كتاب الأشربة
کتاب: مشروبات کے متعلق احکام و مسائل
.

1- بَابُ: الْخَمْرُ مِفْتَاحُ كُلِّ شَرٍّ
باب: شراب ہر برائی کی کنجی ہے۔
حدیث نمبر: 3371
حَدَّثَنَا الْحُسَيْنُ بْنُ الْحَسَنِ الْمَرْوَزِيُّ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا بْنُ أَبِي عَدِيٍّ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏. ح وحَدَّثَنَا إِبْرَاهِيمُ بْنُ سَعِيدٍ الْجَوْهَرِيُّ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا عَبْدُ الْوَهَّابِ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏ جَمِيعًا،‏‏‏‏ عَنْ رَاشِدٍ أَبِي مُحَمَّدٍ الْحِمَّانِيِّ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ عَنْ شَهْرِ بْنِ حَوْشَبٍ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ عَنْ أُمِّ الدَّرْدَاءِ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي الدَّرْدَاءِ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ أَوْصَانِي خَلِيلِي صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ"لَا تَشْرَبْ الْخَمْرَ،‏‏‏‏ فَإِنَّهَا مِفْتَاحُ كُلِّ شَرٍّ".
ابو الدرداء رضی اللہ عنہ کہتے ہیں کہ میرے خلیل (جگری دوست) رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے مجھے وصیت فرمائی: شراب مت پیو، اس لیے کہ یہ تمام برائیوں کی کنجی ہے ۱؎۔

تخریج دارالدعوہ: «تفرد بہ ابن ماجہ، (تحفة الأشراف: ۱۰۹۸۵، ومصباح الزجاجة: ۱۱۶۸) (صحیح)

وضاحت: ۱؎: آدمی ہر ایک برائی سے عقل کی وجہ سے بچتا ہے جب عقل ہوتی ہے تو اللہ کا خوف ہوتا ہے، شراب پینے سے عقل ہی میں فتور آ جاتا ہے، پھر خوف کہاں رہا شرابی سے سینکڑوں گناہ سرزد ہوتے ہیں، اس لئے اس کو ام الخبائث کہتے ہیں، یعنی سب برائیوں کی جڑ۔

قال الشيخ الألباني: صحيح
حدیث نمبر: 3372
حَدَّثَنَا الْعَبَّاسُ بْنُ عُثْمَانَ الدِّمَشْقِيُّ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا الْوَلِيدُ بْنُ مُسْلِمٍ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا مُنِيرُ بْنُ الزُّبَيْرِ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ أَنَّهُ سَمِعَ عُبَادَةَ بْنَ نُسَيٍّ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ يَقُولُ:‏‏‏‏ سَمِعْتُ خَبَّابَ بْنَ الْأَرَتِّ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ عَنْ رَسُولِ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ أَنَّهُ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ "إِيَّاكَ وَالْخَمْرَ،‏‏‏‏ فَإِنَّ خَطِيئَتَهَا تَفْرَعُ الْخَطَايَا،‏‏‏‏ كَمَا أَنَّ شَجَرَتَهَا تَفْرَعُ الشَّجَرَ".
خباب بن ارت رضی اللہ عنہ کہتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: شراب سے بچو، اس لیے کہ اس کے گناہ سے دوسرے بہت سے گناہ پھوٹتے ہیں جس طرح ایک درخت ہوتا ہے اور اس سے بہت سی شاخیں پھوٹتی ہیں۔

تخریج دارالدعوہ: «تفرد بہ ابن ماجہ، (تحفة الأشراف: ۳۵۱۵، ومصباح الزجاجة: ۱۱۶۹) (ضعیف) (منیر بن زبیر الشامی ضعیف ہے)

قال الشيخ الألباني: ضعيف
2- بَابُ: مَنْ شَرِبَ الْخَمْرَ فِي الدُّنْيَا لَمْ يَشْرَبْهَا فِي الآخِرَةِ
باب: جس نے دنیا میں شراب پی اسے آخرت میں جنت کی (پاک) شراب نہ ملے گی۔
حدیث نمبر: 3373
حَدَّثَنَا عَلِيُّ بْنُ مُحَمَّدٍ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا عَبْدُ اللَّهِ بْنُ نُمَيْرٍ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ عَنْ عُبَيْدِ اللَّهِ بْنِ عُمَرَ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ عَنْ نَافِعٍ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ عَنْ ابْنِ عُمَرَ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ "مَنْ شَرِبَ الْخَمْرَ فِي الدُّنْيَا،‏‏‏‏ لَمْ يَشْرَبْهَا فِي الْآخِرَةِ، ‏‏‏‏‏‏إِلَّا أَنْ يَتُوبَ".
عبداللہ بن عمر رضی اللہ عنہما سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: جو شخص دنیا میں شراب پئے گا، وہ آخرت میں نہیں پی سکے گا مگر یہ کہ وہ توبہ کر لے۔

تخریج دارالدعوہ: «صحیح مسلم/الأشربة ۸ (۲۰۰۳)، (تحفة الأشراف: ۷۹۵۱)، وقد أخرجہ: صحیح البخاری/الأشربة ۱ (۵۵۷۵)، سنن الترمذی/الأشربة ۱ (۱۸۶۱)، موطا امام مالک/الأشربة ۴ (۱۱)، مسند احمد (۲/۱۹، ۲۲، ۲۸، ۵/۹۸، ۱۰۶، ۱۳۳، ۱۴۲)، سنن الدارمی/الأشربة ۳ (۲۱۳۵) (صحیح)

قال الشيخ الألباني: صحيح
حدیث نمبر: 3374
حَدَّثَنَا هِشَامُ بْنُ عَمَّارٍ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا يَحْيَى بْنُ حَمْزَةَ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنِي زَيْدُ بْنُ وَاقِدٍ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ أَنَّ خَالِدَ بْنَ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ حُسَيْنٍ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏ حَدَّثَهُ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنِي أَبُو هُرَيْرَةَ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ "مَنْ شَرِبَ الْخَمْرَ فِي الدُّنْيَا،‏‏‏‏ لَمْ يَشْرَبْهَا فِي الْآخِرَةِ".
ابوہریرہ رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: جو دنیا میں شراب پئے گا، وہ آخرت میں اس سے محروم رہے گا۔

تخریج دارالدعوہ: «تفرد بہ ابن ماجہ، (تحفة الأشراف: ۱۲۳۰۰، ومصباح الزجاجة: ۱۱۷۰) (صحیح)

قال الشيخ الألباني: صحيح
3- بَابُ: مُدْمِنِ الْخَمْرِ
باب: عادی شرابی کا بیان۔
حدیث نمبر: 3375
حَدَّثَنَا أَبُو بَكْرِ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ وَمُحَمَّدُ بْنُ الصَّبَّاحِ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ قَالَا:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ سُلَيْمَانَ بْنِ الْأَصْبَهَانِيِّ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ عَنْ سُهَيْلٍ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ عَنْ أَبِيهِ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ "مُدْمِنُ الْخَمْرِ كَعَابِدِ وَثَنٍ".
ابوہریرہ رضی اللہ عنہ کہتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: شراب کا عادی ایسے ہی ہے جیسے بتوں کا پجاری ۱؎۔

تخریج دارالدعوہ: «تفرد بہ ابن ماجہ، (تحفة الأشراف: ۱۲۷۴۸، ومصباح الزجاجة: ۱۱۷۱) (حسن) (سند میں محمد بن سلیمان ضعیف ہے، لیکن شواہد کی وجہ سے یہ حسن ہے، ملاحظہ ہو: سلسلة الاحادیث الصحیحة، للالبانی: ۶۷۷)

وضاحت: ۱؎: حالانکہ بت پوجنا شرک ہے اور شرک گناہوں میں سب سے بڑا ہے، مگر شراب بھی ایسا گناہ ہے کہ ہمیشہ کرنے سے وہ شرک کے مثل ہو جاتا ہے جیسے صغیرہ گناہ ہمیشہ کرنے سے کبیرہ ہو جاتا ہے، اس میں ڈر ہے شرابیوں کے لئے ایسا نہ ہو ان کا خاتمہ برا ہو۔

قال الشيخ الألباني: حسن
حدیث نمبر: 3376
حَدَّثَنَا هِشَامُ بْنُ عَمَّارٍ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا سُلَيْمَانُ بْنُ عُتْبَةَ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ حَدَّثَنِي يُونُسُ بْنُ مَيْسَرَةَ بْنِ حَلْبَسٍ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي إِدْرِيسَ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي الدَّرْدَاءِ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ عَنِ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ "لَا يَدْخُلُ الْجَنَّةَ مُدْمِنُ خَمْرٍ".
ابو الدرداء رضی اللہ عنہ کہتے ہیں کہ نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: عادی شرابی جنت میں داخل نہیں ہو گا۔

تخریج دارالدعوہ: «تفرد بہ ابن ماجہ، (تحفة الأشراف: ۱۰۹۴۶، ومصباح الزجاجة: ۱۱۷۲)، وقد أخرجہ: مسند احمد (۲/۱۸۹، ۶/۴۴۱) (صحیح) (ملاحظہ ہو: سلسلة الاحادیث الصحیحة، للالبانی: ۶۷۵ و ۶۷۸)

قال الشيخ الألباني: صحيح
4- بَابُ: مَنْ شَرِبَ الْخَمْرَ لَمْ تُقْبَلْ لَهُ صَلاَةٌ
باب: شراب پینے والے کی نماز قبول نہ ہونے کا بیان۔
حدیث نمبر: 3377
حَدَّثَنَا عَبْدُ الرَّحْمَنِ بْنُ إِبْرَاهِيمَ الدِّمَشْقِيُّ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا الْوَلِيدُ بْنُ مُسْلِمٍ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا الْأَوْزَاعِيُّ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ عَنْ رَبِيعَةَ بْنِ يَزِيدَ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ عَنْ ابْنِ الدَّيْلَمِيِّ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ عَنْ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ عَمْرٍو‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ "مَنْ شَرِبَ الْخَمْرَ وَسَكِرَ،‏‏‏‏ لَمْ تُقْبَلْ لَهُ صَلَاةٌ أَرْبَعِينَ صَبَاحًا،‏‏‏‏ وَإِنْ مَاتَ دَخَلَ النَّارَ،‏‏‏‏ فَإِنْ تَابَ تَابَ اللَّهُ عَلَيْهِ،‏‏‏‏ وَإِنْ عَادَ فَشَرِبَ فَسَكِرَ،‏‏‏‏ لَمْ تُقْبَلْ لَهُ صَلَاةٌ أَرْبَعِينَ صَبَاحًا،‏‏‏‏ فَإِنْ مَاتَ دَخَلَ النَّارَ،‏‏‏‏ فَإِنْ تَابَ تَابَ اللَّهُ عَلَيْهِ،‏‏‏‏ وَإِنْ عَادَ فَشَرِبَ فَسَكِرَ،‏‏‏‏ لَمْ تُقْبَلْ لَهُ صَلَاةٌ أَرْبَعِينَ صَبَاحًا،‏‏‏‏ فَإِنْ مَاتَ دَخَلَ النَّارَ،‏‏‏‏ فَإِنْ تَابَ تَابَ اللَّهُ عَلَيْهِ،‏‏‏‏ وَإِنْ عَادَ كَانَ حَقًّا عَلَى اللَّهِ أَنْ يَسْقِيَهُ مِنْ رَدَغَةِ الْخَبَالِ يَوْمَ الْقِيَامَةِ"،‏‏‏‏ قَالُوا:‏‏‏‏ يَا رَسُولَ اللَّهِ، ‏‏‏‏‏‏وَمَا رَدَغَةُ الْخَبَالِ؟ قَالَ:‏‏‏‏ "عُصَارَةُ أَهْلِ النَّارِ".
عبداللہ بن عمرو رضی اللہ عنہما کہتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: جو شراب پی کر مست ہو جائے (نشہ ہو جائے) اس کی نماز چالیس روز تک قبول نہیں ہوتی، اور اگر وہ اس دوران مر جائے تو وہ جہنم میں جائے گا، لیکن اگر وہ توبہ کر لے تو اللہ تعالیٰ اس کی توبہ قبول فرمائے گا، پھر اگر وہ توبہ سے پھر جائے اور شراب پئے، اور اسے نشہ آ جائے تو چالیس روز تک اس کی نماز قبول نہیں ہو گی، اگر وہ اس دوران مر گیا تو جہنم میں جائے گا، لیکن اگر وہ پھر توبہ کر لے تو اللہ تعالیٰ اس کی توبہ قبول فرمائے گا، اگر وہ پھر پی کر بدمست ہو جائے تو پھر اس کی نماز چالیس روز تک قبول نہیں ہو گی، اور وہ اسی حالت میں مر گیا تو جہنم میں جائے گا، اور اگر اس نے پھر توبہ کر لی تو اللہ تعالیٰ اس کی توبہ قبول کر لے گا، اب اگر وہ (اس کے بعد بھی) پئے تو اللہ تعالیٰ کے لیے حق ہو گا کہ اسے قیامت کے دن «ردغۃ الخبال» پلائے، لوگوں نے سوال کیا: اللہ کے رسول! یہ «ردغۃ الخبال» کیا ہے؟ فرمایا: جہنمیوں کا پیپ۔

تخریج دارالدعوہ: «سنن النسائی/الأشربة ۴۳ (۵۶۶۷)، (تحفة الأشراف: ۸۸۴۳)، وقد أخرجہ: سنن الترمذی/الأشربة ۱ (۱۸۶۲)، مسند احمد (۲/۳۵، ۱۷۶، ۱۸۹، ۱۹۷، ۵/۱۷۱، ۶/۴۶۰) (صحیح)

وضاحت: ۱؎: معاذ اللہ، شراب پینی، اور اتنی کہ آدمی مست ہو جائے، اور ہوش کھو دے،کتنا بڑا سخت گناہ ہے، توراۃ، اور انجیل میں بھی اس کی بہت برائی آئی ہے، اور حدیث سے یہ بھی معلوم ہوا کہ تیسری بار اگر شراب پئے تو توبہ قبول نہ ہو گی، اور ضرور عذاب ہو گا۔

قال الشيخ الألباني: صحيح
5- بَابُ: مَا يَكُونُ مِنْهُ الْخَمْرُ
باب: شراب کن چیزوں سے بنتی ہے؟
حدیث نمبر: 3378
حَدَّثَنَا يَزِيدُ بْنُ عَبْدِ اللَّهِ الْيَمَامِيُّ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا عِكْرِمَةُ بْنُ عَمَّارٍ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا أَبُو كَثِيرٍ السُّحَيْمِيُّ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ "الْخَمْرُ مِنْ هَاتَيْنِ الشَّجَرَتَيْنِ:‏‏‏‏ النَّخْلَةِ وَالْعِنَبَةِ".
ابوہریرہ رضی اللہ عنہ کہتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: شراب ان دو درختوں: کھجور اور انگور سے بنتی ہے۔

تخریج دارالدعوہ: «صحیح مسلم/الأشربة ۴ (۱۹۸۵)، سنن ابی داود/الأشربة ۴ (۳۶۷۸)، سنن الترمذی/الأشربة ۸ (۱۸۷۵)، سنن النسائی/الأشربة ۱۹ (۵۵۷۵)، (تحفة الأشراف: ۱۴۸۴۱)، وقد أخرجہ: مسند احمد (۲/۲۷۹، ۴۰۸، ۴۰۹، ۴۷۴، ۴۹۶، ۵۱۸، ۵۲۶)، سنن الدارمی/ الأشربة ۷ (۲۱۴۱) (صحیح)

قال الشيخ الألباني: صحيح
حدیث نمبر: 3379
حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ رُمْحٍ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ أَنْبَأَنَا اللَّيْثُ بْنُ سَعْدٍ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ عَنْ يَزِيدَ بْنِ أَبِي حَبِيبٍ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ أَنَّ خَالِدَ بْنَ كَثِيرٍ الْهَمْدَانِيّ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏ حَدَّثَهُ،‏‏‏‏ أَنَّ السَّرِيَّ بْنَ إِسْمَاعِيل‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏ حَدَّثَهُ،‏‏‏‏ أَنَّ الشَّعْبِيَّ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏ حَدَّثَهُ،‏‏‏‏ أَنَّهُ سَمِعَ النُّعْمَانَ بْنَ بَشِيرٍ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ يَقُولُ:‏‏‏‏ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ "إِنَّ مِنَ الْحِنْطَةِ خَمْرًا،‏‏‏‏ وَمِنَ الشَّعِيرِ خَمْرًا،‏‏‏‏ وَمِنَ الزَّبِيبِ خَمْرًا،‏‏‏‏ وَمِنَ التَّمْرِ خَمْرًا،‏‏‏‏ وَمِنَ الْعَسَلِ خَمْرًا".
نعمان بن بشیر رضی اللہ عنہ کہتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: شراب کئی چیزوں سے بنائی جاتی ہے، گیہوں سے، جو سے، منقیٰ سے، کھجور سے اور شہد سے۔

تخریج دارالدعوہ: «سنن ابی داود/الأشربة ۴ (۳۶۷۶، ۳۶۷۷)، سنن الترمذی/الأشربة ۸ (۱۸۷۲، ۱۸۷۳)، (تحفة الأشراف: ۱۱۶۲۶)، وقد أخرجہ: مسند احمد (۴/۲۶۷، ۲۷۳) (صحیح)

قال الشيخ الألباني: صحيح
6- بَابُ: لُعِنَتِ الْخَمْرُ عَلَى عَشَرَةِ أَوْجُهٍ
باب: شراب پر دس طرح سے لعنت ہے۔
حدیث نمبر: 3380
حَدَّثَنَا عَلِيُّ بْنُ مُحَمَّدٍ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ وَمُحَمَّدُ بْنُ إِسْمَاعِيل‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ قَالَا:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا وَكِيعٌ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا عَبْدُ الْعَزِيزِ بْنُ عُمَرَ بْنِ عَبْدِ الْعَزِيزِ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ عَنْ عَبْدِ الرَّحْمَنِ بْنِ عَبْدِ اللَّهِ الْغَافِقِيِّ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ وَأَبِي طُعْمَةَ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏ مَوْلَاهُمْ،‏‏‏‏ أَنَّهُمَا سَمِعَا ابْنَ عُمَرَ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ يَقُولُ:‏‏‏‏ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ "لُعِنَتِ الْخَمْرُ عَلَى عَشْرَةِ أَوْجُهٍ بِعَيْنِهَا:‏‏‏‏ وَعَاصِرِهَا،‏‏‏‏ وَمُعْتَصِرِهَا،‏‏‏‏ وَبَائِعِهَا،‏‏‏‏ وَمُبْتَاعِهَا،‏‏‏‏ وَحَامِلِهَا،‏‏‏‏ وَالْمَحْمُولَةِ إِلَيْهِ،‏‏‏‏ وَآكِلِ ثَمَنِهَا،‏‏‏‏ وَشَارِبِهَا،‏‏‏‏ وَسَاقِيهَا".
عبداللہ بن عمر رضی اللہ عنہما کہتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: شراب دس طرح سے ملعون ہے، یہ لعنت خود اس پر ہے، اس کے نچوڑنے والے پر، نچڑوانے والے پر، اس کے بیچنے والے پر، اس کے خریدنے والے پر، اس کو اٹھا کر لے جانے والے پر، اس شخص پر جس کے پاس اٹھا کر لے جائی جائے، اس کی قیمت کھانے والے پر، اس کے پینے والے پر اور اس کے پلانے والے پر۔

تخریج دارالدعوہ: «تفرد بہ ابن ماجہ، (تحفة الأشراف: ۷۲۹۶، ومصباح الزجاجة: ۱۱۷۳)، وقد أخرجہ: سنن ابی داود/الأشربة ۲ (۳۶۷۴)، مسند احمد (۲/۲۵، ۷۱)، دون قولہ: '' أکل ثمنہا'' (صحیح)

قال الشيخ الألباني: صحيح