تفسير ابن كثير

سورة المرسلات
تفسیر سورۃ المرسلات

ابن مسعود رضی اللہ عنہ فرماتے ہیں کہ ہم منیٰ کے ایک غار میں تھے جب یہ سورت اتری نبی صلی اللہ علیہ وسلم اس کی تلاوت کر رہے تھے اور میں آپ صلی اللہ علیہ وسلم سے سن کر یاد کر رہا تھا کہ ناگہاں ایک سانپ ہم پر کودا، نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: اسے مارو، ہم گو جھپٹے لیکن وہ نکل گیا تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: تمہاری سزا سے وہ بچ گیا جیسے تم اس کی برائی سے محفوظ رہے۔ (بخاری مسلم) (صحیح بخاری:1830)

عبداللہ بن عباس رضی اللہ عنہما کی والدہ صاحبہ سیدہ ام الفضل رضی اللہ تعالیٰ عنہا فرماتی ہیں کہ میں نے نبی صلی اللہ علیہ وسلم کو مغرب کی نماز میں اس سورت کی قرات کرتے ہوئے سنا ہے۔ (سنن نسائی:987،،قال الشيخ الألباني:صحیح) دوسری حدیث میں ہے کہ سیدنا عبداللہ رضی اللہ عنہ کو اس سورت کو پڑھتے ہوئے سن کر ام المؤمنین نے فرمایا پیارے بچے! آج تو تم نے یاد دلا دیا میں نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی زبان مبارک سے اس سورت کو مغرب کی نماز میں پڑھتے ہوئے آخری مرتبہ سنا ہے۔ (بخاری و مسلم و مسند احمد) (صحیح بخاری:763)


 
بِسْمِ اللَّـهِ الرَّحْمَـنِ الرَّحِيمِ﴿﴾
شروع کرتا ہوں اللہ تعالٰی کے نام سے جو بڑا مہربان نہایت رحم کرنے والا ہے۔

 
 

وَالْمُرْسَلَاتِ عُرْفًا﴿1﴾ فَالْعَاصِفَاتِ عَصْفًا﴿2﴾ وَالنَّاشِرَاتِ نَشْرًا﴿3﴾ فَالْفَارِقَاتِ فَرْقًا﴿4﴾ فَالْمُلْقِيَاتِ ذِكْرًا﴿5﴾ عُذْرًا أَوْ نُذْرًا﴿6﴾ إِنَّمَا تُوعَدُونَ لَوَاقِعٌ﴿7﴾ فَإِذَا النُّجُومُ طُمِسَتْ﴿8﴾ وَإِذَا السَّمَاءُ فُرِجَتْ﴿9﴾ وَإِذَا الْجِبَالُ نُسِفَتْ﴿10﴾ وَإِذَا الرُّسُلُ أُقِّتَتْ﴿11﴾ لِأَيِّ يَوْمٍ أُجِّلَتْ﴿12﴾ لِيَوْمِ الْفَصْلِ﴿13﴾ وَمَا أَدْرَاكَ مَا يَوْمُ الْفَصْلِ﴿14﴾ وَيْلٌ يَوْمَئِذٍ لِلْمُكَذِّبِينَ﴿15﴾
[ترجمہ محمد جوناگڑھی] دل خوش کن چلتی ہواؤں کی قسم۔ (1) پھر زور سے جھونکا دینے والیوں کی قسم۔ (2) پھر [ابر کو] ابھار کر پراگنده کرنے والیوں کی قسم۔ (3) پھر حق وباطل کو جدا جدا کر دینے والے۔ (4) اور وحی ﻻنے والے فرشتوں کی قسم۔ (5) جو [وحی] الزام اتارنے یا آگاه کردینے کے لیے ہوتی ہے۔ (6) جس چیز کا تم سے وعده کیا جاتا ہے وہ یقیناً ہونے والی ہے۔ (7) پس جب ستارے بے نور کردئے جائیں گے۔ (8) اور جب آسمان توڑ پھوڑ دیا جائے گا۔ (9) اور جب پہاڑ ٹکڑے ٹکڑے کر کے اڑا دیئے جائیں گے۔ (10) اور جب رسولوں کو وقت مقرره پر ﻻیا جائے گا۔ (11) کس دن کے لیے [ان سب کو] مؤخر کیا گیا ہے؟۔ (12) فیصلے کے دن کے لیے۔ (13) اور تجھے کیا معلوم کہ فیصلے کا دن کیا ہے؟۔ (14) اس دن جھٹلانے والوں کی خرابی ہے۔ (15)
 
 


تفسیر آیت/آیات، 15 ،14 ،13 ،12 ،11 ،10 ،9 ،8 ،7 ،6 ،5 ،4 ،3 ،2 ،1 ،

فرشتوں اور ہواؤں کی قسم ٭٭

بعض بزرگ صحابہ تابعین وغیرہ سے تو مروی ہے کہ مذکورہ بالا قسمیں ان اوصاف والے فرشتوں کی کھائی ہیں، بعض کہتے ہیں پہلے کی چار قسمیں تو ہواؤں کی ہیں اور پانچویں قسم فرشتوں کی ہے۔ بعض نے توقف کیا ہے کہ «وَالْمُرْسَلَاتِ» سے مراد یا تو فرشتے ہیں یا ہوائیں ہیں، ہاں «والْعَاصِفَاتِ» میں کہا ہے کہ اس سے مراد تو ہوائیں ہی ہیں، بعض «عاصفات» میں یہ فرماتے ہیں اور «نَّاشِرَاتِ» میں کوئی فیصلہ نہیں کرتے، یہ بھی مروی ہے کہ «نَّاشِرَاتِ» سے مراد بارش ہے، بہ ظاہر تو یہ معلوم ہوتا ہے کہ «مُُرْسَلَاتِ» سے مراد ہوائیں ہے۔

جیسے اور جگہ فرمان باری «‏‏‏‏وَاَرْسَلْنَا الرِّيٰحَ لَوَاقِحَ فَاَنْزَلْنَا مِنَ السَّمَاءِ مَاءً فَاَسْقَيْنٰكُمُوْهُ وَمَآ اَنْتُمْ لَهٗ بِخٰزِنِيْنَ» (15-الحجر:22) یعنی ” ہم نے ہوائیں چلائیں جو ابر کو بوجھل کرنے والی ہیں “۔

اور جگہ ہے «وَمِنْ اٰيٰتِهٖٓ اَنْ يُّرْسِلَ الرِّيَاحَ مُبَشِّرٰتٍ وَّلِيُذِيْقَكُمْ مِّنْ رَّحْمَتِهٖ وَلِتَجْرِيَ الْفُلْكُ بِاَمْرِهٖ وَلِتَبْتَغُوْا مِنْ فَضْلِهٖ وَلَعَلَّكُمْ تَشْكُرُوْنَ» (30-الروم:46) الخ ” اپنی رحمت سے پیشتر اس کی خوشخبری دنیے والی ٹھنڈی ٹھنڈی ہوائیں وہ چلاتا ہے “۔

«عَاصِفَاتِ» سے بھی مراد ہوائیں ہیں، وہ نرم ہلکی اور بھینی بھینی ہوائیں تھیں یہ ذرا تیز جھونکوں والی اور آواز والی ہوائیں ہیں۔ «نَّاشِرَاتِ» سے مراد بھی ہوائیں ہیں جو بادلوں کو آسمان میں ہر چار سو پھیلا دیتی ہیں اور جدھر اللہ کا حکم ہوتا ہے انہیں لے جاتی ہیں۔

«فَارِقَاتِ» اور «مُلْقِيَاتِ» سے مراد البتہ فرشتے ہیں جو اللہ تعالیٰ کے حکم سے رسولوں پر وحی لے کر آتے ہیں جس سے حق و باطل، حلال و حرام میں، ضالت و ہدایت میں امتیاز اور فرق ہو جاتا ہے تاکہ لوگوں کے عذر ختم ہو جائیں اور منکرین کو تنبیہ ہو جائے۔
ان قسموں کے بعد فرمان ہے کہ ” جس قیامت کا تم سے وعدہ کیا گیا ہے جس دن تم سب کے سب اول آخر والے اپنی اپنی قبروں سے دوبارہ زندہ کئے جاؤ گے اور اپنے کرتوت کا پھل پاؤ گے نیکی کی جزا اور بدی کی سزا پاؤ گے، صور پھونک دیا جائے گا اور ایک چٹیل میدان میں تم سب جمع کر دئیے جاؤ گے یہ وعدہ یقیناً حق ہے اور ہو کر رہنے والا اور لازمی طور پر آنے والا ہے، اس دن ستاروں کا نور اور ان کی چمک دمک ماند پڑ جائے گی“۔

جیسے فرمایا «‏‏‏‏وَاِذَا النُّجُوْمُ انْکَدَرَتْ» (81-التكوير:2) اور جگہ فرمايا «‏‏‏‏وَاِذَا الْکَوَاکِبُ انْتَثَرَتْ» (82-الإنفطار:2) ” ستارے بے نور ہو کر گر جائیں گے اور آسمان پھٹ جائے گا ٹکڑے ٹکڑے ہو جائے گا اور پہاڑ ریزہ ریزہ ہو کر اڑ جائیں گے یہاں تک کہ نام نشان بھی باقی نہ رہے گا “۔

جیسے اور جگہ ہے «‏‏‏‏وَيَسْــَٔـلُوْنَكَ عَنِ الْجِبَالِ فَقُلْ يَنْسِفُهَا رَبِّيْ نَسْفًا» (20-طه:105) اور فرمایا «وَيَوْمَ نُسَيِّرُ الْجِبَالَ وَتَرَى الْاَرْضَ بَارِزَةً وَّحَشَرْنٰهُمْ فَلَمْ نُغَادِرْ مِنْهُمْ اَحَدًا» (18-الكهف:47)، یعنی ” پہاڑ ریزہ ریزہ ہو کر اڑ جائیں گے اور اس دن وہ چلنے لگیں گے بالکل نام و نشان مٹ جائے گا اور زمین ہموار بغیر اونچ نیچے کی رہ جائے گی اور رسولوں کو جمع کیا جائے گا اس وقت مقررہ پر انہیں لایا جائے گا “۔ جیسے اور جگہ ہے «‏‏‏‏يَوْمَ يَجْمَعُ اللّٰهُ الرُّسُلَ فَيَقُوْلُ مَاذَآ اُجِبْتُمْ» (5-المائدة:109) ” اس دن اللہ تعالیٰ رسولوں کو جمع کرے گا اور ان سے شہادتیں لے گا “۔

جیسے اور جگہ ہے «‏‏‏‏وَاَشْرَقَتِ الْاَرْضُ بِنُوْرِ رَبِّهَا وَوُضِعَ الْكِتٰبُ وَجِايْءَ بالنَّـبِيّٖنَ وَالشُّهَدَاءِ وَقُضِيَ بَيْنَهُمْ بالْحَــقِّ وَهُمْ لَا يُظْلَمُوْنَ» (39-الزمر:69) ” زمین اپنے رب کے نور سے چمک اٹھے گی، نامہ اعمال دے دیئے جائیں گے، نبیوں کو اور گواہوں کو لایا جائے گا اور حق و انصاف کے ساتھ فیصلے کئے جائیں گے اور کسی پر ظلم نہ ہو گا “۔

پھر فرماتا ہے کہ ” ان رسولوں کو ٹھہرایا گیا تھا اس لیے کہ قیامت کے دن فیصلے ہوں گے “۔

جیسے فرمایا «‏‏‏‏فَلَا تَحْسَبَنَّ اللّٰهَ مُخْلِفَ وَعْدِهٖ رُسُلَهٗ اِنَّ اللّٰهَ عَزِيْزٌ ذو انْتِقَامٍ» (14-إبراھیم:47) ” یہ خیال نہ کر کہ اللہ تعالیٰ اپنے رسولوں سے وعدہ خلافی کرے گا، نہیں نہیں اللہ تعالیٰ بڑے غلبہ والا اور انتقام والا ہے، جس دن یہ زمین بدل دی جائے گی اور آسمان بھی اور سب کے سب اللہ واحد و قہار کے سامنے پیش ہو جائیں گے “۔

اسی کو یہاں فیصلے کا دن کہا گیا، پھر اس دن کی عظمت ظاہر کرنے کے لیے فرمایا: ” میرے معلوم کرائے بغیر اے نبی کریم تم بھی اس دن کی حقیقت سے باخبر نہیں ہو سکتے، اس دن ان جھٹلانے والوں کے لیے سخت خرابی ہے “۔

ایک غیر صحیح حدیث میں یہ بھی گزر چکا ہے کہ ویل جہنم کی ایک وادی کا نام ہے ۔ (سنن ترمذي:3164،قال الشيخ الألباني:ضعیف)

أَلَمْ نُهْلِكِ الْأَوَّلِينَ﴿16﴾ ثُمَّ نُتْبِعُهُمُ الْآخِرِينَ﴿17﴾ كَذَلِكَ نَفْعَلُ بِالْمُجْرِمِينَ﴿18﴾ وَيْلٌ يَوْمَئِذٍ لِلْمُكَذِّبِينَ﴿19﴾ أَلَمْ نَخْلُقْكُمْ مِنْ مَاءٍ مَهِينٍ﴿20﴾ فَجَعَلْنَاهُ فِي قَرَارٍ مَكِينٍ﴿21﴾ إِلَى قَدَرٍ مَعْلُومٍ﴿22﴾ فَقَدَرْنَا فَنِعْمَ الْقَادِرُونَ﴿23﴾ وَيْلٌ يَوْمَئِذٍ لِلْمُكَذِّبِينَ﴿24﴾ أَلَمْ نَجْعَلِ الْأَرْضَ كِفَاتًا﴿25﴾ أَحْيَاءً وَأَمْوَاتًا﴿26﴾ وَجَعَلْنَا فِيهَا رَوَاسِيَ شَامِخَاتٍ وَأَسْقَيْنَاكُمْ مَاءً فُرَاتًا﴿27﴾ وَيْلٌ يَوْمَئِذٍ لِلْمُكَذِّبِينَ﴿28﴾
[ترجمہ محمد جوناگڑھی] کیا ہم نے اگلوں کو ہلاک نہیں کیا؟۔ (16) پھر ہم ان کے بعد پچھلوں کو ﻻئے۔ (17) ہم گنہگاروں کے ساتھ اسی طرح کرتے ہیں۔ (18) اس دن جھٹلانے والوں کے لیے ویل [افسوس] ہے۔ (19) کیا ہم نے تمہیں حقیر پانی سے [منی سے] پیدا نہیں کیا۔ (20) پھر ہم نے اسے مضبوط ومحفوظ جگہ میں رکھا۔ (21) ایک مقرره وقت تک۔ (22) پھر ہم نے اندازه کیا اور ہم کیا خوب اندازه کرنے والے ہیں۔ (23) اس دن تکذیب کرنے والوں کی خرابی ہے۔ (24) کیا ہم نے زمین کو سمیٹنے والی نہیں بنایا؟۔ (25) زندوں کو بھی اور مردوں کو بھی۔ (26) اور ہم نے اس میں بلند وبھاری پہاڑ بنادیے اور تمہیں سیراب کرنے واﻻ میٹھا پانی پلایا۔ (27) اس دن جھٹلانے والوں کے لیے وائے اور افسوس ہے۔ (28)
 
 


تفسیر آیت/آیات، 28 ،27 ،26 ،25 ،24 ،23 ،22 ،21 ،20 ،19 ،18 ،17 ،16 ،

حسرت و افسوس کا وقت آنے سے پہلے ٭٭

اللہ تعالیٰ فرماتا ہے کہ ” تم سے پہلے بھی جن لوگوں نے میرے رسولوں کی رسالت کو جھٹلایا میں نے انہیں نیست و نابود کر دیا پھر ان کے بعد اور لوگ آئے انہوں نے بھی ایسا ہی کیا اور ہم نے بھی انہیں اسی طرح غارت کر دیا ہم مجرموں کی غفلت کا یہی بدلہ دیتے چلے آئے ہیں، اس دن ان جھٹلانے والوں کی درگت ہو گی “۔

پھر اپنی مخلوق کو اپنا احسان یاد دلاتا ہے اور منکرین قیامت کے سامنے دلیل پیش کرتا ہے کہ ” ہم نے اسے حقیر اور ذلیل قطرے سے پیدا کیا جو خالق کائنات کی قدرت کے سامنے ناچیز محض تھا “، جیسے سورۃ یس کی تفسیر میں گزر چکا ہے کہ ” اے ابن آدم بھلا تو مجھے کیا عاجز کر سکے گا میں نے تو تجھے اسی جیسی چیز سے پیدا کیا ہے، پھر اس قطرے کو ہم نے رحم میں جمع کیا جو اس پانی کے جمع ہونے کی جگہ ہے اسے بڑھاتا ہے اور محفوظ رکھتا ہے، مدت مقررہ تک وہ وہیں رہا یعنی چھ مہینے یا نو مہینے، ہمارے اس اندازے کو دیکھو کہ کس قدر صحیح اور بہترین ہے، پھر بھی اگر تم اس آنے والے دن کو نہ مانو گے تو یقین جانو کہ تمہیں قیامت کے دن بڑی حسرت اور سخت افسوس ہو گا “۔

پھر فرمایا ” کیا ہم نے زمین کو یہ خدمت سپرد نہیں کی؟ کہ وہ تمہیں زندگی میں بھی اپنی پیٹھ پر چلاتی رہے اور موت کے بعد بھی تمہیں اپنے پیٹ میں چھپا رکھے، پھر زمین کے نہ ہلنے جلنے کے لیے ہم نے مضبوط وزنی بلند پہاڑ اس میں گاڑ دیئے اور بادلوں سے برستا ہوا اور چشموں سے رستا ہوا ہلکا زود ہضم، خوش گوار پانی ہم نے تمہیں پلایا، ان نعمتوں کے باوجود بھی اگر تم میری باتوں کو جھٹلاتے ہی رہے تو یاد رکھو وہ وقت آ رہا ہے جب حسرت و افسوس کرو گے اور کچھ کام نہ آئے “۔