كتاب الطلاق
کتاب: طلاق کے احکام و مسائل
.

1- بَابُ: الطَّلاَقِ
باب: ہمیں سوید بن سعید نے بیان کیا۔
حدیث نمبر: 2016
حَدَّثَنَا سُوَيْدُ بْنُ سَعِيدٍ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏ وَعَبْدُ اللَّهِ بْنُ عَامِرِ بْنِ زُرَارَةَ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏ وَمَسْرُوقُ بْنُ الْمَرْزُبَانِ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏قَالُوا:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا يَحْيَى بْنُ زَكَرِيَّا بْنِ أَبِي زَائِدَةَ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏عَنْ صَالِحِ بْنِ صَالِحِ بْنِ حَيٍّ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏عَنْ سَلَمَةَ بْنِ كُهَيْلٍ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏عَنْ سَعِيدِ بْنِ جُبَيْرٍ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏عَنْ ابْنِ عَبَّاسٍ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏عَنْ عُمَرَ بْنِ الْخَطَّابِ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏"أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ طَلَّقَ حَفْصَةَ، ‏‏‏‏‏‏ثُمَّ رَاجَعَهَا".
عمر بن خطاب رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے ام المؤمنین حفصہ رضی اللہ عنہا کو طلاق دے دی پھر رجوع کر لیا۔

تخریج دارالدعوہ: سنن ابی داود/الطلاق ۳۸ (۲۲۸۳)، سنن النسائی/الطلاق ۷۶ (۳۵۹۰)، (تحفة الأشراف: ۱۰۴۹۳)، وقد أخرجہ: سنن الدارمی/الطلاق ۲ (۲۳۱۰) (صحیح)

قال الشيخ الألباني: صحيح
حدیث نمبر: 2017
حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ بَشَّارٍ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنَا مُؤَمَّلٌ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنَا سُفْيَانُ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أَبِي إِسْحَاق‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أَبِي بُرْدَةَ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أَبِي مُوسَى‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ "مَا بَالُ أَقْوَامٍ يَلْعَبُونَ بِحُدُودِ اللَّهِ، ‏‏‏‏‏‏يَقُولُ أَحَدُهُمْ:‏‏‏‏ قَدْ طَلَّقْتُكِ قَدْ رَاجَعْتُكِ قَدْ طَلَّقْتُكِ".
ابوموسیٰ اشعری رضی اللہ عنہ کہتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ان لوگوں کا کیا حال ہے جو اللہ کے حدود سے کھیل کرتے ہیں، ان میں سے ایک اپنی بیوی سے کہتا ہے: میں نے تجھے طلاق دے دی پھر تجھ سے رجعت کر لی، پھر تجھے طلاق دے دی۔

تخریج دارالدعوہ: تفرد بہ ابن ماجہ، (تحفة الأشراف: ۹۱۲۰، ومصباح الزجاجة: ۷۱۶) (ضعیف) (سند میں مؤمل بن اسماعیل مختلف فیہ راوی ہیں)

قال الشيخ الألباني: ضعيف
حدیث نمبر: 2018
حَدَّثَنَا كَثِيرُ بْنُ عُبَيْدٍ الْحِمْصِيُّ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ خَالِدٍ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏عَنْ عُبَيْدِ اللَّهِ بْنِ الْوَلِيدِ الْوَصَّافِيِّ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏عَنْ مُحَارِبِ بْنِ دِثَارٍ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏عَنْ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ عُمَرَ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ "أَبْغَضُ الْحَلَالِ إِلَى اللَّهِ الطَّلَاقُ".
عبداللہ بن عمر رضی اللہ عنہما کہتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: حلال چیزوں میں اللہ کے نزدیک سب سے زیادہ ناپسندیدہ اور مبغوض چیز طلاق ہے۔

تخریج دارالدعوہ: «سنن ابی داود/الطلاق ۳ (۱۲۷۷، ۱۲۷۸)، (تحفة الأشراف: ۷۴۱۱) (ضعیف) (سند میں عبید اللہ بن الولید ضعیف راوی ہیں، صواب اس حدیث کا مرسل ہونا ہے اور ثقات نے اسے مرسلاً ہی روایت کیا ہے)

قال الشيخ الألباني: ضعيف
2- بَابُ: طَلاَقِ السُّنَّةِ
باب: سنت کے مطابق طلاق دینے کا بیان۔
حدیث نمبر: 2019
حَدَّثَنَا أَبُو بَكْرِ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنَا عَبْدُ اللَّهِ بْنُ إِدْرِيسَ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏عَنْ عُبَيْدِ اللَّهِ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏عَنْ نَافِعٍ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏عَنِ ابْنِ عُمَرَ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ طَلَّقْتُ امْرَأَتِي وَهِيَ حَائِضٌ، ‏‏‏‏‏‏فَذَكَرَ ذَلِكَ عُمَرُ لِرَسُولِ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ فَقَالَ:‏‏‏‏ "مُرْهُ فَلْيُرَاجِعْهَا حَتَّى تَطْهُرَ، ‏‏‏‏‏‏ثُمَّ تَحِيضَ، ‏‏‏‏‏‏ثُمَّ تَطْهُرَ، ‏‏‏‏‏‏ثُمَّ إِنْ شَاءَ طَلَّقَهَا قَبْلَ أَنْ يُجَامِعَهَا، ‏‏‏‏‏‏وَإِنْ شَاءَ أَمْسَكَهَا، ‏‏‏‏‏‏فَإِنَّهَا الْعِدَّةُ الَّتِي أَمَرَ اللَّهُ".
عبداللہ بن عمر رضی اللہ عنہما کہتے ہیں کہ میں نے اپنی بیوی کو حیض کی حالت میں طلاق دے دی، عمر رضی اللہ عنہ نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سے اس کا ذکر کیا تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: انہیں حکم دو کہ اپنی بیوی سے رجوع کر لیں یہاں تک کہ وہ عورت حیض سے پاک ہو جائے پھر اسے حیض آئے، اور اس سے بھی پاک ہو جائے، پھر ابن عمر اگر چاہیں تو جماع سے پہلے اسے طلاق دے دیں، اور اگر چاہیں تو روکے رکھیں یہی عورتوں کی عدت ہے جس کا اللہ نے حکم دیا ہے ۱؎۔

تخریج دارالدعوہ: صحیح مسلم/الطلاق ۱ (۱۴۷۱)، سنن النسائی/الطلاق ۱ (۳۴۱۹)، ۵ (۳۴۲۹)، ۷۶ (۳۵۸۵)، (تحفة الأشراف: ۷۹۲۲)، وقد أخرجہ: صحیح البخاری/ تفسیر الطلاق ۱۳ (۴۹۰۸)، الطلاق ۲ (۵۲۵۲)، ۳ (۵۲۵۸)، ۴۵ (۵۳۳۳)، الأحکام ۱۳ (۷۱۶۰)، سنن ابی داود/الطلاق ۴ (۲۱۷۹)، سنن الترمذی/الطلاق ۱ (۱۱۷۵)، موطا امام مالک/الطلاق ۲۰ (۵۲)، مسند احمد (۲/۴۳، ۵۱، ۷۹)، سنن الدارمی/الطلاق ۱ (۲۳۰۸) (صحیح)

وضاحت: ۱؎: اس سے مراد یہ آیت کریمہ ہے: «يَا أَيُّهَا النَّبِيُّ إِذَا طَلَّقْتُمُ النِّسَاء فَطَلِّقُوهُنَّ لِعِدَّتِهِنَّ وَأَحْصُوا الْعِدَّةَ» (سورة الطلاق: 1) یعنی طلاق دو عورتوں کو ان کی عدت کے یعنی طہر کی حالت میں۔

قال الشيخ الألباني: صحيح
حدیث نمبر: 2020
حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ بَشَّارٍ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنَا يَحْيَى بْنُ سَعِيدٍ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏عَنْ سُفْيَانَ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أَبِي إِسْحَاق‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أَبِي الْأَحْوَصِ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏عَنْ عَبْدِ اللَّهِ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ "طَلَاقُ السُّنَّةِ أَنْ يُطَلِّقَهَا طَاهِرًا مِنْ غَيْرِ جِمَاعٍ".
عبداللہ بن مسعود رضی اللہ عنہ کہتے ہیں کہ طلاق سنی یہ ہے کہ عورت کو اس طہر میں ایک طلاق دے جس میں اس سے جماع نہ کیا ہو ۱؎۔

تخریج دارالدعوہ: «سنن النسائی/الطلاق ۲ (۳۴۲۳)، (تحفة الأشراف: ۹۵۱۱) (صحیح)

وضاحت: ۱؎: تاکہ عورت کو عدت کے حساب میں آسانی ہو، اور اسی طہر سے عدت شروع ہو جائے، تین طہر کے بعد وہ مطلقہ بائنہ ہو جائے گی، عدت ختم ہونے کے بعد وہ دوسرے سے شادی کر سکتی ہے، طلاق سنت یہ ہے کہ عورت کو ایسے طہر میں طلاق دے جس میں جماع نہ کیا ہو، اور شرط یہ ہے کہ اس طہر سے پہلے جو حیض تھا اس میں طلاق نہ دی ہو، یا حمل کی حالت میں جب حمل ظاہر ہو گیا ہو اور اس کے سوا دوسری طرح طلاق دینا (مثلاً حیض کی حالت میں یا طہر کی حالت میں جب جماع کر چکا ہو یا حمل کی حالت میں جب وہ ظاہر نہ ہوا ہو، لیکن شبہ ہو، اسی طرح تین طلاق ایک بار دینا حرام ہے اور اس کا ذکر آگے آئے گا) اور حدیث میں جو ابن عمر رضی اللہ عنہ کو حکم ہوا کہ اس طہر کے بعد دوسرے طہر میں طلاق دیں، تو اس میں یہ حکمت تھی کہ طلاق سے رجعت کا علم نہ ہو تو ایک طہر تک عورت کو رہنے دے، اور بعضوں نے کہا کہ یہ سزا ان کے ناجائز فعل کی دی، اور بعضوں نے کہا یہ طہر اسی حیض سے متعلق تھا جس میں طلاق دی گئی تھی اس لئے دوسرے طہر کا انتظار کرے۔

قال الشيخ الألباني: صحيح
حدیث نمبر: 2021
حَدَّثَنَا عَلِيُّ بْنُ مَيْمُونٍ الرَّقِّيُّ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنَا حَفْصُ بْنُ غِيَاثٍ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏عَنْ الْأَعْمَشِ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أَبِي إِسْحَاق‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أَبِي الْأَحْوَصِ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏عَنْ عَبْدِ اللَّهِ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏قَالَ فِي طَلَاقِ السُّنَّةِ:‏‏‏‏ "يُطَلِّقُهَا عِنْدَ كُلِّ طُهْرٍ تَطْلِيقَةً، ‏‏‏‏‏‏فَإِذَا طَهُرَتِ الثَّالِثَةَ طَلَّقَهَا، ‏‏‏‏‏‏وَعَلَيْهَا بَعْدَ ذَلِكَ حَيْضَةٌ".
عبداللہ بن مسعود رضی اللہ عنہ کہتے ہیں طلاق سنی یہ ہے کہ عورت کو ہر طہر میں ایک طلاق دے، جب تیسری بار پاک ہو تو آخری طلاق دیدے، اور اس کے بعد عدت ایک حیض ہو گی ۱؎۔

تخریج دارالدعوہ: انظر ما قبلہ (صحیح)

وضاحت: ۱؎: اس لئے کہ پہلی اور دوسری طلاق کے بعد دو حیض پہلے گزر چکے ہیں، یہ صورت اس وقت ہے، جب کہ عورت کو تین طلاق دینی ہو، اور بہتر یہ ہے کہ جب عورت حیض سے پاک ہو تو ایک ہی طلاق پر قناعت کرے، تین حیض یا تین طہر گزر جانے کے بعد وہ مطلقہ بائنہ ہو جائے گی۔ اس میں یہ فائدہ ہے کہ اگر مرد عدت گزر جانے کے بعد بھی چاہے تو اس عورت سے نکاح کر سکتا ہے، لیکن تین طلاق دینے کے بعد وہ اس سے اس وقت تک شادی نہیں کر سکتا، جب تک کہ وہ عورت کسی دوسرے سے شادی نہ کر لے، پھر وہ اسے طلاق دے دے۔

قال الشيخ الألباني: صحيح
حدیث نمبر: 2022
حَدَّثَنَا نَصْرُ بْنُ عَلِيٍّ الْجَهْضَمِيُّ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنَا عَبْدُ الْأَعْلَى‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا هِشَامٌ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏عَنْ مُحَمَّدٍ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏عَنْ يُونُسَ بْنِ جُبَيْرٍ أَبِي غَلَّابٍ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ سَأَلْتُ ابْنَ عُمَرَ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏عَنْ رَجُلٍ طَلَّقَ امْرَأَتَهُ وَهِيَ حَائِضٌ، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ:‏‏‏‏ "تَعْرِفُ عَبْدَ اللَّهِ بْنَ عُمَرَ طَلَّقَ امْرَأَتَهُ وَهِيَ حَائِضٌ، ‏‏‏‏‏‏فَأَتَى عُمَرُ النَّبِيَّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ فَأَمَرَهُ أَنْ يُرَاجِعَهَا، ‏‏‏‏‏‏قُلْتُ:‏‏‏‏ أَيُعْتَدُّ بِتِلْكَ؟، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ أَرَأَيْتَ إِنْ عَجَزَ وَاسْتَحْمَقَ".
ابو غلاب یونس بن جبیر کہتے ہیں کہ میں نے ابن عمر رضی اللہ عنہما سے اس شخص کے بارے میں پوچھا جس نے اپنی بیوی کو حیض کی حالت میں طلاق دے دی تو انہوں نے کہا: کیا تم عبداللہ بن عمر رضی اللہ عنہما کو پہچانتے ہو؟ انہوں نے اپنی بیوی کو حیض کی حالت میں طلاق دے دی تھی تو عمر رضی اللہ عنہ نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کے پاس آئے تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے انہیں حکم دیا تھا کہ ابن عمر رجوع کر لیں، میں نے پوچھا: کیا اس طلاق کا شمار ہو گا؟ انہوں نے کہا: تم کیا سمجھتے ہو، اگر وہ عاجز ہو جائے یا دیوانہ ہو جائے (تو کیا وہ شمار نہ ہو گی یعنی ضرور ہو گی)۔

تخریج دارالدعوہ: صحیح البخاری/ الطلاق ۲ (۵۲۵۲)، صحیح مسلم/الطلاق ۱ (۱۴۷۱)، سنن ابی داود/الطلاق ۴ (۲۱۸۳)، سنن النسائی/الطلاق ۵ (۳۴۲۸)، (تحفة الأشراف: ۸۵۷۳)، وقد أخرجہ: مسند احمد (۲/۴۳، ۵۱، ۷۴، ۷۹) (صحیح)

قال الشيخ الألباني: صحيح
3- بَابُ: الْحَامِلِ كَيْفَ تُطَلَّقُ
باب: حاملہ عورت کو طلاق کیسے دی جائے؟
حدیث نمبر: 2023
حَدَّثَنَا أَبُو بَكْرِ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏ وَعَلِيُّ بْنُ مُحَمَّدٍ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏قَالَا:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا وَكِيعٌ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏عَنْ سُفْيَانَ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏عَنْ مُحَمَّدِ بْنِ عَبْدِ الرَّحْمَنِ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏ مَوْلَى آلِ طَلْحَةَ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ سَالِمٍ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏عَنِ ابْنِ عُمَرَ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏أَنَّهُ طَلَّقَ امْرَأَتَهُ وَهِيَ حَائِضٌ، ‏‏‏‏‏‏فَذَكَرَ ذَلِكَ عُمَرُ لِلنَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ فَقَالَ:‏‏‏‏ "مُرْهُ فَلْيُرَاجِعْهَا، ‏‏‏‏‏‏ثُمَّ يُطَلِّقْهَا وَهِيَ طَاهِرٌ، ‏‏‏‏‏‏أَوْ حَامِلٌ".
عبداللہ بن عمر رضی اللہ عنہما سے روایت ہے کہ انہوں نے اپنی بیوی کو حیض کی حالت میں طلاق دے دی، تو عمر رضی اللہ عنہ نے نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم سے اس کا ذکر کیا، تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: انہیں حکم دو کہ رجوع کر لیں، پھر طہر کی یا حمل کی حالت میں طلاق دیں ۱؎۔

تخریج دارالدعوہ: صحیح مسلم/الطلاق ۱ (۱۴۷۱)، سنن ابی داود/الطلاق ۴ (۲۱۸۱)، سنن الترمذی/الطلاق ۱ (۱۱۷۶)، سنن النسائی/الطلاق ۳ (۳۴۲۶)، (تحفة الأشراف: ۶۹۷)، وقد أخرجہ: مسند احمد (۲/۲۶، ۵۸) (صحیح)

وضاحت: ۱؎: کیونکہ اس میں عدت کی آسانی ہے اگر طہر میں طلاق دے اور حاملہ نہ ہو تو تین طہر یا حیض کے بعد مدت گزر جائے گی، اگر حاملہ ہو تو وضع حمل ہوتے ہی عدت ختم جائے گی، عدت کا مقصد یہ ہے کہ حمل کی حالت میں عورت دوسرے شوہر سے جماع نہ کرائے ورنہ بچہ میں دوسرے مرد کا پانی بھی شریک ہو گا، اور یہ معیوب ہے، اس وہم کو دور کرنے کے لئے یہ طریقہ ٹھہرا کہ جس طہر میں جماع نہ کیا جائے اس میں طلاق دے، اور تین حیض تک انتظار اس لئے ہوا کہ کبھی حمل کی حالت میں بھی ایک آدھ بار تھوڑا سا حیض آ جاتا ہے، لیکن جب تک تین حیض برابر آئے تو یقین ہوا کہ وہ حاملہ نہیں ہے، اب دوسرے مرد سے نکاح کرے، یا اگر حاملہ ہو تو وضع حمل ہوتے ہی نکاح کر سکتی ہے اگرچہ طلاق یا شوہر کی موت سے متصل ہی وضع حمل ہو۔

قال الشيخ الألباني: صحيح
4- بَابُ: مَنْ طَلَّقَ ثَلاَثًا فِي مَجْلِسٍ وَاحِدٍ
باب: جس نے ایک مجلس میں تین طلاقیں دیں اس کے حکم کا بیان۔
حدیث نمبر: 2024
حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ رُمْحٍ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنَا اللَّيْثُ بْنُ سَعْدٍ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏عَنْ إِسْحَاق بْنِ أَبِي فَرْوَةَ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أَبِي الزِّنَادِ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏عَنْ عَامِرٍ الشَّعْبِيِّ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ قُلْتُ لِفَاطِمَةَ بِنْتِ قَيْسٍ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏:‏‏‏‏ حَدِّثِينِي عَنْ طَلَاقِكِ، ‏‏‏‏‏‏قَالَتْ:‏‏‏‏ "طَلَّقَنِي زَوْجِي ثَلَاثًا وَهُوَ خَارِجٌ إِلَى الْيَمَنِ، ‏‏‏‏‏‏فَأَجَازَ ذَلِكَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ".
عامر شعبی کہتے ہیں کہ میں نے فاطمہ بنت قیس رضی اللہ عنہا سے کہا: آپ مجھ سے اپنی طلاق کے بارے میں بیان کریں، تو انہوں نے کہا: میرے شوہر نے یمن کے سفر پر نکلتے وقت مجھے تین طلاق دی تو رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے اس کو جائز رکھا ۱؎۔

تخریج دارالدعوہ: صحیح مسلم/الطلاق ۶ (۱۴۸۰)، سنن ابی داود/الطلاق) ۳۹ (۲۲۹۱)، سنن الترمذی/الطلاق ۵ (۱۱۸۰)، سنن النسائی/الطلاق ۷ (۳۴۳۲)، (تحفة الأشراف: ۱۸۰۲۵) (صحیح)

وضاحت: ۱؎: اس حدیث سے جمہور علماء و فقہاء نے دلیل لی ہے کہ اگر کوئی ایک ہی مجلس میں تین طلاقیں دے دے تو تینوں پڑ جائیں گی، اس مسئلہ میں تین مذہب اور ہیں، ایک یہ کہ کچھ نہیں پڑے گا، نہ ایک نہ تین، کیونکہ اس طرح طلاق دینا بدعت اور حرام ہے، اس مذہب کو ابن حزم نے امام احمد سے بھی نقل کیا ہے، اور کہا کہ روافض کا بھی یہی مذہب ہے، واضح رہے کہ تابعین کی ایک جماعت کا یہی مذہب ہے۔ اور اہل بیت سے امام باقر، امام صادق اور ناصر کا بھی یہی مذہب ہے،اور ابوعبید اور بعض ظاہریہ بھی اسی کے قائل ہیں، کیونکہ یہ لوگ کہتے ہیں کہ طلاق بدعی نہیں پڑتی اور یہ بھی بدعی ہے۔ دوسرے یہ کہ اگر عورت مدخولہ ہے تو تینوں پڑ جائیں گی اور مدخولہ نہیں ہے تو ایک پڑے گی، ایک جماعت کا یہ قول ہے جیسے ابن عباس اور اسحاق بن راہویہ وغیرہ۔ تیسرے یہ کہ ایک طلاق رجعی پڑے گی خواہ عورت مدخولہ ہو یا نہ ہو، اور ابن عباس رضی اللہ عنہما کا صحیح ترین مذہب یہی ہے، اور ابن اسحاق، عطاء، عکرمہ اور اکثر اہل بیت اسی کے قائل ہیں، سارے مذاہب میں یہ صحیح ہے، امام شوکانی نے اس مسئلے پر ایک مستقل رسالہ لکھا ہے، اور چاروں مذاہب کے دلائل بیان کر کے اخیر قول کو ترجیح دی ہے، اور اس دور میں اس مسئلہ کو اختلافی قرار دیا ہے۔ علامہ ابن القیم رحمہ اللہ فرماتے ہیں کہ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم سے یہ صحیح اور ثابت ہے کہ تین طلاق ایک ہی بار دینے سے ایک ہی طلاق پڑتی تھی عہد نبوت میں، اور ابوبکر رضی اللہ عنہ کے عہد میں، اور شروع خلافت عمر رضی اللہ عنہ میں، اور عمر رضی اللہ عنہ نے لوگوں کو سزا دینے کے لئے یہ فتوی دیا کہ تینوں طلاقیں پڑ جائیں گی، اور یہ ان کا اجتہاد ہے، جو اوروں پر حجت نہیں ہو سکتا، خصوصاً نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم اور ابوبکر صدیق رضی اللہ عنہ کا فتوی ان کے اجتہاد سے رد نہیں ہو سکتا، اور ابن القیم نے اغاثۃ اللہفان میں اس مسئلہ میں طویل کلام کیا ہے، اور ثابت کیا ہے کہ اس صورت میں ایک ہی طلاق پڑے گی، امام شوکانی کہتے ہیں: ابوموسی اشعری، ابن عباس، طاؤس، عطاء، جابر بن زید، احمد بن عیسی، عبد اللہ بن موسی، علی اور زید بن علی سے ایسا ہی منقول ہے، اور شیخ الاسلام ابن تیمیہ اور امام ابن القیم دونوں اسی طرف گئے ہیں، اور ابن مغیث نے کتاب الوثائق میں علی، ابن مسعود، عبدالرحمن بن عوف اور زبیر رضی اللہ عنہم اور مشائخ قرطبہ کی جماعت سے ایسا ہی نقل کیا ہے، اور ابن منذر نے اصحاب ابن عباس رضی اللہ عنہما سے ایسا ہی روایت کیا ہے کہ اس باب میں جو حدیثیں آئی ہیں ان سب میں ابن عباس رضی اللہ عنہما کی یہ حدیث زیادہ صحیح ہے،جو صحیح مسلم میں ہے کہ تین طلاقیں نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم اور ابوبکر رضی اللہ عنہ کی خلافت اور شروع عمر رضی اللہ عنہ کی خلافت میں ایک طلاق شمار ہوتی تھیں، جب عمر رضی اللہ عنہ کا زمانہ آیا اور لوگوں نے پے در پے طلاق دینا شروع کی تو عمر رضی اللہ عنہ نے تینوں طلاق کو ان پر نافذ کردیا۔ علامہ ابن القیم نے اس مسئلہ کی تحقیق میں کتاب و سنت اور لغت اور صحابہ کے عمل سے دلیل لی، پھر کہا کہ اللہ کی کتاب اور سنت رسول اللہ اور لغت اور عرف اسی پر دلالت کرتے ہیں، نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کے خلیفہ اور صحابہ اور عمر رضی اللہ عنہ کی خلافت میں بھی تین برس تک لوگ اسی پر چلتے رہے، اگر کوئی ان کا شمار کرے تو ہزار سے زیادہ ان کی تعداد ہو گی، کسی نے اقرار کیا، کسی نے سکوت اختیار کیا، اور بعضوں نے جو کہا کہ عمر رضی اللہ عنہ کے زمانہ سے پھر لوگوں نے انہی کے فتوی پر اجماع کر لیا،تو یہ ثابت نہیں، ہر زمانہ میں علماء اسی عہد اول کے فتوی پر فتوی دیتے رہے، امت کے عالم عبداللہ بن عباس رضی اللہ عنہما نے مروی حدیث کے مطابق فتوی دیا، اس کو حماد بن زید نے ایوب سے، انہوں نے عکرمہ سے، انہوں نے ابن عباس رضی اللہ عنہما سے نقل کیا کہ جب کسی نے ایک ہی دفعہ میں کہا: تجھ کو تین طلاق ہیں، تو ایک ہی طلاق پڑے گی، اور زبیر بن عوام، عبدالرحمن بن عوف رضی اللہ عنہما نے بھی ایسا ہی فتوی دیا، یہ ابن وضاح نے نقل کیا ہے، اور تابعین میں سے عکرمہ، طاؤس نے ایسا ہی فتوی دیا اور تبع تابعین میں سے محمد بن اسحاق اور خلاس بن عمرو الہجری نے ایسا ہی فتوی دیا اور اتباع تبع تابعین میں داود بن علی اور ان کے اکثر اصحاب نے ایسا ہی فتوی دیا ہے، غرض یہ کہ ہر زمانہ میں علماء اور ائمہ اس قول کے موافق فتویٰ دیتے رہے، اور یہ قول بالاجماع متروک نہیں ہوا، اور کیونکر ہو سکتا ہے جب کتاب و سنت اور قیاس اور اجماع قدیم سے یہی ثابت ہے، اور اس کے بعد کسی اجماع نے اس کو باطل نہیں کیا، لیکن عمر رضی اللہ عنہ نے ایک مصلحت سے اس کے خلاف رائے تجویز کی اور ان کا یہ فیصلہ کسی دوسرے پر حجت نہیں ہو سکتا، ہر مسلمان کی ذمہ داری ہے کہ جب صحیح حدیث مل جائے تو اس پر عمل کرے اور اس کے خلاف کسی کے فتوی اور کسی کا قیاس قبول نہ کرے، خواہ وہ کوئی ہو، اور اس مسئلہ کی مزید تفصیل کے لیے ” إعلام الموقعين، إغاثة اللهفان، رسالہ شوکانی، نیل الاوطار، مسک الختام، سنن ابن ماجہ مع حاشیہ مولانا وحیدالزمان حیدرآبادی “ کی طرف رجوع کیجئے، نیز ” تسمية المفتين“ کے نام سے ایک رسالہ اردو میں ترجمہ کر کے شائع کیا ہے جس میں قدیم و جدید علماء کی ایک بڑی تعداد کا ذکر ہے جو تین طلاقوں کو ایک قرار دیتی ہے۔ (فریوائی)

قال الشيخ الألباني: صحيح
5- بَابُ: الرَّجْعَةِ
باب: طلاق سے رجوع ہونے کا بیان۔
حدیث نمبر: 2025
حَدَّثَنَا بِشْرُ بْنُ هِلَالٍ الصَّوَّافُ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنَا جَعْفَرُ بْنُ سُلَيْمَانَ الضُّبَعِيُّ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏عَنْ يَزِيدَ الرِّشْكِ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏عَنْ مُطَرِّفِ بْنِ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ الشِّخِّيرِ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏أَنَّ عِمْرَانَ بْنَ الْحُصَيْنِ سُئِلَ عَنْ رَجُلٍ يُطَلِّقُ امْرَأَتَهُ، ‏‏‏‏‏‏ثُمَّ يَقَعُ بِهَا وَلَمْ يُشْهِدْ عَلَى طَلَاقِهَا وَلَا عَلَى رَجْعَتِهَا؟، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ عِمْرَانُ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏:‏‏‏‏ "طَلَّقْتَ بِغَيْرِ سُنَّةٍ، ‏‏‏‏‏‏وَرَاجَعْتَ بِغَيْرِ سُنَّةٍ، ‏‏‏‏‏‏أَشْهِدْ عَلَى طَلَاقِهَا وَعَلَى رَجْعَتِهَا".
مطرف بن عبداللہ بن شخیر سے روایت ہے کہ عمران بن حصین رضی اللہ عنہما سے اس شخص کے بارے میں پوچھا گیا جو اپنی بیوی کو طلاق دیدے پھر اس سے جماع کرے، اور اپنی طلاق اور رجعت پہ کسی کو گواہ نہ بنائے؟ تو عمران رضی اللہ عنہ نے کہا: تم نے سنت کے خلاف طلاق دی، اور سنت کے خلاف رجعت کی، اپنی طلاق اور رجعت پہ گواہ بناؤ ۱؎۔

تخریج دارالدعوہ: سنن ابی داود/الطلاق ۵ (۲۱۸۶)، (تحفة الأشراف: ۱۰۸۶۰) (صحیح)

وضاحت: ۱؎: گواہی ان دونوں کے لئے شرط نہیں، ہاں مسنون ہے۔

قال الشيخ الألباني: صحيح