شمائل ترمذي کل احادیث 417 :حدیث نمبر
سوانح حیات امام ترمذی رحمہ اللہ
سوانح حیات:​
اساتذہ و شیوخ:
آپ کا زمانہ علوم حدیث کے عروج اور ترقی کا زمانہ تھا چنانچہ آپ نے بہت سارے محدثین کو پایا، ان سے اکتساب فیض کیا، احادیث سنیں اور روایت کیں، حافظ ذہبی نے تذکرۃ الحفاظ اور سیر أعلام النبلاء میں آپ کے اساتذہ و شیوخ حدیث کی ایک فہرست دی ہے جن سے آپ نے سماع حدیث کیا،
ان میں سے بعض مشاہیر درج ذیل ہیں:
➊ ابراہیم بن عبداللہ بن حاتم ہروی (م: 244ھ)
➋ ابومصعب احمد بن ابی بکر الزہری المدنی (م: 242ھ)
➌ احمد بن منیع
➍ اسحاق بن راہویہ
➎ اسماعیل بن موسیٰ فزاری سدی (م: 245ھ)
➏ ابوداود سلیمان بن الاشعث (صاحب سنن) (م: 275ھ)
➐ سوید نصر بن سوید مروزی (م: 243ھ)
➑ عبداللہ بن معاویہ جمحی۔ (م: 243ھ)
➒ علی بن حجر مروزی (م: 244ھ)
➓ علی بن سعید بن مسروق الکندی الکوفی (م: 249ھ)
⓫ عمرو بن علی الفلاس (م: 942ھ)
⓬ محمد بن بشار بندار (م: 252ھ)
⓭ قتیبہ بن سعید ثقفی ابورجاء (م: 240ھ)
⓮ محمد بن عبدالملک بن ابی الشوارب (م: 244ھ) وغیرہ وغیرہ
⓯ محمود بن غیلان مروزی بغدادی (239ھ)
⓰ اور روایت حدیث کے ساتھ علوم حدیث و رجال اور فقہ حدیث امام محمد بن اسماعیل بخاری سے حاصل کی۔
⓱ امام مسلم سے بھی آپ نے سماع حدیث کیا ہے، اور اپنی جامع کے اندر ان سے ایک روایت بھی نقل کی ہے۔