صحيح البخاري کل احادیث 7563 :حدیث نمبر
صحيح البخاري
کتاب: نکاح کے مسائل کا بیان
The Book of (The Wedlock)
6. بَابُ تَزْوِيجِ الْمُعْسِرِ الَّذِي مَعَهُ الْقُرْآنُ وَالإِسْلاَمُ:
6. باب: ایسے تنگ دست کی شادی کرانا جس کے پاس صرف قرآن مجید اور اسلام ہے۔
(6) Chapter. The marrying of a poor man who has the knowledge of the Quran and is a Muslim.
حدیث نمبر: Q5071
پی ڈی ایف بنائیں اعراب English
فيه: سهل بن سعد، عن النبي صلى الله عليه وسلم.فِيهِ: سَهْلُ بْنُ سَعْدٍ، عَنِ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ.
‏‏‏‏ اس باب میں سہل رضی اللہ عنہ سے بھی ایک حدیث نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم سے مروی ہے۔

حدیث نمبر: 5071
پی ڈی ایف بنائیں مکررات اعراب English
(مرفوع) حدثنا محمد بن المثنى، حدثنا يحيى، حدثنا إسماعيل، قال: حدثني قيس، عن ابن مسعود رضي الله عنه، قال:" كنا نغزو مع النبي صلى الله عليه وسلم ليس لنا نساء، فقلنا: يا رسول الله، الا نستخصي؟ فنهانا عن ذلك".(مرفوع) حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ الْمُثَنَّى، حَدَّثَنَا يَحْيَى، حَدَّثَنَا إِسْمَاعِيلُ، قَالَ: حَدَّثَنِي قَيْسٌ، عَنْ ابْنِ مَسْعُودٍ رَضِيَ اللَّهُ عَنْهُ، قَالَ:" كُنَّا نَغْزُو مَعَ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ لَيْسَ لَنَا نِسَاءٌ، فَقُلْنَا: يَا رَسُولَ اللَّهِ، أَلَا نَسْتَخْصِي؟ فَنَهَانَا عَنْ ذَلِكَ".
ہم سے محمد بن مثنیٰ نے بیان کیا، کہا ہم سے یحییٰ نے بیان کیا، کہا ہم سے اسماعیل نے بیان کیا، ان سے قیس نے بیان کیا اور ان سے ابن مسعود رضی اللہ عنہ نے بیان کیا کہ ہم نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کے ساتھ جہاد کیا کرتے تھے اور ہمارے ساتھ بیویاں نہیں تھیں۔ اس لیے ہم نے کہا کہ یا رسول اللہ! ہم اپنے آپ کو خصی کیوں نہ کر لیں؟ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے ہمیں اس سے منع فرمایا۔

Narrated Ibn Masud: We used to fight in the holy battles in the company of the Prophet and we had no wives with us. So we said, "O Allah's Apostle! Shall we get castrated?" The Prophet forbade us to do so.
USC-MSA web (English) Reference: Volume 7, Book 62, Number 9



   صحيح البخاري5071عبد الله بن مسعودألا نستخصي فنهانا عن ذلك
   صحيح البخاري4615عبد الله بن مسعودألا نختصي فنهانا عن ذلك فرخص لنا بعد ذلك أن نتزوج المرأة بالثوب ثم قرأ يأيها الذين آمنوا لا تحرموا طيبات ما أحل الله لكم
   صحيح مسلم3410عبد الله بن مسعودألا نستخصي فنهانا عن ذلك ثم رخص لنا أن ننكح المرأة بالثوب إلى أجل
   صحيح البخاري5075عبد الله بن مسعودألا نستخصي فنهانا عن ذلك ثم رخص لنا أن ننكح المرأة بالثوب

تخریج الحدیث کے تحت حدیث کے فوائد و مسائل
  حافظ زبير على زئي رحمه الله، فوائد و مسائل، تحت الحديث صحيح بخاري 4615  
´کچھ عرصے کے لئے متعہ جائز تھا`
«. . . عَنْ عَبْدِ اللَّهِ رَضِيَ اللَّهُ عَنْهُ، قَالَ: كُنَّا نَغْزُو مَعَ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ وَلَيْسَ مَعَنَا نِسَاءٌ، فَقُلْنَا: أَلَا نَخْتَصِي . . .»
. . . ہم رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے ساتھ ہو کر جہاد کیا کرتے تھے اور ہمارے ساتھ ہماری بیویاں نہیں ہوتی تھیں۔ اس پر ہم نے عرض کیا کہ ہم اپنے آپ کو خصی کیوں نہ کر لیں۔ لیکن نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے ہمیں اس سے روک دیا اور اس کے بعد ہمیں اس کی اجازت دی کہ ہم کسی عورت سے کپڑے (یا کسی بھی چیز) کے بدلے میں نکاح کر سکتے ہیں . . . [صحيح البخاري/كِتَاب تَفْسِيرِ الْقُرْآنِ: 4615]

فوائد و مسائل:
یہ حدیث درج ذیل کتابوں میں بھی موجود ہے:
[صحيح مسلم:1404,3410,3412]
[مسند الحميدي:100]
[مسند احمد:385/1، 390، 432،420،450]
[السنن الصغريٰ للنسائي:174/7، مختصراً]
[السنن الكبريٰ للنسائي:11150]
[مسند ابي يعليٰ:5382]
[شرح معاني الآثار للطحاوي:24/3]
[مصنف عبدالرزاق:506/7,ح14940، مختصراً]
[السنن الكبريٰ للبهيقي:201،200،79/7]
اس حدیث میں تین باتوں کا ذکر ہے:
➊ صحابہ کرام کا خصی ہونے کی اجازت مانگنا۔
➋ اس کام سے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کا صحابہ کو منع کر دینا۔
➌ ایک کپڑے کے حق مہر کے ساتھ عورت سے نکاح کرنے کی اجازت۔
اس حدیث میں نکاح کی اجازت ہے اور اسے طیبات (پاک و حلال) میں سے قرار دیا گیا ہے۔ رہا متعتہ النکاح کا مسئلہ تو پہلے یہ جائز اور غیر حرام تھا، بعد میں اسے قیامت تک کے لیے حرام قرار دیا گیا۔ امام بخاری رحمہ اللہ فرماتے ہیں:
«باب نهي رسول الله صلى الله عليه وسلم عن نكاح المتعة آخرا»
باب نکاح متعہ سے نبی صلی اللہ علیہ وسلم کا آخر میں منع فرما دینا۔ [صحیح بخاری،کتاب النکاح، باب:32]
اس باب میں امام بخاری نے سیدنا علی رضی اللہ عنہ سے روایت نقل کی ہے کہ نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے متعہ سے منع فرما دیا تھا۔ [ح:5115]

معترض کا یہ کہنا کہ:
جس کا مطلب ہے کہ امام بخاری خود بھی متعہ کے حلال ہونے کے قائل تھے۔ (ص:28)
بالکل جھوٹ اور امام بخاری پر بہتان عظیم ہے۔ یاد رہے کہ «متعته النكاح» کا ترجمہ زنا کرنا غلط ہے۔
حنفیوں کے ایک امام محمد بن الحسن بن فرقد الشیبانی کی طرف منسوب کتاب الآثار میں لکھا ہوا ہے کہ ابوحنیفہ نے حماد سے، اس نے ابراہیم سے، انہوں نے ابن مسعود رضی اللہ عنہ سے معتہ النکاح کے بارے میں نقل کیا: اصحاب محمد صلی اللہ علیہ وسلم کو صرف ایک جنگ میں متعہ کی اجازت دی گئی تھی . . . پھر نکاح، میراث اور مہر کی آیت نے اس کو منسوخ کر دیا۔ [اردو مترجم ص:198]

اس روایت اور دوسری روایات سے دو چیزیں ثابت ہیں:
➊ کچھ عرصے کے لئے متعہ جائز تھا۔
➋ بعد میں ہمیشہ کے لیے اسے منسوخ قرار دے کر حرام کر دیا گیا۔
لہٰذا قرآن و حدیث میں کوئی تعارض نہیں ہے۔
   توفيق الباري في تطبيق القرآن و صحيح بخاري، حدیث\صفحہ نمبر: 35   
  الشيخ محمد حسين ميمن حفظ الله، فوائد و مسائل، تحت الحديث صحيح بخاري 5071  
´ایسے تنگ دست کی شادی کرانا جس کے پاس صرف قرآن مجید اور اسلام ہے`
«. . . عَنْ ابْنِ مَسْعُودٍ رَضِيَ اللَّهُ عَنْهُ، قَالَ:" كُنَّا نَغْزُو مَعَ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ لَيْسَ لَنَا نِسَاءٌ، فَقُلْنَا: يَا رَسُولَ اللَّهِ، أَلَا نَسْتَخْصِي؟ فَنَهَانَا عَنْ ذَلِكَ . . .»
. . . ابن مسعود رضی اللہ عنہ نے بیان کیا کہ ہم نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کے ساتھ جہاد کیا کرتے تھے اور ہمارے ساتھ بیویاں نہیں تھیں۔ اس لیے ہم نے کہا کہ یا رسول اللہ! ہم اپنے آپ کو خصی کیوں نہ کر لیں؟ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے ہمیں اس سے منع فرمایا۔ [صحيح البخاري/كِتَاب النِّكَاحِ: 5071]
صحیح بخاری کی حدیث نمبر: 5071 کا باب: «بَابُ تَزْوِيجِ الْمُعْسِرِ الَّذِي مَعَهُ الْقُرْآنُ وَالإِسْلاَمُ:»

باب اور حدیث میں مناسبت:
بظاہر ترجمتہ الباب اور حدیث میں مناسبت مشکل ہے، کیونکہ باب میں تنگ دست کے نکا ح کا ذکر ہے، جبکہ حدیث میں تنگدستی کا کوئی ذکر موجود نہیں ہے، چنانچہ ترجمتہ الباب اور حدیث میں مناسبت پر اگر غور کیا جائے تو مناسبت کے پہلو اجاگر ہوں گے، سب سے پہلی بات یہ ہے کہ روایت میں «ليس لنا نساء» یہ الفاظ وارد ہوئے ہیں، لہٰذا ان لفظوں کا تعلق «تزويج المعسر» سے کس طرح ثابت کیا جائے؟ آگے چل کر امام بخاری رحمہ اللہ نے دوسری روایت کا ذکر فرمایا ہے کہ اس میں یہ الفاظ وارد ہیں، «ليس لنا شيئي» کہ ہمارے پاس کچھ نہیں ہے، یعنی کوئی مال وغیرہ نہیں ہے اور نہ ہی عورتیں ہیں، الفاظ سے ترجمۃ الباب کا مقصد حل ہوتا نظر آتا ہے، جس کی طرف حافظ ابن حجر رحمہ اللہ نے بھی اشارہ فرمایا ہے۔

چنانچہ آپ تحریر فرماتے ہیں:
«والذي يظهر ان المراد البخارى المعسر من المال بدليل قول ابن المسعود وليس لنا شيء .» [فتح الباري لابن حجر: 100/9]
لہٰذا سیدنا عبداللہ بن مسعود رضی اللہ عنہ کا مقصد یہ تھا کہ ہمارے پاس نان و نفقہ کا چونکہ بندوبست نہیں تھا اور نہ ہی اس مقصد کے لئے بیویاں تھیں تو نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم اگر ہمیں خصی ہونے کی اجازت مرحمت فرما دیتے تو ہم خصی ہو جاتے مگر آپ نے خصی ہونے کی اجازت مرحمت نہیں فرمائی۔ یاد رکھیں! قرآن و سنت اور اسلام کی دولت سے یہ صحابہ کرام رضی اللہ عنہم مالامال تھے، لیکن انہیں عورتیں میسر نہ تھی، جن کی انہیں سخت ضرورت تھی، لہٰذا یہی وجہ ہے کہ دلالۃ النص کے طور پر اس سے واضح یہ معلوم ہوتا ہے کہ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے انہیں قرآن کے بدلے نکاح کی اجازت مرحمت فرمائی۔

چنانچہ امام قسطلانی رحمہ اللہ رقمطراز ہیں کہ:
«ومطابقة الحديث للترجمه كما قال ابن المنير انه عليه الصلاه والسلام نهاهم عن الاستخصاء ووكلهم الى النكا ح، فلو كان المعسر لا ينكح وهو ممنوع من الاستخصاء لكلف شططاً وكان كل منهم لا بد ان يحفظ شيئا من القران فتعين التزويج بما معهم، فحكم الترجمة من حديث سهل بالتنصيص ومن حديث ابن مسعود بالاستدلال.» [ارشاد الساري لشرح صحيح بخاري: 74/9]
ابن منیر رحمہ اللہ کی اس وضاحت سے واضح ہوا کہ نبی کریم صلی اللہ علیہ ہے وسلم نے ان صحابہ کو جو تنگی میں تھے ہرگز خصی ہونے کی اجازت مرحمت نہیں فرمائی، بلکہ ان صحابہ میں انہیں جو کچھ بھی قرآن یاد تھا اس کے بدل نکاح کی ترغیب دی، جس سے صاف طور پر حدیث کی ترجمہ الباب سے مطابق ظاہر ہوئی ہے، حدیث اول جو سہل رضی اللہ عنہ سے ماخوذ تھی اسے نص بنایا اور جو حدیث ابن مسعود رضی اللہ عنہ سے تھی، اس سے استدلال کو اخذ فرمایا ہے، لہٰذا اس باریک بینی سے امام بخاری رحمہ اللہ نے ترجمتہ الباب سے استدلال فرمایا۔
«قلت: والله در هذا الامام مأادق نظره، وأوسع فهمه رحمة الله عليه ورحمته واسعة .»
   عون الباری فی مناسبات تراجم البخاری ، جلد دوئم، حدیث\صفحہ نمبر: 79