رواة الحدیث

نتائج
نتیجہ مطلوبہ تلاش لفظ / الفاظ: بكر مضر القرشي 1940
کتاب/کتب میں: سنن ترمذی
10 رزلٹ جن میں تمام الفاظ آئے ہیں۔
رواۃ الحدیث: يزيد بن الهاد الليثي ( 8452 ) ، بكر بن مضر القرشي ( 1940 ) ، قتيبة بن سعيد الثقفي ( 6460 ) ، ابو هريرة الدوسي ( 4396 ) ، ابو سلمة بن عبد الرحمن الزهري ( 4903 ) ، محمد بن إبراهيم القرشي ( 6796 ) ، يزيد بن الهاد الليثي ( 8452 ) ، الليث بن سعد الفهمي ( 6641 ) ، قتيبة بن سعيد الثقفي ( 6460 ) ، حدیث ۔۔۔ ابوہریرہ ؓ سے روایت ہے کہ رسول اللہ ﷺ نے فرمایا : ” بھلا بتاؤ تو صحیح ، اگر تم میں سے کسی کے دروازے پر نہر ہو اور وہ اس نہر میں ہر دن پانچ بار نہائے تو کیا اس کے جسم پر کچھ بھی میل کچیل رہے گا ؟ صحابہ نے کہا : اس کے جسم پر تھوڑا بھی میل نہیں رہے گا ۔ آپ نے فرمایا : ” یہی مثال ہے پانچوں نمازوں کی ، ان نمازوں کی برکت سے اللہ تعالیٰ گناہوں کو مٹا دیتا ہے ۔ امام ترمذی کہتے ہیں : ۱- یہ حدیث حسن صحیح ہے ، ۲- قتیبہ کہتے ہیں : ہم سے بکر بن مضر قرشی نے ابن الہاد کے واسطہ سے اسی طرح روایت کی ہے ۔ ۳- اس باب میں جابر سے بھی روایت ہے ۔
Terms matched: 4  -  Score: 396  -  3k
رواۃ الحدیث: العباس بن عبد المطلب الهاشمي ( 4180 ) ، عامر بن سعد القرشي ( 4098 ) ، محمد بن إبراهيم القرشي ( 6796 ) ، يزيد بن الهاد الليثي ( 8452 ) ، بكر بن مضر القرشي ( 1940 ) ، قتيبة بن سعيد الثقفي ( 6460 ) ، حدیث ۔۔۔ عباس بن عبدالمطلب ؓ سے روایت ہے کہ انہوں نے رسول اللہ ﷺ کو فرماتے سنا : ” جب بندہ سجدہ کرتا ہے تو اس کے ساتھ سات جوڑ بھی سجدہ کرتے ہیں : اس کا چہرہ اس کی دونوں ہتھیلیاں ، اس کے دونوں گھٹنے اور اس کے دونوں قدم “ ۔ امام ترمذی کہتے ہیں : ۱- عباس ؓ کی حدیث حسن صحیح ہے ، ۲- اس باب میں ابن عباس ، ابوہریرہ ، جابر اور ابوسعید ؓ سے بھی احادیث آئی ہیں ، ۳- اہل علم کا اسی پر عمل ہے ۔
Terms matched: 4  -  Score: 396  -  2k
رواۃ الحدیث: الربيع بنت معوذ الانصارية ( 1420 ) ، عبد الله بن عقيل الهاشمي ( 5062 ) ، محمد بن عجلان القرشي ( 7172 ) ، بكر بن مضر القرشي ( 1940 ) ، قتيبة بن سعيد الثقفي ( 6460 ) ، حدیث ۔۔۔ ربیع بنت معوذ بن عفراء ؓ سے روایت ہے کہ میں نے نبی اکرم ﷺ کو وضو کرتے ہوئے دیکھا ، آپ نے اپنے سر کا ایک بار مسح کیا ، اگلے حصہ کا بھی اور پچھلے حصہ کا بھی اور اپنی دونوں کنپٹیوں اور کانوں کا بھی ۔ امام ترمذی کہتے ہیں : ۱- ربیع ؓ کی حدیث حسن صحیح ہے ، ۲- اس باب میں علی اور طلحہ بن مصرف بن عمرو کے دادا (عمرو بن کعب یامی) ؓ سے بھی احادیث آئی ہیں ، ۳- اور بھی سندوں سے یہ بات مروی ہے کہ نبی اکرم ﷺ نے اپنے سر کا مسح ایک بار کیا ، ۴- صحابہ کرام اور ان کے بعد کے لوگوں میں سے اکثر اہل علم کا اسی پر عمل ہے اور جعفر بن محمد ، سفیان ثوری ، ابن مبارک ، شافعی احمد بن حنبل اور اسحاق بن راہویہ بھی یہی کہتے ہیں ، ۵- سفیان بن عیینہ کہتے ہیں کہ میں نے جعفر بن محمد سے سر کے مسح کے بارے میں پوچھا : کیا ایک مرتبہ سر کا مسح کر لینا کافی ہے ؟ تو انہوں نے کہا : ہاں قسم ہے اللہ کی ۔
Terms matched: 4  -  Score: 344  -  4k
رواۃ الحدیث: سلمة بن الاكوع الاسلمي ( 3513 ) ، يزيد بن ابي عبيد الاسلمي ( 8376 ) ، بكير بن عبد الله القرشي ( 1951 ) ، عمرو بن الحارث الانصاري ( 6080 ) ، بكر بن مضر القرشي ( 1940 ) ، قتيبة بن سعيد الثقفي ( 6460 ) ، حدیث ۔۔۔ سلمہ بن الاکوع ؓ کہتے ہیں کہ جب آیت کریمہ « وعلى الذين يطيقونہ فديۃ طعام مسكين » ” اور ان لوگوں پر جو روزے کی طاقت رکھتے ہیں ایک مسکین کو کھانا کھلانے کا فدیہ ہے “ (البقرہ : ۱۸۴) اتری تو ہم میں سے جو چاہتا کہ روزہ نہ رکھے وہ فدیہ دے دیتا یہاں تک کہ اس کے بعد والی آیت نازل ہوئی اور اس نے اسے منسوخ کر دیا ۔ امام ترمذی کہتے ہیں : یہ حدیث حسن صحیح غریب ہے ۔
Terms matched: 4  -  Score: 344  -  2k
رواۃ الحدیث: عائشة بنت ابي بكر الصديق ( 4049 ) ، ابو سلمة بن عبد الرحمن الزهري ( 4903 ) ، صخر بن عبد الله المدلجي ( 3915 ) ، بكر بن مضر القرشي ( 1940 ) ، قتيبة بن سعيد الثقفي ( 6460 ) ، حدیث ۔۔۔ ام المؤمنین عائشہ ؓ سے روایت ہے کہ رسول اللہ ﷺ (اپنی بیویوں سے) فرماتے تھے : تم لوگوں کا معاملہ مجھے پریشان کئے رہتا ہے کہ میرے بعد تمہارا کیا ہو گا ؟ تمہارے حقوق کی ادائیگی کے معاملہ میں صرف صبر کرنے والے ہی صبر کر سکیں گے ۔ پھر عائشہ ؓ نے (ابوسلمہ سے) کہا : اللہ تمہارے والد یعنی عبدالرحمٰن بن عوف کو جنت کی نہر سلسبیل سے سیراب کرے ، انہوں نے آپ ﷺ کی بیویوں کے ساتھ ایک ایسے مال کے ذریعہ جو چالیس ہزار (دینار) میں بکا ، اچھے سلوک کا مظاہرہ کیا ۔ امام ترمذی کہتے ہیں : یہ حدیث حسن صحیح غریب ہے ۔
Terms matched: 4  -  Score: 344  -  3k
رواۃ الحدیث: حيي بن هانئ المعافري ( 2600 ) ، بكر بن مضر القرشي ( 1940 ) ، قتيبة بن سعيد الثقفي ( 6460 ) ، حدیث ۔۔۔ اس سند سے بھی عبداللہ بن عمرو ؓ سے اسی جیسی حدیث مروی ہے ۔ امام ترمذی کہتے ہیں : ۱- یہ حدیث حسن صحیح غریب ہے ، ۲- اس باب میں ابن عمر ؓ سے بھی روایت ہے ۔
Terms matched: 4  -  Score: 302  -  1k
رواۃ الحدیث: صدي بن عجلان الباهلي ( 3929 ) ، القاسم بن عبد الرحمن الشامي ( 1581 ) ، علي بن يزيد الالهاني ( 5828 ) ، عبيد الله بن زحر الضمري ( 5385 ) ، بكر بن مضر القرشي ( 1940 ) ، قتيبة بن سعيد الثقفي ( 6460 ) ، حدیث ۔۔۔ ابوامامہ ؓ سے روایت ہے کہ رسول اللہ ﷺ نے فرمایا : ” گانے والی لونڈیوں کو نہ بیچو اور نہ انہیں خریدو ، اور نہ انہیں (گانا) سکھاؤ ، ان کی تجارت میں خیر و برکت نہیں ہے اور ان کی قیمت حرام ہے ۔ اور اسی جیسی چیزوں کے بارے میں یہ آیت اتری ہے : « ومن الناس من يشتري لہو الحديث ليضل عن سبيل اللہ » ” اور بعض لوگ ایسے ہیں جو لغو باتوں کو خرید لیتے ہیں تاکہ لوگوں کو اللہ کی راہ سے بہکائیں “ (لقمان : ۶) “ ۔ امام ترمذی کہتے ہیں : ۱- ابوامامہ کی حدیث کو ہم اس طرح صرف اسی طریق سے جانتے ہیں ، اور بعض اہل علم نے علی بن یزید کے بارے میں کلام کیا ہے اور ان کی تضعیف کی ہے ۔ اور یہ شام کے رہنے والے ہیں ، ۲- اس باب میں عمر بن خطاب ؓ سے بھی روایت ہے ۔
Terms matched: 4  -  Score: 292  -  3k
رواۃ الحدیث: ابو سعيد الخدري ( 3260 ) ، عبد الله بن خباب الانصاري ( 22144 ) ، يزيد بن الهاد الليثي ( 8452 ) ، بكر بن مضر القرشي ( 1940 ) ، قتيبة بن سعيد الثقفي ( 6460 ) ، حدیث ۔۔۔ ابو سعید خدری ؓ سے روایت ہے کہ انہوں نے رسول اللہ ﷺ کو کہتے ہوئے سنا ہے : تم میں سے جب کوئی اچھا اور پسندیدہ خواب دیکھے تو سمجھے کہ یہ اللہ کی جانب سے ہے اور اس پر اللہ کا شکر ادا کرے اور جو دیکھا ہوا سے لوگوں سے بیان کرے ، اور جب خراب اور ناپسندیدہ چیزوں میں سے کوئی چیز دیکھے تو سمجھے کہ یہ شیطان کی جانب سے ہے پھر اللہ سے اس کے شر سے پناہ مانگے اور کسی سے اس کا ذکر نہ کرے ، تو یہ چیز اسے کچھ نقصان نہ پہنچائے گی ۔ امام ترمذی کہتے ہیں : ۱- یہ حدیث اس سند سے حسن غریب صحیح ہے ، ۲- ابن الہاد کا نام یزید بن عبداللہ بن اسامہ بن ہاد مدینی ہے اور یہ محدثین کے نزدیک ثقہ ہیں ان سے امام مالک اور دوسرے لوگوں نے روایت کی ہے ، ۳- اس باب میں ابوقتادہ ؓ سے بھی روایت ہے ۔
Terms matched: 4  -  Score: 292  -  3k
رواۃ الحدیث: صدي بن عجلان الباهلي ( 3929 ) ، القاسم بن عبد الرحمن الشامي ( 1581 ) ، علي بن يزيد الالهاني ( 5828 ) ، عبيد الله بن زحر الضمري ( 5385 ) ، بكر بن مضر القرشي ( 1940 ) ، قتيبة بن سعيد الثقفي ( 6460 ) ، حدیث ۔۔۔ ابوامامہ ؓ سے روایت ہے کہ رسول اللہ ﷺ نے فرمایا : ” گانے والی لونڈیاں نہ بیچو ، نہ انہیں خریدو اور نہ انہیں گانا بجانا سکھاؤ ، ان کی تجارت میں کوئی بہتری نہیں ہے ، ان کی قیمت حرام ہے “ ، ایسے ہی مواقع کے لیے آپ پر آیت « ومن الناس من يشتري لہو الحديث ليضل عن سبيل اللہ » ” بعض لوگ ایسے ہیں جو لہو و لعب کی چیزیں خریدتے ہیں تاکہ اللہ کی راہ سے بھٹکا دیں “ (لقمان : ۶) ، آخر تک نازل ہوئی ہے ۔ امام ترمذی کہتے ہیں : ۱- یہ حدیث غریب ہے ، ۲- یہ حدیث قاسم سے ابوامامہ کے واسطہ سے مروی ہے ، قاسم ثقہ ہیں اور علی بن یزید میں ضعیف سمجھے جاتے ہیں ، یہ میں نے محمد بن اسماعیل بخاری کو کہتے ہوئے سنا ہے ۔
Terms matched: 4  -  Score: 292  -  3k
رواۃ الحدیث: ابو هريرة الدوسي ( 4396 ) ، ابو صالح السمان ( 2840 ) ، عمارة بن غزية الانصاري ( 5887 ) ، بكر بن مضر القرشي ( 1940 ) ، قتيبة بن سعيد الثقفي ( 6460 ) ، حدیث ۔۔۔ اس سند سے ابوہریرہ ؓ کے ذریعہ نبی اکرم ﷺ سے مروی ہے ۔ : معلوم ہوا کہ عمل کے حساب سے ایمان کے مختلف مراتب و درجات ہیں ، یہ بھی معلوم ہوا کہ ایمان اور عمل ایک دوسرے کے لازم و ملزوم ہیں ۔
Terms matched: 4  -  Score: 292  -  2k


Search took 0.526 seconds