English Show/Hide
کل احادیث 5274 :حدیث نمبر
كتاب الخراج والفيء والإمارة
کتاب: محصورات اراضی اور امارت سے متعلق احکام و مسائل
Tribute, Spoils, and Rulership (Kitab Al-Kharaj, Wal-Fai Wal-Imarah)

5- باب فِي الْعِرَافَةِ
باب: عرافت کا بیان۔
CHAPTER: Regarding Al-’Arafah.
حدیث نمبر: 2933
Tashkeel Show/Hide
حدثنا عمرو بن عثمان، ‏‏‏‏‏‏حدثنا محمد بن حرب، ‏‏‏‏‏‏عن ابي سلمة سليمان بن سليم، ‏‏‏‏‏‏عن يحيى بن جابر، ‏‏‏‏‏‏عن صالح بن يحيى بن المقدام،‏‏‏‏عن جده المقدام بن معد يكرب، ‏‏‏‏‏‏ان رسول الله صلى الله عليه وسلم ضرب على منكبه، ‏‏‏‏‏‏ثم قال:‏‏‏‏ "له افلحت يا قديم إن مت ولم تكن اميرا ولا كاتبا ولا عريفا".حَدَّثَنَا عَمْرُو بْنُ عُثْمَانَ، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ حَرْبٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أَبِي سَلَمَةَ سُلَيْمَانَ بْنِ سُلَيْمٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ يَحْيَى بْنِ جَابِرٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ صَالِحِ بْنِ يَحْيَى بْنِ الْمِقْدَامِ،‏‏‏‏عَنْ جَدِّهِ الْمِقْدَامِ بْنِ مَعْدِ يكَرِبَ، ‏‏‏‏‏‏أَنّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ ضَرَبَ عَلَى مَنْكِبِهِ، ‏‏‏‏‏‏ثُمَّ قَالَ:‏‏‏‏ "لَهُ أَفْلَحْتَ يَا قُدَيْمُ إِنْ مُتَّ وَلَمْ تَكُنْ أَمِيرًا وَلَا كَاتِبًا وَلَا عَرِيفًا".
مقدام بن معد یکرب رضی اللہ عنہ کہتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے ان کے کندھے پر مارا پھر ان سے فرمایا: قدیم! (مقدام کی تصغیر ہے) اگر تم امیر، منشی اور عریف ہوئے بغیر مر گئے تو تم نے نجات پا لی ۲؎۔

تخریج دارالدعوہ: تفرد بہ أبوداود، (تحفة الأشراف: ۱۱۵۶۶)، وقد أخرجہ: مسند احمد (۴/۱۳۳) (ضعیف) (اس کے راوی صالح بن یحییٰ بن مقدام ضعیف ہیں)

وضاحت: ۱؎: عریف: اپنے ساتھیوں کا تعارف کرانے والا، قوم کے معاملات کی دیکھ بھال کرنے والا، نقیب، یہ حاکم سے کم مرتبے کا ہوتا ہے، اور اپنی قوم کے ہر ایک شخص کا رویہ اور چال چلن حاکم سے بیان کرتا ہے اور اسے برے بھلے کی خبر دیتا ہے۔ ۲؎: اس لئے کہ ہر سرکاری کام میں مواخذہ اور تقصیر خدمت کا ڈر لگا رہتا ہے اسی وجہ سے سلف نے زراعت اور تجارت کو نوکری سے بہتر جانا ہے۔

Narrated Al-Miqdam ibn Madikarib: The Messenger of Allah ﷺ struck him on his shoulders and then said: You will attain success, Qudaym, if you die without having been a ruler, a secretary, or a chief.
USC-MSA web (English) Reference: Book 19 , Number 2927

قال الشيخ زبیر علی زئی في انوار الصحیفة فی احادیث ضعیفة من السنن الاربعة:
إسناده ضعيف ¤ صالح بن يحيي لين وأبوه مستور (تق:2894،7653)

قال الشيخ الألباني: ضعيف