كتاب تعبير الرؤيا
کتاب: خواب کی تعبیر سے متعلق احکام و مسائل
.

1- بَابُ: الرُّؤْيَا الصَّالِحَةِ يَرَاهَا الْمُسْلِمُ أَوْ تُرَى لَهُ
باب: مسلمان اچھا خواب دیکھے یا اس کے بارے میں دیکھا جائے اس کا بیان۔
حدیث نمبر: 3893
حَدَّثَنَا هِشَامُ بْنُ عَمَّارٍ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا مَالِكُ بْنُ أَنَسٍ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ حَدَّثَنِي إِسْحَاق بْنُ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ أَبِي طَلْحَةَ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ عَنْ أَنَسِ بْنِ مَالِكٍ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ "الرُّؤْيَا الْحَسَنَةُ مِنَ الرَّجُلِ الصَّالِحِ جُزْءٌ مِنْ سِتَّةٍ وَأَرْبَعِينَ جُزْءًا مِنَ النُّبُوَّةِ".
انس بن مالک رضی اللہ عنہ کہتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: نیک آدمی کا اچھا خواب نبوت کا چھیالیسواں حصہ ہے۔

تخریج دارالدعوہ: «صحیح البخاری/التعبیر ۲ (۶۹۸۳)، (تحفة الأشراف: ۲۰۶)، وقد أٰخرجہ: صحیح مسلم/الرؤیاح ۷ (۲۲۶۴)، سنن الترمذی/الرؤیا ۲ (۲۲۷۲)، موطا امام مالک/الرؤیا ۱ (۱)، مسند احمد (۳/۱۲۶، ۱۴۹) (صحیح)

قال الشيخ الألباني: صحيح
حدیث نمبر: 3894
حَدَّثَنَا أَبُو بَكْرِ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا عَبْدُ الْأَعْلَى‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ عَنْ مَعْمَرٍ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ عَنْ الزُّهْرِيِّ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ عَنْ سَعِيدٍ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ عَنِ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ "رُؤْيَا الْمُؤْمِنِ جُزْءٌ مِنْ سِتَّةٍ وَأَرْبَعِينَ جُزْءًا مِنَ النُّبُوَّةِ".
ابوہریرہ رضی اللہ عنہ کہتے ہیں کہ نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: مومن کا خواب نبوت کا چھیالیسواں حصہ ہے۔

تخریج دارالدعوہ: «صحیح مسلم/الرؤیا (۲۲۶۴)، (تحفة الأشراف: ۱۳۲۸۴)، وقد أخرجہ: صحیح البخاری/التعبیر ۲ (۶۹۸۷)، سنن ابی داود/الأدب ۹۶ (۵۰۱۸)، سنن الترمذی/الرؤیا ۱ (۲۲۷۱)، موطا امام مالک/الرؤیا ۱ (۳)، سنن الدارمی/الرؤیا ۲ (۲۱۸۳) (صحیح)

قال الشيخ الألباني: صحيح
حدیث نمبر: 3895
حَدَّثَنَا أَبُو بَكْرِ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ وَأَبُو كُرَيْبٍ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ قَالَا:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا عُبَيْدُ اللَّهِ بْنُ مُوسَى‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ أَنْبَأَنَا شَيْبَانُ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ عَنْ فِرَاسٍ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ عَنْ عَطِيَّةَ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي سَعِيدٍ الْخُدْرِيِّ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ عَنِ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ "رُؤْيَا الرَّجُلِ الْمُسْلِمِ الصَّالِحِ جُزْءٌ مِنْ سَبْعِينَ جُزْءًا مِنَ النُّبُوَّةِ".
ابو سعید خدری رضی اللہ عنہ کہتے ہیں کہ نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: نیک مسلمان کا خواب نبوت کے ستر حصوں میں سے ایک حصہ ہے۔

تخریج دارالدعوہ: «تفرد بہ ابن ماجہ، (تحفة الأشراف: ۴۲۲۵، ومصباح الزجاجة: ۱۳۶۱) (صحیح) (سند میں عطیہ العوفی ضعیف ہیں، لیکن دوسرے طرق اور شواہد کی بناء پر یہ صحیح ہے)

قال الشيخ الألباني: صحيح
حدیث نمبر: 3896
حَدَّثَنَا هَارُونُ بْنُ عَبْدِ اللَّهِ الْحَمَّالُ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا سُفْيَانُ بْنُ عُيَيْنَةَ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ عَنْ عُبَيْدِ اللَّهِ بْنِ أَبِي يَزِيدَ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ عَنْ أَبِيهِ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ عَنْ سِبَاعِ بْنِ ثَابِتٍ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ عَنْ أُمِّ كُرْزٍ الْكَعْبِيَّةِ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ قَالَتْ:‏‏‏‏ سَمِعْتُ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ،‏‏‏‏ يَقُولُ:‏‏‏‏ "ذَهَبَتِ النُّبُوَّةُ وَبَقِيَتِ الْمُبَشِّرَاتُ".
ام کرز کعبیہ رضی اللہ عنہا کہتی ہیں کہ میں نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کو فرماتے سنا: نبوت ختم ہو گئی لیکن مبشرات (اچھے خواب) باقی ہیں۔

تخریج دارالدعوہ: «تفرد بہ ابن ماجہ، (تحفة الأشراف: ۱۸۳۴۸، ومصباح الزجاجة: ۱۳۶۲)، وقد أخرجہ: مسند احمد (۶/۳۸۱)، سنن الدارمی/الرؤیا ۳ (۲۱۸۴) (صحیح)

قال الشيخ الألباني: صحيح
حدیث نمبر: 3897
حَدَّثَنَا عَلِيُّ بْنُ مُحَمَّدٍ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا أَبُو أُسَامَةَ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ وَعَبْدُ اللَّهِ بْنُ نُمَيْرٍ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ عَنْ عُبَيْدِ اللَّهِ بْنِ عُمَرَ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ عَنْ نَافِعٍ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ عَنْ ابْنِ عُمَرَ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ "الرُّؤْيَا الصَّالِحَةُ جُزْءٌ مِنْ سَبْعِينَ جُزْءًا مِنَ النُّبُوَّةِ".
عبداللہ بن عمر رضی اللہ عنہما کہتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: اچھا خواب نبوت کا سترواں حصہ ہے۔

تخریج دارالدعوہ: «صحیح مسلم/الرؤیا (۲۲۶۵)، (تحفة الأشراف: ۷۸۳۷، ۷۹۵۷) (صحیح)

قال الشيخ الألباني: صحيح
حدیث نمبر: 3898
حَدَّثَنَا عَلِيُّ بْنُ مُحَمَّدٍ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا وَكِيعٌ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ عَنْ عَلِيِّ بْنِ الْمُبَارَكِ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ عَنْ يَحْيَى بْنِ أَبِي كَثِيرٍ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي سَلَمَةَ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ عَنْ عُبَادَةَ بْنِ الصَّامِتِ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ سَأَلْتُ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ عَنْ قَوْلِ اللَّهِ سُبْحَانَهُ:‏‏‏‏ لَهُمُ الْبُشْرَى فِي الْحَيَاةِ الدُّنْيَا وَفِي الآخِرَةِ سورة يونس آية 64،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ "هِيَ الرُّؤْيَا الصَّالِحَةُ يَرَاهَا الْمُسْلِمُ أَوْ تُرَى لَهُ".
عبادہ بن صامت رضی اللہ عنہ کہتے ہیں کہ میں نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سے اللہ تعالیٰ کے فرمان: «لهم البشرى في الحياة الدنيا وفي الآخرة» (سورة يونس: ۶۳) ان کے لیے دنیا کی زندگی اور آخرت میں خوشخبری ہے کے بارے میں سوال کیا (کہ اس آیت کا کیا مطلب ہے؟) تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: یہ اچھے خواب ہیں جنہیں مسلمان دیکھتا ہے یا اس کے لیے کوئی اور دیکھتا ہے۔

تخریج دارالدعوہ: «سنن الترمذی/الرؤیا ۳ (۲۲۲۵)، (تحفة الأشراف: ۵۱۲۳)، وقد أخرجہ: مسند احمد (۵/۳۱۵، ۳۲۱)، سنن الدارمی/الرؤیا ۱ (۲۱۸۲) (صحیح)

قال الشيخ الألباني: صحيح
حدیث نمبر: 3899
حَدَّثَنَا إِسْحَاق بْنُ إِسْمَاعِيل الْأَيْلِيُّ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا سُفْيَانُ بْنُ عُيَيْنَةَ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ عَنْ سُلَيْمَانَ بْنِ سُحَيْمٍ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ عَنْ إِبْرَاهِيمَ بْنِ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ مَعْبَدِ بْنِ عَبَّاسٍ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ عَنْ أَبِيهِ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ عَنْ ابْنِ عَبَّاسٍ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ كَشَفَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ السِّتَارَةَ فِي مَرَضِهِ وَالنَّاسُ صُفُوفُ،‏‏‏‏ وَالصُّفُوفُ خَلْفَ أَبِي بَكْرٍ،‏‏‏‏ فَقَالَ:‏‏‏‏ "أَيُّهَا النَّاسُ إِنَّهُ لَمْ يَبْقَ مِنْ مُبَشِّرَاتِ النُّبُوَّةِ إِلَّا الرُّؤْيَا الصَّالِحَةُ،‏‏‏‏ يَرَاهَا الْمُسْلِمُ أَوْ تُرَى لَهُ".
عبداللہ بن عباس رضی اللہ عنہما کہتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے اپنے مرض الموت میں (حجرے کا) پردہ اٹھایا، تو لوگ اس وقت ابوبکر رضی اللہ عنہ کے پیچھے (نماز کے لیے) صفیں باندھے ہوئے تھے، آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: لوگو! اب نبوت کی خوشخبریوں میں سے کوئی چیز باقی نہیں رہی، سوائے سچے خواب کے جسے خود مسلمان دیکھتا ہے، یا اس کے لیے کوئی اور دیکھتا ہے۔

تخریج دارالدعوہ: «صحیح مسلم/الصلاة ۴۱ (۴۷۹)، سنن ابی داود/الصلاة ۱۵۲ (۸۷۶)، سنن النسائی/التطبیق ۸ (۱۰۴۶)، ۶۲ (۱۱۲۱)، (تحفة الأشراف: ۵۸۱۲)، وقد أخرجہ: مسند احمد (۱/۲۱۹)، سنن الدارمی/الصلاة ۷۷ (۱۳۶۴) (صحیح)

قال الشيخ الألباني: صحيح
2- بَابُ: رُؤْيَةِ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ فِي الْمَنَامِ
باب: رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کو خواب میں دیکھنے کا بیان۔
حدیث نمبر: 3900
حَدَّثَنَا عَلِيُّ بْنُ مُحَمَّدٍ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا وَكِيعٌ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ عَنْ سُفْيَانَ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي إِسْحَاق‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي الْأَحْوَصِ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ عَنْ عَبْدِ اللَّهِ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ عَنِ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ قَالَ:‏‏‏‏ "مَنْ رَآنِي فِي الْمَنَامِ،‏‏‏‏ فَقَدْ رَآنِي فِي الْيَقَظَةِ،‏‏‏‏ فَإِنَّ الشَّيْطَانَ لَا يَتَمَثَّلُ عَلَى صُورَتِي".
عبداللہ بن مسعود رضی اللہ عنہ کہتے ہیں کہ نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: جس نے مجھے خواب میں دیکھا، تو اس نے مجھے بیداری میں دیکھا کیونکہ شیطان میری صورت نہیں اپنا سکتا ۱؎۔

تخریج دارالدعوہ: «سنن الترمذی/الرؤیا ۴ (۲۲۷۶)، (تحفة الأشراف: ۹۵۰۹)، وقد أخرجہ: مسند احمد (۱/۳۷۵، ۴۰۰، ۴۴۰، ۴۵۰)، سنن الدارمی/الرؤیا ۴ (۱۲۸۵) (صحیح)

وضاحت: ۱؎: پس جب کوئی رسول اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کو آپ کے حلیہ اور صورت پر دیکھے جیسا کہ صحیح حدیث میں آ رہا ہے تو اس کا خواب سچ ہے اور اس نے بیشک آپ کو دیکھا، کیونکہ شیطان کی یہ طاقت نہیں کہ آپ کی شکل اختیار کرے، لیکن خواب میں دیکھنا ہر بات میں بیداری میں دیکھنے کے برابر نہیں ہے، مثلاً خواب میں آپ کو دیکھنے سے آدمی صحابی نہیں ہو سکتا، اسی طرح علماء کہتے ہیں کہ آپ کو شرع کے خلاف کسی بات کا حکم دیتے خواب میں دیکھے تو یہ حجت نہ ہو گا، شرع کی پیروی ضروری ہے، جیسے منقول ہے کہ ایک شخص نے خواب میں نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کو دیکھا کہ آپ شراب پینے کا حکم دے رہے ہیں، وہ بیدار ہوکر حیران ہوا، ایک عالم نے اس کو بتلایا کہ یہ تیرا سہو ہے، آپ نے شراب پینے سے منع فرمایا ہے، اسی طرح علماء کہتے ہیں کہ اگر نبی صلی اللہ علیہ وسلم کو کسی اور شکل پر دیکھے مثلاً داڑ ھی منڈے آدمی کی شکل پر تو گویا اس نے آپ کو نہیں دیکھا، اور یہ خواب صحیح نہیں ہو گا، اور یہ امر متفق علیہ ہے کہ خواب میں آپ کا کوئی حکم ظاہری شرع کے خلاف ہو تو اس پر عمل کرنا جائز نہیں ہے، یہ کہا جائے گا کہ دیکھنے والے کو دھوکا ہوا جب بیداری میں شیطان آدمی کو اس قدر دھوکہ دیتا ہے تو خواب میں اس کی مداخلت بدرجہ اولیٰ ہو سکتی ہے۔

قال الشيخ الألباني: صحيح
حدیث نمبر: 3901
حَدَّثَنَا أَبُو مَرْوَانَ الْعُثْمَانِيُّ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا عَبْدُ الْعَزِيزِ بْنُ أَبِي حَازِمٍ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ عَنْ الْعَلَاءِ بْنِ عَبْدِ الرَّحْمَنِ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ عَنْ أَبِيهِ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ قَال رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ "مَنْ رَآنِي فِي الْمَنَامِ،‏‏‏‏ فَقَدْ رَآنِي،‏‏‏‏ فَإِنَّ الشَّيْطَانَ لَا يَتَمَثَّلُ بِي".
ابوہریرہ رضی اللہ عنہ کہتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: جس نے مجھے خواب میں دیکھا اس نے یقیناً مجھے دیکھا کیونکہ شیطان میری صورت نہیں اپنا سکتا۔

تخریج دارالدعوہ: «تفرد بہ ابن ماجہ، (تحفة الأشراف: ۱۴۰۴۲)، وقد أخرجہ: صحیح البخاری/العلم ۳۹ (۱۱۰)، الأدب ۱۰۹ (۶۱۹۷)، صحیح مسلم/الرؤیا ۱ (۲۲۶۶)، سنن ابی داود/الأدب ۹۶ (۵۰۲۳) (صحیح)

قال الشيخ الألباني: صحيح
حدیث نمبر: 3902
حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ رُمْحٍ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ أَنْبَأَنَا اللَّيْثُ بْنُ سَعْدٍ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي الزُّبَيْرِ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ عَنْ جَابِرٍ‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ عَنْ رَسُولِ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ،‏‏‏‏ أَنَّهُ قَالَ:‏‏‏‏ "مَنْ رَآنِي فِي الْمَنَامِ،‏‏‏‏ فَقَدْ رَآنِي،‏‏‏‏ إِنَّهُ لَا يَنْبَغِي لِلشَّيْطَانِ أَنْ يَتَمَثَّلَ فِي صُورَتِي".
جابر رضی اللہ عنہ کہتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: جس نے مجھے خواب میں دیکھا یقیناً اس نے مجھے دیکھا، کیونکہ شیطان کے لیے جائز نہیں کہ وہ میری صورت اپنائے۔

تخریج دارالدعوہ: «صحیح مسلم/الرؤیا ۱ (۲۲۶۵)، (تحفة الأشراف: ۲۹۱۴)، وقد أخرجہ: مسند احمد (۳/۳۵۰) (صحیح)

قال الشيخ الألباني: صحيح