English Show/Hide
کل احادیث 5274 :حدیث نمبر
كتاب الخراج والفيء والإمارة
کتاب: محصورات اراضی اور امارت سے متعلق احکام و مسائل
Tribute, Spoils, and Rulership (Kitab Al-Kharaj, Wal-Fai Wal-Imarah)

2- باب مَا جَاءَ فِي طَلَبِ الإِمَارَةِ
باب: حکومت و اقتدار کو طلب کرنا کیسا ہے؟
CHAPTER: What Has Been Related About Seeking A Position Of Leadership.
حدیث نمبر: 2930
Tashkeel Show/Hide
حدثنا وهب بن بقية، ‏‏‏‏‏‏حدثنا خالد، ‏‏‏‏‏‏عن إسماعيل بن ابي خالد، ‏‏‏‏‏‏عن اخيه، ‏‏‏‏‏‏عن بشر بن قرة الكلبي، ‏‏‏‏‏‏عن ابي بردة، ‏‏‏‏‏‏عن ابي موسى، ‏‏‏‏‏‏قال:‏‏‏‏ انطلقت مع رجلين إلى النبي صلى الله عليه وسلم فتشهد احدهما، ‏‏‏‏‏‏ثم قال:‏‏‏‏ جئنا لتستعين بنا على عملك، ‏‏‏‏‏‏وقال الآخر مثل قول صاحبه، ‏‏‏‏‏‏فقال:‏‏‏‏ إن اخونكم عندنا من طلبه، ‏‏‏‏‏‏فاعتذر ابو موسى إلى النبي صلى الله عليه وسلم وقال:‏‏‏‏ لم اعلم لما جاءا له فلم يستعن بهما على شيء حتى مات.حَدَّثَنَا وَهْبُ بْنُ بَقِيَّةَ، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنَا خَالِدٌ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ إِسْمَاعِيل بْنِ أَبِي خَالِدٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أَخِيهِ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ بِشْرِ بْنِ قُرَّةَ الْكَلْبِيِّ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أَبِي بُرْدَةَ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أَبِي مُوسَى، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ انْطَلَقْتُ مَعَ رَجُلَيْنِ إِلَى النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ فَتَشَهَّدَ أَحَدُهُمَا، ‏‏‏‏‏‏ثُمَّ قَالَ:‏‏‏‏ جِئْنَا لِتَسْتَعِينَ بِنَا عَلَى عَمَلِكَ، ‏‏‏‏‏‏وَقَالَ الآخَرُ مِثْلَ قَوْلِ صَاحِبِهِ، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ:‏‏‏‏ إِنَّ أَخْوَنَكُمْ عِنْدَنَا مَنْ طَلَبَهُ، ‏‏‏‏‏‏فَاعْتَذَرَ أَبُو مُوسَى إِلَى النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ وَقَالَ:‏‏‏‏ لَمْ أَعْلَمْ لِمَا جَاءَا لَهُ فَلَمْ يَسْتَعِنْ بِهِمَا عَلَى شَيْءٍ حَتَّى مَاتَ.
ابوموسیٰ رضی اللہ عنہ کہتے ہیں کہ میں دو آدمیوں کو لے کر نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کے پاس گیا، ان میں سے ایک نے (اللہ کی وحدانیت اور رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی رسالت کی) گواہی دی پھر کہا کہ ہم آپ کے پاس اس غرض سے آئے ہیں کہ آپ ہم سے اپنی حکومت کے کام میں مدد لیجئے ۱؎ دوسرے نے بھی اپنے ساتھی ہی جیسی بات کہی، تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ہمارے نزدیک تم میں وہ شخص سب سے بڑا خائن ہے جو حکومت طلب کرے۔ ابوموسیٰ رضی اللہ عنہ نے نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم سے معذرت پیش کی، اور کہا کہ مجھے معلوم نہیں تھا کہ یہ دونوں آدمی اس غرض سے آئے ہیں پھر انہوں نے ان سے زندگی بھر کسی کام میں مدد نہیں لی۔

تخریج دارالدعوہ: سنن النسائی/آداب القضاة ۴ (۵۳۸۴)، (تحفة الأشراف: ۹۰۷۷)، وقد أخرجہ: مسند احمد (۴/۳۹۳، ۴۱۱) (منکر)

وضاحت: ۱؎: یعنی ہمیں عامل بنا دیجئے یا حکومت کی کوئی ذمہ داری ہمارے سپرد کر دیجئے۔

Narrated Abu Musa: I went along with two men to see the Prophet ﷺ. One of them recited tashahhud and said: We have come to you so that you may employ us for your work. The other also said the same thing. He (the Prophet) replied: The most faithless of you in our eyes is the one who asked for it (responsible post). Abu Musa then apologized to the Prophet ﷺ and said: I did not know why they came to you. He did not employ them for anything until he died.
USC-MSA web (English) Reference: Book 19 , Number 2924

قال الشيخ زبیر علی زئی في انوار الصحیفة فی احادیث ضعیفة من السنن الاربعة:
إسناده ضعيف ¤ إسماعيل بن أبي خالد عنعن وهو مدلس (طبقات المدلسين:2/36 وهو من الثالثة) وأما أخره سعيد : فثقة وثقه العجلي وابن حبان وغيرهما ۔

قال الشيخ الألباني: منكر