كتاب سجود القرآن
کتاب: سجدہ تلاوت کے احکام و مسائل
Prayer (Kitab Al-Salat): Prostration while reciting the Quran

1- باب تَفْرِيعِ أَبْوَابِ السُّجُودِ وَكَمْ سَجْدَةٍ فِي الْقُرْآنِ
باب: سجدہ تلاوت کا بیان اور یہ کہ قرآن کریم میں کتنے سجدے ہیں؟
CHAPTER: How Many Places Are There In The Qur’an Where Prostration Is Required.
حدیث نمبر: 1401
حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ عَبْدِ الرَّحِيمِ بْنِ الْبَرْقِيِّ، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنَا ابْنُ أَبِي مَرْيَمَ، ‏‏‏‏‏‏أَخْبَرَنَا نَافِعُ بْنُ يَزِيدَ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ الْحَارِثِ بْنِ سَعِيدٍ الْعُتَقِيِّ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ مُنَيْنٍ مِنْ بَنِي عَبْدِ كُلَالٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ عَمْرِو بْنِ الْعَاصِ، ‏‏‏‏‏‏أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ"أَقْرَأَهُ خَمْسَ عَشْرَةَ سَجْدَةً فِي الْقُرْآنِ، ‏‏‏‏‏‏مِنْهَا ثَلَاثٌ فِي الْمُفَصَّلِ، ‏‏‏‏‏‏وَفِي سُورَةِ الْحَجِّ سَجْدَتَانِ". قَالَ أَبُو دَاوُد:‏‏‏‏ رُوِيَ عَنْ أَبِي الدَّرْدَاءِ، ‏‏‏‏‏‏عَنِ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ، ‏‏‏‏‏‏"إِحْدَى عَشْرَةَ سَجْدَةً"وَإِسْنَادُهُ وَاهٍ.
عمرو بن العاص رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے ان کو قرآن مجید میں (۱۵) سجدے ۱؎ پڑھائے: ان میں سے تین مفصل میں ۲؎ اور دو سورۃ الحج میں ۳؎۔ ابوداؤد کہتے ہیں: ابوالدرداء رضی اللہ عنہ نے نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم سے گیارہ سجدے نقل کئے ہیں، لیکن اس کی سند کمزور ہے۔

تخریج دارالدعوہ: سنن ابن ماجہ/إقامة الصلاة ۷۱ (۱۰۵۷)، (تحفة الأشراف:۱۰۷۳۵) (ضعیف) (اس کے راوی حارث لین الحدیث، اور عبد اللہ مجہول ہیں)

وضاحت: ۱؎: امام احمد اور جمہور اہل حدیث کے یہاں قرآن مجید میں پندرہ سجدے تلاوت کے ہیں، امام مالک کے نزدیک صرف گیارہ سجدے ہیں، مفصل اور سورہ ص میں ان کے نزدیک سجدہ نہیں ہے، امام شافعی کے نزدیک کل چودہ سجدے ہیں، سورہ ص میں ان کے نزدیک بھی سجدہ نہیں، اور امام ابوحنیفہ کے نزدیک بھی کل چودہ سجدے ہیں، وہ سورہ حج میں ایک ہی سجدہ مانتے ہیں، سجدہ تلاوت جمہور کے نزدیک سنت ہے لیکن امام ابوحنیفہ اسے واجب کہتے ہیں، ائمہ اربعہ اور اکثر علماء کے نزدیک اس میں وضو شرط ہے، امام ابن تیمیہ کے نزدیک شرط نہیں ہے۔ ۲؎: سورہ نجم، سورہ انشقت اور اقرأ میں۔ ۳؎: یہ کل پانچ سجدے ہوئے اور دس ان کے علاوہ باقی سورتوں: اعراف، رعد، نحل، بنی اسرائیل، مریم، فرقان، نمل، الم تنزیل السجدہ، ص اور فصلت میں، اس طرح کل پندرہ سجدے ہوئے۔

Narrated Amr ibn al-As: The Prophet ﷺ taught me fifteen prostrations while reciting the Quran, including three in al-Mufassal and two in Surah al-Hajj. Abu Dawud said: Abu al-Darda has reported eleven prostrations from the Prophet ﷺ, but chain of this tradition is weak.
USC-MSA web (English) Reference: Book 7 , Number 1396

قال الشيخ الألباني: ضعيف
حدیث نمبر: 1402
حَدَّثَنَا أَحْمَدُ بْنُ عَمْرِو بْنِ السَّرْحِ، ‏‏‏‏‏‏أَخْبَرَنَا ابْنُ وَهْبٍ، ‏‏‏‏‏‏أَخْبَرَنِي ابْنُ لَهِيعَةَ، ‏‏‏‏‏‏أَنَّ مِشْرَحَ بْنَ هَاعَانَ أَبَا الْمُصْعَبِ حَدَّثَهُ، ‏‏‏‏‏‏أَنَّ عُقْبَةَ بْنَ عَامِرٍ حَدَّثَهُ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ قُلْتُ لِرَسُولِ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ أَفِي سُورَةِ الْحَجِّ سَجْدَتَانِ؟ قَالَ:‏‏‏‏ "نَعَمْ، ‏‏‏‏‏‏وَمَنْ لَمْ يَسْجُدْهُمَا فَلَا يَقْرَأْهُمَا".
عقبہ بن عامر رضی اللہ عنہ کہتے ہیں کہ میں نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سے پوچھا: اللہ کے رسول! کیا سورۃ الحج میں دو سجدے ہیں؟ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ہاں اور جو یہ دونوں سجدے نہ کرے وہ انہیں نہ پڑھے۔

تخریج دارالدعوہ: سنن الترمذی/الصلاة ۲۸۹ (الجمعة ۵۴) (۵۷۸)، (تحفة الأشراف:۹۹۶۵)، وقد أخرجہ: مسند احمد (۴/۱۵۱، ۱۵۵) (حسن) (مشرح کے بارے میں کلام ہے، لیکن دوسری خالد بن حمدان کی مرسل حدیث سے تقویت پاکر یہ حدیث حسن کے درجہ کو پہنچی) (ملاحظہ ہو: صحیح ابی داود: ۵؍ ۱۴۶)

Narrated Uqbah ibn Amir: I said to the Messenger of Allah ﷺ: Are there two prostrations in Surah al-Hajj? He replied: Yes; if anyone does not make two prostrations, he should not recite them.
USC-MSA web (English) Reference: Book 7 , Number 1397

قال الشيخ الألباني: ضعيف
2- باب مَنْ لَمْ يَرَ السُّجُودَ فِي الْمُفَصَّلِ
باب: مفصل میں سجدہ نہ ہونے کے قائلین کی دلیل کا بیان۔
CHAPTER: A View That There Is No Prostration In Mufassal Surahs.
حدیث نمبر: 1403
حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ رَافِعٍ، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنَا أَزْهَرُ بْنُ الْقَاسِمِ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ مُحَمَّدٌ:‏‏‏‏ رَأَيْتُهُ بِمَكَّةَ، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنَا أَبُو قُدَامَةَ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ مَطَرٍ الْوَرَّاقِ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ عِكْرِمَةَ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ ابْنِ عَبَّاسٍ، ‏‏‏‏‏‏أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ"لَمْ يَسْجُدْ فِي شَيْءٍ مِنْ الْمُفَصَّلِ مُنْذُ تَحَوَّلَ إِلَى الْمَدِينَةِ".
عبداللہ بن عباس رضی اللہ عنہما کہتے ہیں کہ مکہ سے مدینہ آ جانے کے بعد رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے مفصل (سورتوں) میں سے کسی سورۃ میں سجدہ نہیں کیا ۱؎۔

تخریج دارالدعوہ: تفرد بہ أبوداود، (تحفة الأشراف:۶۲۱۶) (ضعیف) (اس کے راوی ابوقدامہ حارث بن عبید اور مطر وراق حافظہ کے بہت کمزور راوی ہیں)

وضاحت: ۱؎: یہ حدیث امام مالک کی دلیل ہے، لیکن یہ ضعیف ہے، جیسا کہ تخریج سے واضح ہے، اور ابوہریرہ رضی اللہ عنہ کی صحیح حدیث (۱۴۰۷) جو آگے آ رہی ہے کے معارض ہے، اور ابوہریرہ رضی اللہ عنہ متاخر الاسلام ہیں، انہوں نے ساتویں ہجری میں اسلام قبول کیا ہے، نیز ان کی حدیث صحیحین میں ہے۔

Narrated Abdullah ibn Abbas: The Messenger of Allah ﷺ did not make a prostration at any verse in al-Mufassal from the time he moved to Madina.
USC-MSA web (English) Reference: Book 7 , Number 1398

قال الشيخ الألباني: ضعيف
حدیث نمبر: 1404
حَدَّثَنَا هَنَّادُ بْنُ السَّرِيِّ، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنَا وَكِيعٌ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ ابْنِ أَبِي ذِئْبٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ يَزِيدَ بْنِ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ قُسَيْطٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ عَطَاءِ بْنِ يَسَارٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ زَيْدِ بْنِ ثَابِتٍ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ قَرَأْتُ عَلَى رَسُولِ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ النَّجْمَ"فَلَمْ يَسْجُدْ فِيهَا".
زید بن ثابت رضی اللہ عنہ کہتے ہیں کہ میں نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کو سورۃ النجم پڑھ کر سنائی تو آپ نے اس میں سجدہ نہیں کیا۔

تخریج دارالدعوہ: صحیح البخاری/سجود القرآن ۶ (۱۰۷۲)، صحیح مسلم/المساجد ۲۰ (۵۷۷)، ت الجمعة ۵۲ (۵۷۶)، سنن النسائی/الافتتاح ۵۰ (۹۶۱)، (تحفة الأشراف:۳۷۳۳)، وقد أخرجہ: مسند احمد (۵/۱۸۳، ۱۸۶)، سنن الدارمی/الصلاة ۱۶۴ (۱۵۱۳) (صحیح)

Narrated Zaid bin Thabit: The Messenger of Allah ﷺ did not make prostration at any verse in al-Mufassal from the time he moved to Madina.
USC-MSA web (English) Reference: Book 7 , Number 1399

قال الشيخ الألباني: صحيح
حدیث نمبر: 1405
حَدَّثَنَا ابْنُ السَّرْحِ، ‏‏‏‏‏‏أَخْبَرَنَا ابْنُ وَهْبٍ، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنَا أَبُو صَخْرٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ ابْنِ قُسَيْطٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ خَارِجَةَ بْنِ زَيْدِ بْنِ ثَابِتٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أَبِيهِ، ‏‏‏‏‏‏عَنِ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ، ‏‏‏‏‏‏بِمَعْنَاهُ. قَالَ أَبُو دَاوُد:‏‏‏‏ كَانَ زَيْدٌ الْإِمَامَ فَلَمْ يَسْجُدْ فِيهَا.
اس سند سے بھی زید بن ثابت رضی اللہ عنہ سے اسی مفہوم کی حدیث مرفوعاً آئی ہے۔ ابوداؤد کہتے ہیں: زید امام تھے لیکن انہوں نے اس میں سجدہ نہیں کیا۔

تخریج دارالدعوہ: تفرد بہ أبو داود، (تحفة الأشراف:۳۷۰۷) (صحیح)

This tradition has also been transmitted by Zaid bin Thabit through a different chain of narrators to the same effect. Abu Dawud said: Zaid was imam (in a prayer) and he did not make prostration.
USC-MSA web (English) Reference: Book 7 , Number 1400
3- باب مَنْ رَأَى فِيهَا السُّجُودَ
باب: سورۃ النجم میں سجدہ ہے اس کے قائلین کی دلیل کا بیان۔
CHAPTER: A View That There Is Prostration In Mufassal Surahs.
حدیث نمبر: 1406
حَدَّثَنَا حَفْصُ بْنُ عُمَرَ، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنَا شُعْبَةُ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أَبِي إِسْحَاقَ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ الْأَسْوَدِ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ عَبْدِ اللَّهِ، ‏‏‏‏‏‏أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ"قَرَأَ سُورَةَ النَّجْمِ فَسَجَدَ فِيهَا، ‏‏‏‏‏‏وَمَا بَقِيَ أَحَدٌ مِنَ الْقَوْمِ إِلَّا سَجَدَ، ‏‏‏‏‏‏فَأَخَذَ رَجُلٌ مِنَ الْقَوْمِ كَفًّا مِنْ حَصًى أَوْ تُرَابٍ فَرَفَعَهُ إِلَى وَجْهِهِ، ‏‏‏‏‏‏وَقَالَ يَكْفِينِي هَذَا"، ‏‏‏‏‏‏قَالَ عَبْدُ اللَّهِ:‏‏‏‏ فَلَقَدْ رَأَيْتُهُ بَعْدَ ذَلِكَ قُتِلَ كَافِرًا.
عبداللہ بن مسعود رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے سورۃ النجم پڑھی اور اس میں سجدہ کیا اور لوگوں میں سے کوئی بھی ایسا نہ رہا جس نے سجدہ نہ کیا ہو، البتہ ایک شخص نے تھوڑی سی ریت یا مٹی مٹھی میں لی اور اسے اپنے منہ (یعنی پیشانی) تک اٹھایا اور کہنے لگا: میرے لیے اتنا ہی کافی ہے۔ عبداللہ بن مسعود رضی اللہ عنہ کہتے ہیں: میں نے اس کے بعد اسے دیکھا کہ وہ حالت کفر میں قتل کیا گیا۔

تخریج دارالدعوہ: صحیح البخاری/سجود القرآن ۱ (۱۰۷۲)، ۴ (۱۰۷۳)، ومناقب الأنصار ۲۹ (۳۸۵۳)، والمغازي ۸ (۳۹۷۲)، وتفسیر النجم ۴ (۴۸۶۲)، صحیح مسلم/المساجد۲۰ (۵۷۶)، سنن النسائی/الافتتاح ۴۹ (۹۶۰)، (تحفة الأشراف:۹۱۸۰)، وقد أخرجہ: مسند احمد (۱/۳۸۸، ۴۰۱، ۴۴۳، ۴۶۲) دي /الصلاة ۱۶۰ (۱۵۰۶) (صحیح)

Narrated Abdullah (bin Masud): The Messenger of Allah ﷺ recited Surah al-Najm and prostrated himself. No one remained there who did not prostrate (along with him). A man from the people took a handful of pebbles or dust and raised it to his face saying: This is enough for me. Abdullah (bin Masud) said: I later saw him killed as an infidel.
USC-MSA web (English) Reference: Book 7 , Number 1401

قال الشيخ الألباني: صحيح
4- باب السُّجُودِ فِي ‏{‏ إِذَا السَّمَاءُ انْشَقَّتْ ‏}‏ وَ ‏{‏ اقْرَأْ ‏}‏
باب: سورۃ ”انشقاق“ اور سورۃ ”علق“ میں سجدے کا بیان۔
CHAPTER: Prostration In Surah’s Inshiqaq And Iqra’.
حدیث نمبر: 1407
حَدَّثَنَا مُسَدَّدٌ، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنَا سُفْيَانُ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أَيُّوبَ بْنِ مُوسَى، ‏‏‏‏‏‏عَنْ عَطَاءِ بْنِ مِينَاءَ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ "سَجَدْنَا مَعَ رَسُولِ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ فِي:‏‏‏‏ إِذَا السَّمَاءُ انْشَقَّتْ وَ اقْرَأْ بِاسْمِ رَبِّكَ الَّذِي خَلَقَ".
ابوہریرہ رضی اللہ عنہ کہتے ہیں ہم نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے ساتھ سورۃ «إذا السماء انشقت» اور «‏‏‏‏اقرأ باسم ربك الذي خلق» میں سجدہ کیا۔ ابوداؤد کہتے ہیں: ابوہریرہ چھ ہجری میں غزوہ خیبر کے سال اسلام لائے اور رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے یہ سجدے آپ کے آخری فعل ہیں۔

تخریج دارالدعوہ: صحیح مسلم/المساجد ۲۰ (۵۷۸)، سنن الترمذی/الصلاة ۲۸۵ (الجمعة ۵۰) (۵۷۳ و ۵۷۴)، سنن النسائی/الافتتاح ۵۲ (۹۶۸)، سنن ابن ماجہ/إقامة الصلاة ۷۱ (۱۰۵۸و ۱۰۵۹)، (تحفة الأشراف:۱۴۲۰۶)، وقد أخرجہ: صحیح البخاری/الأذان ۱۰۰(۷۶۶)، موطا امام مالک/القرآن ۵ (۱۲)، مسند احمد (۲/۲۴۹، ۴۶۱)، سنن الدارمی/الصلاة ۱۶۳ (۱۵۱۲) (صحیح)

Narrated Abu Hurairah: We prostrated ourselves along with the Messenger of Allah ﷺ on account of: "When the sky is rent asunder" and "Recite in the name of Your Lord Who created"
USC-MSA web (English) Reference: Book 7 , Number 1402

قال الشيخ الألباني: صحيح
حدیث نمبر: 1408
حَدَّثَنَا مُسَدَّدٌ، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنَا الْمُعْتَمِرُ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ سَمِعْتُ أَبِي، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنَا بَكْرٌ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أَبِي رَافِعٍ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ صَلَّيْتُ مَعَ أَبِي هُرَيْرَةَ الْعَتَمَةَ، ‏‏‏‏‏‏فَقَرَأَ:‏‏‏‏ إِذَا السَّمَاءُ انْشَقَّتْ، ‏‏‏‏‏‏فَسَجَدَ، ‏‏‏‏‏‏فَقُلْتُ:‏‏‏‏ مَا هَذِهِ السَّجْدَةُ؟ قَالَ:‏‏‏‏ "سَجَدْتُ بِهَا خَلْفَ أَبِي الْقَاسِمِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ، ‏‏‏‏‏‏فَلَا أَزَالُ أَسْجُدُ بِهَا حَتَّى أَلْقَاهُ"‏.‏
ابورافع نفیع الصائغ بصریٰ کہتے ہیں کہ میں نے ابوہریرہ رضی اللہ عنہ کے ساتھ عشاء پڑھی، آپ نے «إذا السماء انشقت» کی تلاوت کی اور سجدہ کیا، میں نے کہا: یہ سجدہ کیسا ہے؟ انہوں نے جواب دیا: میں نے یہ سجدہ ابوالقاسم صلی اللہ علیہ وسلم کے پیچھے (نماز پڑھتے ہوئے) کیا ہے اور میں برابر اسے کرتا رہوں گا یہاں تک کہ آپ سے جا ملوں۔

تخریج دارالدعوہ: صحیح البخاری/الأذان ۱۰۰(۷۶۶)، صحیح مسلم/المساجد ۲۰ (۵۷۸)، سنن النسائی/الافتتاح ۵۳ (۹۶۹)، (تحفة الأشراف: ۱۴۶۴۹)، وقد أخرجہ: مسند احمد (۲/۲۲۹، ۲۵۶، ۲۶۶) (صحیح)

Narrated Abu Rafi: I offered the night prayer behind Abu Hurairah. He recited Surah Inshiqaq ("When the sky is rent asunder") and prostrated himself. I asked him: What is this prostration ? He replied: I prostrated myself on account of this (surah) behind Abu al-Qasim (i. e. the Prophet). I shall continue prostrating on account of this till I meet him.
USC-MSA web (English) Reference: Book 7 , Number 1403

قال الشيخ الألباني: صحيح
5- باب السُّجُودِ فِي ‏{‏ ص ‏}‏
باب: سورۃ ”ص“ میں سجدے کا بیان۔
CHAPTER: The Prostration In Surah Sad.
حدیث نمبر: 1409
حَدَّثَنَا مُوسَى بْنُ إِسْمَاعِيلَ، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنَا وُهَيْبٌ، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنَا أَيُّوبُ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ عِكْرِمَةَ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ ابْنِ عَبَّاسٍ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ لَيْسَ ص مِنْ عَزَائِمِ السُّجُودِ، ‏‏‏‏‏‏وَقَدْ رَأَيْتُ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ"يَسْجُدُ فِيهَا".
عبداللہ بن عباس رضی اللہ عنہما کہتے ہیں کہ سورۃ ص کا سجدہ تاکیدی سجدوں میں سے نہیں لیکن میں نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کو اس میں سجدہ کرتے دیکھا ہے۔

تخریج دارالدعوہ: صحیح البخاری/سجود القرآن ۳ (۱۰۶۹)، سنن الترمذی/الصلاة ۲۸۸ (الجمعة ۵۳) (۵۷۷)، سنن النسائی/الافتتاح ۴۸ (۹۵۸)، (تحفة الأشراف:۵۹۸۸)، وقد أخرجہ: سنن الدارمی/الصلاة ۱۶۱ (۱۵۰۸) (صحیح)

Narrated Ibn Abbas: A prostration when reciting Sad is not one of those which are divinely commanded, but I have seen Messenger of Allah ﷺ prostrate himself.
USC-MSA web (English) Reference: Book 7 , Number 1404

قال الشيخ الألباني: صحيح
حدیث نمبر: 1410
حَدَّثَنَا أَحْمَدُ بْنُ صَالِحٍ، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنَا ابْنُ وَهْبٍ، ‏‏‏‏‏‏أَخْبَرَنِي عَمْرٌو يَعْنِي ابْنَ الْحَارِثِ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ ابْنِ أَبِي هِلَالٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ عِيَاضِ بْنِ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ سَعْدِ بْنِ أَبِي سَرْحٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أَبِي سَعِيدٍ الْخُدْرِيِّ، ‏‏‏‏‏‏أَنَّهُ قَالَ:‏‏‏‏ قَرَأَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ وَهُوَ عَلَى الْمِنْبَرِ ص، ‏‏‏‏‏‏فَلَمَّا بَلَغَ السَّجْدَةَ نَزَلَ فَسَجَدَ وَسَجَدَ النَّاسُ مَعَهُ، ‏‏‏‏‏‏فَلَمَّا كَانَ يَوْمٌ آخَرُ قَرَأَهَا فَلَمَّا بَلَغَ السَّجْدَةَ تَشَزَّنَ النَّاسُ لِلسُّجُودِ، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ النَّبِيُّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ "إِنَّمَا هِيَ تَوْبَةُ نَبِيٍّ، ‏‏‏‏‏‏وَلَكِنِّي رَأَيْتُكُمْ تَشَزَّنْتُمْ لِلسُّجُودِ، ‏‏‏‏‏‏فَنَزَلَ، ‏‏‏‏‏‏فَسَجَدَ وَسَجَدُوا".
ابو سعید خدری رضی اللہ عنہ کہتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے سورۃ ص پڑھی، آپ منبر پر تھے جب سجدہ کے مقام پر پہنچے تو اترے، سجدہ کیا، لوگوں نے بھی آپ صلی اللہ علیہ وسلم کے ساتھ سجدہ کیا، پھر ایک دن کی بات ہے کہ آپ نے اس سورۃ کی تلاوت کی، جب سجدہ کے مقام پر پہنچے تو لوگ سجدے کے لیے تیار ہو گئے، اس پر نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: یہ سجدہ دراصل ایک نبی ۱؎ کی توبہ تھی، لیکن میں دیکھ رہا ہوں کہ تم لوگ سجدے کے لیے تیار ہو رہے ہو، چنانچہ آپ اترے، سجدہ کیا، لوگوں نے بھی سجدہ کیا۔

تخریج دارالدعوہ: تفرد بہ أبو داو د، (تحفة الأشراف:۴۲۷۶)، وقد أخرجہ: سنن الدارمی/الصلاة ۱۶۱ (۱۵۰۷) (صحیح)

وضاحت: وضاحت: اس سے مراد داود علیہ السلام ہیں۔

Narrated Saeed al-Khudri: The Messenger of Allah ﷺ recited surah Sad on the pulpit. When he reached the place of prostration (in the surah), he descended and prostrated himself and the people prostrated with him. When the next day came, he recited it. When he reached the place of prostration (in the surah), the people became ready for prostration. Thereupon the Messenger of Allah ﷺ said: This is the repentance of a Prophet ; but I saw you being ready for prostration. So he descended and prostrated himself and the people prostrated along with him.
USC-MSA web (English) Reference: Book 7 , Number 1405

قال الشيخ الألباني: صحيح