کل احادیث 3033 :ترقیم فواد عبدالباقی
 
کل احادیث 7563 :حدیث نمبر
كِتَاب صِفَةِ الْقِيَامَةِ وَالْجَنَّةِ وَالنَّارِ
قیامت اور جنت اور جہنم کے احوال
0

2- باب صِفَّةِ الْقِيَامَةِ وَالْجَنَّةِ وَالنَّارِ
باب: قیامت اور جنت اور دوزخ کا بیان۔
فواد عبدالباقی حدیث نمبر: 2786
Tashkeel Show/Hide
حدثنا احمد بن عبد الله بن يونس ، حدثنا فضيل يعني ابن عياض ، عن منصور ، عن إبراهيم ، عن عبيدة السلماني ، عن عبد الله بن مسعود ، قال:‏‏‏‏ " جاء حبر إلى النبي صلى الله عليه وسلم، ‏‏‏‏‏‏فقال:‏‏‏‏ يا محمد او يا ابا القاسم إن الله تعالى يمسك السماوات يوم القيامة على إصبع، ‏‏‏‏‏‏والارضين على إصبع، ‏‏‏‏‏‏والجبال والشجر على إصبع، ‏‏‏‏‏‏والماء والثرى على إصبع، ‏‏‏‏‏‏وسائر الخلق على إصبع، ‏‏‏‏‏‏ثم يهزهن، ‏‏‏‏‏‏فيقول:‏‏‏‏ انا الملك انا الملك؟ فضحك رسول الله صلى الله عليه وسلم تعجبا مما قال الحبر تصديقا له، ‏‏‏‏‏‏ثم قرا وما قدروا الله حق قدره والارض جميعا قبضته يوم القيامة والسموات مطويات بيمينه سبحانه وتعالى عما يشركون سورة الزمر آية 67 "،‏‏‏‏حَدَّثَنَا أَحْمَدُ بْنُ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ يُونُسَ ، حَدَّثَنَا فُضَيْلٌ يَعْنِي ابْنَ عِيَاضٍ ، عَنْ مَنْصُورٍ ، عَنْ إِبْرَاهِيمَ ، عَنْ عَبِيدَةَ السَّلْمَانِيِّ ، عَنْ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ مَسْعُودٍ ، قَالَ:‏‏‏‏ " جَاءَ حَبْرٌ إِلَى النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ:‏‏‏‏ يَا مُحَمَّدُ أَوْ يَا أَبَا الْقَاسِمِ إِنَّ اللَّهَ تَعَالَى يُمْسِكُ السَّمَاوَاتِ يَوْمَ الْقِيَامَةِ عَلَى إِصْبَعٍ، ‏‏‏‏‏‏وَالْأَرَضِينَ عَلَى إِصْبَعٍ، ‏‏‏‏‏‏وَالْجِبَالَ وَالشَّجَرَ عَلَى إِصْبَعٍ، ‏‏‏‏‏‏وَالْمَاءَ وَالثَّرَى عَلَى إِصْبَعٍ، ‏‏‏‏‏‏وَسَائِرَ الْخَلْقِ عَلَى إِصْبَعٍ، ‏‏‏‏‏‏ثُمَّ يَهُزُّهُنَّ، ‏‏‏‏‏‏فَيَقُولُ:‏‏‏‏ أَنَا الْمَلِكُ أَنَا الْمَلِكُ؟ فَضَحِكَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ تَعَجُّبًا مِمَّا قَالَ الْحَبْرُ تَصْدِيقًا لَهُ، ‏‏‏‏‏‏ثُمَّ قَرَأَ وَمَا قَدَرُوا اللَّهَ حَقَّ قَدْرِهِ وَالأَرْضُ جَمِيعًا قَبْضَتُهُ يَوْمَ الْقِيَامَةِ وَالسَّمَوَاتُ مَطْوِيَّاتٌ بِيَمِينِهِ سُبْحَانَهُ وَتَعَالَى عَمَّا يُشْرِكُونَ سورة الزمر آية 67 "،‏‏‏‏
سیدنا عبداللہ بن مسعود رضی اللہ عنہ سے روایت ہے، ایک یہودی عالم رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے پاس آیا اور کہنے لگا: اے محمد یا اے ابولقاسم! اللہ تعالیٰ قیامت کے دن آسمانوں کو ایک انگلی پر اٹھا لے گا اور زمینوں کو ایک انگلی پر اور پہاڑوں اور درختوں کو ایک انگلی پر اور پانی اور نمناک زمین کو ایک انگلی پر اور تمام خلق کو ایک انگلی پر پھر ان کو ہلائے گا اور کہے گا: میں بادشاہ ہوں، میں بادشاہ ہوں، یہ سن کر رسول اللہ ہنسے تعجب سے اور آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے تصدیق کی اس عالم کے کلام کی پھر یہ آیت پڑھی: «وَمَا قَدَرُوا اللَّـهَ حَقَّ قَدْرِهِ وَالْأَرْضُ جَمِيعًا قَبْضَتُهُ يَوْمَ الْقِيَامَةِ وَالسَّمَاوَاتُ مَطْوِيَّاتٌ بِيَمِينِهِ سُبْحَانَهُ وَتَعَالَىٰ عَمَّا يُشْرِكُونَ» ﴿۳۹-الزمر: ٦٧﴾ یعنی نہیں قدر کی انہوں نے اللہ کی جیسے قدر اس کی ہونی چاہیے اور ساری زمین اس کی ایک مٹھی میں ہے قیامت کے دن اور آسمان لپٹے ہوئے ہیں اس کے داہنے ہاتھ میں، پاک ہے وہ اور بلند مشرکوں کے شرک سے۔
حدیث نمبر: 7046
فواد عبدالباقی حدیث نمبر: 2786
Tashkeel Show/Hide
حدثنا عثمان بن ابي شيبة ، وإسحاق بن إبراهيم كلاهما، ‏‏‏‏‏‏عن جرير ، عن منصور بهذا الإسناد، ‏‏‏‏‏‏قال:‏‏‏‏ جاء حبر من اليهود إلى رسول الله صلى الله عليه وسلم بمثل حديث فضيل، ‏‏‏‏‏‏ولم يذكر، ‏‏‏‏‏‏ثم يهزهن، ‏‏‏‏‏‏وقال:‏‏‏‏ فلقد رايت رسول الله صلى الله عليه وسلم ضحك حتى بدت نواجذه تعجبا لما، ‏‏‏‏‏‏قال تصديقا له، ‏‏‏‏‏‏ثم قال رسول الله صلى الله عليه وسلم وما قدروا الله حق قدره سورة الزمر آية 67 وتلا الآية.حَدَّثَنَا عُثْمَانُ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ ، وَإِسْحَاقُ بْنُ إِبْرَاهِيمَ كِلَاهُمَا، ‏‏‏‏‏‏عَنْ جَرِيرٍ ، عَنْ مَنْصُورٍ بِهَذَا الْإِسْنَادِ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ جَاءَ حَبْرٌ مِنَ الْيَهُودِ إِلَى رَسُولِ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ بِمِثْلِ حَدِيثِ فُضَيْلٍ، ‏‏‏‏‏‏وَلَمْ يَذْكُرْ، ‏‏‏‏‏‏ثُمَّ يَهُزُّهُنَّ، ‏‏‏‏‏‏وَقَالَ:‏‏‏‏ فَلَقَدْ رَأَيْتُ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ ضَحِكَ حَتَّى بَدَتْ نَوَاجِذُهُ تَعَجُّبًا لِمَا، ‏‏‏‏‏‏قَالَ تَصْدِيقًا لَهُ، ‏‏‏‏‏‏ثُمَّ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ وَمَا قَدَرُوا اللَّهَ حَقَّ قَدْرِهِ سورة الزمر آية 67 وَتَلَا الْآيَةَ.
ترجمہ وہی ہے جو اوپر گزرا۔ اس میں یہ ہے کہ میں نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کو دیکھا آپ صلی اللہ علیہ وسلم ہنسے یہاں تک کہ آپ کی ڈاڑھیں ظاہر ہو گئیں۔ تعجب سے اس کی تصدیق کر کے پھر آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: «وَمَا قَدَرُوا اللَّـهَ حَقَّ قَدْرِهِ» آخر تک۔
حدیث نمبر: 7047
فواد عبدالباقی حدیث نمبر: 2786
Tashkeel Show/Hide
حدثنا عمر بن حفص بن غياث ، حدثنا ابي ، حدثنا الاعمش ، قال:‏‏‏‏ سمعت إبراهيم ، يقول:‏‏‏‏ سمعت علقمة ، يقول:‏‏‏‏ قال عبد الله : جاء رجل من اهل الكتاب إلى رسول الله صلى الله عليه وسلم، ‏‏‏‏‏‏فقال:‏‏‏‏ يا ابا القاسم، ‏‏‏‏‏‏إن الله يمسك السماوات على إصبع، ‏‏‏‏‏‏والارضين على إصبع، ‏‏‏‏‏‏والشجر والثرى على إصبع، ‏‏‏‏‏‏والخلائق على إصبع، ‏‏‏‏‏‏ثم يقول:‏‏‏‏ انا الملك انا الملك، ‏‏‏‏‏‏قال:‏‏‏‏ فرايت النبي صلى الله عليه وسلم ضحك حتى بدت نواجذه ثم قرا وما قدروا الله حق قدره سورة الزمر آية 67 "،‏‏‏‏حَدَّثَنَا عُمَرُ بْنُ حَفْصِ بْنِ غِيَاثٍ ، حَدَّثَنَا أَبِي ، حَدَّثَنَا الْأَعْمَشُ ، قَالَ:‏‏‏‏ سَمِعْتُ إِبْرَاهِيمَ ، يَقُولُ:‏‏‏‏ سَمِعْتُ عَلْقَمَةَ ، يَقُولُ:‏‏‏‏ قَالَ عَبْدُ اللَّهِ : جَاءَ رَجُلٌ مِنْ أَهْلِ الْكِتَابِ إِلَى رَسُولِ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ:‏‏‏‏ يَا أَبَا الْقَاسِمِ، ‏‏‏‏‏‏إِنَّ اللَّهَ يُمْسِكُ السَّمَاوَاتِ عَلَى إِصْبَعٍ، ‏‏‏‏‏‏وَالْأَرْضِينَ عَلَى إِصْبَعٍ، ‏‏‏‏‏‏وَالشَّجَرَ وَالثَّرَى عَلَى إِصْبَعٍ، ‏‏‏‏‏‏وَالْخَلَائِقَ عَلَى إِصْبَعٍ، ‏‏‏‏‏‏ثُمَّ يَقُولُ:‏‏‏‏ أَنَا الْمَلِكُ أَنَا الْمَلِكُ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ فَرَأَيْتُ النَّبِيَّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ ضَحِكَ حَتَّى بَدَتْ نَوَاجِذُهُ ثُمَّ قَرَأَ وَمَا قَدَرُوا اللَّهَ حَقَّ قَدْرِهِ سورة الزمر آية 67 "،‏‏‏‏
سیدنا علقمہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے، سیدنا عبداللہ بن مسعود رضی اللہ عنہ نے کہا: اہل کتاب میں سے ایک شخص رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے پاس آیا اور کہنے لگا: اے ابو القاسم! اللہ آسمانوں کو ایک انگلی پر رکھ لے گا اور زمینوں کو ایک انگلی پر پھر فرمائے گا: میں بادشاہ ہوں، میں بادشاہ ہوں۔ عبداللہ رضی اللہ عنہ نے کہا: میں نے رسول اللہ کو دیکھا آپ صلی اللہ علیہ وسلم ہنسے یہاں تک کہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم کے دانت کھل گئے، پھر فرمایا: «وَمَا قَدَرُوا اللَّـهَ حَقَّ قَدْرِهِ» ۹-الزمر: ٦٧)۔
حدیث نمبر: 7048
فواد عبدالباقی حدیث نمبر: 2786
Tashkeel Show/Hide
حدثنا ابو بكر بن ابي شيبة ، وابو كريب ، قالا:‏‏‏‏ حدثنا ابو معاوية . ح وحدثنا إسحاق بن إبراهيم ، وعلي بن خشرم ، قالا:‏‏‏‏ اخبرنا عيسى بن يونس . ح وحدثنا عثمان بن ابي شيبة ، حدثنا جرير كلهم، ‏‏‏‏‏‏عن الاعمش بهذا الإسناد، ‏‏‏‏‏‏غير ان في حديثهم جميعا والشجر على إصبع، ‏‏‏‏‏‏والثرى على إصبع، ‏‏‏‏‏‏وليس في حديث جرير والخلائق على إصبع، ‏‏‏‏‏‏ولكن في حديثه والجبال على إصبع وزاد في حديث جرير، ‏‏‏‏‏‏تصديقا له تعجبا لما قال.حَدَّثَنَا أَبُو بَكْرِ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ ، وَأَبُو كُرَيْبٍ ، قَالَا:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا أَبُو مُعَاوِيَةَ . ح وحَدَّثَنَا إِسْحاَقُ بْنُ إِبْرَاهِيمَ ، وَعَلِيُّ بْنُ خَشْرَمٍ ، قَالَا:‏‏‏‏ أَخْبَرَنَا عِيسَى بْنُ يُونُسَ . ح وحَدَّثَنَا عُثْمَانُ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ ، حَدَّثَنَا جَرِيرٌ كُلُّهُمْ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ الْأَعْمَشِ بِهَذَا الْإِسْنَادِ، ‏‏‏‏‏‏غَيْرَ أَنَّ فِي حَدِيثِهِمْ جَمِيعًا وَالشَّجَرَ عَلَى إِصْبَعٍ، ‏‏‏‏‏‏وَالثَّرَى عَلَى إِصْبَعٍ، ‏‏‏‏‏‏وَلَيْسَ فِي حَدِيثِ جَرِيرٍ وَالْخَلَائِقَ عَلَى إِصْبَعٍ، ‏‏‏‏‏‏وَلَكِنْ فِي حَدِيثِهِ وَالْجِبَالَ عَلَى إِصْبَعٍ وَزَادَ فِي حَدِيثِ جَرِيرٍ، ‏‏‏‏‏‏تَصْدِيقًا لَهُ تَعَجُّبًا لِمَا قَالَ.
ترجمہ وہی جو اوپر گزرا۔ اس میں اتنا زیادہ ہے کہ پہاڑوں کو ایک انگلی پر اور جریر کی روایت میں ہے کہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم ہنسے اس کی تصدیق کر کے تعجب سے۔
حدیث نمبر: 7049