كتاب الطهارة
کتاب: طہارت کے احکام و مسائل
eng

1- بَابُ: تَأْوِيلِ قَوْلِهِ عَزَّ وَجَلَّ {إِذَا قُمْتُمْ إِلَى الصَّلاَةِ فَاغْسِلُوا وُجُوهَكُمْ وَأَيْدِيَكُمْ إِلَى الْمَرَافِقِ}
باب: اللہ عزوجل کے فرمان: «إذا قمتم إلى الصلاة فاغسلوا ...»۔
حدیث نمبر: 1
أَخْبَرَنَا قُتَيْبَةُ بْنُ سَعِيدٍ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا سُفْيَانُ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ الزُّهْرِيِّ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أَبِي سَلَمَةَ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ، ‏‏‏‏‏‏أَنّ النَّبِيَّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ "إِذَا اسْتَيْقَظَ أَحَدُكُمْ مِنْ نَوْمِهِ، ‏‏‏‏‏‏فَلَا يَغْمِسْ يَدَهُ فِي وَضُوئِهِ حَتَّى يَغْسِلَهَا ثَلَاثًا، ‏‏‏‏‏‏فَإِنَّ أَحَدَكُمْ لَا يَدْرِي أَيْنَ بَاتَتْ يَدُهُ".
ابوہریرہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: جب تم میں سے کوئی شخص نیند سے جاگ جائے تو اپنا ہاتھ اپنے وضو کے پانی میں نہ ڈالے، یہاں تک کہ اسے تین بار دھو لے، کیونکہ وہ نہیں جانتا کہ اس کا ہاتھ رات میں کہاں کہاں رہا ہے۔

تخریج دارالدعوہ: صحیح البخاری/الوضوء ۲۶ (۱۶۲)، صحیح مسلم/الطہارة ۲۶ (۲۷۸)، سنن ابی داود/الطھارة ۴۹ (۱۰۳)، سنن الترمذی/الطھارة ۱۹ (۲۴)، سنن ابن ماجہ/الطھارة ۴۰ (۳۹۳)، (تحفة الأشراف: ۱۵۱۴۹)، موطا امام مالک/ فیہ ۲ (۹)، مسند احمد ۲/۲۴۱، ۲۵۳، ۲۵۹، ۳۴۹، ۳۸۲، سنن الدارمی/الطہارة ۷۸ (۷۹۳)، ویأتي عند المؤلف برقم: ۱۶۱، ۴۴۱ (صحیح)

قال الشيخ الألباني: صحيح ق وليس عند خ العدد
2- بَابُ: السِّوَاكِ إِذَا قَامَ مِنَ اللَّيْلِ
باب: رات کو سو کر اٹھنے کے بعد مسواک کرنے کا بیان۔
حدیث نمبر: 2
أَخْبَرَنَا إِسْحَاقُ بْنُ إِبْرَاهِيمَ، ‏‏‏‏‏‏وَقُتَيْبَةُ بْنُ سَعِيدٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ جَرِيرٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ مَنْصُورٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أَبِي وَائِلٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ حُذَيْفَةَ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ كَانَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ"إِذَا قَامَ مِنَ اللَّيْلِ يَشُوصُ فَاهُ بِالسِّوَاكِ".
حذیفہ رضی اللہ عنہ کہتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم جب رات کو (نماز تہجد کے لیے) اٹھتے تو اپنا منہ مسواک سے خوب صاف کرتے ۱؎۔

تخریج دارالدعوہ: صحیح البخاری/الوضوء ۷۳ (۲۴۵)، الجمعة ۸ (۸۸۹)، التہجد ۹ (۱۱۳۶)، صحیح مسلم/الطہارة ۱۵ (۲۵۵)، سنن ابی داود/فیہ ۳۰ (۵۵)، سنن ابن ماجہ/فیہ ۷ (۲۸۶)، (تحفة الأشراف: ۳۳۳۶)، مسند احمد (۵/۳۸۲، ۳۹۰، ۳۹۷، ۴۰۲، ۴۰۷)، سنن الدارمی/الطہارة ۲۰/۷۱۲، وأعادہ المؤلف في قیام اللیل: ۱۰، رقم: ۱۶۲۳ (صحیح)

قال الشيخ الألباني: صحيح
3- بَابُ: كَيْفَ يَسْتَاكُ
باب: مسواک کس طرح کی جائے؟
حدیث نمبر: 3
أَخْبَرَنَا أَحْمَدُ بْنُ عَبْدَةَ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا حَمَّادُ بْنُ زَيْدٍ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ أَخْبَرَنَا غَيْلَانُ بْنُ جَرِيرٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أَبِي بُرْدَةَ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أَبِي مُوسَى، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ دَخَلْتُ عَلَى رَسُولِ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ"وَهُوَ يَسْتَنُّ وَطَرَفُ السِّوَاكِ عَلَى لِسَانِهِ وَهُوَ يَقُولُ:‏‏‏‏ عَأْ عَأْ".
ابوموسیٰ اشعری رضی اللہ عنہ کہتے ہیں کہ میں رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے پاس آیا، آپ مسواک کر رہے تھے اور مسواک کا سرا آپ صلی اللہ علیہ وسلم کی زبان پر تھا، اور آپ: «عأعأ‏» کی آواز نکال رہے تھے ۱؎۔

تخریج دارالدعوہ: صحیح البخاری/الوضوء ۷۳ (۲۴۴)، صحیح مسلم/الطہارة ۱۵ (۲۵۴)، سنن ابی داود/فیہ ۲۶ (۴۹)، (تحفة الأشراف: ۹۱۲۳) وقد أخرجہ: مسند احمد ۴/۴۱۷ (صحیح)

وضاحت: ۱؎: یعنی حلق صاف کر رہے تھے۔

قال الشيخ الألباني: صحيح
4- بَابُ: هَلْ يَسْتَاكُ الإِمَامُ بِحَضْرَةِ رَعِيَّتِهِ
باب: کیا حاکم اپنی رعیت کے سامنے مسواک کر سکتا ہے؟
حدیث نمبر: 4
أَخْبَرَنَا عَمْرُو بْنُ عَلِيٍّ، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنَا يَحْيَى وَهُوَ ابْنُ سَعِيدٍ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا قُرَّةُ بْنُ خَالِدٍ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا حُمَيْدُ بْنُ هِلَالٍ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنِي أَبُو بُرْدَةَ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أَبِي مُوسَى، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ أَقْبَلْتُ إِلَى النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ وَمَعِي رَجُلَانِ مِنَ الْأَشْعَرِيِّينَ، ‏‏‏‏‏‏أَحَدُهُمَا عَنْ يَمِينِي وَالْآخَرُ عَنْ يَسَارِي وَرَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ يَسْتَاكُ فَكِلَاهُمَا سَأَلَ الْعَمَلَ قُلْتُ:‏‏‏‏ وَالَّذِي بَعَثَكَ بِالْحَقِّ نَبِيًّا، ‏‏‏‏‏‏مَا أَطْلَعَانِي عَلَى مَا فِي أَنْفُسِهِمَا وَمَا شَعَرْتُ أَنَّهُمَا يَطْلُبَانِ الْعَمَلَ، ‏‏‏‏‏‏فَكَأَنِّي أَنْظُرُ إِلَى سِوَاكِهِ تَحْتَ شَفَتِهِ قَلَصَتْ، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ:‏‏‏‏ "إِنَّا لَا أَوْ لَنْ نَسْتَعِينَ عَلَى الْعَمَلِ مَنْ أَرَادَهُ، ‏‏‏‏‏‏وَلَكِنْ اذْهَبْ أَنْتَ"، ‏‏‏‏‏‏فَبَعَثَهُ عَلَى الْيَمَنِ ثُمَّ أَرْدَفَهُ مُعَاذُ بْنُ جَبَلٍ رَضِيَ اللَّهُ عَنْهُمَا.
ابوموسیٰ اشعری رضی اللہ عنہ کہتے ہیں کہ میں نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کے پاس آیا، میرے ساتھ قبیلہ اشعر کے دو آدمی تھے، ان میں سے ایک میرے دائیں اور دوسرا میرے بائیں تھا، رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم مسواک کر رہے تھے، تو ان دونوں نے آپ صلی اللہ علیہ وسلم سے کام (نوکری) کی درخواست کی ۲؎، میں نے عرض کیا: اس ذات کی قسم جس نے آپ کو نبی برحق بنا کر بھیجا ہے، ان دونوں نے اپنے ارادے سے مجھے آگاہ نہیں کیا تھا، اور نہ ہی مجھے اس کا احساس تھا کہ وہ کام (نوکری) کے طلب گار ہیں، گویا میں آپ صلی اللہ علیہ وسلم کی مسواک کو (جو اس وقت آپ کر رہے تھے) آپ کے ہونٹ کے نیچے دیکھ رہا ہوں اور ہونٹ اوپر اٹھا ہوا ہے، تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ہم کام پر اس شخص سے مدد نہیں لیتے جو اس کا طلب گار ہو ۳؎، لیکن (اے ابوموسیٰ!) تم جاؤ (یعنی ان دونوں کے بجائے میں تمہیں کام دیتا ہوں)، چنانچہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے ان کو یمن کا ذمہ دار بنا کر بھیجا، پھر معاذ بن جبل رضی اللہ عنہم کو ان کے پیچھے بھیجا۔

تخریج دارالدعوہ: صحیح البخاری/الإجارة ۱ (۲۲۶۱)، المرتدین ۲ (۶۹۲۳) مطولا، الأحکام ۷ (۷۱۴۹) ۱۲ (۷۱۵۶) مختصرا، صحیح مسلم/الإمارة ۳ (۱۷۳۳)، سنن ابی داود/الأقضیة ۳ (۳۵۷۹)، الحدود ۱ (۴۳۵۴)، (تحفة الأشراف: ۹۰۸۳)، وقد أخرجہ: مسند احمد (۴/۳۹۳، ۴۰۹، ۴۱۱) (صحیح)

وضاحت: ۱؎ نسخہ نظامیہ میں «يستاك» کا لفظ ہے، بقیہ تمام نسخوں میں «يستن» کا لفظ موجود ہے۔ ۲؎: یعنی اس بات کی درخواست کی کہ آپ ہمیں عامل بنا دیجئیے یا حکومت کی کوئی ذمہ داری ہمارے سپرد کر دیجئیے۔ ۳؎: کیونکہ اللہ کی توفیق و مدد ایسے شخص کے شامل حال نہیں ہوتی، وہ اپنے نفس کے سپرد کر دیا جاتا ہے، جیسا کہ عبدالرحمٰن بن سمرہ رضی اللہ عنہ سے نبی اکرم صلی الله علیہ وسلم نے فرمایا تھا: لا تسال الإمارة فإنك إن اعطيتها عن مسالة وكلت إليها ” حکومت کا سوال نہ کرنا اس لیے کہ اگر تمہیں مانگنے کے بعد حکومت ملی تو تم اس کے حوالے کر دئیے جاؤ گے “ (صحیح البخاری: ۷۱۴۶)۔

قال الشيخ الألباني: صحيح
5- بَابُ: التَّرْغِيبِ فِي السِّوَاكِ
باب: مسواک کی ترغیب کا بیان۔
حدیث نمبر: 5
أَخْبَرَنَا حُمَيْدُ بْنُ مَسْعَدَةَ وَمُحَمَّدُ بْنُ عَبْدِ الْأَعْلَى، ‏‏‏‏‏‏عَنْ يَزِيدَ وَهُوَ ابْنُ زُرَيْعٍ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنِي عَبْدُ الرَّحْمَنِ بْنُ أَبِي عَتِيقٍ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنِي أَبِي، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ سَمِعْتُ عَائِشَةَ، ‏‏‏‏‏‏عَنِ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ "السِّوَاكُ مَطْهَرَةٌ لِلْفَمِ مَرْضَاةٌ لِلرَّبِّ".
ام المؤمنین عائشہ رضی اللہ عنہا نبی اکرم صلی الله علیہ وسلم سے روایت کرتی ہیں کہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: مسواک منہ کی پاکیزگی، رب تعالیٰ کی رضا کا ذریعہ ہے۔

تخریج دارالدعوہ: تفرد بہ النسائی، (تحفة الأشراف: ۱۶۲۷۱)، وقد أخرجہ: صحیح البخاری/الصوم ۲۷ (تعلیقا: ۱۹۳۴)، مسند احمد ۶/۴۷، ۶۲، ۱۲۴، ۲۳۸، سنن الدارمی/الطہارة ۱۹ (۷۱۱) (صحیح)

قال الشيخ الألباني: صحيح
6- بَابُ: الإِكْثَارِ فِي السِّوَاكِ
باب: مسواک کثرت سے کرنے کا بیان۔
حدیث نمبر: 6
أَخْبَرَنَا حُمَيْدُ بْنُ مَسْعَدَةَ وَعِمْرَانُ بْنُ مُوسَى، ‏‏‏‏‏‏قَالَا:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا عَبْدُ الْوَارِثِ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا شُعَيْبُ بْنُ الْحَبْحَابِ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أَنَسِ بْنِ مَالِكٍ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ "قَدْ أَكْثَرْتُ عَلَيْكُمْ فِي السِّوَاكِ".
انس بن مالک رضی اللہ عنہ کہتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: میں نے مسواک کے سلسلے میں تم لوگوں سے بارہا کہا ہے ۱؎۔

تخریج دارالدعوہ: صحیح البخاری/الجمعة ۸ (۸۸۸) (تحفة الأشراف: ۹۱۴)، مسند احمد (۳/۱۴۳، ۲۴۹)، سنن الدارمی/الطہارة ۱۸ (۷۰۹) (صحیح)

وضاحت: ۱؎: «أكثرت» بصیغہ مجہول بھی منقول ہے یعنی مجھے بارہا یہ حکم دیا گیا کہ میں تمہیں باربار مسواک کرنے کی تاکید کروں۔

قال الشيخ الألباني: صحيح
7- بَابُ: الرُّخْصَةِ فِي السِّوَاكِ بِالْعَشِيِّ لِلصَّائِمِ
باب: روزہ دار کے لیے شام کے وقت مسواک کی رخصت کا بیان۔
حدیث نمبر: 7
أَخْبَرَنَا قُتَيْبَةُ بْنُ سَعِيدٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ مَالِكٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أَبِي الزِّنَادِ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ الْأَعْرَجِ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ، ‏‏‏‏‏‏أَنّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ "لَوْلَا أَنْ أَشُقَّ عَلَى أُمَّتِي، ‏‏‏‏‏‏لَأَمَرْتُهُمْ بِالسِّوَاكِ عِنْدَ كُلِّ صَلَاةٍ".
ابوہریرہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: اگر میں اپنی امت کے لیے باعث مشقت نہ سمجھتا تو انہیں ہر نماز کے وقت مسواک کرنے کا حکم دیتا ۱؎۔

تخریج دارالدعوہ: صحیح البخاری/الجمعة ۸ (۸۸۷)، موطا امام مالک/الطھارة: ۳۲ (۱۱۴)، (تحفة الأشراف: ۱۳۸۴۲)، وقد أخرجہ: صحیح مسلم/الطہارة ۱۵ (۲۵۲)، سنن ابی داود/ فیہ ۲۵ (۴۶)، سنن الترمذی/ فیہ ۱۸ (۲۲)، سنن ابن ماجہ/فیہ ۷ (۲۸۷)، موطا امام مالک/فیہ۳۲ (۱۱۴)، مسند احمد ۲/۲۴۵، ۲۵۰، ۳۹۹، ۴۰۰، سنن الدارمی/الطہارة ۱۷ (۷۱۰)، یہ حدیث مکرر ہے، ملاحظہ فرمائیں ۵۳۵ (صحیح)

وضاحت: ۱؎: یعنی وجوبی حکم دیتا، رہا مسواک کا ہر نماز کے وقت مسنون ہونا تو وہ ثابت ہے، اور باب سے مناسبت یہ ہے کہ نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کا یہ حکم عام ہے، صائم اور غیر صائم دونوں کو شامل ہے، اسی طرح صبح، دوپہر اور شام سبھی وقتوں کو شامل ہے۔

قال الشيخ الألباني: صحيح
8- بَابُ: السِّوَاكِ فِي كُلِّ حِينٍ
باب: ہر وقت مسواک کرنے کا بیان۔
حدیث نمبر: 8
أَخْبَرَنَا عَلِيُّ بْنُ خَشْرَمٍ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا عِيسَى وَهُوَ ابْنُ يُونُسَ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ مِسْعَرٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ الْمِقْدَامِ وَهُوَ ابْنُ شُرَيْحٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أَبِيهِ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ قُلْتُ لِعَائِشَةَ"بِأَيِّ شَيْءٍ كَانَ يَبْدَأُ النَّبِيُّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ إِذَا دَخَلَ بَيْتَهُ؟ قَالَتْ:‏‏‏‏ بِالسِّوَاكِ".
شریح کہتے ہیں: میں نے ام المؤمنین عائشہ رضی اللہ عنہا سے پوچھا کہ نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم جب اپنے گھر میں داخل ہوتے تو کون سا کام پہلے کرتے؟ انہوں نے کہا: مسواک سے (پہل کرتے) ۱؎۔

تخریج دارالدعوہ: صحیح مسلم/الطہارة ۱۵ (۲۵۳)، سنن ابی داود/فیہ ۲۷ (۵۱)، سنن ابن ماجہ/فیہ ۷ (۲۹۰)، مسند احمد ۶/۴۱، ۱۱۰، ۱۸۲، ۱۸۸، ۱۹۲، ۲۳۷، ۲۵۴، (تحفة الأشراف: ۱۶۱۴۴) (صحیح)

وضاحت: ۱؎: اس سے اندازہ ہوتا ہے کہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم کی طبیعت میں کس درجہ لطافت تھی کہ منہ میں معمولی تغیر کا پیدا ہونا بھی گوارا نہ تھا۔

قال الشيخ الألباني: صحيح