۔۔ جریر بن عبداللہ بجلی ؓ کہتے ہیں کہ جب سے میں اسلام لایا ہوں رسول اللہ ﷺ نے مجھے (اجازت مانگنے پر اندر داخل ہونے سے) منع نہیں فرمایا اور جب بھی آپ نے مجھے دیکھا آپ مسکرائے ۔ امام ترمذی کہتے ہیں : یہ حدیث حسن صحیح ہے ۔
Terms matched: 4  -  Score: 292  -  2k
رواۃ الحدیث: انس بن مالك الانصاري ( 720 ) ، بيان بن بشر الاحمسي ( 1980 ) ، إسماعيل بن مجالد الهمداني ( 1052 ) ، عمر بن إسماعيل الهمداني ( 5908 ) ، حدیث ۔۔۔ انس ؓ کہتے ہیں کہ رسول اللہ ﷺ اپنی بیویوں میں سے ایک بیوی کے ساتھ شادی والی رات گزاری ، پھر آپ نے مجھے کچھ لوگوں کو کھانے پر بلانے کے لیے بھیجا ۔ جب لوگ کھا پی کر چلے گئے ، تو آپ اٹھے ، عائشہ ؓ کے گھر کا رخ کیا پھر آپ کی نظر دو بیٹھے ہوئے آدمیوں پر پڑی ۔ تو آپ (فوراً) پلٹ پڑے (انہیں اس کا احساس ہو گیا) وہ دونوں اٹھے اور وہاں سے نکل گئے ۔ اسی موقع پر اللہ عزوجل نے آیت « يا أيہا الذين آمنوا لا تدخلوا بيوت النبي إلا أن يؤذن لكم إلى طعام غير ناظرين إناہ » نازل فرمائی ، اس حدیث میں ایک طویل قصہ ہے “ ۔ امام ترمذی کہتے ہیں : ۱- بیان کی روایت سے یہ حدیث حسن غریب ہے ، ۲- ثابت نے انس کے واسطہ سے یہ حدیث پوری کی پوری بیان کی ہے ۔
Terms matched: 4  -  Score: 292  -  3k
رواۃ الحدیث: سعد بن ابي وقاص الزهري ( 3232 ) ، قيس بن ابي حازم البجلي ( 6508 ) ، بيان بن بشر الاحمسي ( 1980 ) ، إسماعيل بن مجالد الهمداني ( 1052 ) ، عمر بن إسماعيل الهمداني ( 5908 ) ، حدیث ۔۔۔ سعد بن ابی وقاص ؓ کہتے ہیں کہ میں پہلا شخص ہوں جس نے اللہ کی راہ میں خون بہایا (یعنی کافر کو قتل کیا) اور میں پہلا شخص ہوں جس نے اللہ کی راہ میں تیر پھینکا ، میں نے اپنے آپ کو محمد ﷺ کے ساتھیوں کی ایک جماعت کے ساتھ جہاد کرتے ہوئے دیکھا ہے ، کھانے کے لیے ہم درختوں کے پتے اور « حبلہ » (خاردار درخت کے پھل) کے علاوہ اور کچھ نہیں پاتے تھے ، یہاں تک کہ ہم لوگ بکریوں اور اونٹوں کی طرح قضائے حاجت میں مینگنیاں نکالتے تھے ، اور قبیلہ بنی اسد کے لوگ مجھے دین کے سلسلے میں طعن و تشنیع کرتے ہیں ، اگر میں اسی لائق ہوں تو بڑا ہی محروم ہوں اور میرے تمام اعمال ضائع و برباد ہو گئے ۔ امام ترمذی کہتے ہیں : یہ حدیث حسن صحیح غریب ہے ۔
Terms matched: 4  -  Score: 292  -  3k
رواۃ الحدیث: ابو هريرة الدوسي ( 4396 ) ، قيس بن ابي حازم البجلي ( 6508 ) ، بيان بن بشر الاحمسي ( 1980 ) ، سلام بن سليم الحنفي ( 3457 ) ، هناد بن السري التميمي ( 8098 ) ، حدیث ۔۔۔ ابوہریرہ ؓ کہتے ہیں کہ میں نے رسول اللہ ﷺ کو فرماتے سنا : ” تم میں سے کوئی شخص صبح سویرے جائے اور لکڑیوں کا گٹھر اپنی پیٹھ پر رکھ کر لائے اور اس میں سے (یعنی اس کی قیمت میں سے) صدقہ کرے اور اس طرح لوگوں سے بے نیاز رہے (یعنی ان سے نہ مانگے) اس کے لیے اس بات سے بہتر ہے کہ وہ کسی سے مانگے ، وہ اسے دے یا نہ دے کیونکہ اوپر والا ہاتھ نیچے والے ہاتھ سے افضل ہے ، اور پہلے اسے دو جس کی تم خود کفالت کرتے ہو “ ۔ امام ترمذی کہتے ہیں : ۱- ابوہریرہ کی حدیث حسن صحیح غریب ہے ، ۲- وہ بیان کی حدیث سے جسے انہوں نے قیس سے روایت کی ہے غریب جانی جاتی ہے ، ۳- اس باب میں حکیم بن حزام ، ابو سعید خدری ، زبیر بن عوام ، عطیہ سعدی ، عبداللہ بن مسعود ، مسعود بن عمرو ، ابن عباس ، ثوبان ، زیاد بن حارث صدائی ، انس ، حبشی بن جنادہ ، قبیصہ بن مخارق ، سمرہ اور ابن عمر ؓ سے بھی احادیث آئی ہیں ۔
Terms matched: 4  -  Score: 292  -  4k


Search took 0.372 seconds