كتاب الشفعة
کتاب: شفعہ کے احکام و مسائل
.

1- بَابُ: مَنْ بَاعَ رِبَاعًا فَلْيُؤْذِنْ شَرِيكَهُ
باب: جائیداد بیچتے وقت اپنے شریک کو خبر دینے کا بیان۔
حدیث نمبر: 2492
حَدَّثَنَا هِشَامُ بْنُ عَمَّارٍ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏ وَمُحَمَّدُ بْنُ الصَّبَّاحِ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏قَالَا:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا سُفْيَانُ بْنُ عُيَيْنَةَ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أَبِي الزُّبَيْرِ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏عَنْ جَابِرٍ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ "مَنْ كَانَتْ لَهُ نَخْلٌ أَوْ أَرْضٌ فَلَا يَبِيعُهَا حَتَّى يَعْرِضَهَا عَلَى شَرِيكِهِ".
جابر رضی اللہ عنہ کہتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: جس کے پاس کھجور کے درخت ہوں یا زمین ہو تو وہ اسے اس وقت تک نہ بیچے، جب تک کہ اسے اپنے شریک پر پیش نہ کر دے۔

تخریج دارالدعوہ: «سنن النسائی/البیوع ۷۸ (۴۶۵۰)، (تحفة الأشراف: ۲۷۶۵)، وقد أخرجہ: صحیح مسلم/المساقاة ۲۸ (۱۶۰۸)، سنن ابی داود/البیوع ۷۵ (۳۵۱۳)، مسند احمد (۳/۳۱۲، ۳۱۶، ۳۵۷) (صحیح)

قال الشيخ الألباني: صحيح
حدیث نمبر: 2493
حَدَّثَنَا أَحْمَدُ بْنُ سِنَانَ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏ وَالْعَلَاءُ بْنُ سَالِمٍ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏قَالَا:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا يَزِيدُ بْنُ هَارُونَ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏أَنْبَأَنَا شَرِيكٌ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏عَنْ سِمَاكٍ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏عَنْ عِكْرِمَةَ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏عَنِ ابْنِ عَبَّاسٍ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏عَنِ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ قَالَ:‏‏‏‏ "مَنْ كَانَتْ لَهُ أَرْضٌ فَأَرَادَ بَيْعَهَا فَلْيَعْرِضْهَا عَلَى جَارِهِ".
عبداللہ بن عباس رضی اللہ عنہما کہتے ہیں کہ نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: جس کے پاس زمین ہو اور وہ اس کو بیچنا چاہے تو اسے چاہیئے کہ وہ اسے اپنے پڑوسی پر پیش کرے ۱؎۔

تخریج دارالدعوہ: «تفرد بہ ابن ماجہ، (تحفة الأشراف: ۶۱۳۱، ومصباح الزجاجة: ۸۸۳) (صحیح) (سند میں سماک ہیں، جن کی عکرمہ سے روایت میں اضطراب ہے، لیکن سابق شواہد سے تقویت پاکر حدیث صحیح ہے)

وضاحت: ۱؎: باب کا خلاصہ یہ ہے کہ اگر پڑوسی یا شریک نہ خریدنا چاہے تب دوسروں کے ہاتھ بیچے۔

قال الشيخ الألباني: صحيح لغيره
2- بَابُ: الشُّفْعَةِ بِالْجِوَارِ
باب: پڑوس ہونے کی وجہ سے حق شفعہ کا بیان۔
حدیث نمبر: 2494
حَدَّثَنَا عُثْمَانُ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنَا هُشَيْمٌ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏أَنْبَأَنَا عَبْدُ الْمَلِكِ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏عَنْ عَطَاءٍ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏عَنْ جَابِرٍ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ "الْجَارُ أَحَقُّ بِشُفْعَةِ جَارِهِ يَنْتَظِرُ بِهَا وَإِنْ كَانَ غَائِبًا إِذَا كَانَ طَرِيقُهُمَا وَاحِدًا".
جابر رضی اللہ عنہ کہتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: پڑوسی اپنے پڑوسی کے شفعہ کا زیادہ حقدار ہے، اس کا انتظار کیا جائے گا اگر وہ موجود نہ ہو جب دونوں کا راستہ ایک ہو۔

تخریج دارالدعوہ: «سنن ابی داود/البیوع ۷۵ (۳۵۱۸)، سنن الترمذی/الأحکام ۳۲ (۱۳۶۹)، (تحفة الأشراف: ۲۴۳۴)، وقد أخرجہ: سنن الدارمی/البیوع ۸۳ (۲۶۶۹) (صحیح)

قال الشيخ الألباني: صحيح
حدیث نمبر: 2495
حَدَّثَنَا أَبُو بَكْرِ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏ وَعَلِيُّ بْنُ مُحَمَّدٍ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏قَالَا:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا سُفْيَانُ بْنُ عُيَيْنَةَ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏عَنْ إِبْرَاهِيمَ بْنِ مَيْسَرَةَ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏عَنْ عَمْرِو بْنِ الشَّرِيدِ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أَبِي رَافِعٍ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏أَنّ النَّبِيَّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ قَالَ:‏‏‏‏ "الْجَارُ أَحَقُّ بِسَقَبِهِ".
ابورافع رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: پڑوسی اپنے نزدیکی مکان کا زیادہ حقدار ہے۔

تخریج دارالدعوہ: «صحیح البخاری/الشفعة ۲ (۲۲۵۸)، الحیل ۱۴ (۶۹۷۷)، ۱۵ (۶۹۸۱، ۶۹۷۸)، سنن ابی داود/البیوع ۷۵ (۳۵۱۶)، سنن النسائی/البیوع ۱۰۷ (۴۷۰۶)، (تحفة الأشراف: ۱۲۰۲۷)، وقد أخرجہ: مسند احمد (۴/۳۸۹، ۳۹۰، ۶/۱۰، ۳۹۰) (صحیح)

قال الشيخ الألباني: صحيح
حدیث نمبر: 2496
حَدَّثَنَا أَبُو بَكْرِ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنَا أَبُو أُسَامَةَ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏عَنْ حُسَيْنٍ الْمُعَلِّمِ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏عَنْ عَمْرِو بْنِ شُعَيْبٍ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏عَنْ عَمْرِو بْنِ الشَّرِيدِ بْنِ سُوَيْدٍ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أَبِيهِ الشَّرِيدِ بْنِ سُوَيْدٍ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ قُلْتُ:‏‏‏‏ يَا رَسُولَ اللَّهِ، ‏‏‏‏‏‏أَرْضٌ لَيْسَ فِيهَا لِأَحَدٍ قِسْمٌ وَلَا شِرْكٌ إِلَّا الْجِوَارُ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ "الْجَارُ أَحَقُّ بِسَقَبِهِ".
شرید بن سوید رضی اللہ عنہ کہتے ہیں کہ میں نے عرض کیا: اللہ کے رسول! ایک زمین ہے جس میں کسی کا حصہ نہیں اور نہ کوئی شرکت ہے، سوائے پڑوسی کے (تو اس کے بارے میں فرمائیے؟!) آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: پڑوسی اپنی نزدیکی زمین کا زیادہ حقدار ہے۔

تخریج دارالدعوہ: «سنن النسائی/البیوع ۱۰۷ (۴۷۰۷)، (تحفة الأشراف: ۴۸۴۰) (حسن صحیح)

وضاحت: ۱؎: جابر رضی اللہ عنہ کی حدیث اور اس حدیث میں بظاہر تعارض ہے، شاہ ولی اللہ محدث دہلوی نے ان دونوں میں تطبیق دیتے ہوئے فرماتے ہیں کہ شفعہ کی دو قسمیں ہیں: ایک شعفہ یہ ہے کہ مالک کے لئے یہ ضروری ہے کہ وہ شفیع پر پیش کرے، اور دوسروں پر اسے ترجیح دے، اور اس شفعہ پر قضاء میں وہ مجبور نہ کیا جائے، اور یہی اس پڑوسی کا حق ہے جو شریک نہیں ہے، اور دوسری قسم یہ ہے کہ اس شفعہ پر اسے قضاء میں مجبور کیا جائے گا، اور یہ اس پڑوسی کے حق میں ہے جو شریک بھی ہے، (حجۃ اللہ البالغۃ ۲/۱۱۳)۔

قال الشيخ الألباني: حسن صحيح
3- بَابُ: إِذَا وَقَعَتِ الْحُدُودُ فَلاَ شُفْعَةَ
باب: جائیداد کی حد بندی کے بعد حق شفعہ نہیں ہے۔
حدیث نمبر: 2497
حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ يَحْيَى‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏ وَعَبْدُ الرَّحْمَنِ بْنُ عُمَرَ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏قَالَا:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا أَبُو عَاصِمٍ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنَا مَالِكُ بْنُ أَنَسٍ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏عَنِ الزُّهْرِيِّ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏عَنْ سَعِيدِ بْنِ الْمُسَيَّبِ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏ وَأَبِي سَلَمَةَ بْنِ عَبْدِ الرَّحْمَنِ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏أَنّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ "قَضَى بِالشُّفْعَةِ فِيمَا لَمْ يُقْسَمْ فَإِذَا وَقَعَتِ الْحُدُودُ فَلَا شُفْعَةَ".
ابوہریرہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے ایسی جائیداد میں شفعہ کا حکم دیا ہے جو تقسیم نہ کی گئی ہو، لیکن جب تقسیم ہو جائے اور حد بندی ہو تو شفعہ نہیں ہے۔

تخریج دارالدعوہ: «تفرد بہ ابن ماجہ، (تحفة الأشراف: ۱۳۲۴۱، ۱۵۲۴۹)، مصباح الزجاجة: ۸۸۴)، وقد أخرجہ: سنن ابی داود/البیوع ۷۵ (۳۵۱۵) (صحیح)

قال الشيخ الألباني: صحيح
حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ حَمَّادٍ الطِّهْرَانِيُّ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنَا أَبُو عَاصِمٍ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏عَنْ مَالِكٍ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏عَنِ الزُّهْرِيِّ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏عَنْ سَعِيدِ بْنِ الْمُسَيَّبِ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏ وَأَبِي سَلَمَةَ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏عَنِ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ نَحْوَهُ. قَالَ أَبُو عَاصِمٍ:‏‏‏‏ سَعِيدُ بْنُ الْمُسَيَّبِ مُرْسَلٌ، ‏‏‏‏‏‏وَأَبُو سَلَمَةَ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ مُتَّصِلٌ.
اس سند سے بھی ابوہریرہ رضی اللہ عنہ سے اسی طرح مروی ہے۔ ابوعاصم کہتے ہیں: سعید بن مسیب کی روایت مرسل ہے، اور ابوسلمہ کی روایت ابوہریرہ رضی اللہ عنہ سے متصل ہے۔

تخریج دارالدعوہ: «تفرد بہ ابن ماجہ، (تحفة الأشراف: ۱۳۲۴۱، ۱۵۲۴۹، ومصباح الزجاجة: ۸۸۵)
حدیث نمبر: 2498
حَدَّثَنَا عَبْدُ اللَّهِ بْنُ الْجَرَّاحِ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنَا سُفْيَانُ بْنُ عُيَيْنَةَ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏عَنْ إِبْرَاهِيمَ بْنِ مَيْسَرَةَ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏عَنْ عَمْرِو بْنِ الشَّرِيدِ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أَبِي رَافِعٍ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ "الشَّرِيكُ أَحَقُّ بِسَقَبِهِ مَا كَانَ".
ابورافع رضی اللہ عنہ کہتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: شریک (ساجھی دار) اپنی قریبی جائیداد کا زیادہ حقدار ہے، خواہ کوئی بھی چیز ہو۔

تخریج دارالدعوہ: «انظرحدیث رقم: (۲۴۹۵) (صحیح)

قال الشيخ الألباني: صحيح
حدیث نمبر: 2499
حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ يَحْيَى‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنَا عَبْدُ الرَّزَّاقِ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏عَنْ مَعْمَرٍ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏عَنِ الزُّهْرِيِّ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أَبِي سَلَمَةَ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏عَنْ جَابِرِ بْنِ عَبْدِ اللَّهِ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ "إِنَّمَا جَعَلَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ الشُّفْعَةَ فِي كُلِّ مَا لَمْ يُقْسَمْ، ‏‏‏‏‏‏فَإِذَا وَقَعَتِ الْحُدُودُ، ‏‏‏‏‏‏وَصُرِّفَتِ الطُّرُقُ فَلَا شُفْعَةَ".
جابر بن عبداللہ رضی اللہ عنہما کہتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے شفعہ ہر اس جائیداد میں ٹھہرایا ہے جو تقسیم نہ کی گئی ہو، اور جب حد بندی ہو جائے اور راستے جدا ہو جائیں تو اب شفعہ نہیں ہے ۱؎۔

تخریج دارالدعوہ: «صحیح البخاری/البیوع ۹۶ (۲۲۱۳)، ۹۷ (۲۲۱۴)، الشفعة ۲ (۲۲۵۷)، الحیل ۱۴ (۷۶ ۶۹)، الشرکة ۸ (۹۵ ۲۴)، سنن ابی داود/البیوع ۷۵ (۳۵۱۴)، سنن الترمذی/الأحکام ۳۳ (۱۳۷۰)، (تحفة الأشراف: ۳۱۵۳)، وقد أخرجہ: سنن النسائی/البیوع ۱۰۷ (۴۷۰۸)، موطا امام مالک/الشفعة ۱ (۱)، مسند احمد (۳/۳۷۲، ۳۹۹)، سنن الدارمی/البیوع ۸۳ (۲۶۷۰) (صحیح)

وضاحت: ۱؎: معلوم ہوا کہ وہ جائیداد جو تقسیم کے قابل نہ ہو، اس میں بھی شفعہ نہیں ہے، جیسے حمام اور کنواں وغیرہ۔

قال الشيخ الألباني: صحيح
4- بَابُ: طَلَبِ الشُّفْعَةِ
باب: شفعہ کا مطالبہ۔
حدیث نمبر: 2500
حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ بَشَّارٍ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ الْحَارِثِ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏عَنْ مُحَمَّدِ بْنِ عَبْدِ الرَّحْمَنِ الْبَيْلَمَانِيِّ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أَبِيهِ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏عَنِ ابْنِ عُمَرَ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ "الشُّفْعَةُ كَحَلِّ الْعِقَالِ".
عبداللہ بن عمر رضی اللہ عنہما کہتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: شفعہ اونٹ کی رسی کھولنے کے مانند ہے ۱؎۔

تخریج دارالدعوہ: تفرد بہ ابن ماجہ، (تحفة الأشراف: ۷۲۹۲، ومصباح الزجاجة: ۸۸۶) (ضعیف جدا) (سند میں محمد بن الحارث ضعیف ہے، اور محمد بن عبد الرحمن البیلمانی متہم بالکذب ہے، ملاحظہ ہو: الإرواء: ۱۵۴۲)

وضاحت: ۱؎: یعنی جیسے اونٹ کے کھٹنے کی رسی کھول دی جائے تو اونٹ فوراً اٹھ کھڑا ہوتا ہے اسی طرح بیع کی خبر ہوتے ہی اگر شفیع شفعہ لے تو ٹھیک ہے، اور اگر دیر کرے تو شفعہ کا حق باطل ہو گیا، یہ حدیث حنفیہ کی دلیل ہے جن کے نزدیک شفیع کو جب بیع کی خبر پہنچے تو فوراً اس کو طلب کرنا چاہئے، فقہ حنفی میں ہے کہ مجلس علم میں شفعہ طلب کرنا کافی ہے، اگرچہ مجلس دیر تک رہے، پس احناف کے نزدیک اگر شفیع فوراً یا اس مجلس میں شفعہ کا مطالبہ نہ کرے تو اس کا حق باطل ہو جاتا ہے۔ اور اہل حدیث کے نزدیک دیر کرنے سے شفعہ کا حق باطل نہیں ہوتا کیونکہ شفعہ کی احادیث مطلق ہیں، اور ابن عمر رضی اللہ عنہما سے مروی یہ حدیث جس سے حنفیہ نے استدلال کیا ہے سخت ضعیف ہے۔

قال الشيخ الألباني: ضعيف جدا