English Show/Hide
کل احادیث 7563 :حدیث نمبر
كتاب الشركة
کتاب: شراکت کے مسائل کے بیان میں
THE BOOK OF PARTNERSHIP.

1- بَابُ الشَّرِكَةِ فِي الطَّعَامِ وَالنَّهْدِ وَالْعُرُوضِ:
باب: کھانے، سفر خرچ اور اسباب میں شرکت کا بیان۔
(1) CHAPTER. About (sharing) meals and the Nahd (i.e., sharing the expenses of a journey or putting the journey food of the travellers together to be distrbuted among them in equal shares) and Urud (i.e., sharing other goods)
حدیث نمبر: 2484
Tashkeel Show/Hide
حدثنا بشر بن مرحوم، ‏‏‏‏‏‏حدثنا حاتم بن إسماعيل، ‏‏‏‏‏‏عن يزيد بن ابي عبيد، ‏‏‏‏‏‏عن سلمة رضي الله عنه، ‏‏‏‏‏‏قال:‏‏‏‏ "خفت ازواد القوم واملقوا، ‏‏‏‏‏‏فاتوا النبي صلى الله عليه وسلم في نحر إبلهم، ‏‏‏‏‏‏فاذن لهم، ‏‏‏‏‏‏فلقيهم عمر فاخبروه، ‏‏‏‏‏‏فقال:‏‏‏‏ ما بقاؤكم بعد إبلكم، ‏‏‏‏‏‏فدخل على النبي صلى الله عليه وسلم، ‏‏‏‏‏‏فقال:‏‏‏‏ يا رسول الله، ‏‏‏‏‏‏ما بقاؤهم بعد إبلهم؟ فقال رسول الله صلى الله عليه وسلم:‏‏‏‏ ناد في الناس فياتون بفضل ازوادهم، ‏‏‏‏‏‏فبسط لذلك نطع وجعلوه على النطع، ‏‏‏‏‏‏فقام رسول الله صلى الله عليه وسلم فدعا وبرك عليه، ‏‏‏‏‏‏ثم دعاهم باوعيتهم، ‏‏‏‏‏‏فاحتثى الناس حتى فرغوا، ‏‏‏‏‏‏ثم قال رسول الله صلى الله عليه وسلم:‏‏‏‏ اشهد ان لا إله إلا الله واني رسول الله".حَدَّثَنَا بِشْرُ بْنُ مَرْحُومٍ، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنَا حَاتِمُ بْنُ إِسْمَاعِيلَ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ يَزِيدَ بْنِ أَبِي عُبَيْدٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ سَلَمَةَ رَضِيَ اللَّهُ عَنْهُ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ "خَفَّتْ أَزْوَادُ الْقَوْمِ وَأَمْلَقُوا، ‏‏‏‏‏‏فَأَتَوْا النَّبِيَّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ فِي نَحْرِ إِبِلِهِمْ، ‏‏‏‏‏‏فَأَذِنَ لَهُمْ، ‏‏‏‏‏‏فَلَقِيَهُمْ عُمَرُ فَأَخْبَرُوهُ، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ:‏‏‏‏ مَا بَقَاؤُكُمْ بَعْدَ إِبِلِكُمْ، ‏‏‏‏‏‏فَدَخَلَ عَلَى النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ:‏‏‏‏ يَا رَسُولَ اللَّهِ، ‏‏‏‏‏‏مَا بَقَاؤُهُمْ بَعْدَ إِبِلِهِمْ؟ فَقَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ نَادِ فِي النَّاسِ فَيَأْتُونَ بِفَضْلِ أَزْوَادِهِمْ، ‏‏‏‏‏‏فَبُسِطَ لِذَلِكَ نِطَعٌ وَجَعَلُوهُ عَلَى النِّطَعِ، ‏‏‏‏‏‏فَقَامَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ فَدَعَا وَبَرَّكَ عَلَيْهِ، ‏‏‏‏‏‏ثُمَّ دَعَاهُمْ بِأَوْعِيَتِهِمْ، ‏‏‏‏‏‏فَاحْتَثَى النَّاسُ حَتَّى فَرَغُوا، ‏‏‏‏‏‏ثُمَّ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ أَشْهَدُ أَنْ لَا إِلَهَ إِلَّا اللَّهُ وَأَنِّي رَسُولُ اللَّهِ".
ہم سے بشر بن مرحوم نے بیان کیا، کہا کہ ہم سے حاتم بن اسماعیل نے بیان کیا، ان سے یزید بن ابی عبیدہ نے اور ان سے سلمہ رضی اللہ عنہ نے بیان کیا کہ (غزوہ ہوازن میں) لوگوں کے توشے ختم ہو گئے اور فقر و محتاجی آ گئی، تو لوگ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کی خدمت میں حاضر ہوئے۔ اپنے اونٹوں کو ذبح کرنے کی اجازت لینے (تاکہ انہیں کے گوشت سے پیٹ بھر سکیں) آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے انہیں اجازت دے دی۔ راستے میں عمر رضی اللہ عنہ کی ملاقات ان سے ہو گئی تو انہیں بھی ان لوگوں نے اطلاع دی۔ عمر رضی اللہ عنہ نے کہا اونٹوں کو کاٹ ڈالو گے تو پھر تم کیسے زندہ رہو گے۔ چنانچہ آپ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی خدمت میں حاضر ہوئے اور کہا، یا رسول اللہ! اگر انہوں نے اونٹ بھی ذبح کر لیے تو پھر یہ لوگ کیسے زندہ رہیں گے۔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ اچھا، تمام لوگوں میں اعلان کر دو کہ ان کے پاس جو کچھ توشے بچ رہے ہیں وہ لے کر یہاں آ جائیں۔ اس کے لیے ایک چمڑے کا دستر خوان بچھا دیا گیا۔ اور لوگوں نے توشے اسی دستر خوان پر لا کر رکھ دئیے۔ اس کے بعد رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم اٹھے اور اس میں برکت کی دعا فرمائی۔ اب آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے پھر سب لوگوں کو اپنے اپنے برتنوں کے ساتھ بلایا اور سب نے دونوں ہاتھوں سے توشے اپنے برتنوں میں بھر لیے۔ جب سب لوگ بھر چکے تو رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا میں گواہی دیتا ہوں کہ اللہ کے سوا کوئی معبود نہیں اور یہ کہ میں اللہ کا سچا رسول ہوں۔

Narrated Salama: Once the journey food diminished and the people were reduced to poverty. They went to the Prophet and asked his permission to slaughter their camels, and he agreed. `Umar met them and they told him about it, and he said, "How would you survive after slaughtering your camels?" Then he went to the Prophet and said, "O Allah's Apostle! How would they survive after slaughtering their camels?" Allah's Apostle ordered `Umar, "Call upon the people to bring what has remained of their food." A leather sheet was spread and al I the journey food was collected and heaped over it. Allah's Apostle stood up and invoked Allah to bless it, and then directed all the people to come with their utensils, and they started taking from it till all of them got what was sufficient for them. Allah's Apostle then said, "I testify that None has the right to be worshipped but Allah, and I am His Apostle. "
USC-MSA web (English) Reference: Book 44 , Number 664