سنن ابي داود کل احادیث 5274 :حدیث نمبر
سنن ابي داود
کتاب: طہارت کے مسائل
Purification (Kitab Al-Taharah)
4. باب كَرَاهِيَةِ اسْتِقْبَالِ الْقِبْلَةِ عِنْدَ قَضَاءِ الْحَاجَةِ
4. باب: قضائے حاجت (پیشاب و پاخانہ) کے وقت قبلہ کی طرف منہ کرنا مکروہ ہے۔
Chapter: It Is Dislikes To Face The Qiblah While Relieving Oneself.
حدیث نمبر: 7
پی ڈی ایف بنائیں مکررات اعراب English
(مرفوع) حدثنا مسدد بن مسرهد، حدثنا ابو معاوية، عن الاعمش، عن إبراهيم، عن عبد الرحمن بن يزيد، عن سلمان، قال: قيل له: لقد علمكم نبيكم كل شيء حتى الخراءة، قال: اجل، لقد" نهانا صلى الله عليه وسلم ان نستقبل القبلة بغائط او بول، وان لا نستنجي باليمين، وان لا يستنجي احدنا باقل من ثلاثة احجار، او نستنجي برجيع او عظم".
(مرفوع) حَدَّثَنَا مُسَدَّدُ بْنُ مُسَرْهَدٍ، حَدَّثَنَا أَبُو مُعَاوِيَةَ، عَنْ الْأَعْمَشِ، عَنْ إِبْرَاهِيمَ، عَنْ عَبْدِ الرَّحْمَنِ بْنِ يَزِيدَ، عَنْ سَلْمَانَ، قَالَ: قِيلَ لَهُ: لَقَدْ عَلَّمَكُمْ نَبِيُّكُمْ كُلَّ شَيْءٍ حَتَّى الْخِرَاءَةَ، قَالَ: أَجَلْ، لَقَدْ" نَهَانَا صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ أَنْ نَسْتَقْبِلَ الْقِبْلَةَ بِغَائِطٍ أَوْ بَوْلٍ، وَأَنْ لا نَسْتَنْجِيَ بِالْيَمِينِ، وَأَنْ لا يَسْتَنْجِيَ أَحَدُنَا بِأَقَلَّ مِنْ ثَلَاثَةِ أَحْجَارٍ، أَوْ نَسْتَنْجِيَ بِرَجِيعٍ أَوْ عَظْمٍ".
سلمان رضی اللہ عنہ کہتے ہیں کہ ان سے (بطور استہزاء) یہ کہا گیا کہ تمہارے نبی نے تو تمہیں سب چیزیں سکھا دی ہیں حتیٰ کہ پاخانہ کرنا بھی، تو انہوں نے (فخریہ انداز میں) کہا: ہاں، بیشک ہمارے نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے ہم کو پاخانہ اور پیشاب کے وقت قبلہ رخ ہونے، داہنے ہاتھ سے استنجاء کرنے، استنجاء میں تین سے کم پتھر استعمال کرنے اور گوبر اور ہڈی سے استنجاء کرنے سے منع فرمایا ہے۔
16541 - D 7 - U 6

تخریج الحدیث: «‏‏‏‏صحیح مسلم/الطھارة 17 (262)، سنن الترمذی/الطھارة 12 (16)، سنن النسائی/الطھارة 37 (41)، سنن ابن ماجہ/الطھارة 16 (316)، (تحفة الأشراف: 4505)، وقد أخرجہ: مسند احمد (5/437، 438، 439) (صحیح)» ‏‏‏‏

Narrated Salman al-Farsi: It was said to Salman: Your Prophet teaches you everything, even about excrement. He replied: Yes. He has forbidden us to face the qiblah at the time of easing or urinating, and cleansing with right hand, and cleansing with less than three stones, or cleansing with dung or bone.
USC-MSA web (English) Reference: Book 1 , Number 7



قال الشيخ الألباني: صحيح

   سنن أبي داود7سلمان بن الإسلامنهانا أن نستقبل القبلة بغائط أو بول لا نستنجي باليمين لا يستنجي أحدنا بأقل من ثلاثة أحجار نستنجي برجيع أو عظم
   جامع الترمذي16سلمان بن الإسلامنهانا أن نستقبل القبلة بغائط أو بول نستنجي باليمين يستنجي أحدنا بأقل من ثلاثة أحجار نستنجي برجيع أو بعظم
   سنن النسائى الصغرى49سلمان بن الإسلاميستنجي أحدنا بيمينه ويستقبل القبلة
   سنن النسائى الصغرى41سلمان بن الإسلامنهانا أن نستقبل القبلة بغائط أو بول نستنجي بأيماننا نكتفي بأقل من ثلاثة أحجار
   صحيح مسلم606سلمان بن الإسلامنهانا أن نستقبل القبلة لغائط أو بول نستنجي باليمين نستنجي بأقل من ثلاثة أحجار نستنجي برجيع أو بعظم
   صحيح مسلم607سلمان بن الإسلاميستنجي أحدنا بيمينه أو يستقبل القبلة نهى عن الروث والعظام لا يستنجي أحدكم بدون ثلاثة أحجار
   سنن ابن ماجه316سلمان بن الإسلاملا نستقبل القبلة لا نستنجي بأيماننا لا نكتفي بدون ثلاثة أحجار ليس فيها رجيع ولا عظم

تخریج الحدیث کے تحت حدیث کے فوائد و مسائل
  فوائد ومسائل از الشيخ حافظ محمد امين حفظ الله سنن نسائي تحت الحديث 41  
´استنجاء میں تین پتھر سے کم کا استعمال منع ہے۔`
سلمان رضی اللہ عنہ کہتے ہیں کہ ایک شخص نے (حقارت کے انداز میں) ان سے کہا: تمہارے نبی تمہیں (سب کچھ) سکھاتے ہیں یہاں تک کہ پاخانہ کرنا (بھی)؟ تو انہوں نے (فخریہ انداز میں) کہا: ہاں! آپ نے ہمیں پاخانہ اور پیشاب کے وقت قبلہ کی طرف رخ کرنے، داہنے ہاتھ سے استنجاء کرنے اور (استنجاء کے لیے) تین پتھر سے کم پر اکتفا کرنے سے منع فرمایا ہے۔ [سنن نسائي/ذكر الفطرة/حدیث: 41]
41۔ اردو حاشیہ:
➊ یہ آدمی مشرک تھا اور اس نے یہ جملہ تحقیر و مذاق کے انداز میں کہا: تھا جسے حضرت سلمان فارسی رضی اللہ عنہ نے کمال حکمت سے سنجیدہ انداز میں پیش فرمایا۔ جزاء اللہ أحسن الجزاء۔
➋ مذکورہ احادیث سے جہاں یہ مسئلہ ثابت ہوا کہ گوبر اور لید سے صفائی کرنا اور پھر اس غرض کے لیے دائیں ہاتھ کا استعمال ممنوع ہے۔ وہاں یہ مسئلہ بھی ثابت ہوتا ہے کہ کم از کم تین پتھروں یا ڈھیلوں سے استنجا کرنا ضروری ہے، اس سے کم پتھروں سے استنجا کرنے کی ممانعت ہے، اگرچہ بسا اوقات صفائی ایک یا دو پتھروں سے بھی ممکن ہو اور یقیناًً اس تعداد کے حکم میں کوئی نہ کوئی حکمت ضرور ہے، نظافتِ مزید کی حکمت تو سمجھ میں آتی ہی ہے جبکہ حصول نظافت کی خاطر تین سے زائد ڈھیلوں کا استعمال، جب تین سے صفائی حاصل نہ ہو، حسب ضرورت مطلوب ہے۔ لیکن طاق عدد کو ملحوظ رکھا جائے جیسا کہ حدیث میں اس کی صراحت ہے: «ومن استجمر فلیوتر» جو ڈھیلے استعمال کرے تو چاہیے کہ طاق استعمال کرے۔ [صحیح البخاري، الوضوء، حدیث: 161]
   سنن نسائی ترجمہ و فوائد از الشیخ حافظ محمد امین حفظ اللہ، حدیث\صفحہ نمبر: 41   
  مولانا عطا الله ساجد حفظ الله، فوائد و مسائل، سنن ابن ماجه، تحت الحديث316  
´پتھر سے استنجاء کے جواز اور گوبر اور ہڈی سے ممانعت کا بیان۔`
سلمان فارسی رضی اللہ عنہ کہتے ہیں کہ ان سے کسی مشرک نے بطور استہزاء کے کہا: میں تمہارے ساتھی (نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم) کو دیکھتا ہوں کہ وہ تمہیں ہر چیز سکھاتے ہیں، یہاں تک کہ قضائے حاجت کے آداب بھی بتاتے ہیں! سلمان فارسی رضی اللہ عنہ نے کہا: ہاں، آپ نے ہمیں حکم دیا ہے کہ ہم قضائے حاجت کے وقت قبلہ کی طرف رخ نہ کریں، دائیں ہاتھ سے استنجاء نہ کریں، اور تین پتھر سے کم استعمال نہ کریں، ان میں کوئی گوبر ہو نہ ہڈی۔ [سنن ابن ماجه/كتاب الطهارة وسننها/حدیث: 316]
اردو حاشہ:
(1)
اسلام دین فطرت ہے اس لیے اس نے انسان کی زندگی کے کسی پہلو کو نظر انداز نہیں کیا۔
حتی کہ وہ مسائل بھی جنھیں زیر بحث لانا عام طور پر پسند نہیں کیا جاتا۔
ان میں بھی ہدایت کی ضروری تفصیل موجود ہے۔
علاوہ ازیں اسلامی تعلیمات میں نہ یہودیت کی سی ناروا سختی ہے نہ نصرانیت کی سی بے لگام اباحیت۔
  بلکہ ایک حسین اعتدال موجود ہے۔

(2)
غیر مسلم اقوام کی ہمیشہ سے یہ عادت رہی ہے کہ وہ اسلام کی خوبیوں کو بھی خامیاں بنا کر پیش کرتے ہیں۔
بعض مسلمان جو ذہنی طور پر ان سے مرغوب ہوتے ہیں وہ اس کے جواب میں معذرت خواہانہ رویہ اختیار کرتے ہیں اور تاویل یا انکار کے ذریعےسے اسلام کو ان کے غیراسلامی تصورات کے مطابق ثابت کرنے کی کوشش کرتے ہیں۔
صحیح طریقہ یہ ہے کہ اسلام کے احکام کی خوبیاں اور غیر اسلامی افکار کی خامیاں واضح کی جائیں کیونکہ اسلام ہی راہ ہدایت ہے اور کافروں کا گمراہ ہونا کسی دلیل کا محتاج نہیں۔
حضرت سلمان ؓ نے بھی معذرت خواہانہ رویہ اختیار کرنے کے بجائے انھیں مسکت جواب دیا یعنی ہمیں تو اللہ کے نبیﷺ نے بیت الخلاء کے آداب سکھائے ہیں اور یہ کوئی شرم کی بات نہیں۔
شرم کی بات تو یہ ہے کہ تم جیسے لوگوں کو قضائے حاجت کی بھی تمیز نہیں۔

(3)
حضرت سلمان رضی اللہ عنہ نے جو قضائے حاجت کے چار آداب ذکر کیے ہیں۔
ان سے اسلامی تہذیب کی دوسری تہذیبوں پر برتری واضح ہے۔
اپنے اپنے قبلے کا احترام ہرمذہب کے ہاں مسلم ہے۔
لیکن اس احترام کے لیے جس طرح کی ہدایات اسلام نے دی ہیں دوسرے مذاہب میں موجود نہیں۔
عبادت کے موقع پر جس طرف منہ کیا جاتا ہے۔
قضائے حاجت کے وقت اس طرف منہ کرنے سے اجتناب اس احترام کا ایک واضح مظہر ہے۔
یہود ونصاری میں ان کے قبلے کے لیے اس قسم کے احترام کی کوئی مثال موجود نہیں۔
دائیں اور بائیں ہاتھ کو الگ الگ کا موں کے لیے مخصوص کرنا بھی اسلامی تہذیب کی ایک نمایاں خوبی ہے۔
دایاں ہاتھ کھانے پینے کے لیے مخصوص ہے اور بایاں ہاتھ صفائی سے متعلقہ امور کے لیے۔
غیر مسلموں میں اس طرح کا کوئی امتیاز نہیں۔
خاص طور پر نصاری میں تو قضائے حاجت کے بعد جسم کی صفائی کی بھی وہ اہمیت نہیں جو فطرت سلیم کا تقاضہ ہے۔
اس کے بعد ہاتھ دھوئے بغیر کھانا کھا لینا تہذیب سے کس قدر دور ہے یہ محتاج وضاحت نہیں۔
تین ڈھیلے استعمال کرنے کا حکم بھی صفائی کی اہمیت واضح کرتا ہے۔
یعنی قضائے حاجت کے بعد جسم کی اس قد ر صفائی ہوجا نی چاہیے کہ نجاست رہ جانے کا احتمال نہ رہے اسی طرح لید گوبر اور ہڈی سے استنجاء کرنے سے منع کیا گیا ہے۔
کیونکہ یہ مسلمان جنوں اور ان کے جانوروں کی خوراک ہے نیز غذائی اشیاء کے لیے استنجا کے لیے استعمال کرنا ایک قابل نفرت فعل ہے جسے کوئی صاحب عقل پسند نہیں کرسکتا۔
نبی اکرم ﷺ نے مسلمان جنوں سے فرمایا تھا:
تمھارے لیے ہر وہ ہڈی ہے جس پر اللہ کا نام لیا گیا ہو وہ تمھارے ہاتھ میں آئے گی تو بہت زیادہ گوشت والی ہوجائے گی اور ہر مینگنی تمھارے جانوروں کے لیے چارہ ہوگی۔
اور صحابہ کرام رضی اللہ عنہ سے فرمایا:
تم ان دونوں چیزوں سے استنجاء نہ کرو کیونکہ یہ تمھارے بھائیوں کا طعام ہے۔ (صحیح مسلم، الصلاۃ، باب الجھر بالقراءۃ فی الصبح والقراءۃ علی الجن، حدیث: 450)
   سنن ابن ماجہ شرح از مولانا عطا الله ساجد، حدیث\صفحہ نمبر: 316