سنن ترمذي کل احادیث 3956 :حدیث نمبر
سنن ترمذي
کتاب: جنازہ کے احکام و مسائل
The Book on Jana\'iz (Funerals)
74. باب آخَرُ فِي فَضْلِ التَّعْزِيَةِ
74. باب: تعزیت کی فضیلت کا بیان۔
حدیث نمبر: 1076
پی ڈی ایف بنائیں اعراب
حدثنا محمد بن حاتم المؤدب، حدثنا يونس بن محمد، قال: حدثتنا ام الاسود، عن منية بنت عبيد بن ابي برزة، عن جدها ابي برزة، قال: قال رسول الله صلى الله عليه وسلم: " من عزى ثكلى كسي بردا في الجنة ". قال ابو عيسى: هذا حديث غريب، وليس إسناده بالقوي.حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ حَاتِمٍ الْمُؤَدِّبُ، حَدَّثَنَا يُونُسُ بْنُ مُحَمَّدٍ، قَالَ: حَدَّثَتْنَا أُمُّ الْأَسْوَدِ، عَنْ مُنْيَةَ بِنْتِ عُبَيْدِ بْنِ أَبِي بَرْزَةَ، عَنْ جَدِّهَا أَبِي بَرْزَةَ، قَالَ: قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ: " مَنْ عَزَّى ثَكْلَى كُسِيَ بُرْدًا فِي الْجَنَّةِ ". قَالَ أَبُو عِيسَى: هَذَا حَدِيثٌ غَرِيبٌ، وَلَيْسَ إِسْنَادُهُ بِالْقَوِيِّ.
ابوبرزہ رضی الله عنہ کہتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: جس نے کسی ایسی عورت کی تعزیت (ماتم پرسی) کی جس کا لڑکا مر گیا ہو، تو اسے جنت میں اس کے بدلہ ایک عمدہ کپڑا پہنایا جائے گا۔
امام ترمذی کہتے ہیں:
۱- یہ حدیث غریب ہے،
۲- اس کی سند قوی نہیں ہے۔

تخریج الحدیث: «تفرد بہ المؤلف (تحفة الأشراف: 11609) (ضعیف) (اس کی راویہ ”منیہ“ مجہول الحال ہیں)»

قال الشيخ الألباني: ضعيف، المشكاة (1738) // ضعيف الجامع الصغير (5695)، الإرواء (764) //

قال الشيخ زبير على زئي: (1076) إسناده ضعيف
منية،لا يعرف حالھا (تق:8687)
   جامع الترمذي1076نضلة بن عبيدمن عزى ثكلى كسي بردا في الجنة

تخریج الحدیث کے تحت حدیث کے فوائد و مسائل
  الشیخ ڈاکٹر عبد الرحمٰن فریوائی حفظ اللہ، فوائد و مسائل، سنن ترمذی، تحت الحديث 1076  
´تعزیت کی فضیلت کا بیان۔`
ابوبرزہ رضی الله عنہ کہتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: جس نے کسی ایسی عورت کی تعزیت (ماتم پرسی) کی جس کا لڑکا مر گیا ہو، تو اسے جنت میں اس کے بدلہ ایک عمدہ کپڑا پہنایا جائے گا۔‏‏‏‏ [سنن ترمذي/كتاب الجنائز/حدیث: 1076]
اردو حاشہ:
نوٹ:
(اس کی راویہ منیہ مجہول الحال ہیں)
   سنن ترمذي مجلس علمي دار الدعوة، نئى دهلى، حدیث\صفحہ نمبر: 1076   


http://islamicurdubooks.com/ 2005-2023 islamicurdubooks@gmail.com No Copyright Notice.
Please feel free to download and use them as you would like.
Acknowledgement / a link to www.islamicurdubooks.com will be appreciated.