كتاب الإجارة
کتاب: اجارے کے احکام و مسائل
Wages (Kitab Al-Ijarah)

30- باب فِي ثَمَنِ الْخَمْرِ وَالْمَيْتَةِ
باب: شراب اور مردار کی قیمت لینا حرام ہے۔
CHAPTER: Regarding The Price Of Khamr And Deat Meat.
حدیث نمبر: 3486
حَدَّثَنَا قُتَيْبَةُ بْنُ سَعِيدٍ، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنَا اللَّيْثُ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ يَزِيدَ بْنِ أَبِي حَبِيبٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ عَطَاءِ بْنِ أَبِي رَبَاحٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ جَابِرِ بْنِ عَبْدِ اللَّهِ، ‏‏‏‏‏‏أَنَّهُ سَمِعَ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ، ‏‏‏‏‏‏يَقُولُ عَامَ الْفَتْحِ وَهُوَ بِمَكَّةَ:‏‏‏‏ "إِنَّ اللَّهَ حَرَّمَ بَيْعَ الْخَمْرِ وَالْمَيْتَةَ وَالْخِنْزِيرَ وَالْأَصْنَامَ، ‏‏‏‏‏‏فَقِيلَ:‏‏‏‏ يَا رَسُولَ اللَّهِ، ‏‏‏‏‏‏أَرَأَيْتَ شُحُومَ الْمَيْتَةِ فَإِنَّهُ يُطْلَى بِهَا السُّفُنُ، ‏‏‏‏‏‏وَيُدْهَنُ بِهَا الْجُلُودُ، ‏‏‏‏‏‏وَيَسْتَصْبِحُ بِهَا النَّاسُ، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ:‏‏‏‏ لَا، ‏‏‏‏‏‏هُوَ حَرَامٌ، ‏‏‏‏‏‏ثُمَّ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ عِنْدَ ذَلِكَ:‏‏‏‏ قَاتَلَ اللَّهُ الْيَهُودَ، ‏‏‏‏‏‏إِنَّ اللَّهَ لَمَّا حَرَّمَ عَلَيْهِمْ شُحُومَهَا أَجْمَلُوهُ، ‏‏‏‏‏‏ثُمَّ بَاعُوهُ فَأَكَلُوا ثَمَنَهُ".
جابر بن عبداللہ رضی اللہ عنہما کہتے ہیں کہ انہوں نے فتح مکہ کے سال رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کو فرماتے ہوئے سنا (آپ مکہ میں تھے): اللہ نے شراب، مردار، سور اور بتوں کے خریدنے اور بیچنے کو حرام کیا ہے عرض کیا گیا: اللہ کے رسول! مردار کی چربی کے بارے میں آپ کیا فرماتے ہیں؟ (اس سے تو بہت سے کام لیے جاتے ہیں) اس سے کشتیوں پر روغن آمیزی کی جاتی ہے، اس سے کھال نرمائی جاتی ہے، لوگ اس سے چراغ جلاتے ہیں، آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: نہیں (ان سب کے باوجود بھی) وہ حرام ہے پھر آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے اسی موقع پر فرمایا: اللہ تعالیٰ یہود کو تباہ و برباد کرے، اللہ نے ان پر جانوروں کی چربی جب حرام کی تو انہوں نے اسے پگھلایا پھر اسے بیچا اور اس کے دام کھائے۔

تخریج دارالدعوہ: صحیح البخاری/البیوع ۱۱۲ (۲۲۳۶)، المغازي ۵۱ (۴۲۹۶)، تفسیر سورة الأنعام ۶ (۴۶۳۳)، صحیح مسلم/المساقاة ۱۳ (۱۵۸۱)، سنن الترمذی/البیوع ۶۱ (۱۲۹۷)، سنن النسائی/الفرع والعتیرة ۷ (۴۲۶۱)، البیوع ۹۱ (۴۶۷۳)، سنن ابن ماجہ/التجارات ۱۱ (۲۱۶۷)، (تحفة الأشراف: ۲۴۹۴)، وقد أخرجہ: مسند احمد (۳/۳۲۴، ۳۲۶، ۳۷۰) (صحیح)

Narrated Jabir bin Abdullah: That he heard the Messenger of Allah ﷺ say in the year of the Conquest when he was in Makkah: Allah has forbidden the sale of wine, animals which have dead natural death, swine and idols. He was asked: Messenger of Allah, what do you think of the fat of animals which had died a natural death, for it was used for caulking ships, greasing skins, and making oil for lamps? He replies: No, it is forbidden. Thereafter, the Messenger of Allah ﷺ said: May Allah curse the Jews! When Allah declared the fat of such animals lawful, they melted it, then sold it, and enjoyed the price they received.
USC-MSA web (English) Reference: Book 23 , Number 3479

قال الشيخ الألباني: صحيح
حدیث نمبر: 3487
حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ بَشَّارٍ، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنَا أَبُو عَاصِمٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ عَبْدِ الْحَمِيدِ بْنِ جَعْفَرٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ يَزِيدَ بْنِ أَبِي حَبِيبٍ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ كَتَبَ إِلَيَّ عَطَاءٌ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ جَابِرٍ، ‏‏‏‏‏‏نَحْوَهُ، ‏‏‏‏‏‏لَمْ يَقُلْ هُوَ حَرَامٌ.
اس سند سے بھی جابر رضی اللہ عنہ سے اسی طرح کی حدیث مروی ہے مگر اس میں انہوں نے «هو حرام» نہیں کہا ہے۔

تخریج دارالدعوہ: انظر ما قبلہ، (تحفة الأشراف: ۲۴۹۴) (صحیح)

Yazid bin Abi Habib said: Jabir wrote to me a similar tradition. But he did not say in this version "It is forbidden. "
USC-MSA web (English) Reference: Book 23 , Number 3480
حدیث نمبر: 3488
حَدَّثَنَا مُسَدَّدٌ، ‏‏‏‏‏‏أَنَّ بِشْرَ بْنَ الْمُفَضَّلِ، ‏‏‏‏‏‏وَخَالِدَ بْنَ عَبْدِ اللَّهِ، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَاهُمُ الْمَعْنَى عَنْ خَالِدٍ الْحَذَّاءِ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ بَرَكَةَ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ مُسَدَّدٌ فِي حَدِيثِ، ‏‏‏‏‏‏خَالِدِ بْنِ عَبْدِ اللَّهِ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ بَرَكَةَ أَبِي الْوَلِيدِ ثُمَّ اتَّفَقَا، ‏‏‏‏‏‏عَنِ ابْنِ عَبَّاسٍ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ رَأَيْتُ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ جَالِسًا عِنْدَ الرُّكْنِ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ فَرَفَعَ بَصَرَهُ إِلَى السَّمَاءِ فَضَحِكَ، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ:‏‏‏‏ "لَعَنَ اللَّهُ الْيَهُودَ ثَلَاثًا:‏‏‏‏ إِنَّ اللَّهَ حَرَّمَ عَلَيْهِمُ الشُّحُومَ فَبَاعُوهَا، ‏‏‏‏‏‏وَأَكَلُوا أَثْمَانَهَا، ‏‏‏‏‏‏وَإِنَّ اللَّهَ إِذَا حَرَّمَ عَلَى قَوْمٍ أَكْلَ شَيْءٍ حَرَّمَ عَلَيْهِمْ ثَمَنَهُ". وَلَمْ يَقُلْ فِي حَدِيثِ خَالِدِ بْنِ عَبْدِ اللَّهِ الطَّحَّانِ رَأَيْتُ، ‏‏‏‏‏‏وَقَالَ:‏‏‏‏ "قَاتَلَ اللَّهُ الْيَهُودَ".
عبداللہ بن عباس رضی اللہ عنہما کہتے ہیں کہ میں نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کو رکن (حجر اسود) کے پاس بیٹھا ہوا دیکھا، آپ نے اپنی نگاہیں آسمان کی طرف اٹھائیں پھر ہنسے اور تین بار فرمایا: اللہ یہود پر لعنت فرمائے، اللہ نے ان پر جانوروں کی چربی حرام کی (تو انہوں نے چربی تو نہ کھائی) لیکن چربی بیچ کر اس کے پیسے کھائے، اللہ تعالیٰ نے جب کسی قوم پر کسی چیز کے کھانے کو حرام کیا ہے، تو اس قوم پر اس کی قیمت لینے کو بھی حرام کر دیا ہے۔ خالد بن عبداللہ (خالد بن عبداللہ طحان) کی حدیث میں دیکھنے کا ذکر نہیں ہے اور اس میں: «لعن الله اليهود» کے بجائے: «قال ‏"‏ قاتل الله اليهود» ہے۔

تخریج دارالدعوہ: تفرد بہ أبو داود، (تحفة الأشراف: ۵۳۷۲)، وقد أخرجہ: مسند احمد (۱/۲۴۷، ۲۹۳، ۳۲۲) (صحیح)

Narrated Ibn Abbas: I saw the Messenger of Allah ﷺ sitting neat the Black stone (or at a corner of the Kabah). He said: He (the Prophet) raised his eyes towards the heaven, and laughed, and he said: May Allah curse the Jews! He said this three times. Allah declared unlawful for them the fats (of the animals which died a natural death); they sold them and they enjoyed the price they received for them. When Allah declared eating of thing forbidden for the people, He declares it price also forbidden for them. The version of Khalid bin Abdullah al-Tahhan does not have the words "I saw". It has: "May Allah destroy the Jews!"
USC-MSA web (English) Reference: Book 23 , Number 3481

قال الشيخ الألباني: صحيح
حدیث نمبر: 3489
حَدَّثَنَا عُثْمَانُ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا ابْنُ إِدْرِيسَ، ‏‏‏‏‏‏وَوَكِيعٌ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ طُعْمَةَ بْنِ عَمْرٍو الْجَعْفَرِيِّ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ عُمَرَ بْنِ بَيَانٍ التَّغْلِبِيِّ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ عُرْوَةَ بْنِ الْمُغِيرَةِ بْنِ شُعْبَةَ، ‏‏‏‏‏‏عَنِ الْمُغِيرَةِ بْنِ شُعْبَةَ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ "مَنْ بَاعَ الْخَمْرَ فَلْيُشَقِّصْ الْخَنَازِيرَ".
مغیرہ بن شعبہ رضی اللہ عنہ کہتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: جو شراب بیچے اسے سور کا گوشت بھی کاٹنا (اور بیچنا) چاہیئے (اس لیے کہ دونوں ہی چیزیں حرمت میں برابر ہیں) ۔

تخریج دارالدعوہ: تفرد بہ أبوداود، (تحفة الأشراف: ۱۱۵۱۵)، وقد أخرجہ: مسند احمد (۴/۲۵۳)، سنن الدارمی/الأشربة ۹ (۲۱۴۷) (ضعیف) (اس کے راوی عمر بن بیان لین الحدیث ہیں)

Narrated Al-Mughirah ibn Shubah: The Prophet ﷺ said: He who sold wine should shear the flesh of swine.
USC-MSA web (English) Reference: Book 23 , Number 3482

قال الشيخ الألباني: ضعيف
حدیث نمبر: 3490
حَدَّثَنَا مُسْلِمُ بْنُ إِبْرَاهِيمَ، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنَا شُعْبَةُ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ سُلَيْمَانَ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أَبِي الضُّحَى، ‏‏‏‏‏‏عَنْ مَسْرُوقٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ عَائِشَةَ، ‏‏‏‏‏‏قَالَتْ:‏‏‏‏ "لَمَّا نَزَلَتِ الْآيَاتُ الْأَوَاخِرُ مِنْ سُورَةِ الْبَقَرَةِ، ‏‏‏‏‏‏خَرَجَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ فَقَرَأَهُنَّ عَلَيْنَا، ‏‏‏‏‏‏وَقَالَ:‏‏‏‏ حُرِّمَتِ التِّجَارَةُ فِي الْخَمْرِ".
ام المؤمنین عائشہ رضی اللہ عنہا فرماتی ہیں کہ سورۃ البقرہ کی آخری آیتیں: «يسألونك عن الخمر والميسر...» اتریں، تو رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم تشریف لائے اور آپ نے یہ آیتیں ہم پر پڑھیں اور فرمایا: شراب کی تجارت حرام کر دی گئی ہے۔

تخریج دارالدعوہ: صحیح البخاری/الصلاة ۷۳ (۴۵۹)، والبیوع ۲۵ (۲۰۸۴)، ۱۰۵ (۲۲۲۶)، وتفسیر آل عمران ۴۹ (۴۵۴۰)، ۵۲ (۴۵۴۳)، صحیح مسلم/المساقاة ۱۲ (۱۵۸۰)، سنن النسائی/البیوع ۸۹ (۴۶۶۹)، سنن ابن ماجہ/الأشربة ۷ (۳۳۸۲)، (تحفة الأشراف: ۱۷۶۳۶)، وقد أخرجہ: مسند احمد (۶/۴۶، ۱۰۰، ۱۲۷، ۱۸۶، ۱۹۰، ۲۸۷)، سنن الدارمی/البیوع ۳۵ (۲۶۱۲) (صحیح)

Narrated Aishah: When the last verses of Surat al-Baqarah were revealed, the Messenger of Allah ﷺ came out and recited them to us and siad: Trading in wine has been forbidden.
USC-MSA web (English) Reference: Book 23 , Number 3483

قال الشيخ الألباني: صحيح
حدیث نمبر: 3491
حَدَّثَنَا عُثْمَانُ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنَا أَبُو مُعَاوِيَةَ، ‏‏‏‏‏‏عَنِ الْأَعْمَشِ بِإِسْنَادِه وَمَعْنَاهُ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ الْآيَاتُ الْأَوَاخِرُ فِي الرِّبَا.
اعمش سے بھی اسی سند سے اسی مفہوم کی حدیث مروی ہے اس میں «الآيات الأواخر من سورة البقرہ» ‏‏‏‏ کے بجائے «الآيات الأواخر في الربا» ہے۔

تخریج دارالدعوہ: انظر ما قبلہ، (تحفة الأشراف: ۱۷۶۳۶) (صحیح)

The tradition mentioned above has also been transmitted by al-Amash to the same effect through a different chain of narrators. This version adds: "The last verses about usury. "
USC-MSA web (English) Reference: Book 23 , Number 3484

قال الشيخ الألباني: صحيح
31- باب فِي بَيْعِ الطَّعَامِ قَبْلَ أَنْ يُسْتَوْفَى
باب: قبضہ سے پہلے غلہ بیچنا منع ہے۔
CHAPTER: Regarding Selling Food Before Taking Possession Of It.
حدیث نمبر: 3492
حَدَّثَنَا عَبْدُ اللَّهِ بْنُ مَسْلَمَةَ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ مَالِكٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ نَافِعٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنِ ابْنِ عُمَرَ، ‏‏‏‏‏‏أَنّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ "مَنِ ابْتَاعَ طَعَامًا، ‏‏‏‏‏‏فَلَا يَبِعْهُ حَتَّى يَسْتَوْفِيَهُ".
عبداللہ بن عمر رضی اللہ عنہما کہتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: جو کھانے کا غلہ خریدے وہ اسے اس وقت تک نہ بیچے جب تک کہ اسے پورے طور سے اپنے قبضہ میں نہ لے لے ۱؎۔

تخریج دارالدعوہ: صحیح البخاری/البیوع ۵۱ (۲۱۲۶)، ۵۴ (۲۱۳۳)، ۵۵ (۲۱۳۶)، صحیح مسلم/البیوع ۸ (۱۵۲۶)، سنن النسائی/البیوع ۵۳ (۴۵۹۹)، سنن ابن ماجہ/التجارات ۳۷ (۲۲۲۶)، (تحفة الأشراف: ۸۳۲۷)، وقد أخرجہ: موطا امام مالک/البیوع ۱۹ (۴۰)، مسند احمد (۱/۵۶، ۶۳، ۲/۲۳، ۴۶، ۵۹، ۶۴، ۷۳، ۷۹، ۱۰۸، ۱۱۱، ۱۱۳)، سنن الدارمی/البیوع ۲۶ (۲۶۰۲) (صحیح)

وضاحت: ۱؎: جمہور علماء کا کہنا ہے کہ یہ حکم ہر بیچی جانے والی شے کے لئے عام ہے لہٰذا خریدی گئی چیز میں اس وقت تک کسی طرح کا تصرف جائز نہیں جب تک کہ اسے پورے طور سے قبضہ میں نہ لے لیا جائے یا جہاں خریدا ہے وہاں سے اسے منتقل نہ کر لیا جائے۔

Narrated Ibn Umar: The Messenger of Allah ﷺ as saying: If anyone buys grain, he must not sell it till receives it in full.
USC-MSA web (English) Reference: Book 23 , Number 3485

قال الشيخ الألباني: صحيح
حدیث نمبر: 3493
حَدَّثَنَا عَبْدُ اللَّهِ بْنُ مَسْلَمَةَ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ مَالِكٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ نَافِعٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنِ ابْنِ عُمَر، ‏‏‏‏‏‏أَنَّهُ قَالَ:‏‏‏‏ "كُنَّا فِي زَمَنِ رَسُولِ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ نَبْتَاعُ الطَّعَامَ، ‏‏‏‏‏‏فَيَبْعَثُ عَلَيْنَا مَنْ يَأْمُرُنَا بِانْتِقَالِهِ مِنَ الْمَكَانِ الَّذِي ابْتَعْنَاهُ فِيهِ إِلَى مَكَانٍ سِوَاهُ، ‏‏‏‏‏‏قَبْلَ أَنْ نَبِيعَهُ"يَعْنِي جُزَافًا.
عبداللہ بن عمر رضی اللہ عنہما کہتے ہیں ہم رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے زمانہ میں غلہ خریدتے تھے، تو آپ ہمارے پاس (کسی شخص کو) بھیجتے وہ ہمیں اس بات کا حکم دیتا کہ غلہ اس جگہ سے اٹھا لیا جائے جہاں سے ہم نے اسے خریدا ہے اس سے پہلے کہ ہم اسے بیچیں یعنی اندازے سے۔

تخریج دارالدعوہ: صحیح مسلم/البیوع ۸ (۱۵۲۷)، سنن النسائی/البیوع ۵۵ (۴۶۰۹)، سنن ابن ماجہ/التجارات ۳۱ (۲۲۲۹)، (تحفة الأشراف: ۸۳۷۱)، وقد أخرجہ: صحیح البخاری/البیوع ۵۴ (۲۱۳۱)، ۵۶ (۲۱۳۷)، ۷۲ (۲۱۶۶)، موطا امام مالک/البیوع ۱۹ (۴۲)، مسند احمد (۱/۵۶، ۱۱۲، ۲/۷، ۱۵، ۲۱، ۴۰، ۵۳، ۱۴۲، ۱۵۰، ۱۵۷) (صحیح)

Narrated Ibn Umar: During the time of Messenger of Allah ﷺ we used to buy grain, and he sent a man to us who ordered us to move it from the spot where we had bought it to some other place, before we sold it without weighing or measuring it.
USC-MSA web (English) Reference: Book 23 , Number 3486

قال الشيخ الألباني: صحيح
حدیث نمبر: 3494
حَدَّثَنَا أَحْمَدُ بْنُ حَنْبَلٍ، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنَا يَحْيَى، ‏‏‏‏‏‏عَنْ عُبَيْدِ اللَّهِ، ‏‏‏‏‏‏أَخْبَرَنِي نَافِعٌ، ‏‏‏‏‏‏عَنِ ابْنِ عُمَرَ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ "كَانُوا يَتَبَايَعُونَ الطَّعَامَ جُزَافًا بِأَعْلَى السُّوقِ، ‏‏‏‏‏‏فَنَهَى رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ أَنْ يَبِيعُوهُ حَتَّى يَنْقُلُوهُ".
عبداللہ بن عمر رضی اللہ عنہما کہتے ہیں لوگ اٹکل سے بغیر ناپے تولے (ڈھیر کے ڈھیر) بازار کے بلند علاقے میں غلہ خریدتے تھے تو رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے اسے بیچنے سے منع فرمایا جب تک کہ وہ اسے اس جگہ سے منتقل نہ کر لیں (تاکہ مشتری کا پہلے اس پر قبضہ ثابت ہو جائے پھر بیچے) ۔

تخریج دارالدعوہ: صحیح البخاری/ البیوع ۷۲ (۲۱۶۷)، سنن النسائی/ البیوع ۵۵ (۴۶۱۰)، (تحفة الأشراف: ۸۱۵۴)، وقد أخرجہ: مسند احمد (۲/۱۵، ۲۱) (صحیح)

Ibn Umar said: They (the people) used to buy grain in the upper part of the market in the same spot without measuring or weighing it. The Messenger of Allah ﷺ forbade them to sell it there before removing it.
USC-MSA web (English) Reference: Book 23 , Number 3487

قال الشيخ الألباني: صحيح
حدیث نمبر: 3495
حَدَّثَنَا أَحْمَدُ بْنُ صَالِحٍ، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنَا ابْنُ وَهْبٍ، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنَا عَمْرٌو، ‏‏‏‏‏‏عَنِ الْمُنْذِرِ بْنِ عُبَيْدٍ الْمَدِينِيِّ، ‏‏‏‏‏‏أَنَّ الْقَاسِمَ بْنَ مُحَمَّدٍ، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَهُ، ‏‏‏‏‏‏أَنَّ عَبْدَ اللَّهِ بْنَ عُمَرَ حَدَّثَهُ، ‏‏‏‏‏‏أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ"نَهَى أَنْ يَبِيعَ أَحَدٌ طَعَامًا اشْتَرَاهُ بِكَيْلٍ حَتَّى يَسْتَوْفِيَهُ".
عبداللہ بن عمر رضی اللہ عنہما بیان کرتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے غلہ کو جسے کسی نے ناپ تول کر خریدا ہو، جب تک اسے اپنے قبضہ و تحویل میں پوری طرح نہ لے لے بیچنے سے منع فرمایا ہے۔

تخریج دارالدعوہ: سنن النسائی/ البیوع ۵۴ (۴۶۰۸)، (تحفة الأشراف: ۷۳۷۵)، وقد أخرجہ: مسند احمد (۲/۱۱۱) (صحیح)

Narrated Abdullah ibn Umar: The Messenger of Allah ﷺ forbade to sell grain which one buys by measurement until one receives it in full.
USC-MSA web (English) Reference: Book 23 , Number 3488

قال الشيخ الألباني: صحيح