English Show/Hide
کل احادیث 7563 :حدیث نمبر
كتاب الشركة
کتاب: شراکت کے مسائل کے بیان میں
THE BOOK OF PARTNERSHIP.

1- بَابُ الشَّرِكَةِ فِي الطَّعَامِ وَالنَّهْدِ وَالْعُرُوضِ:
باب: کھانے، سفر خرچ اور اسباب میں شرکت کا بیان۔
(1) CHAPTER. About (sharing) meals and the Nahd (i.e., sharing the expenses of a journey or putting the journey food of the travellers together to be distrbuted among them in equal shares) and Urud (i.e., sharing other goods)
Tashkeel Show/Hide
وكيف قسمة ما يكال ويوزن مجازفة او قبضة قبضة لما لم ير المسلمون في النهد باسا ان ياكل هذا بعضا وهذا بعضا، ‏‏‏‏‏‏وكذلك مجازفة الذهب والفضة والقران في التمر.وَكَيْفَ قِسْمَةُ مَا يُكَالُ وَيُوزَنُ مُجَازَفَةً أَوْ قَبْضَةً قَبْضَةً لَمَّا لَمْ يَرَ الْمُسْلِمُونَ فِي النَّهْدِ بَأْسًا أَنْ يَأْكُلَ هَذَا بَعْضًا وَهَذَا بَعْضًا، ‏‏‏‏‏‏وَكَذَلِكَ مُجَازَفَةُ الذَّهَبِ وَالْفِضَّةِ وَالْقِرَانُ فِي التَّمْرِ.
اور جو چیزیں ناپی یا تولی جاتی ہیں تخمینے سے بانٹنا یا مٹھی بھربھر کر تقسیم کر لینا، کیونکہ مسلمانوں نے اس میں کوئی مضائقہ نہیں خیال کیا کہ مشترک زاد سفر (کی مختلف چیزوں میں سے) کوئی شریک ایک چیز کھا لے اور دوسرا دوسری چیز، اسی طرح سونے چاندی کے بدل بن تولے ڈھیر لگا کر بانٹنے میں، اسی طرح دو دو کھجور اٹھا کر کھانے میں۔
حدیث نمبر: 2483
Tashkeel Show/Hide
حدثنا عبد الله بن يوسف، ‏‏‏‏‏‏اخبرنا مالك، ‏‏‏‏‏‏عن وهب بن كيسان، ‏‏‏‏‏‏عن جابر بن عبد الله رضي الله عنهما، ‏‏‏‏‏‏انه قال:‏‏‏‏ "بعث رسول الله صلى الله عليه وسلم بعثا قبل الساحل، ‏‏‏‏‏‏فامر عليهم ابا عبيدة بن الجراح وهم ثلاث مائة وانا فيهم، ‏‏‏‏‏‏فخرجنا حتى إذا كنا ببعض الطريق فني الزاد، ‏‏‏‏‏‏فامر ابو عبيدة بازواد ذلك الجيش، ‏‏‏‏‏‏فجمع ذلك كله، ‏‏‏‏‏‏فكان مزودي تمر، ‏‏‏‏‏‏فكان يقوتنا كل يوم قليلا قليلا حتى فني فلم يكن يصيبنا إلا تمرة تمرة، ‏‏‏‏‏‏فقلت:‏‏‏‏ وما تغني تمرة؟ فقال:‏‏‏‏ لقد وجدنا فقدها حين فنيت، ‏‏‏‏‏‏قال:‏‏‏‏ ثم انتهينا إلى البحر، ‏‏‏‏‏‏فإذا حوت مثل الظرب، ‏‏‏‏‏‏فاكل منه ذلك الجيش ثماني عشرة ليلة، ‏‏‏‏‏‏ثم امر ابو عبيدة بضلعين من اضلاعه فنصبا، ‏‏‏‏‏‏ثم امر براحلة فرحلت، ‏‏‏‏‏‏ثم مرت تحتهما فلم تصبهما".حَدَّثَنَا عَبْدُ اللَّهِ بْنُ يُوسُفَ، ‏‏‏‏‏‏أَخْبَرَنَا مَالِكٌ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ وَهْبِ بْنِ كَيْسَانَ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ جَابِرِ بْنِ عَبْدِ اللَّهِ رَضِيَ اللَّهُ عَنْهُمَا، ‏‏‏‏‏‏أَنَّهُ قَالَ:‏‏‏‏ "بَعَثَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ بَعْثًا قِبَلَ السَّاحِلِ، ‏‏‏‏‏‏فَأَمَّرَ عَلَيْهِمْ أَبَا عُبَيْدَةَ بْنَ الْجَرَّاحِ وَهُمْ ثَلَاثُ مِائَةٍ وَأَنَا فِيهِمْ، ‏‏‏‏‏‏فَخَرَجْنَا حَتَّى إِذَا كُنَّا بِبَعْضِ الطَّرِيقِ فَنِيَ الزَّادُ، ‏‏‏‏‏‏فَأَمَرَ أَبُو عُبَيْدَةَ بِأَزْوَادِ ذَلِكَ الْجَيْشِ، ‏‏‏‏‏‏فَجُمِعَ ذَلِكَ كُلُّهُ، ‏‏‏‏‏‏فَكَانَ مِزْوَدَيْ تَمْرٍ، ‏‏‏‏‏‏فَكَانَ يُقَوِّتُنَا كُلَّ يَوْمٍ قَلِيلًا قَلِيلًا حَتَّى فَنِيَ فَلَمْ يَكُنْ يُصِيبُنَا إِلَّا تَمْرَةٌ تَمْرَةٌ، ‏‏‏‏‏‏فَقُلْتُ:‏‏‏‏ وَمَا تُغْنِي تَمْرَةٌ؟ فَقَالَ:‏‏‏‏ لَقَدْ وَجَدْنَا فَقْدَهَا حِينَ فَنِيَتْ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ ثُمَّ انْتَهَيْنَا إِلَى الْبَحْرِ، ‏‏‏‏‏‏فَإِذَا حُوتٌ مِثْلُ الظَّرِبِ، ‏‏‏‏‏‏فَأَكَلَ مِنْهُ ذَلِكَ الْجَيْشُ ثَمَانِيَ عَشْرَةَ لَيْلَةً، ‏‏‏‏‏‏ثُمَّ أَمَرَ أَبُو عُبَيْدَةَ بِضِلَعَيْنِ مِنْ أَضْلَاعِهِ فَنُصِبَا، ‏‏‏‏‏‏ثُمَّ أَمَرَ بِرَاحِلَةٍ فَرُحِلَتْ، ‏‏‏‏‏‏ثُمَّ مَرَّتْ تَحْتَهُمَا فَلَمْ تُصِبْهُمَا".
ہم سے عبداللہ بن یوسف نے بیان کیا، کہا ہم کو امام مالک نے خبر دی، انہیں وہب بن کیسان نے اور انہیں جابر بن عبداللہ رضی اللہ عنہما نے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے (رجب 7 ھ میں) ساحل بحر کی طرف ایک لشکر بھیجا۔ اور اس کا امیر ابوعبیدہ بن جراح رضی اللہ عنہ کو بنایا۔ فوجیوں کی تعداد تین سو تھی اور میں بھی ان میں شریک تھا۔ ہم نکلے اور ابھی راستے ہی میں تھے کہ توشہ ختم ہو گیا۔ ابوعبیدہ رضی اللہ عنہ نے حکم دیا کہ تمام فوجی اپنے توشے (جو کچھ بھی باقی رہ گئے ہوں) ایک جگہ جمع کر دیں۔ سب کچھ جمع کرنے کے بعد کھجوروں کے کل دو تھیلے ہو سکے اور روزانہ ہمیں اسی میں سے تھوڑی تھوڑی کھجور کھانے کے لیے ملنے لگی۔ جب اس کا بھی اکثر حصہ ختم ہو گیا تو ہمیں صرف ایک ایک کھجور ملتی رہی۔ میں (وہب بن کیسان) نے جابر رضی اللہ عنہ سے کہا بھلا ایک کھجور سے کیا ہوتا ہو گا؟ انہوں نے بتلایا کہ اس کی قدر ہمیں اس وقت معلوم ہوئی جب وہ بھی ختم ہو گئی تھی۔ انہوں نے بیان کیا کہ آخر ہم سمندر تک پہنچ گئے۔ اتفاق سے سمندر میں ہمیں ایک ایسی مچھلی مل گئی جو (اپنے جسم میں) پہاڑ کی طرح معلوم ہوتی تھی۔ سارا لشکر اس مچھلی کو اٹھارہ راتوں تک کھاتا رہا۔ پھر ابوعبیدہ رضی اللہ عنہ نے اس کی دونوں پسلیوں کو کھڑا کرنے کا حکم دیا۔ اس کے بعد اونٹوں کو ان کے تلے سے چلنے کا حکم دیا۔ اور وہ ان پسلیوں کے نیچے سے ہو کر گزرے، لیکن اونٹ نے ان کو چھوا تک نہیں۔

Narrated Jabir bin `Abdullah: "Allah's Apostle sent an army towards the east coast and appointed Abu 'Ubaida bin Al-Jarrah as their chief, and the army consisted of three-hundred men including myself. We marched on till we reached a place where our food was about to finish. Abu- 'Ubaida ordered us to collect all the journey food and it was collected. My (our) journey food was dates. Abu 'Ubaida kept on giving us our daily ration in small amounts from it, till it was exhausted. The share of everyone of us used to be one date only." I said, "How could one date benefit you?" Jabir replied, "We came to know its value when even that too finished." Jabir added, "When we reached the sea-shore, we saw a huge fish which was like a small mountain. The army ate from it for eighteen days. Then Abu 'Ubaida ordered that two of its ribs be fixed and they were fixed in the ground. Then he ordered that a she-camel be ridden and it passed under the two ribs (forming an arch) without touching them."
USC-MSA web (English) Reference: Book 44 , Number 663