رواة الحدیث

نتائج
نتیجہ مطلوبہ تلاش لفظ / الفاظ: بكر عبد الله المزني 1933
کتاب/کتب میں: صحیح بخاری
12 رزلٹ جن میں تمام الفاظ آئے ہیں۔
رواۃ الحدیث: انس بن مالك الانصاري ( 720 ) ، بكر بن عبد الله المزني ( 1933 ) ، غالب بن ابي غيلان الراسبي ( 6350 ) ، خالد بن عبد الرحمن السلمي ( 2660 ) ، عبد الله بن المبارك الحنظلي ( 4716 ) ، محمد بن مقاتل المروزي ( 7287 ) ، حدیث ۔۔۔ ہم سے محمد بن مقاتل نے بیان کیا ، انہوں نے کہا کہ ہمیں عبداللہ بن مبارک نے خبر دی ، انہوں نے کہا ہم سے خالد بن عبدالرحمٰن نے بیان کیا ، انہوں نے کہا مجھ سے غالب قطان نے بکر بن عبداللہ مزنی کے واسطہ سے بیان کیا ، انہوں نے انس بن مالک ؓ سے آپ نے فرمایا کہ جب ہم (گرمیوں میں) نبی کریم ﷺ کے پیچھے ظہر کی نماز دوپہر دن میں پڑھتے تھے تو گرمی سے بچنے کے لیے کپڑوں پر سجدہ کیا کرتے ۔
Terms matched: 5  -  Score: 945  -  3k
رواۃ الحدیث: المغيرة بن شعبة الثقفي ( 1665 ) ، جبير بن حية الثقفي ( 2094 ) ، زياد بن جبير الثقفي ( 3077 ) ، بكر بن عبد الله المزني ( 1933 ) ، سعيد بن عبيد الله الثقفي ( 3370 ) ، معتمر بن سليمان التيمي ( 7607 ) ، عبد الله بن جعفر القرشي ( 4764 ) ، الفضل بن يعقوب الرخامي ( 1563 ) ، حدیث ۔۔۔ ہم سے فضل بن یعقوب نے بیان کیا ، کہا ہم سے عبداللہ بن جعفر الرقی نے ، کہا ہم سے معتمر بن سلیمان نے ، کہا ہم سے سعید بن عبیداللہ ثقفی نے بیان کیا ، ان سے بکر بن عبداللہ مزنی اور زیاد بن جبیر ہر دو نے بیان کیا اور ان سے جبیر بن حیہ نے بیان کیا کہ کفار سے جنگ کے لیے عمر ؓ نے فوجوں کو (فارس کے) بڑے بڑے شہروں کی طرف بھیجا تھا ۔ (جب لشکر قادسیہ پہنچا اور لڑائی کا نتیجہ مسلمانوں کے حق میں نکلا) تو ہرمزان (شوستر کا حاکم) اسلام لے آیا ۔ عمر ؓ نے اس سے فرمایا کہ میں تم سے ان (ممالک فارس وغیرہ) پر فوج بھیجنے کے سلسلے میں مشورہ چاہتا ہوں (کہ پہلے ان تین مقاموں فارس ، اصفہان اور آذربائیجان میں کہاں سے لڑائی شروع کی جائے) اس نے کہا جی ہاں ! اس ملک کی مثال اور اس میں رہنے والے اسلام دشمن باشندوں کی مثال ایک پرندے جیسی ہے جس کا سر ہے ، دو بازو ہیں ۔ اگر اس کا ایک بازو توڑ دیا جائے تو وہ اپنے دونوں پاؤں پر ایک بازو اور ایک سر کے ساتھ کھڑا رہ سکتا ہے ۔ اگر دوسرا بازو بھی توڑ دیا جائے تو دونوں پاؤں اور سر کے ساتھ کھڑا رہ سکتا ہے ۔ لیکن اگر سر توڑ دیا جائے تو دونوں پاؤں دونوں بازو اور سر سب بےکار رہ جاتا ہے ۔ پس سر تو کسریٰ ہے ، ایک بازو قیصر ہے اور دوسرا فارس ! اس لیے آپ مسلمانوں کو حکم دے دیں کہ پہلے وہ کسریٰ پر حملہ کریں ۔ اور بکر بن عبداللہ اور زیاد بن جبیر دونوں نے بیان کیا کہ ان سے جبیر بن حیہ نے بیان کیا کہ ہمیں عمر ؓ نے (جہاد کے لیے) بلایا اور نعمان بن مقرن ؓ کو ہمارا امیر مقرر کیا ۔ جب ہم دشمن کی سر زمین (نہاوند) کے قریب پہنچے تو کسریٰ کا ایک افسر چالیس ہزار کا لشکر ساتھ لیے ہوئے ہمارے مقابلہ کے لیے بڑھا ۔ پھر ایک ترجمان نے آ کر کہا کہ تم میں سے کوئی ایک شخص (معاملات پر) گفتگو کرے ۔ مغیرہ بن شعبہ ؓ نے (مسلمانوں کی نمائندگی کی اور) فرمایا کہ جو تمہارے مطالبات ہوں ، انہیں بیان کرو ۔ اس نے پوچھا آخر تم لوگ ہو کون ؟ مغیرہ ؓ نے کہا کہ ہم عرب کے رہنے والے ہیں ، ہم انتہائی بدبختیوں اور مصیبتوں ...
Terms matched: 5  -  Score: 889  -  10k
رواۃ الحدیث: المغيرة بن شعبة الثقفي ( 1665 ) ، جبير بن حية الثقفي ( 2094 ) ، زياد بن جبير الثقفي ( 3077 ) ، بكر بن عبد الله المزني ( 1933 ) ، سعيد بن عبيد الله الثقفي ( 3370 ) ، معتمر بن سليمان التيمي ( 7607 ) ، عبد الله بن جعفر القرشي ( 4764 ) ، الفضل بن يعقوب الرخامي ( 1563 ) ، حدیث ۔۔۔ ہم سے فضل بن یعقوب نے بیان کیا ، انہوں نے کہا ہم سے عبداللہ بن جعفر الرقی نے بیان کیا ، ان سے معتمر بن سلیمان نے بیان کیا ، ان سے سعید بن عبیداللہ ثقفی نے بیان کیا ، ان سے بکر بن عبداللہ مزنی اور زیاد بن جبیر بن حیہ نے بیان کیا ، ان سے مغیرہ بن شعبہ ؓ نے (ایران کی فوج کے سامنے) کہا کہ ہمارے نبی ﷺ نے ہمیں اپنے رب کے پیغامات میں سے یہ پیغام پہنچایا کہ ہم میں سے جو (فی سبیل اللہ) قتل کیا جائے گا وہ جنت میں جائے گا ۔
Terms matched: 5  -  Score: 889  -  3k
رواۃ الحدیث: ابو هريرة الدوسي ( 4396 ) ، نفيع بن رافع المدني ( 7930 ) ، بكر بن عبد الله المزني ( 1933 ) ، حميد بن ابي حميد الطويل ( 2531 ) ، عبد الاعلى بن عبد الاعلى القرشي ( 4207 ) ، عياش بن الوليد الرقام ( 6274 ) ، حدیث ۔۔۔ ہم سے عیاش نے بیان کیا ، انہوں نے کہا ہم سے عبدالاعلیٰ نے بیان کیا ، انہوں نے کہا ہم سے حمید نے بکر کے واسطہ سے بیان کیا ، انہوں نے ابورافع سے ، وہ ابوہریرہ ؓ سے ، کہا کہ میری ملاقات رسول اللہ ﷺ سے ہوئی ۔ اس وقت میں جنبی تھا ۔ آپ ﷺ نے میرا ہاتھ پکڑ لیا اور میں آپ ﷺ کے ساتھ چلنے لگا ۔ آخر آپ ﷺ ایک جگہ بیٹھ گئے اور میں آہستہ سے اپنے گھر آیا اور غسل کر کے حاضر خدمت ہوا ۔ آپ ﷺ ابھی بیٹھے ہوئے تھے ، آپ ﷺ نے دریافت فرمایا اے ابوہریرہ ! کہاں چلے گئے تھے ، میں نے واقعہ بیان کیا تو آپ ﷺ نے فرمایا سبحان اللہ ! مومن تو نجس نہیں ہوتا ۔
Terms matched: 5  -  Score: 812  -  3k
رواۃ الحدیث: انس بن مالك الانصاري ( 720 ) ، بكر بن عبد الله المزني ( 1933 ) ، سعيد بن عبيد الله الثقفي ( 3370 ) ، يوسف بن يزيد البصري ( 8596 ) ، محمد بن ابي بكر المقدمي ( 6760 ) ، حدیث ۔۔۔ ہم سے محمد بن ابی بکر مقدمی نے بیان کیا ، انہوں نے کہا ہم سے یوسف ابومعشر براء نے بیان کیا ، انہوں نے کہا کہ میں نے سعید بن عبداللہ سے سنا ، انہوں نے کہا کہ مجھ سے بکر بن عبداللہ نے بیان کیا اور انہوں نے کہا کہ مجھ سے انس بن مالک ؓ نے بیان کیا کہ جب شراب حرام کی گئی تو وہ کچی اور پختہ کھجوروں سے تیار کی جاتی تھی ۔
Terms matched: 5  -  Score: 800  -  2k
رواۃ الحدیث: انس بن مالك الانصاري ( 720 ) ، بكر بن عبد الله المزني ( 1933 ) ، غالب بن ابي غيلان الراسبي ( 6350 ) ، بشر بن المفضل الرقاشي ( 1868 ) ، هشام بن عبد الملك الباهلي ( 8053 ) ، حدیث ۔۔۔ ہم سے ابوالولید ہشام بن عبدالملک نے بیان کیا ، انہوں نے کہا ہم سے بشر بن مفضل نے بیان کیا ، انہوں نے کہا مجھے غالب قطان نے بکر بن عبداللہ کے واسطے سے بیان کیا ، انہوں نے انس بن مالک ؓ سے کہا کہ ہم نبی کریم ﷺ کے ساتھ نماز پڑھتے تھے ۔ پھر سخت گرمی کی وجہ سے کوئی کوئی ہم میں سے اپنے کپڑے کا کنارہ سجدے کی جگہ رکھ لیتا ۔ ... حدیث متعلقہ ابواب: گرمی کی شدت میں کپڑے پر سجدہ کرنا ۔
Terms matched: 5  -  Score: 711  -  2k
رواۃ الحدیث: انس بن مالك الانصاري ( 720 ) ، بكر بن عبد الله المزني ( 1933 ) ، غالب بن ابي غيلان الراسبي ( 6350 ) ، بشر بن المفضل الرقاشي ( 1868 ) ، مسدد بن مسرهد الاسدي ( 7426 ) ، حدیث ۔۔۔ ہم سے مسدد بن مسرہد نے بیان کیا ، کہا کہ ہم سے بشر بن مفضل نے بیان کیا ، کہا کہ ہم سے غالب بن قطان نے بیان کیا ، ان سے بکر بن عبداللہ مزنی نے اور ان سے انس بن مالک ؓ نے کہ ہم سخت گرمیوں میں جب نبی کریم ﷺ کے ساتھ نماز پڑھتے اور چہرے کو زمین پر پوری طرح رکھنا مشکل ہو جاتا تو اپنا کپڑا بچھا کر اس پر سجدہ کیا کرتے تھے ۔
Terms matched: 5  -  Score: 662  -  2k
رواۃ الحدیث: ابو هريرة الدوسي ( 4396 ) ، نفيع بن رافع المدني ( 7930 ) ، بكر بن عبد الله المزني ( 1933 ) ، سليمان بن طرخان التيمي ( 3601 ) ، معتمر بن سليمان التيمي ( 7607 ) ، محمد بن الفضل السدوسي ( 6855 ) ، حدیث ۔۔۔ ہم سے ابوالنعمان محمد بن فضل نے بیان کیا ، کہا کہ ہم سے معتمر بن سلیمان نے بیان کیا اپنے باپ سے ، انہوں نے بکر بن عبداللہ سے ، انہوں نے ابورافع سے ، انہوں نے بیان کیا کہ میں نے ابوہریرہ ؓ کے ساتھ عشاء کی نماز پڑھی ۔ اس میں آپ نے « إذا السماء انشقت‏ » پڑھی اور سجدہ (تلاوت) کیا ۔ میں نے ان سے اس کے متعلق معلوم کیا تو بتلایا کہ میں نے ابوالقاسم ﷺ کے پیچھے بھی (اس آیت میں تلاوت کا) سجدہ کیا ہے اور زندگی بھر میں اس میں سجدہ کروں گا ، یہاں تک کہ میں آپ ﷺ سے مل جاؤں ۔
Terms matched: 5  -  Score: 632  -  3k
رواۃ الحدیث: ابو هريرة الدوسي ( 4396 ) ، نفيع بن رافع المدني ( 7930 ) ، بكر بن عبد الله المزني ( 1933 ) ، حميد بن ابي حميد الطويل ( 2531 ) ، يحيى بن سعيد القطان ( 8271 ) ، علي بن المديني ( 5792 ) ، حدیث ۔۔۔ ہم سے علی بن عبداللہ مدینی نے بیان کیا ، کہا ہم سے یحییٰ بن سعید قطان نے ، کہا ہم سے حمید طویل نے ، کہا ہم سے بکر بن عبداللہ نے ابورافع کے واسطہ سے ، انہوں نے ابوہریرہ سے سنا کہ مدینہ کے کسی راستے پر نبی کریم ﷺ سے ان کی ملاقات ہوئی ۔ اس وقت ابوہریرہ ؓ جنابت کی حالت میں تھے ۔ ابوہریرہ ؓ نے کہا کہ میں پیچھے رہ کر لوٹ گیا اور غسل کر کے واپس آیا ۔ تو رسول اللہ ﷺ نے دریافت فرمایا کہ اے ابوہریرہ ! کہاں چلے گئے تھے ۔ انہوں نے جواب دیا کہ میں جنابت کی حالت میں تھا ۔ اس لیے میں نے آپ ﷺ کے ساتھ بغیر غسل کے بیٹھنا برا جانا ۔ آپ ﷺ نے ارشاد فرمایا ۔ سبحان اللہ ! مومن ہرگز نجس نہیں ہو سکتا ۔ ... حدیث متعلقہ ابواب: مومن نجس نہیں ہوتا ۔
Terms matched: 5  -  Score: 632  -  3k
رواۃ الحدیث: ابو هريرة الدوسي ( 4396 ) ، نفيع بن رافع المدني ( 7930 ) ، بكر بن عبد الله المزني ( 1933 ) ، سليمان بن طرخان التيمي ( 3601 ) ، معتمر بن سليمان التيمي ( 7607 ) ، مسدد بن مسرهد الاسدي ( 7426 ) ، حدیث ۔۔۔ ہم سے مسدد بن مسرہد نے بیان کیا ، کہا کہ ہم سے معتمر بن سلیمان نے بیان کیا ، کہا کہ میں نے اپنے باپ سے سنا کہا کہ ہم سے بکر بن عبداللہ مزنی نے بیان کیا ، ان سے ابورافع نے کہا کہ میں نے ابوہریرہ ؓ کے ساتھ نماز عشاء پڑھی ۔ آپ نے « إذا السماء انشقت‏ » کی تلاوت کی اور سجدہ کیا ۔ میں نے عرض کیا کہ آپ نے یہ کیا کیا ؟ انہوں نے اس کا جواب دیا کہ میں نے اس میں ابوالقاسم ﷺ کی اقتداء میں سجدہ کیا تھا اور ہمیشہ سجدہ کرتا ہوں گا تاآنکہ آپ ﷺ سے جا ملوں ۔
Terms matched: 5  -  Score: 632  -  3k
رواۃ الحدیث: ابو هريرة الدوسي ( 4396 ) ، نفيع بن رافع المدني ( 7930 ) ، بكر بن عبد الله المزني ( 1933 ) ، سليمان بن طرخان التيمي ( 3601 ) ، يزيد بن زريع العيشي ( 8418 ) ، مسدد بن مسرهد الاسدي ( 7426 ) ، حدیث ۔۔۔ ہم سے مسدد بن مسرہد نے بیان کیا ، کہا کہ ہم سے یزید بن زریع نے بیان کیا ، کہا کہ ہم سے تیمی نے ابوبکر سے ، انہوں نے ابورافع سے ، انہوں نے کہا کہ میں نے ابوہریرہ ؓ کے ساتھ عشاء پڑھی ، آپ نے « إذا السماء انشقت‏ » اور سجدہ کیا ۔ اس پر میں نے کہا کہ یہ سجدہ کیسا ہے ؟ آپ نے جواب دیا کہ اس سورت میں میں نے ابوالقاسم ﷺ کے پیچھے سجدہ کیا تھا ۔ اس لیے میں بھی ہمیشہ اس میں سجدہ کروں گا ، یہاں تک کہ آپ سے مل جاؤں ۔ ... حدیث متعلقہ ابواب: نماز عشاء میں سجدے والی سورت پڑھنا ۔
Terms matched: 5  -  Score: 622  -  3k
رواۃ الحدیث: انس بن مالك الانصاري ( 720 ) ، بكر بن عبد الله المزني ( 1933 ) ، حميد بن ابي حميد الطويل ( 2531 ) ، بشر بن المفضل الرقاشي ( 1868 ) ، مسدد بن مسرهد الاسدي ( 7426 ) ، حدیث ۔۔۔ ہم سے مسدد بن مسرہد نے بیان کیا ، کہا ہم سے بشر بن مفضل نے بیان کیا ، ان سے حمید طویل نے ، کہا ہم سے بکر بن عبداللہ نے بیان کیا ، انہوں نے عبداللہ بن عمر ؓ سے ذکر کیا کہ انس ؓ نے ان سے بیان کیا کہ نبی کریم ﷺ نے عمرہ اور حج دونوں کا احرام باندھا تھا اور ہم نے بھی آپ کے ساتھ حج ہی کا احرام باندھا تھا ۔ پھر ہم جب مکہ آئے تو آپ ﷺ نے فرمایا کہ جس کے ساتھ قربانی کا جانور نہ ہو وہ اپنے حج کے احرام کو عمرہ کا احرام کر لے (اور طواف اور سعی کر کے احرام کھول دے) اور نبی کریم ﷺ کے ساتھ قربانی کا جانور تھا ۔ پھر علی بن ابی طالب ؓ یمن سے لوٹ کر حج کا احرام باندھ کر آئے ۔ آپ ﷺ نے ان سے دریافت فرمایا کہ تم نے کس طرح احرام باندھا ہے ؟ ہمارے ساتھ تمہاری زوجہ فاطمہ بھی ہیں ۔ انہوں نے عرض کیا کہ میں نے اسی طرح کا احرام باندھا ہے جس طرح آپ ﷺ نے باندھا ہو ۔ آپ ﷺ نے فرمایا کہ پھر اپنے احرام پر قائم رہو ، کیونکہ ہمارے ساتھ قربانی کا جانور ہے ۔
Terms matched: 5  -  Score: 622  -  4k


Search took 0.611 seconds