كتاب الضحايا
کتاب: قربانی کے احکام و مسائل
eng

1- بَابُ:
باب:
حدیث نمبر: 4366
أَخْبَرَنَا سُلَيْمَانُ بْنُ سَلْمٍ الْبَلْخِيُّ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا النَّضْرُ وَهُوَ ابْنُ شُمَيْلٍ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ أَنْبَأَنَا شُعْبَةُ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ مَالِكِ بْنِ أَنَسٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنِ ابْنِ مُسْلِمٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ سَعِيدِ بْنِ الْمُسَيِّبِ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أُمِّ سَلَمَةَ، ‏‏‏‏‏‏عَنِ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ قَالَ:‏‏‏‏ "مَنْ رَأَى هِلَالَ ذِي الْحِجَّةِ فَأَرَادَ أَنْ يُضَحِّيَ فَلَا يَأْخُذْ مِنْ شَعْرِهِ، ‏‏‏‏‏‏وَلَا مِنْ أَظْفَارِهِ حَتَّى يُضَحِّيَ".
ام المؤمنین ام سلمہ رضی اللہ عنہا روایت کرتی ہیں کہ نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: جس شخص نے ذی الحجہ کے مہینے کا چاند دیکھا پھر قربانی کرنے کا ارادہ کیا تو وہ اپنے بال اور ناخن قربانی کرنے تک نہ لے ۱؎۔

تخریج دارالدعوہ: صحیح مسلم/الأضاحی ۳ (۱۹۷۷)، سنن ابی داود/الضحایا ۳ (۲۷۹۱)، سنن الترمذی/الضحایا۲۴(۱۵۲۳)، سنن ابن ماجہ/الضحایا ۱۱ (۳۱۵۰)، (تحفة الأشراف: ۱۸۱۵۲) مسند احمد ۶/۲۸۹، ۳۰۱، ۳۱۱، سنن الدارمی/الأضاحی ۲ (۱۹۹۰)، ویأتی برقم: ۴۳۶۷-۴۳۶۹) (صحیح)

وضاحت: ۱؎: بال اور ناخن وغیرہ کچھ نہ کاٹے، جمہور کے نزدیک یہ حکم استحبابی ہے۔

قال الشيخ الألباني: صحيح
حدیث نمبر: 4367
أَخْبَرَنَا مُحَمَّدُ بْنُ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ عَبْدِ الْحَكَمِ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ شُعَيْبٍ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ أَنْبَأَنَا اللَّيْثُ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا خَالِدُ بْنُ يَزِيدَ، ‏‏‏‏‏‏عَنِ ابْنِ أَبِي هِلَالٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ عَمْرِو بْنِ مُسْلِمٍ، ‏‏‏‏‏‏أَنَّهُ قَالَ:‏‏‏‏ أَخْبَرَنِي ابْنُ الْمُسَيَّبِ، ‏‏‏‏‏‏أَنَّ أُمَّ سَلَمَةَ زَوْجَ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ أَخْبَرَتْهُ، ‏‏‏‏‏‏أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ قَالَ:‏‏‏‏ "مَنْ أَرَادَ أَنْ يُضَحِّيَ فَلَا يَقْلِمْ مِنْ أَظْفَارِهِ، ‏‏‏‏‏‏وَلَا يَحْلِقْ شَيْئًا مِنْ شَعْرِهِ فِي عَشْرِ الْأُوَلِ مِنْ ذِي الْحِجَّةِ".
ام المؤمنین ام سلمہ رضی اللہ عنہا بیان کرتی ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: جو شخص قربانی کرنا چاہے تو وہ ذی الحجہ کے ابتدائی دس دنوں میں نہ اپنے ناخن کترے اور نہ بال کٹوائے۔

تخریج دارالدعوہ: انظر ما قبلہ (صحیح)

قال الشيخ الألباني: صحيح
حدیث نمبر: 4368
أَخْبَرَنَا عَلِيُّ بْنُ حُجْرٍ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ أَنْبَأَنَا شَرِيكٌ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ عُثْمَانَ الْأَحْلَافِيِّ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ سَعِيدِ بْنِ الْمُسَيِّبِ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ "مَنْ أَرَادَ أَنْ يُضَحِّيَ فَدَخَلَتْ أَيَّامُ الْعَشْرِ، ‏‏‏‏‏‏فَلَا يَأْخُذْ مِنْ شَعْرِهِ، ‏‏‏‏‏‏وَلَا أَظْفَارِهِ". فَذَكَرْتُهُ لِعِكْرِمَةَ، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ:‏‏‏‏ أَلَا يَعْتَزِلُ النِّسَاءَ، ‏‏‏‏‏‏وَالطِّيبَ.
تابعی سعید بن مسیب کہتے ہیں کہ جو شخص قربانی کا ارادہ کرے اور (ذی الحجہ کے ابتدائی) دس دن شروع ہو جائیں تو اپنے بال اور اپنے ناخن نہ کترے، میں نے اس چیز کا ذکر عکرمہ سے کیا تو انہوں نے کہا: وہ عورتوں اور خوشبو سے بھی دور رہے ۱؎۔

تخریج دارالدعوہ: انظر رقم: ۴۳۶۶ (ضعیف الإسناد) (اس کے راوی ’’ شریک القاضی ‘‘ حافظے کے کمزور ہیں)

وضاحت: ۱؎: ان کو اس بابت مرفوع حدیث نہیں پہنچی تھی اس لیے بطور طنز ایسا کہا، ویسے اس کی سند ضعیف ہے۔

قال الشيخ الألباني: ضعيف الإسناد
حدیث نمبر: 4369
أَخْبَرَنَا عَبْدُ اللَّهِ بْنُ مُحَمَّدِ بْنِ عَبْدِ الرَّحْمَنِ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا سُفْيَانُ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنِي عَبْدُ الرَّحْمَنِ بْنُ حُمَيْدِ بْنِ عَبْدِ الرَّحْمَنِ بْنِ عَوْفٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ سَعِيدِ بْنِ الْمُسَيِّبِ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أُمِّ سَلَمَةَ، ‏‏‏‏‏‏أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ قَالَ:‏‏‏‏ "إِذَا دَخَلَتِ الْعَشْرُ فَأَرَادَ أَحَدُكُمْ أَنْ يُضَحِّيَ فَلَا يَمَسَّ مِنْ شَعْرِهِ، ‏‏‏‏‏‏وَلَا مِنْ بَشَرِهِ شَيْئًا".
ام المؤمنین ام سلمہ رضی اللہ عنہا سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: جب ذی الحجہ کا پہلا عشرہ شروع ہو جائے اور تم میں کا کوئی قربانی کا ارادہ رکھتا ہو تو اسے اپنے بال اور اپنی کھال سے کچھ نہیں چھونا چاہیئے۔

تخریج دارالدعوہ: انظر حدیث رقم: ۴۳۶۶ (صحیح)

قال الشيخ الألباني: صحيح
2- بَابُ: مَنْ لَمْ يَجِدِ الأُضْحِيَةَ
باب: جو قربانی نہ پائے تو کیا کرے؟
حدیث نمبر: 4370
أَخْبَرَنَا يُونُسُ بْنُ عَبْدِ الْأَعْلَى، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا ابْنُ وَهْبٍ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ أَخْبَرَنِي سَعِيدُ بْنُ أَبِي أَيُّوبَ، ‏‏‏‏‏‏وَذَكَرَ آخَرِينَ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ عَيَّاشِ بْنِ عَبَّاسٍ الْقِتْبَانِيِّ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ عِيسَى بْنِ هِلَالٍ الصَّدَفِيِّ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ عَمْرِو بْنِ الْعَاصِ، ‏‏‏‏‏‏أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ قَالَ لِرَجُلٍ:‏‏‏‏ "أُمِرْتُ بِيَوْمِ الْأَضْحَى عِيدًا جَعَلَهُ اللَّهُ عَزَّ وَجَلَّ لِهَذِهِ الْأُمَّةِ"، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ الرَّجُلُ:‏‏‏‏ أَرَأَيْتَ إِنْ لَمْ أَجِدْ إِلَّا مَنِيحَةً أُنْثَى،‏‏‏‏ أَفَأُضَحِّي بِهَا؟، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ "لَا، ‏‏‏‏‏‏وَلَكِنْ تَأْخُذُ مِنْ شَعْرِكَ، ‏‏‏‏‏‏وَتُقَلِّمُ أَظْفَارَكَ، ‏‏‏‏‏‏وَتَقُصُّ شَارِبَكَ، ‏‏‏‏‏‏وَتَحْلِقُ عَانَتَكَ، ‏‏‏‏‏‏فَذَلِكَ تَمَامُ أُضْحِيَّتِكَ عِنْدَ اللَّهِ عَزَّ وَجَلَّ".
عبداللہ بن عمرو بن عاص رضی اللہ عنہما سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے ایک شخص سے فرمایا: مجھے قربانی کے دن (دسویں ذی الحجہ) کو عید منانے کا حکم ہوا ہے، اللہ تعالیٰ نے اس دن کو اس امت کے لیے عید کا دن بنایا ہے، وہ شخص بولا: اگر میرے پاس سوائے ایک دو دھاری بکری کے کچھ نہ ہو تو آپ کا کیا خیال ہے؟ کیا میں اس کی قربانی کروں؟ آپ نے فرمایا: نہیں، بلکہ تم (قربانی کے دن) ۱؎ اپنے بال، ناخن کاٹو، اپنی مونچھ تراشو اور ناف کے نیچے کے بال کاٹو، تو یہ اللہ تعالیٰ کے نزدیک تمہاری مکمل قربانی ہے۔

تخریج دارالدعوہ: سنن ابی داود/الأضاحی ۱ (۲۷۸۹)، (تحفة الأشراف: ۸۹۰۹)، مسند احمد (۲/۱۶۹) (حسن) (شیخ البانی نے ’’عیسیٰ بن ہلال صوفی‘‘ کو مجہول قرار دے کر اس حدیث کی تضعیف کی ہے۔ جب کہ عیسیٰ بتحقیق ابن حجر ’’صدوق‘‘ ہیں دیکھئے ’’ أحکام العیدین للفریابی ‘‘ تحقیق مساعد الراشد حدیث رقم ۲)

وضاحت: ۱؎: یعنی: ذی الحجہ کا چاند دیکھنے کے بعد اپنے بال اور ناخن کاٹنے سے رک جاؤ، اور عید کی نماز پڑھ کر ان کو کاٹو تو تمہیں بھی مکمل قربانی کا ثواب ملے گا۔

قال الشيخ الألباني: ضعيف
3- بَابُ: ذَبْحِ الإِمَامِ أُضْحِيَتَهُ بِالْمُصَلَّى
باب: امام کا اپنی قربانی کا جانور عیدگاہ میں ذبح کرنے کا بیان۔
حدیث نمبر: 4371
أَخْبَرَنَا مُحَمَّدُ بْنُ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ عَبْدِ الْحَكَمِ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ شُعَيْبٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنِ اللَّيْثِ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ كَثِيرِ بْنِ فَرْقَدٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ نَافِعٍ، ‏‏‏‏‏‏أَنَّ عَبْدَ اللَّهِ أَخْبَرَهُ:‏‏‏‏ "أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ كَانَ يَذْبَحُ، ‏‏‏‏‏‏أَوْ يَنْحَرُ بِالْمُصَلَّى".
عبداللہ بن عمر رضی اللہ عنہما کہتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم عید گاہ میں ہی (قربانی کا جانور) ذبح یا نحر کرتے تھے ۱؎۔

تخریج دارالدعوہ: انظر حدیث رقم: ۱۵۹۰ (صحیح)

وضاحت: ۱؎: نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کے زمانہ میں مدینہ میں عید گاہ کے اندر قربانی کرنے کی سہولت میسر تھی تو آپ نے ایسا کیا، اگر آج ایسی سہولت میسر ہو تو عید گاہ کے اندر ایسا کیا جا سکتا ہے، یہ کوئی واجب اور سنت نہیں کہ ہر حال میں ایسا ہی کیا جائے، اس زمانہ میں تو اب شاید کسی دیہات میں بھی یہ سہولت نہ ہو، شہروں میں تو اب ایسا ممکن ہی نہیں۔

قال الشيخ الألباني: صحيح
حدیث نمبر: 4372
أَخْبَرَنَا عَلِيُّ بْنُ عُثْمَانَ النُّفَيْلِيُّ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا سَعِيدُ بْنُ عِيسَى، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا الْمُفَضَّلُ بْنُ فَضَالَةَ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنِي عَبْدُ اللَّهِ بْنُ سُلَيْمَانَ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنِي نَافِعٌ،‏‏‏‏ عَنْ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ عُمَرَ:‏‏‏‏ "أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ نَحَرَ يَوْمَ الْأَضْحَى بِالْمَدِينَةِ"،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ وَقَدْ كَانَ إِذَا لَمْ يَنْحَرْ يَذْبَحُ بِالْمُصَلَّى.
عبداللہ بن عمر رضی اللہ عنہما سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے عید الاضحی کے دن مدینے میں اونٹ نحر (ذبح) کیا، اور جب آپ (اونٹ) نحر نہیں کرتے تو عید گاہ میں ذبح کرتے۔

تخریج دارالدعوہ: تفرد بہ النسائي (تحفة الأشراف: ۷۷۱۹) (صحیح)

قال الشيخ الألباني: صحيح
4- بَابُ: ذَبْحِ النَّاسِ بِالْمُصَلَّى
باب: عیدگاہ میں قربانی کرنے کا بیان۔
حدیث نمبر: 4373
أَخْبَرَنَا هَنَّادُ بْنُ السَّرِيِّ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أَبِي الْأَحْوَصِ، ‏‏‏‏‏‏عَنِ الْأَسْوَدِ بْنِ قَيْسٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ جُنْدُبِ بْنِ سُفْيَانَ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ شَهِدْتُ أَضْحًى مَعَ رَسُولِ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ،‏‏‏‏ فَصَلَّى بِالنَّاسِ، ‏‏‏‏‏‏فَلَمَّا قَضَى الصَّلَاةَ رَأَى غَنَمًا قَدْ ذُبِحَتْ، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ:‏‏‏‏ "مَنْ ذَبَحَ قَبْلَ الصَّلَاةِ فَلْيَذْبَحْ شَاةً مَكَانَهَا، ‏‏‏‏‏‏وَمَنْ لَمْ يَكُنْ ذَبَحَ فَلْيَذْبَحْ عَلَى اسْمِ اللَّهِ عَزَّ وَجَلَّ".
جندب بن سفیان رضی اللہ عنہ کہتے ہیں کہ میں رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے ساتھ عید الاضحی میں تھا، آپ نے لوگوں کو نماز عید پڑھائی، جب نماز مکمل کر لی تو آپ نے دیکھا کہ کچھ بکریاں (نماز سے پہلے ہی) ذبح کر دی گئیں ہیں، آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: نماز عید سے پہلے جس نے ذبح کیا ہے اسے چاہیئے کہ وہ اس کی جگہ دوسری بکری ذبح کرے اور جس نے ذبح نہیں کیا ہے تو وہ اللہ کا نام لے کر ذبح کرے ۱؎۔

تخریج دارالدعوہ: صحیح البخاری/العیدین ۲۳ (۹۸۵)، الصید ۱۷ (۵۵۰۰)، الأضاحی ۱۲ (۵۵۶۲)، الأیمان ۱۵ (۶۶۷۴)، التوحید ۱۳ (۷۴۰۰)، صحیح مسلم/الأضاحی ۱ (۱۹۶۰)، سنن ابن ماجہ/الأضاحی ۱۲ (۳۱۵۲)، (تحفة الأشراف: ۳۲۵۱)، مسند احمد (۴/۳۱۲، ۳۱۳)، ویأتی عند المؤلف برقم: ۴۴۰۳ (صحیح)

وضاحت: : ۱؎ واضح طور پر باب کے مطابق پچھلی حدیث ہے، مؤلف نے اس حدیث سے اس طرح استدلال کیا ہے کہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے عید گاہ میں ذبح پر کچھ نہیں فرمایا: بلکہ صرف نماز عید سے پہلے ذبح کر دیئے جانے پر اعتراض کیا۔

قال الشيخ الألباني: صحيح
5- بَابُ: مَا نُهِيَ عَنْهُ مِنَ الأَضَاحِي الْعَوْرَاءِ
باب: ممنوع جانوروں میں سے کانے جانور کی قربانی منع ہے۔
حدیث نمبر: 4374
أَخْبَرَنَا إِسْمَاعِيل بْنُ مَسْعُودٍ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا خَالِدٌ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ شُعْبَةَ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ سُلَيْمَانَ بْنِ عَبْدِ الرَّحْمَنِ مَوْلَى بَنِي أَسَدٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أَبِي الضَّحَّاكِ عُبَيْدِ بْنِ فَيْرُوزَ مَوْلَى بَنِي شَيْبَانَ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ قُلْتُ لِلْبَرَاءِ:‏‏‏‏ حَدِّثْنِي عَمَّا نَهَى عَنْهُ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ مِنَ الْأَضَاحِيِّ. قَالَ:‏‏‏‏ قَامَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ وَيَدِي أَقْصَرُ مِنْ يَدِهِ، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ:‏‏‏‏ "أَرْبَعٌ لَا يَجُزْنَ:‏‏‏‏ الْعَوْرَاءُ الْبَيِّنُ عَوَرُهَا، ‏‏‏‏‏‏وَالْمَرِيضَةُ الْبَيِّنُ مَرَضُهَا، ‏‏‏‏‏‏وَالْعَرْجَاءُ الْبَيِّنُ ظَلْعُهَا، ‏‏‏‏‏‏وَالْكَسِيرَةُ الَّتِي لَا تُنْقِي". قُلْتُ:‏‏‏‏ إِنِّي أَكْرَهُ أَنْ يَكُونَ فِي الْقَرْنِ نَقْصٌ، ‏‏‏‏‏‏وَأَنْ يَكُونَ فِي السِّنِّ نَقْصٌ. قَالَ:‏‏‏‏ مَا كَرِهْتَهُ فَدَعْهُ، ‏‏‏‏‏‏وَلَا تُحَرِّمْهُ عَلَى أَحَدٍ.
ابوالضحاک عبید بن فیروز کہتے ہیں کہ میں نے براء رضی اللہ عنہ سے کہا: مجھے بتائیے کہ کن کن جانوروں کی قربانی سے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے روکا ہے؟ انہوں نے کہا: رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کھڑے ہوئے (اور براء نے ہاتھ سے اشارہ کیا اور کہا) میرا ہاتھ آپ کے ہاتھ سے چھوٹا ہے، آپ نے فرمایا: چار طرح کے جانور جائز نہیں: ایک تو کانا جس کا کانا پن صاف معلوم ہو، دوسرا بیمار جس کی بیماری واضح ہو، تیسرا لنگڑا جس کا لنگڑا پن صاف ظاہر ہو، چوتھا وہ دبلا اور کمزور جانور جس کی ہڈیوں میں گودا نہ ہو۔ میں نے کہا: مجھے یہ بھی ناپسند ہے کہ اس کے سینگ میں کوئی نقص عیب ہو یا اس کے دانت میں کوئی کمی ہو ۱؎، انہوں نے کہا: جو تمہیں ناپسند ہو اسے چھوڑ دو، لیکن تم کسی اور کو اس سے مت روکو۔

تخریج دارالدعوہ: سنن ابی داود/الضحایا ۶ (۲۸۰۲)، سنن الترمذی/الضحایا ۵ (۱۴۹۷)، سنن ابن ماجہ/الضحایا ۸ (۳۱۴۴)، موطا امام مالک/الضحایا ۱ (۱)، مسند احمد (۴/۲۸۴، ۲۸۹، ۳۰۰، ۳۰۱)، سنن الدارمی/الأضاحی ۳ (۱۹۹۳)، ویأتی برقم: ۴۳۷۵، ۴۳۷۶ (صحیح)

وضاحت: ۱؎: اس سے مراد: سینگ یا دانت میں معمولی سی کمی ہے، اسی لیے اتنی کمی والے جانور کے بارے میں آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ” جو تمہیں ناپسند ہو … “ ورنہ مذکورہ چاروں عیوب کی طرح کسی بھی بڑے عیب کی موجودگی میں جمہور کے نزدیک قربانی جائز نہیں جیسے آدھا سے زیادہ کان کٹا ہوا ہو سینگ ٹوٹی ہوئی، پاؤں کٹا ہوا ہو، اندھا ہو، وغیرہ وغیرہ۔

قال الشيخ الألباني: صحيح
6- بَابُ: الْعَرْجَاءِ
باب: لنگڑے جانوروں کی قربانی منع ہے۔
حدیث نمبر: 4375
أَخْبَرَنَا مُحَمَّدُ بْنُ بَشَّارٍ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ جَعْفَرٍ، ‏‏‏‏‏‏وَأَبُو دَاوُدَ،‏‏‏‏ وَيَحْيَى، ‏‏‏‏‏‏وَعَبْدُ الرَّحْمَنِ، ‏‏‏‏‏‏وَابْنُ أَبِي عَدِيٍّ، ‏‏‏‏‏‏وَأَبُو الْوَلِيدِ، ‏‏‏‏‏‏قَالُوا:‏‏‏‏ أَنْبَأَنَا شُعْبَةُ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ سَمِعْتُ سُلَيْمَانَ بْنَ عَبْدِ الرَّحْمَنِ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ سَمِعْتُ عُبَيْدَ بْنَ فَيْرُوزَ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ قُلْتُ لِلْبَرَاءِ بْنِ عَازِبٍ:‏‏‏‏ حَدِّثْنِي مَا كَرِهَ، ‏‏‏‏‏‏أَوْ نَهَى عَنْهُ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ مِنَ الْأَضَاحِيِّ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ فَإِنَّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ قَالَ:‏‏‏‏ هَكَذَا بِيَدِهِ، ‏‏‏‏‏‏وَيَدِي أَقْصَرُ مِنْ يَدِ رَسُولِ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ "أَرْبَعَةٌ لَا يَجْزِينَ فِي الْأَضَاحِيِّ:‏‏‏‏ الْعَوْرَاءُ الْبَيِّنُ عَوَرُهَا، ‏‏‏‏‏‏وَالْمَرِيضَةُ الْبَيِّنُ مَرَضُهَا، ‏‏‏‏‏‏وَالْعَرْجَاءُ الْبَيِّنُ ظَلْعُهَا، ‏‏‏‏‏‏وَالْكَسِيرَةُ الَّتِي لَا تُنْقِي". قَالَ:‏‏‏‏ فَإِنِّي أَكْرَهُ أَنْ يَكُونَ نَقْصٌ فِي الْقَرْنِ، ‏‏‏‏‏‏وَالْأُذُنِ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ فَمَا كَرِهْتَ مِنْهُ فَدَعْهُ، ‏‏‏‏‏‏وَلَا تُحَرِّمْهُ عَلَى أَحَدٍ.
عبید بن فیروز کہتے ہیں کہ میں نے براء بن عازب رضی اللہ عنہما سے کہا: مجھے بتائیے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کو کن کن جانوروں کی قربانی ناپسند تھی، یا آپ ان سے منع فرماتے تھے؟ انہوں نے کہا کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا ہے (اور اس طرح انہوں نے اپنے ہاتھ سے اشارہ کیا، اور میرا ہاتھ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے ہاتھ سے چھوٹا ہے): چار جانوروں کی قربانی درست اور صحیح نہیں ہے: کانا جس کا کانا پن ظاہر ہو، بیمار جس کی بیماری واضح ہو، لنگڑا جس کا لنگڑا پن ظاہر ہو، اور دبلا اور کمزور جس میں گودا نہ ہو، انہوں نے کہا: مجھے ناپسند ہے کہ اس جانور کے سینگ اور کان میں کوئی عیب ہو، انہوں نے کہا: جو تمہیں ناپسند ہو اسے چھوڑ دو لیکن کسی اور کو اس سے مت روکو۔

تخریج دارالدعوہ: انظر ما قبلہ (صحیح)

قال الشيخ الألباني: صحيح