رواة الحدیث

نتائج
نتیجہ مطلوبہ تلاش لفظ / الفاظ: برد سنان الشامي 1834
تمام کتب میں:
15 رزلٹ جن میں تمام الفاظ آئے ہیں۔
رواۃ الحدیث: واثلة بن الاسقع الليثي ( 8115 ) ، مكحول بن ابي مسلم الشامي ( 7659 ) ، برد بن سنان الشامي ( 1834 ) ، حفص بن غياث النخعي ( 2448 ) ، القاسم بن امية العقدي ( 1566 ) ، سلمة بن شبيب المسمعي ( 3505 ) ، حفص بن غياث النخعي ( 2448 ) ، عمر بن إسماعيل الهمداني ( 5908 ) ، حدیث ۔۔۔ واثلہ بن اسقع ؓ کہتے ہیں کہ رسول اللہ ﷺ نے فرمایا : ” اپنے بھائی کے ساتھ شماتت اعداء نہ کرو ، ہو سکتا ہے کہ اللہ تعالیٰ اس پر رحم کرے اور تمہیں آزمائش میں ڈال دے “ ۔ امام ترمذی کہتے ہیں : ۱- یہ حدیث حسن غریب ہے ، ۲- مکحول کا سماع واثلہ بن اسقع ، انس بن مالک اور ابوھند داری سے ثابت ہے ، اور یہ بھی کہا جاتا ہے کہ ان کا سماع ان تینوں صحابہ کے علاوہ کسی سے ثابت نہیں ہے ، ۳- یہ مکحول شامی ہیں ان کی کنیت ابوعبداللہ ہے ، یہ ایک غلام تھے بعد میں انہیں آزاد کر دیا گیا تھا ، ۴- اور ایک مکحول ازدی بصریٰ بھی ہیں ان کا سماع عبداللہ بن عمر سے ثابت ہے ان سے عمارہ بن زاذان روایت کرتے ہیں ۔ اس سند سے مکحول شامی کے بارے میں مروی ہے کہ جب ان سے کوئی مسئلہ پوچھا جاتا تو وہ « ندانم » (میں نہیں جانتا) کہتے تھے ۔
Terms matched: 4  -  Score: 344  -  4k
رواۃ الحدیث: مكحول بن ابي مسلم الشامي ( 7659 ) ، برد بن سنان الشامي ( 1834 ) ، حماد بن سلمة البصري ( 2492 ) ، موسى بن إسماعيل التبوذكي ( 7721 ) ، حدیث ۔۔۔ مکحول کہتے ہیں کہ رسول اللہ ﷺ نے فرمایا : ” مسلمانوں کا خیمہ لڑائیوں کے وقت ایک ایسی سر زمین میں ہو گا جسے غوطہٰ کہا جاتا ہے “ ۔
Terms matched: 4  -  Score: 344  -  1k
رواۃ الحدیث: ابو هريرة الدوسي ( 4396 ) ، واثلة بن الاسقع الليثي ( 8115 ) ، مكحول بن ابي مسلم الشامي ( 7659 ) ، برد بن سنان الشامي ( 1834 ) ، محرز بن عبد الله الجزري ( 6740 ) ، محمد بن خازم الاعمى ( 6936 ) ، علي بن محمد الكوفي ( 5811 ) ، حدیث ۔۔۔ ابوہریرہ ؓ کہتے ہیں کہ رسول اللہ ﷺ نے فرمایا : ” ابوہریرہ ! ورع و تقویٰ والے بن جاؤ ، لوگوں میں سب سے زیادہ عبادت گزار ہو جاؤ گے ، قانع بن جاؤ ، لوگوں میں سب سے زیادہ شکر کرنے والے ہو جاؤ گے ، اور لوگوں کے لیے وہی پسند کرو جو اپنے لیے پسند کرتے ہو ، مومن ہو جاؤ گے ، پڑوسی کے ساتھ حسن سلوک کرو ، مسلمان ہو جاؤ گے ، اور کم ہنسا کرو ، کیونکہ زیادہ ہنسی دل کو مردہ کر دیتی ہے “ ۔
Terms matched: 4  -  Score: 344  -  3k
رواۃ الحدیث: مكحول بن ابي مسلم الشامي ( 7659 ) ، برد بن سنان الشامي ( 1834 ) ، معتمر بن سليمان التيمي ( 7607 ) ، إسحاق بن راهويه المروزي ( 927 ) ، حدیث ۔۔۔ مکحول کہتے ہیں : ہر نشہ لانے والی چیز حرام ہے ۔
Terms matched: 4  -  Score: 340  -  1k
رواۃ الحدیث: عائشة بنت ابي بكر الصديق ( 4049 ) ، غضيف بن الحارث السكوني ( 6369 ) ، عبادة بن نسي الكندي ( 4159 ) ، برد بن سنان الشامي ( 1834 ) ، حماد بن زيد الازدي ( 2491 ) ، يحيى بن حبيب الحارثي ( 8247 ) ، حدیث ۔۔۔ غضیف بن حارث کہتے ہیں کہ میں ام المؤمنین عائشہ ؓ کے پاس آیا ، اور ان سے پوچھا : کیا رسول اللہ ﷺ رات کے ابتدائی حصہ میں غسل کرتے تھے یا آخری حصہ میں ؟ تو انہوں نے کہا : دونوں وقتوں میں کرتے تھے ، کبھی رات کے شروع میں غسل کرتے اور کبھی رات کے آخر میں ، میں نے کہا : شکر ہے اس اللہ رب العزت کا جس نے اس معاملے میں گنجائش رکھی ہے ۔
Terms matched: 4  -  Score: 292  -  2k
رواۃ الحدیث: عائشة بنت ابي بكر الصديق ( 4049 ) ، غضيف بن الحارث السكوني ( 6369 ) ، عبادة بن نسي الكندي ( 4159 ) ، برد بن سنان الشامي ( 1834 ) ، حماد بن زيد الازدي ( 2491 ) ، يحيى بن حبيب الحارثي ( 8247 ) ، حدیث ۔۔۔ غضیف بن حارث کہتے ہیں کہ میں ام المؤمنین عائشہ ؓ کے پاس آیا ، تو میں نے ان سے سوال کیا اور کہا : رسول اللہ ﷺ رات کے ابتدائی حصہ میں غسل کرتے تھے یا آخری حصے میں ؟ تو انہوں نے کہا : دونوں طرح سے (کرتے تھے) ، کبھی رات کے ابتدائی حصہ میں غسل کرتے ، اور کبھی آخری حصہ میں ، اس پر میں نے کہا : اس اللہ کی تعریف ہے جس نے شریعت مطہرہ والے معاملہ کے اندر گنجائش رکھی ہے ۔
Terms matched: 4  -  Score: 292  -  2k
رواۃ الحدیث: جابر بن عبد الله الانصاري ( 2069 ) ، عطاء بن ابي رباح القرشي ( 5625 ) ، برد بن سنان الشامي ( 1834 ) ، قدامة بن شهاب المازني ( 6463 ) ، يوسف بن واضح الهاشمي ( 8594 ) ، حدیث ۔۔۔ جابر بن عبداللہ ؓ سے روایت ہے کہ جبرائیل علیہ السلام نبی اکرم ﷺ کے پاس آئے وہ آپ ﷺ کو نماز کے اوقات سکھا رہے تھے ، تو جبرائیل علیہ السلام آگے بڑھے ، اور رسول اللہ ﷺ ان کے پیچھے تھے اور لوگ رسول اللہ ﷺ کے پیچھے تھے ، تو جبرائیل علیہ السلام نے ظہر پڑھائی جس وقت سورج ڈھل گیا ، پھر جبرائیل علیہ السلام آپ ﷺ کے پاس اس وقت آئے جب سایہ قد کے برابر ہو گیا ، اور جس طرح انہوں نے پہلے کیا تھا ویسے ہی پھر کیا ، جبرائیل آگے بڑھے ، اور رسول اللہ ﷺ ان کے پیچھے ہوئے ، اور لوگ رسول اللہ ﷺ کے پیچھے ، پھر انہوں نے عصر پڑھائی ، پھر جبرائیل علیہ السلام آپ ﷺ کے پاس اس وقت آئے جب سورج ڈوب گیا ، تو جبرائیل آگے بڑھے ، رسول اللہ ﷺ ان کے پیچھے ہوئے ، اور لوگ رسول اللہ ﷺ کے پیچھے ، پھر انہوں نے مغرب پڑھائی ، پھر جبرائیل علیہ السلام آپ ﷺ کے پاس اس وقت آئے جب شفق غائب ہو گئی ، تو وہ آگے بڑھے ، اور رسول اللہ ﷺ ان کے پیچھے ہوئے ، اور لوگ رسول اللہ ﷺ کے پیچھے ، تو انہوں نے عشاء پڑھائی ، پھر جبرائیل علیہ السلام آپ ﷺ کے پاس اس وقت آئے جب فجر کی پو پھٹی ، تو وہ آگے بڑھے ، رسول اللہ ﷺ ان کے پیچھے اور لوگ رسول اللہ ﷺ کے پیچھے ، انہوں نے فجر پڑھائی ، پھر جبرائیل علیہ السلام دوسرے دن آپ کے پاس اس وقت آئے جب آدمی کا سایہ اس کے قد کے برابر ہو گیا ، چنانچہ انہوں نے ویسے ہی کیا جس طرح کل کیا تھا ، تو ظہر پڑھائی ، پھر وہ آپ کے پاس اس وقت آئے جب انسان کا سایہ اس کے قد کے دوگنا ہو گیا ، انہوں نے ویسے ہی کیا جس طرح کل کیا تھا ، تو انہوں نے عصر پڑھائی ، پھر آپ کے پاس اس وقت آئے جب سورج ڈوب گیا ، تو انہوں نے ویسے ہی کیا جس طرح کل کیا تھا ، تو انہوں نے مغرب پڑھائی ، پھر ہم سو گئے ، پھر اٹھے ، پھر سو گئے پھر اٹھے ، پھر جبرائیل علیہ السلام آپ کے پاس آئے ، اور اسی طرح کیا جس طرح کل انہوں نے کیا تھا ، پھر عشاء پڑھائی ، پھر آپ ﷺ کے پاس اس وقت آئے جب فجر (کی روشنی) پھیل گئی ، صبح ہو گئی ، اور ستارے نمودار ہو گئے ، اور انہوں نے ویسے ہی کیا جس طرح کل کیا تھا ، تو انہوں نے فجر پڑھائی ، پھر کہا : ” ان دونوں نمازوں کے درمیان میں ہی نماز ...
Terms matched: 4  -  Score: 292  -  7k
رواۃ الحدیث: عائشة بنت ابي بكر الصديق ( 4049 ) ، عروة بن الزبير الاسدي ( 5594 ) ، محمد بن شهاب الزهري ( 7272 ) ، برد بن سنان الشامي ( 1834 ) ، حاتم بن وردان السعدي ( 2214 ) ، إسحاق بن راهويه المروزي ( 927 ) ، حدیث ۔۔۔ ام المؤمنین عائشہ ؓ کہتی ہیں کہ میں نے دروازہ کھلوانا چاہا ، اس وقت رسول اللہ ﷺ نفل نماز پڑھ رہے تھے ، دروازہ قبلہ کی طرف پڑ رہا تھا ، آپ اپنے دائیں جانب یا بائیں جانب (چند قدم) چلے ، اور آپ نے دروازہ کھولا ، پھر آپ اپنی جگہ پر واپس لوٹ آئے ۔
Terms matched: 4  -  Score: 292  -  2k
رواۃ الحدیث: عائشة بنت ابي بكر الصديق ( 4049 ) ، غضيف بن الحارث السكوني ( 6369 ) ، عبادة بن نسي الكندي ( 4159 ) ، برد بن سنان الشامي ( 1834 ) ، سفيان الثوري ( 3436 ) ، مخلد بن يزيد الحراني ( 7370 ) ، عمرو بن هشام الجزري ( 6213 ) ، حدیث ۔۔۔ غضیف بن حارث سے روایت ہے کہ انہوں نے ام المؤمنین عائشہ ؓ سے پوچھا : رسول اللہ ﷺ رات کے کس حصہ میں غسل کرتے تھے ؟ تو انہوں نے کہا : کبھی آپ ﷺ نے رات کے ابتدائی حصہ میں غسل کیا ، اور کبھی آخری حصہ میں کیا ، میں نے کہا : شکر ہے اس اللہ تعالیٰ کا جس نے معاملہ میں وسعت اور گنجائش رکھی ہے ۔
Terms matched: 4  -  Score: 292  -  2k
رواۃ الحدیث: عائشة بنت ابي بكر الصديق ( 4049 ) ، غضيف بن الحارث السكوني ( 6369 ) ، عبادة بن نسي الكندي ( 4159 ) ، برد بن سنان الشامي ( 1834 ) ، إسماعيل بن علية الاسدي ( 1003 ) ، ابن ابي شيبة العبسي ( 5049 ) ، حدیث ۔۔۔ غضیف بن حارث کہتے ہیں کہ میں ام المؤمنین عائشہ ؓ کے پاس آیا ، اور ان سے پوچھا : رسول اللہ ﷺ قرآن بلند آواز سے پڑھتے تھے یا آہستہ ؟ انہوں نے کہا : کبھی بلند آواز سے پڑھتے تھے اور کبھی آہستہ ، میں نے کہا : اللہ اکبر ، شکر ہے اس اللہ کا جس نے اس معاملہ میں وسعت رکھی ہے ۔
Terms matched: 4  -  Score: 292  -  2k
رواۃ الحدیث: عائشة بنت ابي بكر الصديق ( 4049 ) ، عروة بن الزبير الاسدي ( 5594 ) ، محمد بن شهاب الزهري ( 7272 ) ، برد بن سنان الشامي ( 1834 ) ، بشر بن المفضل الرقاشي ( 1868 ) ، مسدد بن مسرهد الاسدي ( 7426 ) ، احمد بن حنبل الشيباني ( 488 ) ، حدیث ۔۔۔ ام المؤمنین عائشہ ؓ کہتی ہیں کہ رسول اللہ ﷺ نماز پڑھ رہے تھے ، دروازہ بند تھا تو میں آئی اور دروازہ کھلوانا چاہا تو آپ نے (حالت نماز میں) چل کر میرے لیے دروازہ کھولا اور مصلی (نماز کی جگہ) پر واپس لوٹ گئے ۔ اور عروہ نے ذکر کیا کہ آپ کے گھر کا دروازہ قبلہ کی سمت میں تھا ۔
Terms matched: 4  -  Score: 292  -  2k
رواۃ الحدیث: جابر بن عبد الله الانصاري ( 2069 ) ، عطاء بن ابي رباح القرشي ( 5625 ) ، برد بن سنان الشامي ( 1834 ) ، إسماعيل بن علية الاسدي ( 1003 ) ، عبد الاعلى بن عبد الاعلى القرشي ( 4207 ) ، عثمان بن ابي شيبة العبسي ( 5551 ) ، حدیث ۔۔۔ جابر ؓ کہتے ہیں ہم رسول اللہ ﷺ کے ساتھ غزوہ کرتے تھے تو ہم مشرکین کے برتن اور مشکیزے پاتے تو انہیں کام میں لاتے تو آپ اس کی وجہ سے ہم پر کوئی نکیر نہیں فرماتے ۔
Terms matched: 4  -  Score: 292  -  2k
رواۃ الحدیث: عائشة بنت ابي بكر الصديق ( 4049 ) ، عروة بن الزبير الاسدي ( 5594 ) ، محمد بن شهاب الزهري ( 7272 ) ، برد بن سنان الشامي ( 1834 ) ، بشر بن المفضل الرقاشي ( 1868 ) ، يحيى بن خلف الجوباري ( 8257 ) ، حدیث ۔۔۔ ام المؤمنین عائشہ ؓ کہتی ہیں کہ میں گھر آئی ، رسول اللہ ﷺ نماز پڑھ رہے تھے اور دروازہ بند تھا ، تو آپ چل کر آئے اور میرے لیے دروازہ کھولا ۔ پھر اپنی جگہ لوٹ گئے ، اور انہوں نے بیان کیا کہ دروازہ قبلے کی طرف تھا ۔ امام ترمذی کہتے ہیں : یہ حدیث حسن غریب ہے ۔
Terms matched: 4  -  Score: 292  -  2k
رواۃ الحدیث: عبادة بن الصامت الانصاري ( 4153 ) ، قبيصة بن ذؤيب الخزاعي ( 6453 ) ، إسحاق بن قبيصة الخزاعي ( 963 ) ، برد بن سنان الشامي ( 1834 ) ، يحيى بن حمزة الحضرمي ( 8254 ) ، هشام بن عمار السلمي ( 8056 ) ، حدیث ۔۔۔ قبیصہ سے روایت ہے کہ عبادہ بن صامت انصاری ؓ نے (جو کہ عقبہ کی رات میں رسول اللہ ﷺ سے بیعت کرنے والے صحابی ہیں) معاویہ ؓ کے ساتھ سر زمین روم میں جہاد کیا ، وہاں لوگوں کو دیکھا کہ وہ سونے کے ٹکڑوں کو دینار (اشرفی) کے بدلے اور چاندی کے ٹکڑوں کو درہم کے بدلے بیچتے ہیں ، تو کہا : لوگو ! تم سود کھاتے ہو ، میں نے رسول اللہ ﷺ کو فرماتے سنا ہے : ” تم سونے کو سونے سے نہ بیچو مگر برابر برابر ، نہ تو اس میں زیادتی ہو اور نہ ادھار “ ، تو معاویہ ؓ نے ان سے کہا : ابوالولید ! میری رائے میں تو یہ سود نہیں ہے ، یعنی نقدا نقد میں تفاضل (کمی بیشی) جائز ہے ، ہاں اگر ادھار ہے تو وہ سود ہے ، عبادہ ؓ نے کہا : میں آپ سے حدیث رسول بیان کر رہا ہوں اور آپ اپنی رائے بیان کر رہے ہیں ، اگر اللہ تعالیٰ نے مجھے یہاں سے صحیح سالم نکال دیا تو میں کسی ایسی سر زمین میں نہیں رہ سکتا جہاں میرے اوپر آپ کی حکمرانی چلے ، پھر جب وہ واپس لوٹے تو مدینہ چلے گئے ، تو ان سے عمر بن خطاب ؓ نے پوچھا : ابوالولید ! مدینہ آنے کا سبب کیا ہے ؟ تو انہوں نے ان سے پورا واقعہ بیان کیا ، اور معاویہ ؓ سے ان کے زیر انتظام علاقہ میں نہ رہنے کی جو بات کہی تھی اسے بھی بیان کیا ، عمر ؓ نے کہا : ” ابوالولید ! آپ اپنی سر زمین کی طرف واپس لوٹ جائیں ، اللہ اس سر زمین میں کوئی بھلائی نہ رکھے جس میں آپ اور آپ جیسے لوگ نہ ہوں “ ، اور معاویہ ؓ کو لکھا کہ عبادہ پر آپ کا حکم نہیں چلے گا ، آپ لوگوں کو ترغیب دیں کہ وہ عبادہ کی بات پر چلیں کیونکہ شرعی حکم دراصل وہی ہے جو انہوں نے بیان کیا ۔
Terms matched: 4  -  Score: 292  -  6k
رواۃ الحدیث: عائشة بنت ابي بكر الصديق ( 4049 ) ، غضيف بن الحارث السكوني ( 6369 ) ، عبادة بن نسي الكندي ( 4159 ) ، برد بن سنان الشامي ( 1834 ) ، إسماعيل بن علية الاسدي ( 1003 ) ، احمد بن حنبل الشيباني ( 488 ) ، معتمر بن سليمان التيمي ( 7607 ) ، مسدد بن مسرهد الاسدي ( 7426 ) ، حدیث ۔۔۔ غضیف بن حارث کہتے ہیں کہ میں نے ام المؤمنین عائشہ ؓ سے کہا : آپ نے رسول اللہ ﷺ کو رات کے پہلے حصہ میں غسل جنابت کرتے ہوئے دیکھا ہے یا آخری حصہ میں ؟ کہا : کبھی آپ رات کے پہلے حصہ میں غسل فرماتے ، کبھی آخری حصہ میں ، میں نے کہا : اللہ اکبر ! شکر ہے اس اللہ کا جس نے اس معاملہ میں وسعت رکھی ہے ۔ پھر میں نے کہا : آپ نے رسول اللہ ﷺ کو رات کے پہلے حصہ میں وتر پڑھتے دیکھا ہے یا آخری حصہ میں ؟ کہا : کبھی آپ ﷺ رات کے پہلے حصہ میں پڑھتے تھے اور کبھی آخری حصہ میں ، میں نے کہا : اللہ اکبر ! اس اللہ کا شکر ہے جس نے اس معاملے میں وسعت رکھی ہے ۔ پھر میں نے پوچھا : آپ نے رسول اللہ ﷺ کو قرآن زور سے پڑھتے دیکھا ہے یا آہستہ سے ؟ کہا : کبھی آپ ﷺ زور سے پڑھتے اور کبھی آہستہ سے ، میں نے کہا : اللہ اکبر ! اس اللہ کا شکر ہے جس نے اس امر میں وسعت رکھی ہے ۔
Terms matched: 4  -  Score: 292  -  4k


Search took 0.783 seconds