كتاب الأطعمة
کتاب: کھانے کے متعلق احکام و مسائل
Foods (Kitab Al-Atimah)

1- باب مَا جَاءَ فِي إِجَابَةِ الدَّعْوَةِ
باب: دعوت قبول کرنے کے حکم کا بیان۔
CHAPTER: What has been reported about accepting invitations.
حدیث نمبر: 3736
حَدَّثَنَا الْقَعْنَبِيُّ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ مَالِكٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ نَافِعٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ عُمَرَ، ‏‏‏‏‏‏أَنّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ "إِذَا دُعِيَ أَحَدُكُمْ إِلَى الْوَلِيمَةِ فَلْيَأْتِهَا".
عبداللہ بن عمر رضی اللہ عنہما کہتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: جب تم میں سے کوئی ولیمہ کی دعوت میں مدعو کیا جائے تو اسے چاہیئے کہ اس میں آئے ۱؎۔

تخریج دارالدعوہ: صحیح البخاری/النکاح ۷۱ (۵۱۷۳)، صحیح مسلم/النکاح ۱۶ (۱۴۲۹)، (تحفة الأشراف: ۸۳۳۹، ۷۹۴۹)، وقد أخرجہ: سنن ابن ماجہ/النکاح ۲۵ (۱۹۱۴)، موطا امام مالک/النکاح ۲۱(۴۹)، مسند احمد (۲/۲۰)، سنن الدارمی/الأطعمة ۴۰ (۲۱۲۷)، النکاح ۲۳ (۲۲۵۱) (صحیح)

وضاحت: ۱؎: اس حدیث سے معلوم ہوا کہ ولیمہ کی دعوت کو قبول کرنا واجب ہے، إلا یہ کہ وہاں کوئی خلاف شرع بات پائی جائے۔

Abdullah bin Umar reported the Prophet ﷺ as sayings: when one of you is invited for a wedding feast, he must attend it.
USC-MSA web (English) Reference: Book 27 , Number 3727

قال الشيخ الألباني: صحيح
حدیث نمبر: 3737
حَدَّثَنَا مَخْلَدُ بْنُ خَالِدٍ، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنَا أَبُو أُسَامَةَ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ عُبَيْدِ اللَّهِ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ نَافِعٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ ابْنِ عُمَرَ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ بِمَعْنَاهُ، ‏‏‏‏‏‏زَادَ:‏‏‏‏ فَإِنْ كَانَ مُفْطِرًا فَلْيَطْعَمْ، ‏‏‏‏‏‏وَإِنْ كَانَ صَائِمًا فَلْيَدْعُ.
عبداللہ بن عمر رضی اللہ عنہما کہتے ہیں رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے اسی مفہوم کی حدیث بیان فرمائی اس میں اتنا اضافہ ہے کہ اگر روزے سے نہ ہو تو کھا لے، اور اگر روزے سے ہو تو (کھانے اور کھلانے والوں کے لیے بخشش و برکت کی) دعا کرے۔

تخریج دارالدعوہ: تفرد بہ أبو داود، (تحفة الأشراف: ۷۸۷۱)، وقد أخرجہ: مسند احمد (۲/۳۷) (صحیح)

The tradition mentioned above has also been transmitted by Ibn Umar to the same effect through a different chain of narrators. This version has the additional words: If he is not fasting, he should eat, and if he is fasting, he should leave it.
USC-MSA web (English) Reference: Book 27 , Number 3728

قال الشيخ الألباني: صحيح
حدیث نمبر: 3738
حَدَّثَنَا الْحَسَنُ بْنُ عَلِيٍّ، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنَا عَبْدُ الرَّزَّاقِ، ‏‏‏‏‏‏أَخْبَرَنَا مَعْمَرٌ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أَيُّوبَ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ نَافِعٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ ابْنِ عُمَرَ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ "إِذَا دَعَا أَحَدُكُمْ أَخَاهُ فَلْيُجِبْ عُرْسًا كَانَ أَوْ نَحْوَهُ".
عبداللہ بن عمر رضی اللہ عنہما کہتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: جب تم میں کوئی اپنے بھائی کو ولیمے کی یا اسی طرح کی کوئی دعوت دے تو وہ اسے قبول کرے۔

تخریج دارالدعوہ: صحیح مسلم/ النکاح ۱۶ (۱۴۲۹)، (تحفة الأشراف: ۷۵۳۷)، وقد أخرجہ: مسند احمد (۲/۶۸، ۱۰۱، ۱۲۷، ۱۴۶) (صحیح)

Ibn Umar reported the Messenger of Allah ﷺ as saying: if one of you invites his brother, he should accept (the invitation), whether it is a wedding feast or something of that nature.
USC-MSA web (English) Reference: Book 27 , Number 3729

قال الشيخ الألباني: صحيح
حدیث نمبر: 3739
حَدَّثَنَا ابْنُ الْمُصَفَّى، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنَا بَقِيَّةُ، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنَا الزُّبَيْدِيُّ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ نَافِعٍ بِإِسْنَادِ أَيُّوبَ وَمَعْنَاهُ.
اس سند سے بھی نافع سے ایوب کی روایت جیسی حدیث مروی ہے۔

تخریج دارالدعوہ: صحیح مسلم/ النکاح ۱۶ (۱۴۲۹)، (تحفة الأشراف: ۸۴۴۲)

The tradition mentioned above has also been transmitted by Nafi to the same effect through the chain of narrators as mentioned in Ayyub.
USC-MSA web (English) Reference: Book 27 , Number 3730
حدیث نمبر: 3740
حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ كَثِيرٍ، ‏‏‏‏‏‏أَخْبَرَنَا سُفْيَانُ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أَبِي الزُّبَيْرِ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ جَابِرٍ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ "مَنْ دُعِيَ فَلْيُجِبْ، ‏‏‏‏‏‏فَإِنْ شَاءَ طَعِمَ وَإِنْ شَاءَ تَرَكَ".
جابر رضی اللہ عنہ کہتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: جس کو دعوت دی جائے اسے دعوت قبول کرنی چاہیئے پھر اگر چاہے تو کھائے اور چاہے تو نہ کھائے۔

تخریج دارالدعوہ: صحیح مسلم/النکاح ۱۶ (۱۴۳۰)، (تحفة الأشراف: ۲۷۴۳)، وقد أخرجہ: سنن ابن ماجہ/الصیام ۴۷ (۱۷۵۱)، مسند احمد (۳/۳۹۲) (صحیح)

Jabir reported the Messenger of Allah ﷺ as sayings: when one of you is invited to a meal, he must accept. If he wishes he may eat, but if he wishes (to leave), he may leave.
USC-MSA web (English) Reference: Book 27 , Number 3731

قال الشيخ الألباني: صحيح
حدیث نمبر: 3741
حَدَّثَنَا مُسَدَّدٌ، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنَا دُرُسْتُ بْنُ زِيَادٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أَبَانَ بْنِ طَارِقٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ طَارِقٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ نَافِعٍ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ قَالَ عَبْدُ اللَّهِ بْنُ عُمَرَ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ "مَنْ دُعِيَ فَلَمْ يُجِبْ فَقَدْ عَصَى اللَّهَ وَرَسُولَهُ، ‏‏‏‏‏‏وَمَنْ دَخَلَ عَلَى غَيْرِ دَعْوَةٍ دَخَلَ سَارِقًا وَخَرَجَ مُغِيرًا"، ‏‏‏‏‏‏قَالَ أَبُو دَاوُد:‏‏‏‏ أَبَانُ بْنُ طَارِقٍ مَجْهُولٌ.
عبداللہ بن عمر رضی اللہ عنہما کہتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: جسے دعوت دی گئی اور اس نے قبول نہیں کیا تو اس نے اللہ اور اس کے رسول کی نافرمانی کی، اور جو بغیر دعوت کے گیا تو وہ چور بن کر داخل ہوا اور لوٹ مار کر نکلا۔ ابوداؤد کہتے ہیں: ابان بن طارق مجہول راوی ہیں۔

تخریج دارالدعوہ: تفرد بہ أبو داود، (تحفة الأشراف: ۷۴۶۹) (ضعیف) (اس کے راوی درست ضعیف، اور ابان مجہول ہیں، لیکن پہلا ٹکڑا ابوہریرہ کی اگلی حدیث سے صحیح ہے)

Narrated Abdullah ibn Umar: The Prophet ﷺ said: He who does not accept an invitation which he receives has disobeyed Allah and His Messenger of, and he who enters without invitation enters as a thief and goes out as a raider. Abu Dawud said: Aban bin Tariq is unknown.
USC-MSA web (English) Reference: Book 27 , Number 3732

قال الشيخ الألباني: ضعيف
حدیث نمبر: 3742
حَدَّثَنَا الْقَعْنَبِيُّ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ مَالِكٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ ابْنِ شِهَابٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ الْأَعْرَجِ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ، ‏‏‏‏‏‏أَنَّهُ كَانَ يَقُولُ:‏‏‏‏ "شَرُّ الطَّعَامِ طَعَامُ الْوَلِيمَةِ يُدْعَى لَهَا الْأَغْنِيَاءُ وَيُتْرَكُ الْمَسَاكِينُ، ‏‏‏‏‏‏وَمَنْ لَمْ يَأْتِ الدَّعْوَةَ فَقَدْ عَصَى اللَّهَ وَرَسُولَهُ".
ابوہریرہ رضی اللہ عنہ کہتے تھے سب سے برا کھانا اس ولیمہ کا کھانا ہے جس میں صرف مالدار بلائے جائیں اور غریب و مسکین چھوڑ دیئے جائیں، اور جو (ولیمہ کی) دعوت میں نہیں آیا اس نے اللہ اور اس کے رسول کی نافرمانی کی ۱؎۔

تخریج دارالدعوہ: صحیح البخاری/ النکاح ۷۳ (۵۱۷۷)، صحیح مسلم/النکاح ۱۶ (۱۴۳۲)، سنن ابن ماجہ/النکاح ۲۵ (۱۹۱۳)، (۲۱۱۰)، (تحفة الأشراف: ۱۳۹۵۵)، وقد أخرجہ: مسند احمد (۲/۲۴۰)، سنن الدارمی/الأطعمة ۲۸(۲۱۱۰) (صحیح)

وضاحت: ۱؎: معلوم ہوا کہ جو ولیمہ ایسا ہو جس میں صرف مالدار اور باحیثیت لوگ ہی بلائے جائیں، اور محتاج و فقیر نہ آنے پائیں وہ برا ہے، نہ یہ کہ خود ولیمہ برا ہے۔

Abu Hurairah said: The worst kind of food is that at a wedding feast to which the rich are invited and from which the poor are left out. If anyone does not attend the feast to which he was invited, he has disobeyed Allah and His Messenger (may peace upon him).
USC-MSA web (English) Reference: Book 27 , Number 3733

قال الشيخ الألباني: صحيح ق موقوفا م مرفوعا
2- باب فِي اسْتِحْبَابِ الْوَلِيمَةِ عِنْدَ النِّكَاحِ
باب: نکاح ہونے پر ولیمہ کی دعوت کرنا مستحب ہے۔
CHAPTER: Regarding the recommendation for holding a wedding feast.
حدیث نمبر: 3743
حَدَّثَنَا مُسَدَّدٌ، ‏‏‏‏‏‏وَقُتَيْبَةُ بْنُ سَعِيدٍ، ‏‏‏‏‏‏قَالَا:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا حَمَّادٌ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ ثَابِتٍ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ "ذُكِرَ تَزْوِيجُ زَيْنَبَ بِنْتِ جَحْشٍ عِنْدَ أَنَسِ بْنِ مَالِكٍ، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ:‏‏‏‏ مَا رَأَيْتُ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ أَوْلَمَ عَلَى أَحَدٍ مِنْ نِسَائِهِ مَا أَوْلَمَ عَلَيْهَا أَوْلَمَ بِشَاةٍ".
ثابت کہتے ہیں : انس بن مالک رضی اللہ عنہ کے پاس ام المؤمنین زینب بنت جحش رضی اللہ عنہا کے نکاح کا ذکر کیا گیا تو انہوں نے کہا: میں نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کو اپنی بیویوں میں سے کسی کے نکاح میں زینب کے نکاح کی طرح ولیمہ کرتے نہیں دیکھا، آپ نے ان کے نکاح میں ایک بکری کا ولیمہ کیا۔

تخریج دارالدعوہ: صحیح البخاری/النکاح ۶۸ (۵۱۶۸)، صحیح مسلم/النکاح ۱۳ (۱۴۲۸)، سنن النسائی/الکبری ۴ (۶۶۰۲)، سنن ابن ماجہ/النکاح ۲۴ (۱۹۰۸)، (تحفة الأشراف: ۲۸۷)، وقد أخرجہ: مسند احمد (۳/۲۲۷) (صحیح)

Thabit said: The marriage of Zainab daughter of Jahsh was mentioned before Anas bin Malik. He said: I did not see that the Messenger of Allah ﷺ held such a wedding feast for any of his wives as he did for her. He held a wedding feast with a sheep.
USC-MSA web (English) Reference: Book 27 , Number 3734

قال الشيخ الألباني: صحيح
حدیث نمبر: 3744
حَدَّثَنَا حَامِدُ بْنُ يَحْيَى، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنَا سُفْيَانُ، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنَا وَائِلُ بْنُ دَاوُدَ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ ابْنِهِ بَكْرِ بْنِ وَائِلٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ الزَّهْرِيِّ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أَنَسِ بْنِ مَالِكٍ:‏‏‏‏ أَنّ النَّبِيَّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ"أَوْلَمَ عَلَى صَفِيَّةَ بِسَوِيقٍ وَتَمْرٍ".
انس بن مالک رضی اللہ عنہ کہتے ہیں کہ نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے ام المؤمنین صفیہ رضی اللہ عنہا کے نکاح میں ستو اور کھجور کا ولیمہ کیا۔

تخریج دارالدعوہ: سنن الترمذی/النکاح ۱۰ (۱۰۹۵)، سنن النسائی/النکاح ۷۹ (۳۳۸۴)، سنن ابن ماجہ/النکاح ۲۴ (۱۹۰۹)، (تحفة الأشراف: ۱۴۸۲)، وقد أخرجہ: صحیح مسلم/النکاح ۱۴ (۱۳۶۵)، الجہاد ۴۳ (۱۳۶۵) (صحیح)

Narrated Anas ibn Malik: The Prophet ﷺ held a wedding feast) for Safiyyah with meal and dates.
USC-MSA web (English) Reference: Book 27 , Number 3735

قال الشيخ الألباني: صحيح
3- باب فِي كَمْ تُسْتَحَبُّ الْوَلِيمَةُ
باب: دعوت ولیمہ کتنے روز تک مستحب ہے؟
CHAPTER: How long should the wedding feast last.
حدیث نمبر: 3745
حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ الْمُثَنَّى، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنَا عَفَّانُ بْنُ مُسْلِمٍ، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنَا هَمَّامٌ، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنَا قَتَادَةُ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ الْحَسَنِ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ عُثْمَانَ الثَّقَفِيِّ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ رَجُلٍ أَعْوَرَ مِنْ ثَقِيفٍ كَانَ يُقَالُ لَهُ مَعْرُوفًا أَيْ يُثْنَى عَلَيْهِ خَيْرًا إِنْ لَمْ يَكُنْ اسْمُهُ زُهَيْرُ بْنُ عُثْمَانَ فَلَا أَدْرِي مَا اسْمُهُ، ‏‏‏‏‏‏أَنّ النَّبِيَّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ "الْوَلِيمَةُ أَوَّلَ يَوْمٍ حَقٌّ، ‏‏‏‏‏‏وَالثَّانِيَ مَعْرُوفٌ، ‏‏‏‏‏‏وَالْيَوْمَ الثَّالِثَ سُمْعَةٌ وَرِيَاءٌ"، ‏‏‏‏‏‏قَالَ قَتَادَةُ:‏‏‏‏ وَحَدَّثَنِي رَجُلٌ:‏‏‏‏ أَنَّ سَعِيدَ بْنَ الْمُسَيِّبِ دُعِيَ أَوَّلَ يَوْمٍ فَأَجَابَ، ‏‏‏‏‏‏وَدُعِيَ الْيَوْمَ الثَّانِيَ فَأَجَابَ، ‏‏‏‏‏‏وَدُعِيَ الْيَوْمَ الثَّالِثَ فَلَمْ يُجِبْ، ‏‏‏‏‏‏وَقَالَ:‏‏‏‏ أَهْلُ سُمْعَةٍ وَرِيَاءٍ.
عبداللہ بن عثمان ثقفی بنو ثقیف کے ایک کانے شخص سے روایت کرتے ہیں (جسے اس کی بھلائیوں کی وجہ سے معروف کہا جاتا تھا، یعنی خیر کے پیش نظر اس کی تعریف کی جاتی تھی، اگر اس کا نام زہیر بن عثمان نہیں تو مجھے نہیں معلوم کہ اس کا کیا نام تھا) کہ نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ولیمہ پہلے روز حق ہے، دوسرے روز بہتر ہے، اور تیسرے روز شہرت و ریاکاری ہے۔ قتادہ کہتے ہیں: مجھ سے ایک شخص نے بیان کیا کہ سعید بن مسیب کو پہلے دن دعوت دی گئی تو انہوں نے قبول کیا اور دوسرے روز بھی دعوت دی گئی تو اسے بھی قبول کیا اور تیسرے روز دعوت دی گئی تو قبول نہیں کیا اور کہا: (دعوت دینے والے) نام و نمود والے اور ریا کار لوگ ہیں۔

تخریج دارالدعوہ: سنن الدارمی/الأطعمة ۲۸ (۲۱۰۹)، (تحفة الأشراف: ۳۶۵۱، ۱۸۷۱۹) (ضعیف) (اس کی سند میں ایک راوی مبہم ہے)

Narrated Zubayr ibn Uthman: The Prophet ﷺ said: The wedding feast on the first day is a duty, that on the second is a good practice, but that on the third day is to make men hear of it and show it to them. Qatadah said: A man told me that Saeed ibn al-Musayyab was invited (to a wedding feast on the first day and he accepted it. He was again invited on the second day, and he accepted. When he was invited on the third day, he did not accept; he said: They are the people who make men hear of it and show it to them.
USC-MSA web (English) Reference: Book 27 , Number 3736

قال الشيخ الألباني: ضعيف