كِتَاب الْبِرِّ وَالصِّلَةِ وَالْآدَابِ
حسن سلوک، صلہ رحمی اور ادب
0

1- باب بِرِّ الْوَالِدَيْنِ وَأَنَّهُمَا أَحَقُّ بِهِ:
باب: والدین کے ساتھ اچھا سلوک کرنا اور ان دونوں سے کون زیادہ حقدار ہے۔
حدیث نمبر: 6500
حَدَّثَنَا قُتَيْبَةُ بْنُ سَعِيدِ بْنِ جَمِيلِ بْنِ طَرِيفٍ الثَّقَفِيُّ ، وَزُهَيْرُ بْنُ حَرْبٍ ، قَالَا:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا جَرِيرٌ ، عَنْ عُمَارَةَ بْنِ الْقَعْقَاعِ ، عَنْ أَبِي زُرْعَةَ ، عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ ، قَالَ:‏‏‏‏ جَاءَ رَجُلٌ إِلَى رَسُولِ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ:‏‏‏‏ " مَنْ أَحَقُّ النَّاسِ بِحُسْنِ صَحَابَتِي؟ قَالَ:‏‏‏‏ أُمُّكَ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ ثُمَّ مَنْ؟ قَالَ:‏‏‏‏ ثُمَّ أُمُّكَ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ ثُمَّ مَنْ؟ قَالَ:‏‏‏‏ ثُمَّ أُمُّكَ؟ قَالَ:‏‏‏‏ ثُمَّ مَنْ؟ قَالَ:‏‏‏‏ ثُمَّ أَبُوكَ "، ‏‏‏‏‏‏وَفِي حَدِيثِ قُتَيْبَةَ:‏‏‏‏ مَنْ أَحَقُّ بِحُسْنِ صَحَابَتِي، ‏‏‏‏‏‏وَلَمْ يَذْكُرِ النَّاسَ.
سیدنا ابوہریرہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے، ایک شخص آیا رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے پاس اور عرض کیا: یا رسول اللہ! سب لوگوں میں کس کا زیادہ حق ہے مجھ پر سلوک کرنے کے لیے؟ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: تیری ماں کا۔ وہ بولا: پھر کون؟ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: تیری ماں کا۔ وہ بولا: پھر کون؟ فرمایا: تیری ماں کا۔ وہ بولا: پھر کون؟ فرمایا: تیرے باپ کا۔ (آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے ماں کو مقدم کیا کس لیے کہ ماں بچے کے ساتھ بہت محنت کرتی ہے، حمل نو مہینے، پھر جننا، پھر دودھ پلانا، پھر پالنا، بیماری دکھ میں خبر لینا۔ حارث محاسبی نے کہا: اجماع کیا ہے علماء نے کہ ماں مقدم ہے باپ پر نیک سلوک کرنے میں اور بعضوں نے دونوں کو برابر کہا ہے اور صواب ماں کی تقدیم ہے)۔
حدیث نمبر: 6501
حَدَّثَنَا أَبُو كُرَيْبٍ مُحَمَّدُ بْنُ الْعَلَاءِ الْهَمْدَانِيُّ ، حَدَّثَنَا ابْنُ فُضَيْلٍ ، عَنْ أَبِيهِ ، عَنْ عُمَارَةَ بْنِ الْقَعْقَاعِ ، عَنْ أَبِي زُرْعَةَ ، عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ ، قَالَ:‏‏‏‏ قَالَ رَجُلٌ:‏‏‏‏ " يَا رَسُولَ اللَّهِ، ‏‏‏‏‏‏مَنْ أَحَقُّ النَّاسِ بِحُسْنِ الصُّحْبَةِ؟ قَالَ:‏‏‏‏ أُمُّكَ، ‏‏‏‏‏‏ثُمَّ أُمُّكَ، ‏‏‏‏‏‏ثُمَّ أُمُّكَ، ‏‏‏‏‏‏ثُمَّ أَبُوكَ، ‏‏‏‏‏‏ثُمَّ أَدْنَاكَ أَدْنَاكَ ".
سیدنا ابوہریرہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے، رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سے ایک شخص نے پوچھا: کون زیادہ حقدار ہے نیک سلوک کرنے کا؟ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ماں، پھر ماں، پھر ماں، پھر باپ، پھر جو قریب، ہو قریب ہو۔
حدیث نمبر: 6502
حَدَّثَنَا أَبُو بَكْرِ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ ، حَدَّثَنَا شَرِيكٌ ، عَنْ عُمَارَةَ ، وَابْنِ شُبْرُمَةَ ، عَنْ أَبِي زُرْعَةَ ، عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ ، قَالَ:‏‏‏‏ جَاءَ رَجُلٌ إِلَى النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ، ‏‏‏‏‏‏فَذَكَرَ بِمِثْلِ حَدِيثِ جَرِيرٍ وَزَادَ، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ:‏‏‏‏ نَعَمْ، ‏‏‏‏‏‏وَأَبِيكَ لَتُنَبَّأَنَّ.
ترجمہ وہی ہے جو گزرا۔ اس میں اتنا زیادہ ہے، وہ شخص بولا:: آپ کے باپ کی قسم آپ کو خبر پہنچے گی (نووی رحمہ اللہ نے کہا: باپ کی قسم سے قسم کھانا مقصود نہیں ہے بلکہ یہ ایک کلمہ ہے جو عادتاً زبان پر جاری ہوتا ہے)۔
حدیث نمبر: 6503
حَدَّثَنِي مُحَمَّدُ بْنُ حَاتِمٍ ، حَدَّثَنَاشَبَابَةُ ، حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ طَلْحَةَ . ح وحَدَّثَنِي أَحْمَدُ بْنُ خِرَاشٍ ، حَدَّثَنَا حَبَّانُ ، حَدَّثَنَا وُهَيْبٌ كِلَاهُمَا، ‏‏‏‏‏‏عَنْ ابْنِ شُبْرُمَةَ ، بِهَذَا الْإِسْنَادِ فِي حَدِيثِ وُهَيْبٍ:‏‏‏‏ مَنْ أَبَرُّ، ‏‏‏‏‏‏وَفِي حَدِيثِ مُحَمَّدِ بْنِ طَلْحَةَ:‏‏‏‏ أَيُّ النَّاسِ أَحَقُّ مِنِّي بِحُسْنِ الصُّحْبَةِ، ‏‏‏‏‏‏ثُمَّ ذَكَرَ بِمِثْلِ حَدِيثِ جَرِيرٍ.
ترجمہ وہی ہے جو او پر گزرا۔
حدیث نمبر: 6504
حَدَّثَنَا أَبُو بَكْرِ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ ، وَزُهَيْرُ بْنُ حَرْبٍ ، قَالَا:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا وَكِيعٌ ، عَنْ سُفْيَانَ ، عَنْ حَبِيبٍ . ح وحَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ الْمُثَنَّى ، حَدَّثَنَا يَحْيَي يَعْنِي ابْنَ سَعِيدٍ الْقَطَّانَ ، عَنْ سُفْيَانَ ، وَشُعْبَةَ ، قَالَا:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا حَبِيبٌ ، عَنْ أَبِي الْعَبَّاسِ ، عَنْ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ عَمْرٍو ، قَالَ:‏‏‏‏ " جَاءَ رَجُلٌ إِلَى النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ يَسْتَأْذِنُهُ فِي الْجِهَادِ، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ:‏‏‏‏ أَحَيٌّ وَالِدَاكَ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ نَعَمْ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ فَفِيهِمَا فَجَاهِدْ ".
سیدنا عبداللہ بن عمر رضی اللہ عنہما سے روایت ہے کہ ایک شخص آیا رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے پاس اور اجازت چاہی آپ صلی اللہ علیہ وسلم سے جہاد پر جا نے کی۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: تیرے ماں باپ زندہ ہیں۔ وہ بولا: ہاں۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: تو ان ہی میں جہاد کر۔
حدیث نمبر: 6505
حَدَّثَنَا عُبَيْدُ اللَّهِ بْنُ مُعَاذٍ ، حَدَّثَنَا أَبِي ، حَدَّثَنَا شُعْبَةُ ، عَنْ حَبِيبٍ ، سَمِعْتُ أَبَا الْعَبَّاسِ ، سَمِعْتُ عَبْدَ اللَّهِ بْنَ عَمْرِو بْنِ الْعَاصِ ، يَقُولُ:‏‏‏‏ جَاءَ رَجُلٌ إِلَى النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ، ‏‏‏‏‏‏فَذَكَرَ بِمِثْلِهِ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ مُسْلِم:‏‏‏‏ أَبُو الْعَبَّاسِ اسْمُهُ:‏‏‏‏ السَّائِبُ بْنُ فَرُّوخَ الْمَكِّيُّ.
ترجمہ وہی ہے جو اوپر گزرا۔
حدیث نمبر: 6506
حَدَّثَنَا أَبُو كُرَيْبٍ ، أَخْبَرَنَا ابْنُ بِشْرٍ ، عَنْ مِسْعَرٍ . ح وحَدَّثَنِي مُحَمَّدُ بْنُ حَاتِمٍ ، حَدَّثَنَا مُعَاوِيَةُ بْنُ عَمْرٍو ، عَنْ أَبِي إِسْحَاقَ . ح وحَدَّثَنِي الْقَاسِمُ بْنُ زَكَرِيَّاءَ ، حَدَّثَنَا حُسَيْنُ بْنُ عَلِيٍّ الْجُعْفِيُّ ، عَنْ زَائِدَةَ كِلَاهُمَا، ‏‏‏‏‏‏عَنْ الْأَعْمَشِ جَمِيعًا، ‏‏‏‏‏‏عَنْ حَبِيبٍ ، بِهَذَا الْإِسْنَادِ مِثْلَهُ.
مذکورہ بالا حدیث اس سند سے بھی مروی ہے۔
حدیث نمبر: 6507
حَدَّثَنَا سَعِيدُ بْنُ مَنْصُورٍ ، حَدَّثَنَا عَبْدُ اللَّهِ بْنُ وَهْبٍ ، أَخْبَرَنِي عَمْرُو بْنُ الْحَارِثِ ، عَنْ يَزِيدَ بْنِ أَبِي حَبِيبٍ ، أَنَّ نَاعِمًا مَوْلَى أُمِّ سَلَمَةَ حَدَّثَهُ، ‏‏‏‏‏‏أَنَّ عَبْدَ اللَّهِ بْنَ عَمْرِو بْنِ الْعَاصِ ، قَالَ:‏‏‏‏ " أَقْبَلَ رَجُلٌ إِلَى نَبِيِّ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ:‏‏‏‏ أُبَايِعُكَ عَلَى الْهِجْرَةِ وَالْجِهَادِ أَبْتَغِي الْأَجْرَ مِنَ اللَّهِ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ فَهَلْ مِنْ وَالِدَيْكَ أَحَدٌ حَيٌّ؟ قَالَ:‏‏‏‏ نَعَمْ، ‏‏‏‏‏‏بَلْ كِلَاهُمَا، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ فَتَبْتَغِي الْأَجْرَ مِنَ اللَّهِ؟ قَالَ:‏‏‏‏ نَعَمْ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ فَارْجِعْ إِلَى وَالِدَيْكَ فَأَحْسِنْ صُحْبَتَهُمَا ".
سیدنا عبداللہ بن عمرو بن العاص رضی اللہ عنہما سے روایت ہے کہ ایک شخص رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے پاس آیا اور عرض کیا میں آپ سے بعیت کرتا ہوں ہجرت اور جہاد پر، اللہ سے اس کا ثواب چاہتا ہوں۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: تیرے ماں باپ میں سے کوئی زندہ ہے۔ وہ بولا: دونوں زندہ ہیں، آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: تو اللہ سے ثواب چاہتا ہے . وہ بولا: ہاں۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا . تو لوٹ جا اپنے ماں باپ کے پاس اور نیک سلوک کر ان سے۔
2- باب تَقْدِيمِ بِرِّ الْوَالِدَيْنِ عَلَى التَّطَوُّعِ بِالصَّلاَةِ وَغَيْرِهَا:
باب: نفل نماز پر والدین کی اطاعت مقدم ہے۔
حدیث نمبر: 6508
حَدَّثَنَا شَيْبَانُ بْنُ فَرُّوخَ ، حَدَّثَنَا سُلَيْمَانُ بْنُ الْمُغِيرَةِ ، حَدَّثَنَا حُمَيْدُ بْنُ هِلَالٍ ، عَنْ أَبِي رَافِعٍ ، عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ ، أَنَّهُ قَالَ:‏‏‏‏ " كَانَ جُرَيْجٌ يَتَعَبَّدُ فِي صَوْمَعَةٍ، ‏‏‏‏‏‏فَجَاءَتْ أُمُّهُ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ حُمَيْدٌ:‏‏‏‏ فَوَصَفَ لَنَا أَبُو رَافِعٍ صِفَةَ أَبِي هُرَيْرَةَ، ‏‏‏‏‏‏لِصِفَةِ رَسُولِ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ أُمَّهُ حِينَ دَعَتْهُ كَيْفَ جَعَلَتْ كَفَّهَا فَوْقَ حَاجِبِهَا، ‏‏‏‏‏‏ثُمَّ رَفَعَتْ رَأْسَهَا إِلَيْهِ تَدْعُوهُ، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَتْ يَا جُرَيْجُ:‏‏‏‏ أَنَا أُمُّكَ كَلِّمْنِي، ‏‏‏‏‏‏فَصَادَفَتْهُ يُصَلِّي، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ:‏‏‏‏ اللَّهُمَّ أُمِّي وَصَلَاتِي، ‏‏‏‏‏‏فَاخْتَارَ صَلَاتَهُ، ‏‏‏‏‏‏فَرَجَعَتْ، ‏‏‏‏‏‏ثُمَّ عَادَتْ فِي الثَّانِيَةِ، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَتْ يَا جُرَيْجُ:‏‏‏‏ أَنَا أُمُّكَ فَكَلِّمْنِي، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ اللَّهُمَّ أُمِّي وَصَلَاتِي، ‏‏‏‏‏‏فَاخْتَارَ صَلَاتَهُ، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَتْ:‏‏‏‏ اللَّهُمَّ إِنَّ هَذَا جُرَيْجٌ وَهُوَ ابْنِي وَإِنِّي كَلَّمْتُهُ، ‏‏‏‏‏‏فَأَبَى أَنْ يُكَلِّمَنِي اللَّهُمَّ فَلَا تُمِتْهُ حَتَّى تُرِيَهُ الْمُومِسَاتِ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ وَلَوْ دَعَتْ عَلَيْهِ أَنْ يُفْتَنَ لَفُتِنَ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ وَكَانَ رَاعِي ضَأْنٍ يَأْوِي إِلَى دَيْرِهِ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ فَخَرَجَتِ امْرَأَةٌ مِنَ الْقَرْيَةِ فَوَقَعَ عَلَيْهَا الرَّاعِي، ‏‏‏‏‏‏فَحَمَلَتْ فَوَلَدَتْ غُلَامًا، ‏‏‏‏‏‏فَقِيلَ لَهَا:‏‏‏‏ مَا هَذَا؟ قَالَتْ:‏‏‏‏ مِنْ صَاحِبِ هَذَا الدَّيْرِ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ فَجَاءُوا بِفُؤُوسِهِمْ وَمَسَاحِيهِمْ فَنَادَوْهُ فَصَادَفُوهُ يُصَلِّي، ‏‏‏‏‏‏فَلَمْ يُكَلِّمْهُمْ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ فَأَخَذُوا يَهْدِمُونَ دَيْرَهُ، ‏‏‏‏‏‏فَلَمَّا رَأَى ذَلِكَ نَزَلَ إِلَيْهِمْ، ‏‏‏‏‏‏فَقَالُوا لَهُ:‏‏‏‏ سَلْ هَذِهِ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ فَتَبَسَّمَ ثُمَّ مَسَحَ رَأْسَ الصَّبِيِّ، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ:‏‏‏‏ مَنْ أَبُوكَ؟ قَالَ:‏‏‏‏ أَبِي رَاعِي الضَّأْنِ، ‏‏‏‏‏‏فَلَمَّا سَمِعُوا ذَلِكَ مِنْهُ، ‏‏‏‏‏‏قَالُوا:‏‏‏‏ نَبْنِي مَا هَدَمْنَا مِنْ دَيْرِكَ بِالذَّهَبِ وَالْفِضَّةِ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ لَا، ‏‏‏‏‏‏وَلَكِنْ أَعِيدُوهُ تُرَابًا كَمَا كَانَ ثُمَّ عَلَاهُ ".
سیدنا ابوہریرہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ جریج (ایک عابد تھا بنی اسرائیل میں) عبادت کر رہا تھا عبادت خانہ میں، اتنے میں اس کی ماں آئی۔ حمید نے کہا: ابورافع نے بیان کیا کہ سیدنا ابوہریرہ رضی اللہ عنہ نے جیسے بیان کیا، جیسے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے بیان کیا کہ اس کی ماں نے اپنا ہاتھ ابرو پر رکھا اور سر اٹھایا جریج کو پکارنے کو تو بولی: اے جریج! میں تیری ماں ہوں، مجھ سے بات کر۔ جریج اس وقت نماز میں تھا، وہ بولا: (اپنے دل میں) یا اللہ! میری ماں پکارتی ہے اور میں نماز میں ہوں، پھر وہ اپنی نماز میں رہا اس کی ماں لوٹ گئی۔ دوسرے دن، پھر آئی اور بولی: اے جریج! میں تیری ماں ہوں، مجھ سے بات کر۔ وہ کہنے لگا: اے رب میری ماں پکارتی ہے اور میں نماز میں ہوں۔ آخر وہ نماز میں مشغول رہے۔ وہ بولی: یا اللہ! یہ جریج ہے اور میرا بیٹا ہے میں نے اس سے بات کی لیکن اس نے بات کرنے سے انکار کیا۔ یا اللہ! مت مارنا اس کو جب تک بدکار عورتو ں کو نہ دیکھ لے۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ اگر وہ دعا کرتی جریج کسی فتنہ میں پڑے البتہ پڑ جاتا (پر اس نے صرف اسی قدر دعا کی کہ بدکار عورتوں کو دیکھے)۔ ایک چرواہا تھا بھیڑوں کا جو جریج کے عبادت خانہ کے پاس ٹھہرا کرتا تھا، تو گاؤں سے ایک عورت باہر نکلی وہ چرواہا اس پر چڑھ بیٹھا اس کو حمل ٹھر گیا۔ ایک لڑکا جنا۔ لوگوں نے اس سے پوچھا: یہ لڑکا کہاں سے لائی؟ وہ بولی: اس عبادت خانہ میں جو رہتا ہے اس کا لڑکا ہے۔ یہ سن کر (بستی کے لوگ) اپنی کدالیں اور پھاوڑے لے کر آئے اور جریج کو آواز دی۔ وہ نماز میں تھا اس نے بات نہ کی، لوگ اس کا عبادت خانہ گرا نے لگے جب اس نے یہ دیکھا تو اترا۔ لوگوں نے اس سے کہا: اس عورت سے پوچھ کیا کہتی ہے؟ جریج ہنسا اور اس نے لڑکے کے سر پر ہاتھ پھیرا اور پوچھا: تیرا باپ کون ہے؟ وہ بولا: میرا باپ بھیڑوں کا چرواہا ہے۔ جب لوگوں نے بچہ سے یہ بات سنی تو کہنے لگے: جتنا عبادت خانہ ہم نے تیرا گرایا ہے وہ سو نے اور چاندی سے بنا دیتے ہیں۔ جریج نے کہا: نہیں مٹی ہی سے درست کر دو جیسا پہلے تھا، پھر چڑھ گیا اس کے اوپر۔
حدیث نمبر: 6509
حَدَّثَنَا زُهَيْرُ بْنُ حَرْبٍ ، حَدَّثَنَا يَزِيدُ بْنُ هَارُونَ ، أَخْبَرَنَا جَرِيرُ بْنُ حَازِمٍ ، حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ سِيرِينَ ، عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ ، عَنِ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ " لَمْ يَتَكَلَّمْ فِي الْمَهْدِ إِلَّا ثَلَاثَةٌ، ‏‏‏‏‏‏عِيسَى ابْنُ مَرْيَمَ، ‏‏‏‏‏‏وَصَاحِبُ جُرَيْجٍ، ‏‏‏‏‏‏وَكَانَ جُرَيْجٌ رَجُلًا عَابِدًا فَاتَّخَذَ صَوْمَعَةً، ‏‏‏‏‏‏فَكَانَ فِيهَا فَأَتَتْهُ أُمُّهُ وَهُوَ يُصَلِّي، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَتْ:‏‏‏‏ يَا جُرَيْجُ، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ:‏‏‏‏ يَا رَبِّ أُمِّي وَصَلَاتِي، ‏‏‏‏‏‏فَأَقْبَلَ عَلَى صَلَاتِهِ، ‏‏‏‏‏‏فَانْصَرَفَتْ، ‏‏‏‏‏‏فَلَمَّا كَانَ مِنَ الْغَدِ أَتَتْهُ وَهُوَ يُصَلِّي، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَتْ:‏‏‏‏ يَا جُرَيْجُ، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ:‏‏‏‏ يَا رَبِّ أُمِّي وَصَلَاتِي، ‏‏‏‏‏‏فَأَقْبَلَ عَلَى صَلَاتِهِ، ‏‏‏‏‏‏فَانْصَرَفَتْ، ‏‏‏‏‏‏فَلَمَّا كَانَ مِنَ الْغَدِ أَتَتْهُ وَهُوَ يُصَلِّي، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَتْ:‏‏‏‏ يَا جُرَيْجُ، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ:‏‏‏‏ أَيْ رَبِّ أُمِّي وَصَلَاتِي، ‏‏‏‏‏‏فَأَقْبَلَ عَلَى صَلَاتِهِ، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَتْ:‏‏‏‏ اللَّهُمَّ لَا تُمِتْهُ حَتَّى يَنْظُرَ إِلَى وُجُوهِ الْمُومِسَاتِ، ‏‏‏‏‏‏فَتَذَاكَرَ بَنُو إِسْرَائِيلَ جُرَيْجًا وَعِبَادَتَهُ، ‏‏‏‏‏‏وَكَانَتِ امْرَأَةٌ بَغِيٌّ يُتَمَثَّلُ بِحُسْنِهَا، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَتْ:‏‏‏‏ إِنْ شِئْتُمْ لَأَفْتِنَنَّهُ لَكُمْ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ فَتَعَرَّضَتْ لَهُ، ‏‏‏‏‏‏فَلَمْ يَلْتَفِتْ إِلَيْهَا، ‏‏‏‏‏‏فَأَتَتْ رَاعِيًا كَانَ يَأْوِي إِلَى صَوْمَعَتِهِ، ‏‏‏‏‏‏فَأَمْكَنَتْهُ مِنْ نَفْسِهَا فَوَقَعَ عَلَيْهَا فَحَمَلَتْ، ‏‏‏‏‏‏فَلَمَّا وَلَدَتْ، ‏‏‏‏‏‏قَالَتْ:‏‏‏‏ هُوَ مِنْ جُرَيْجٍ، ‏‏‏‏‏‏فَأَتَوْهُ فَاسْتَنْزَلُوهُ وَهَدَمُوا صَوْمَعَتَهُ، ‏‏‏‏‏‏وَجَعَلُوا يَضْرِبُونَهُ، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ:‏‏‏‏ مَا شَأْنُكُمْ؟ قَالُوا:‏‏‏‏ زَنَيْتَ بِهَذِهِ الْبَغِيِّ فَوَلَدَتْ مِنْكَ، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ:‏‏‏‏ أَيْنَ الصَّبِيُّ فَجَاءُوا بِهِ، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ:‏‏‏‏ دَعُونِي حَتَّى أُصَلِّيَ، ‏‏‏‏‏‏فَصَلَّى فَلَمَّا انْصَرَفَ أَتَى الصَّبِيَّ فَطَعَنَ فِي بَطْنِهِ، ‏‏‏‏‏‏وَقَالَ يَا غُلَامُ:‏‏‏‏ مَنْ أَبُوكَ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ فُلَانٌ الرَّاعِي، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ فَأَقْبَلُوا عَلَى جُرَيْجٍ يُقَبِّلُونَهُ وَيَتَمَسَّحُونَ بِهِ، ‏‏‏‏‏‏وَقَالُوا:‏‏‏‏ نَبْنِي لَكَ صَوْمَعَتَكَ مِنْ ذَهَبٍ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ لَا، ‏‏‏‏‏‏أَعِيدُوهَا مِنْ طِينٍ كَمَا كَانَتْ، ‏‏‏‏‏‏فَفَعَلُوا، ‏‏‏‏‏‏وَبَيْنَا صَبِيٌّ يَرْضَعُ مِنْ أُمِّهِ، ‏‏‏‏‏‏فَمَرَّ رَجُلٌ رَاكِبٌ عَلَى دَابَّةٍ فَارِهَةٍ وَشَارَةٍ حَسَنَةٍ، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَتْ أُمُّهُ:‏‏‏‏ اللَّهُمَّ اجْعَلِ ابْنِي مِثْلَ هَذَا، ‏‏‏‏‏‏فَتَرَكَ الثَّدْيَ وَأَقْبَلَ إِلَيْهِ فَنَظَرَ إِلَيْهِ، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ:‏‏‏‏ اللَّهُمَّ لَا تَجْعَلْنِي مِثْلَهُ، ‏‏‏‏‏‏ثُمَّ أَقْبَلَ عَلَى ثَدْيِهِ فَجَعَلَ يَرْتَضِعُ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ فَكَأَنِّي أَنْظُرُ إِلَى رَسُولِ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ وَهُوَ يَحْكِي ارْتِضَاعَهُ بِإِصْبَعِهِ السَّبَّابَةِ فِي فَمِهِ، ‏‏‏‏‏‏فَجَعَلَ يَمُصُّهَا، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ وَمَرُّوا بِجَارِيَةٍ وَهُمْ يَضْرِبُونَهَا وَيَقُولُونَ زَنَيْتِ سَرَقْتِ وَهِيَ، ‏‏‏‏‏‏تَقُولُ:‏‏‏‏ حَسْبِيَ اللَّهُ وَنِعْمَ الْوَكِيلُ، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَتْ أُمُّهُ:‏‏‏‏ اللَّهُمَّ لَا تَجْعَلِ ابْنِي مِثْلَهَا، ‏‏‏‏‏‏فَتَرَكَ الرَّضَاعَ وَنَظَرَ إِلَيْهَا، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ:‏‏‏‏ اللَّهُمَّ اجْعَلْنِي مِثْلَهَا، ‏‏‏‏‏‏فَهُنَاكَ تَرَاجَعَا الْحَدِيثَ، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَتْ حَلْقَى مَرَّ رَجُلٌ حَسَنُ الْهَيْئَةِ، ‏‏‏‏‏‏فَقُلْتُ:‏‏‏‏ اللَّهُمَّ اجْعَلِ ابْنِي مِثْلَهُ، ‏‏‏‏‏‏فَقُلْتَ:‏‏‏‏ اللَّهُمَّ لَا تَجْعَلْنِي مِثْلَهُ، ‏‏‏‏‏‏وَمَرُّوا بِهَذِهِ الْأَمَةِ وَهُمْ يَضْرِبُونَهَا، ‏‏‏‏‏‏وَيَقُولُونَ:‏‏‏‏ زَنَيْتِ سَرَقْتِ، ‏‏‏‏‏‏فَقُلْتُ:‏‏‏‏ اللَّهُمَّ لَا تَجْعَلِ ابْنِي مِثْلَهَا، ‏‏‏‏‏‏فَقُلْت:‏‏‏‏ اللَّهُمَّ اجْعَلْنِي مِثْلَهَا، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ إِنَّ ذَاكَ الرَّجُلَ كَانَ جَبَّارًا، ‏‏‏‏‏‏فَقُلْتُ:‏‏‏‏ اللَّهُمَّ لَا تَجْعَلْنِي مِثْلَهُ، ‏‏‏‏‏‏وَإِنَّ هَذِهِ يَقُولُونَ لَهَا زَنَيْتِ، ‏‏‏‏‏‏وَلَمْ تَزْنِ، ‏‏‏‏‏‏وَسَرَقْتِ، ‏‏‏‏‏‏وَلَمْ تَسْرِقْ، ‏‏‏‏‏‏فَقُلْتُ:‏‏‏‏ اللَّهُمَّ اجْعَلْنِي مِثْلَهَا ".
سیدنا ابوہریرہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے، رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: کوئی لڑکا جھولے میں (یعنی شیرخوارگی میں) نہیں بولا: مگر تین لڑکے۔ ایک تو عیسی علیہ السلام، دوسرے جریج کا ساتھی۔ اور جریج کا قصہ یہ ہے کہ وہ ایک عابد شخص تھا سو اس نے ایک عبادت خانہ بنایا اسی میں رہتا تھا۔ اس کی ماں آئی وہ نماز پڑھ رہا تھا، ماں نے پکارا: اے جریج! وہ بولا: اے رب! میری ماں پکارتی ہے اور میں نماز میں ہوں، آخر وہ نماز ہی میں رہا اس کی ماں پھر گئی۔ پھر جب دوسرا دن ہو ا، پھر آئی اور پکارا: اے جریج! وہ بولا: یا اللہ! میری ماں پکارتی ہے اور میں نماز میں ہوں، آخر وہ نماز ہی میں رہا۔ اس کی ماں بولی: یا اللہ! اس کو مت مارنا جب تک بدکار عورتوں کا منہ نہ دیکھے۔ پھر بنی اسرائیل نے جریج کا اور اس کی عبادت کا چرچا شروع کیا۔ اور بنی اسرائیل میں ایک بدکار عورت تھی جس کی خوبصورتی سے مثال دیتے تھے۔ وہ بولی: اگر تم کہو تو میں جریج کو بلا میں ڈال دوں، پھر وہ عورت جریج کے سامنے گئی، لیکن جریج نے اس طرف خیال بھی نہ کیا۔ آخر وہ ایک چروا ہے کے پاس آئی جو جریج کے عبادت خانہ کے پاس ٹھہرا کرتا تھا اور اجازت دی اس کو اپنے سے صبحت کرنے کی، اس نے صبحت کی وہ پیٹ سے ہوئی اور جب بچہ جنا تو بولی: کہ یہ بچہ جریج کا ہے لوگ یہ سن کر جریج کے پاس آئے اور اس سے کہا: اتر اور اس کا عبادت خانہ گرا دیا اور اس کو مارنے لگے وہ بولا: کیا ہو ا تم کو؟ انہوں نے کہا: تو نے زنا کیا اس بدکار عورت سے، وہ ایک بچہ بھی جنی ہے تجھ سے۔ جریج نے کہا: وہ بچہ کہاں ہے؟ لوگ اس کو لائے، جریج نے کہا: ذرا مجھ کو چھوڑو میں نماز پڑھ لوں، پھر نماز پڑھی اور آیا اس بچہ کے پاس اور اس کے پیٹ کو ایک ٹھونسا دیا اور بولا: اے بچے! تیرا باپ کون ہے؟ وہ بولا: فلانا چرواہا ہے۔ یہ سن کر لوگ دوڑے جریج کی طرف اور اس کو چومنے چاٹنے لگے اور کہنے لگے تیرا عبادت خانہ ہم سونے سے بنا دیتے ہیں۔ وہ بولا: نہیں مٹی سے پھر بنا دو جیسا تھا۔ لوگوں نے بنا دیا۔ تیسرا ایک بچہ تھا جو اپنی ماں کا دودھ پی رہا تھا اتنے میں ایک سوار نکلا عمدہ جانور پر ستھری پوشاک والا۔ اس کی ماں نے کہا:: یا اللہ! میرے بیٹے کو ایسا کرنا۔ بچے نے یہ سن کر چھاتی چھوڑ دی اور اس سوار کی طرف دیکھا اور کہا: یا اللہ! مجھ کو ایسا نہ کرنا، پھر چھاتی میں جھکا اور دودھ پینے لگا۔ سیدنا ابوہریرہ رضی اللہ عنہ نے کہا: گویا میں نبی صلی اللہ علیہ وسلم کو دیکھ رہا ہو ں اور نبی صلی اللہ علیہ وسلم اس بچے کے دودھ پینے کی نقل کرتے تھے اس طرح پر کہ کلمہ کی انگلی اپنے منہ میں ڈال کر چوستے تھے۔ نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: پھر لوگ ایک لونڈی کو لے کر نکلےجس کو مارتے جاتے تھے اور کہتے تھے: تو نے زنا کرایا اور چوری کی۔ وہ کہتی تھی: اللہ مجھے کفایت کرتا ہے اور وہی میرا وکیل ہے۔ بچے کی ماں بولی: یا اللہ! میرے بچہ کو اس لونڈی کی طرح نہ کرنا۔ یہ سن کر بچے نے دودھ پینا چھوڑ دیا اور اس لونڈی کی طرف دیکھا اور کہنے لگا: یا اللہ! مجھ کو اس لونڈی کی طرح کرنا۔ اس وقت ماں اور بیٹے میں گفتگو ہوئی۔ ماں نے کہا: او سر منڈے! جب ایک شخص اچھی صورت والا نکلا اور میں نے کہا: یا اللہ! میرے بیٹے کو ایسا کرنا تو تو نے کہا: یا اللہ! مجھ کو ایسا نہ کرنا اور یہ لونڈی کو لوگ مارتے جاتے ہیں اور کہتے جاتے ہیں تو نے زنا کیا، چوری کی، تو میں نے کہا: یا اللہ! میرے بچے کو اس کی طرح نہ کرنا۔ تو کہتا ہے: یا اللہ! مجھ کو اس کی طرح کرنا (یہ کیا بات ہے؟)۔ بچہ بولا: وہ سوار ایک ظالم شخص تھا، میں نے دعا کی یا اللہ! مجھ کو اس کی طرح نہ کرنا اور لونڈی پر لوگ تہمت کرتے ہیں، کہتے ہیں تو نے زنا کیا، چوری کی، حالانکہ نہ اس نے زنا کیا ہے اور نہ چوری کی ہے، تو میں نے کہا: یا اللہ! مجھ کو اس کے مثل بنا۔