English Show/Hide
کل احادیث 7563 :حدیث نمبر
كتاب الجنائز
کتاب: جنازے کے احکام و مسائل
THE BOOK OF AL-JANAIZ (FUNERALS).

3- بَابُ الدُّخُولِ عَلَى الْمَيِّتِ بَعْدَ الْمَوْتِ إِذَا أُدْرِجَ فِي كَفَنِهِ:
باب: میت کو جب کفن میں لپیٹا جا چکا ہو تو اس کے پاس جانا (جائز ہے)۔
(3) CHAPTER. Visiting the deceased person after he has been put in his shroud.
Tashkeel Show/Hide
حدثنا سعيد بن عفير، ‏‏‏‏‏‏حدثنا الليث مثله، ‏‏‏‏‏‏وقال نافع بن يزيد،‏‏‏‏ عن عقيل ما يفعل به، ‏‏‏‏‏‏وتابعه شعيب، ‏‏‏‏‏‏وعمرو بن دينار، ‏‏‏‏‏‏ومعمر.حَدَّثَنَا سَعِيدُ بْنُ عُفَيْرٍ، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنَا اللَّيْثُ مِثْلَهُ، ‏‏‏‏‏‏وَقَالَ نَافِعُ بْنُ يَزِيدَ،‏‏‏‏ عَنْ عُقَيْلٍ مَا يُفْعَلُ بِهِ، ‏‏‏‏‏‏وَتَابَعَهُ شُعَيْبٌ، ‏‏‏‏‏‏وَعَمْرُو بْنُ دِينَارٍ، ‏‏‏‏‏‏وَمَعْمَرٌ.
ہم سے سعید بن عفیر نے بیان کیا اور ان سے لیث نے سابقہ روایت کی طرح بیان کیا، نافع بن یزید نے عقیل سے ( «ما يفعل بی» کے بجائے) «ما يفعل به» کے الفاظ نقل کئے ہیں اور اس روایت کی متابعت شعیب، عمرو بن دینار اور معمر نے کی ہے۔

Narrated Al-Laith as above.:
USC-MSA web (English) Reference: Book 23 , Number 335
حدیث نمبر: 1244
Tashkeel Show/Hide
حدثنا محمد بن بشار، ‏‏‏‏‏‏حدثنا غندر، ‏‏‏‏‏‏حدثنا شعبة،‏‏‏‏ قال:‏‏‏‏ سمعت محمد بن المنكدر،‏‏‏‏ قال:‏‏‏‏ سمعت جابر بن عبد الله رضي الله عنهما،‏‏‏‏ قال:‏‏‏‏ "لما قتل ابي جعلت اكشف الثوب عن وجهه ابكي وينهوني عنه والنبي صلى الله عليه وسلم لا ينهاني فجعلت عمتي فاطمة تبكي، ‏‏‏‏‏‏فقال النبي صلى الله عليه وسلم:‏‏‏‏ تبكين او لا تبكين، ‏‏‏‏‏‏ما زالت الملائكة تظله باجنحتها حتى رفعتموه"، ‏‏‏‏‏‏تابعه ابن جريج، ‏‏‏‏‏‏اخبرني محمد بن المنكدر، ‏‏‏‏‏‏سمع جابرا رضي الله عنه.حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ بَشَّارٍ، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنَا غُنْدَرٌ، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنَا شُعْبَةُ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ سَمِعْتُ مُحَمَّدَ بْنَ الْمُنْكَدِرِ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ سَمِعْتُ جَابِرَ بْنَ عَبْدِ اللَّهِ رَضِيَ اللَّهُ عَنْهُمَا،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ "لَمَّا قُتِلَ أَبِي جَعَلْتُ أَكْشِفُ الثَّوْبَ عَنْ وَجْهِهِ أَبْكِي وَيَنْهَوْنِي عَنْهُ وَالنَّبِيُّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ لَا يَنْهَانِي فَجَعَلَتْ عَمَّتِي فَاطِمَةُ تَبْكِي، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ النَّبِيُّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ تَبْكِينَ أَوْ لَا تَبْكِينَ، ‏‏‏‏‏‏مَا زَالَتِ الْمَلَائِكَةُ تُظِلُّهُ بِأَجْنِحَتِهَا حَتَّى رَفَعْتُمُوهُ"، ‏‏‏‏‏‏تَابَعَهُ ابْنُ جُرَيْجٍ، ‏‏‏‏‏‏أَخْبَرَنِي مُحَمَّدُ بْنُ الْمُنْكَدِرِ، ‏‏‏‏‏‏سَمِعَ جَابِرًا رَضِيَ اللَّهُ عَنْهُ.
ہم سے محمد بن بشار نے بیان کیا، انہوں نے کہا کہ ہم سے غندر نے بیان کیا، انہوں نے کہا ہم سے شعبہ نے بیان کیا، انہوں نے کہا کہ میں نے محمد بن منکدر سے سنا، انہوں نے کہا کہ میں نے جابر بن عبداللہ رضی اللہ عنہما سے سنا، انہوں نے کہا کہ جب میرے والد شہید کر دیئے گئے تو میں ان کے چہرے پر پڑا ہو کپڑا کھولتا اور روتا تھا۔ دوسرے لوگ تو مجھے اس سے روکتے تھے لیکن نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کچھ نہیں کہہ رہے تھے۔ آخر میری چچی فاطمہ رضی اللہ عنہا بھی رونے لگیں تو نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ تم لوگ روؤ یا چپ رہو۔ جب تک تم لوگ میت کو اٹھاتے نہیں ملائکہ تو برابر اس پر اپنے پروں کا سایہ کئے ہوئے ہیں۔ اس روایت کی متابعت شعبہ کے ساتھ ابن جریج نے کی، انہیں ابن منکدر نے خبر دی اور انہوں نے جابر رضی اللہ عنہ سے سنا۔

Narrated Jabir bin `Abdullah: When my father was martyred, I lifted the sheet from his face and wept and the people forbade me to do so but the Prophet did not forbid me. Then my aunt Fatima began weeping and the Prophet said, "It is all the same whether you weep or not. The angels were shading him continuously with their wings till you shifted him (from the field). "
USC-MSA web (English) Reference: Book 23 , Number 336